نعت

 سرورِ انبیا کی حسیں یاد میں ڈوب کر دل مرا مسکرانے لگا

مجاہد ہادؔی ایلولوی

 سرورِ انبیا کی حسیں یاد میں ڈوب کر دل مرا مسکرانے لگا
ذکر آقا کا جب گھر میں میں نے کیا نور سے گھر مرا جگمگانے لگا

تھی یہ دنیا ضلالت میں گمراہی میں, اور عرب سب سے زائد ضلالت میں تھے
باغ اسلام کا مصطفی مجتبی، کی بدولت ہی یوں لہلہانے لگا

دل کو چین و سکوں آنکھوں کو روشنی, اور سارے بدن کو ملی تازگی
"جب سرِ انجمن عشق میں ڈوب کر کوئی نعت نبی گنگنانے لگا”

رحمتِ کاملہ اس کو ملنے لگی، روح کو بھی غذا خوب ملنے لگی
جب کوئی عاشقِ مجتبٰی شہر طیبہ کی راہوں پہ یوں آنے جانے لگا

جس نے بے دینوں کو دولتِ دین دی,اور جو بے کسوں کا مددگار تھا
اس کے تشریف لانے پہ سارا جہاں اپنی قسمت پہ خوشیاں منانے لگا

بے مثال آپ کا حسن ہے دنیا میں، اور ثانی نہیں کوئی اخلاق میں
اپنے رُخ سے ہٹایا ہے جب زلف کو، چاند بھی بادلوں میں ہے چھپنے لگا

اس رفیقِ سفر نے بھی معراج میں اک جگہ اپنے قدموں کو ٹھہرادیا
میرا محبوب جب سدرت المنتہا سے خدا کی طرف آگے جانے لگا

ہوگیا قہقہازار سارا زمن، اور خوشبو سے مہکا ہے سارا چمن
آمنہ کا دُلارا بھری بزم میں پاک ہونٹوں سے جب مسکرانے لگا

رب کی رحمت نے ہادؔی پہ سایہ کیا، اور ستارہ مقدر کا روشن ہوا
جب وہ شوریدہ بن کے درِ مصطفٰی پر محبت سے نعت ان کی گانے لگا

مزید دکھائیں

مجاہد ہادؔی ایلولوی

تخلیقِ کارِ کلامِ دل پزیر شعر و سخن کا نیا ابھرتا ستارہ جناب مجاہد ہادؔی ایلولوی صاحب کا تعلق ہندوستان کے صوبہ گجرات سے ہیں, آپ پیشے سے عالمِ دین ہیں آپ نے اپنی ابتدائی تعلیم اپنے آبائی وطن ایلول میں حاصل کی اس کے بعد مزید عربی اردو اور فارسی کی تعلیم کے حصول کے لئے اپنے علاقہ کا معروف ادارہ ( جامعہ اسلامیہ امداد العلوم وڈالی) کا رخ کیا اور وہی سے 2016 میں سند فضیلت حاصل کی اور اس کے بعد سے اب تک احمدآباد کے قریب شہر بوٹاد میں مقیم ہیں آپ کا تعلیق گجرات کے ضلع سابرکانٹھا کے ایک علمی خاندان سے ہیں آپ کے والد محترم کا اسمِ گرامی عمر ابن محمد پشوا ہیں وہ بھی پیشے سے عالمِ دین ہیں, آپ افق شعر و سخن کا ایک چمکتا ستارہ ہیں اور نئی نسل کے فعال ترین شعراء میں سے ایک ہیں

متعلقہ

Close