نعت

آمــــــــدِ شاہِ دو ســــــــرا ہے آج

نـــــــــور  کا  ایک  سلسلہ ہے آج

ندیــــــــم سلطانپوری

آمــــــــدِ شاہِ دو ســــــــرا ہےآج

نـــــــــور  کا  ایک  سلسلہ ہےآج

چانــــدسورج زمیں کوتکتےہیں

کون   دھـــــرتی   پہ آرہا ہے آج

اے  رُکانہ لے  ہــــــوش کےناخن

کس سے تــــــو  زور آزمــا ہےآج

"لَنْ تَرَانِیْ”کی تھیں صدائیں کل

"اُدْنُ مَنِّی”کی کیوں صــدا ہےآج

عاصیو!ہیں جبیں پہ بل کیسے؟

ان کے لب پـــر  ”اَنَا لَھَاْ“  ہے آج

اگلے،پچھلےہیں سب لـوا کےتلے

"ذکرِ  محبــــــوب کا مزا ہے آج”

وہ ہوں  آدم  ، خلیل  یا عیسی

ہــرکوئی خطبـــہ پڑھ رہا ہےآج

ان کے درکا گـــــــدا یہ کہتا ہے

مانگنے  سے ســــــوا ملا ہے آج

روزِ محشـــر وہ بخشا جائےگا

نعت لکھنےمیں جــــولگاہے آج

کل وہ  منـــزل بقا کی  پائے گا

عشقِ احمــد میں جوفنا ہے آج

نعت لکھنےکاہےیہ صدقہ ندؔیم

تیرا  بھی  چر چا جابجا ہےآج

مزید دکھائیں

متعلقہ

Close