کوئی بھی بشر آپ ؐؐ سے بہ تر نہیں آیا

175

دنیا میں محمد سا موقر نہیں آیا
کوئی بھی یہاں آپ سے برتر نہیں آیا

ہر دور ہر اک قوم میں آئے تھے پیمبر
جو رہبر ِعالم ہو وہ رہبر نہیں آیا

تاریخ کے اوراق پلٹ کر کبھی دیکھو
یاں آپ سا رحمت کا پیمبر نہیں آیا

طائف کے مکینوں نے ہراساں جو کیا تھا
جز حرفِ دعا کچھ بھی زباں پر نہیں آیا

فرعون کے اخلاف ہر اک دور میں آئے
بولہب و ابوجہل سا کم تر نہیں آیا

اوصاف حمیدہ کے ہیں اغیار بھی قائل
کوئی بھی بشر آپ سے بہ تر نہیں آیا

ہے نعت کا لکھنا بھی ظؔفر ایک سعادت
مسعود کو یہ فن ہی میسر نہیں آیا

تبصرے