دیگر نثری اصناف

عرفان صدیقی کی شاعری

حسین عیاض

           تخلیقی متن کے مطالعے اور اس کی تعین قدر کے سلسلے میں  تنقید کی تمام تر حصولیابیوں  کے باوجود ایک سچائی یہ بھی ہے کہ نقادوں  کے ذرا غیر ذمے دارانہ رویے سے نسبتاً بہت اچھے اور پر قوت متن پیچھے چلے گئے ہیں ۔ اس کی مثالیں  ہماری ادبی تاریخ میں  جگہ جگہ مل جائیں  گی۔ لیکن یہ صورتحال بہت دیر تک قائم نہیں  رہتی۔ اچھا متن دیر سے ہی سہی اپنے بال وپر نکالتا ہے اور اپنے قاری پیدا کرتا ہے اور وقت کے ساتھ ساتھ تمام غیر ادبی اور غیر تنقیدی لاحقے ختم ہونے لگتے ہیں ۔ عرفان صدیقی کے شعری متن کا معاملہ بھی کچھ ایسا ہی ہے۔ نئی غزل کی مختلف جہتوں  پر جتنی کثرت سے لکھا گیا ہے وہ حیرت میں  ڈالتا ہے لیکن اس سے زیادہ حیران کن امر یہ ہے کہ عرفان صدیقی نئی غزل کے بیشتر تنقیدی کلامیوں  سے خارج ہیں ۔ اس صورتحال کو پیدا کرنے میں  ایک سطح پر خود عرفان صدیقی کی طبیعت کابھی دخل رہا ہے۔ ان کا مزاج اشتہار بازی اور’’ عرض ہنر ‘‘سے بہت دور تھا۔ خود عرفان صدیقی کو اس بات کا احساس تھا۔

                                              تم بتاتے تو سمجھتی تمہیں  دنیا عرفان

                                             فائدہ عرض ِہنر میں  تھا ہنر میں  کیا تھا

لیکن وہ اپنے بیشترمعاصرین سے اس معنی میں  زیادہ ثروت مند ٹھہرے کہ بعدکہ شعراء نے تخلیقی سطح پران میں  زیادہ دلچسپی لی، آج کا شعری منظرنامہ تواورچونکانے والاہے۔ اس وقت ہونے والی اچھے شاعری پرعرفان صدیقی جتنے گہرے اثرات نظر آتے ہیں ان سے عرفان صدیقی کے شعری متن کی قوت اوراس کے نموسے بھی تعبیرکیاجاسکتاہے۔ تنقیدادب میں  بہت کچھ کرتی ہے لیکن سب کچھ نہیں  کرتی۔ ایک حدآتی ہے کہ صرف متن رہ جاتاہے اورآگے کاسفروہ خودطے کرتاہے۔ عرفان صدیقی کے شعری متن نے یہ سفرپوری کامیابی کے ساتھ طے کیاہے۔

irfan

عرفان صدیقی کے پانچ شعری مجموعے شائع ہوئے ’کینوس‘’ شب درمیان‘’سات سماوات ‘’عشق نامہ‘ اور’ہوائے دشت ماریہ‘ یہ نام ہی عرفان صدیقی کے مختلف ذہنی رویہ کی نشان دہی کرتے ہیں۔ عرفان صدیقی کی شاعری کے بارے میں  قطعی طور پرکوئی بات نہیں  کہی جاسکتی۔ ان کے تخلیقی فشار کوتنقیدی اصطلاحوں سے نشان زدکرنابھی مشکل ہے۔ اس میں  زندگی، جذبے اوراحساس کے اتنے رنگ روپ اورڈائمینشن ہیں  اوراس لطافت کے ساتھ شاعری کاحصہ بنے ہیں  کہ قاری کے گرفت میں  آتے ہیں اورچھوٹ جاتے ہیں۔ یہی وہ جہت ہیں  جس کی طرف شمس الرحمان فاروقی نے اشارہ کرتے ہوئے لکھا تھاکہ’’ عرفان صدیقی کے کلام کاہزارقائل ہونے کے باوجودمیں  ان پرکبھی کوئی مضمون نہ لکھ سکا۔ ۔ ۔ ۔ عرفان صدیقی کے بارے میں  لکھنابہت مشکل کام تھااوراب بھی مشکل ہے۔ ان کے اشعارکی تہہ داری اوران کی لفظیات کاداستانی لیکن گہراداخلی رنگ اوران کے تجربۂ عشق اورتجربۂ حیات کادبدبہ اورطنطنہ یہ ایسی باتیں  نہیں  جن پر لفاظی اورانشاپردازی اورزوربیان کے ذریعے قابوپایاجاسکے‘‘(عرفان صدیقی کی غزل)

عرفان صدیقی پرنہ لکھے جانے کی ایک وجہ یہ بھی ہوسکتی ہے جس کی طرف اشارہ فاروقی کے اس اقتباس میں  ملتاہے۔ دراصل ہمارے یہاں جدید غزل پرجوگفتگوہوئی ہے اس میں  چندنقطے بنیادی حیثیت رکھتے ہیں، ان میں  سے بیشترکاحوالہ موضوعاتی ہے اورکسی بھی فن پارے کاموضوعاتی مطالعہ کسی نہ کسی سطح پرخانہ بندی تک لے جاتاہے۔ عرفان صدیقی کے شعری فکرکے سروکاربالکل نہ صحیح پھربھی بڑی حدتک مختلف تھے۔ ان کے یہاں  جدیدفکریاتی مباحث اس طورپرشاعری کاحصہ نہیں  بنے تھے جس طرح جدید غزل کے دوسرے شعراکے یہاں  ان کی صورت نظرآتی ہے، عشق کاایک شدید احساس عرفان صدیقی کی فکری جہت کوایک توازن تک لے جاتاہے۔ نہ ہی انہوں نے زبان کی سطح پرکوئی ’’انقلابی‘‘رول اداکرنے کی کوشش کی، ان کا لفظیاتی نظام بے پناہ جدت کے باوجود گہراکلاسیکی رچاؤ بھی رکھتاہے۔ جدیدغزل کی تنقیدکے یہ دونوں  حوالے عرفان صدیقی کے یہاں  بہت دھیمے ہیں ، ان کے شعری متن کے سیاق میں  یہ مسائل مرکزی حوالہ نہیں  بنتے اس لئے جدیدتنقیدی کلامیے میں عرفان صدیقی کونظراندازکرنے کی وجہ بہت سامنے کی ہے۔ لیکن آج یہ سب باتیں  بہت اہم نہیں  رہی ہیں، ہرزمانے میں  تخلیقی متن سے وابستگی کی بنیادیں  بھی ایک سی نہیں  رہتی، آج کا قاری اورساتھ ہی تخلیقی ذہن بھی عرفان صدیقی کی طرف باربار پلٹتاہے اوران کی پوری شعری فضاکواپنی اوراپنے زمانے کی حسیت سے زیادہ قریب پاتاہے تو اس کامطلب جدیدغزل کے ایک وقیع سرمائے سے روگردانی نہیں  ہے، جدیدغزل کی تمام فکری ا ورلسانی انتہاپسندیوں کو چھوڑنے کے بعدجوکچھ بچتاہے اس سب کارشتہ خودعرفان صدیقی کے شعری طریق کار سے قائم ہوجاتاہے۔ عرفان صدیقی نے اپنے عہدکی انسانی صورتحال کونسبتاً زیادہ بڑے سیاق میں  رکھ کردیکھنے کی کوشش کی ہے۔ ان کی پوری شاعری ایک غیرمشروط ذہن کی علامیہ ہے۔ نئی غزل کی تمام فکری سروکارکی جھلک بھی عرفان صدیقی  کے یہاں  ملتی ہے لیکن اپنے زمانے کو وقت کی بندشوں  سے آزادہوکردیکھنے کارویہ بھی ان کے شعری امتیازکا مظہرہے۔ عرفان صدیقی کی شاعری میں کربلا کے شعری استعارے کی معنویت بھی اسی سیاق میں  قائم ہونی چاہئے۔ یہ اشعار دیکھئے:

                                                پھرایک عجیب  تماشہ رہے گا  صدیوں   تک

                                                یہ  کاروبارِ  کمان     و گلو  ہے  کتنی دیر

                                                یہ کس نے  دستِ بریدہ  کی  فصل  بوئی تھی

                                                تمام   شہرمیں   نخل  دعا   نکل     آئے

                                                سروں کے پھول سرنوک ِنیزہ    ہنستے  رہے

                                                یہ  فصل  سوکھی   ٹہنیوں    پہ پھلتی رہی

                                                تو نے  مٹی   سے  الجھنے  کا نتیجہ    دیکھا

                                                ڈال دی میرے بدن نے تری تلوارپہ خاک

                                                ہوائے   کوفۂ نامہرباں   کو  حیرت   ہے

                                                 کہ  لوگ  خیمہ ٔ صبر  ورضا  میں   زندہ ہیں

                                                  یا  مرا  وہم  ہے   یہ نغمۂ موج  گزراں

                                                  یاکوئی نہر  ہے اس  کوہ گراں   کے  پیچھے

                                                 ایک رنگ آخری منظرکی دھنک میں  کم ہ ے

                                                  موجِ خوں  اٹھ کے ذراعرصۂ شمشیر  میں آ

                                                  لہومیں  غرق ہمارے  بدن کوسہل  نہ  جان

                                                 یہ آفتاب  ہے   اور  ڈوب  کرنکلتا  ہے

                                                 جو  بھی چا  ہوو ہ  تاریخ  میں    تحر یر کرو

                                                 یہ تو  نیزہ  ہی  سمجھتا  ہے کہ سر میں   کیاہے

                                                 خداسے آخری رشتہ  بھی کٹ نہ جائے کہیں

                                                کہ اب   کے   ہے دستِ  دعا  نشانے   پر

یہ اشعار عرفان صدیقی کے معاصرین کی تخلیقی حسیت سے قریب ہوتے ہوئے بھی بہت دور ہیں  اور نہ ہی انہیں  کسی ادبی تحریک اور میلان کے حوالے سے کوئی نام دیا جا سکتا ہے۔ عرفان صدیقی کی یہ لفظیات بھی ان کے تجربے اور ایک ازلی کشمکش کے ادراک کو نئے تناظر کے ساتھ سامنے لاتی ہیں ۔ عرفان صدیقی کے مطالعے بلکہ یہ کہا جائے کہ ان تمام شعری متون کے مطالعے میں  جنمیں  کربلا کا استعارہ مرکزی اہمیت رکھتا ہے ایک غیر ادبی رویہ بہت حاوی رہا ہے، کہ ان کی معنویت کو کربلا تک ہی محدود کرکے دیکھنے کی کوشش کی گئی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ آج بھی بہت سے لوگ افتخارعارف کا نام لینے سے بچتے ہیں ۔  عرفان صدیقی کے باب میں  بھی کربلا کا ذکر اتنی کثرت سے کیا گیا ہے کہ اس سے آگے ذہن نہیں  جاتا۔ عرفان صدیقی کی اس شعری جہت کو اس مخصوص سیاق میں  سمجھا ضرور جا سکتا ہے لیکن اسے یہیں  تک محدود کردینا ایک غیر ذمے دارانہ رویہ ہے۔ پہلے شعر میں  جس عجیب تماشے کا ذکر ہے اس کا مخصوص اظہاریہ اسے زمانی اور مکانی محدودیت سے باہر لے آتا ہے۔ کاروبارکمان وگلو کو خیروشرکی ازلی کشمکش کے استعارہ کے طور پر دیکھا جانا چاہیے۔  کاروبارکما ن وگلو کی ترکیب بھی معنی کی ایک نئی جہت کو سامنے لاتی ہے۔ عرفان صدیقی نے نیرمسعود سے ایک گفتگو میں  کہا تھا کہ وہ لفظوں  کے امکانات اور ان کے آپسی رشتوں  کو تلاش کرنے اور ان کے استعمال پر ہفتوں  سوچتے ہیں  بلا مبالغہ۔ اس بات کا اندازہ عرفان صدیقی کی لفظیات اور ان کی ترکیبوں  سے صاف طور پر ہوتا ہے۔ ان کی ترکیبیں  معنیاتی سطح پر بڑا کردار ادا کرتی ہیں  اور صوتی اعتبار سے بھی ان میں  ایک حسن اور جاذبیت ہوتی ہے۔ کمان وگلو کے ساتھ کاروبار کی تمام رسومیات کو وابستہ کرکے اس عمل کی نوعیت کی طر ف بھی اشارہ مقصود ہے۔  دوسرے شعر کے معنی سے قطع نظر اس کے مخصوص اظہار سے جو تصویر ابھر کر سامنے آتی ہے اور ایک پیکر خلق ہوتا ہے وہ شاعر کے تخلیقی مزاج کو سامنے لاتا ہے۔ عرفان صدیقی کی شاعری کی یہ خاص بات ہے کہ وہ خیال کو کوئی نہ کوئی صورت دینے میں  کامیاب ہو جاتے ہیں  اور خالص ذہنی اور حسی تجربے ان کے یہاں  بصری پیکر اختیار کر لیتے ہیں  ترکیب سازی اور لفظوں  کے گچھے خلق کرنے کا پورانظام اسی جہت کو سامنے لاتا ہے۔ تیسرا شعر بھی اس رخ پر جاتا ہے۔ عرفان صدیقی کے یہاں  اس طرح کے موضوعات سے خاصی دلچسپی کا اظہار ملتا ہے دراصل یہ ان کے مزاج، شخصیت اور تربیت کا حصہ ہیں ۔ وہ ظلم اور جبر کے خلاف انسان کو قائم کرنا چاہتے ہیں  ان کے یہاں  صداقت اور سچ ایک لازوال حقیقت بن کر ابھرتے ہیں اور کربلا کا واقعہ ہر عہد کی اسی کشمکش کا استعارہ بن جاتا ہے۔ ان دونوں  شعروں  میں  د ست بریدہ اور سروں  کے پھول کے اظہاریہ کو آدمی کی شخصیت اوراس کی خودی کے اثبات کے طور بھی دیکھا جانا چاہیے۔ یہیں  سے عرفان صدیقی کے یہاں وہ پہلو بھی ابھرتا ہے جسے ہم تصوف سے جوڑ کر دیکھتے ہیں ، انہوں  نے نظریاتی سطح پر تو تصوف کو نہیں  برتا نہ ہی اس طرح کے مباحث ان کے یہاں  آئے ہیں  جن کا ذکر عام طورپر تصوف کی شاعری کے حوالے سے کیا جاتا ہے۔ وہ تصوف کو عام انسانی صورتحال سے جوڑ کر دیکھتے ہیں ۔

                                                 فقیر ہوں   د ل تکیہ نشیں  ملا   ہے   مجھے

                                                 میاں  کا صدقہ تاج  ونگیں   ملا ہے  مجھے

                                                 میں  بوریا  اسی خاک   پر کیا تھا    بساط

                                                 سو یہ خریطہ زر بھی  یہیں   ملا ہے   مجھے

                                                 زباں  کو خوش نہیں  آتا کسی کا  آب ونمک

                                                 عجب  تبرک نان  جویں   ملا  ہے  مجھے

                                                  پھر  بار فقیروں   کا اٹھانا میرے   داتا

                                                 پہلے  تو یہ  کشکول  فقیرا  نہ  اٹھا لے

                                                کوئی سلطان نہیں   میرے سوا میر ا شریک

                                                 مسند  خاک   پہ بیٹھا ہوں   برابر  اپنے

ان اشعار میں  زیریں  سطح پر احتجاج کے نشان بھی ملتے ہیں  اور یہ احتجاج انسان کو اپنی ذات کے اثبات تک لے جاتا ہے۔ مذکورہ شعروں  سے ایک متصوفانہ طبیعت اور قلندرانہ مزاج کی تصویر بھی بنتی ہے۔ ان میں  عرفان صدیقی کے عہد کا آشوب بھی ہے اور ان کے بعد کی تما م تر غیر انسانی صورتحال کے خلاف قائم ہونے کی بنیادیں  بھی۔ عرفان صدیقی کی شاعری لفظ ومعنی دونوں  سطحوں  پر ہمیں  چونکاتی ہے۔ وہ سامنے کے موضوعات ومسائل کو بھی جس سطح پر جاکر سوچتے ہیں  اور محسوس کرتے ہیں  اور بھرپور ڈرامائیت کے ساتھ شعری پیکر عطا کرتے ہیں  وہ ہمیں  ایک نئے لسانی اور معنیاتی تجربے سے آشنا کراتا ہے۔ عرفان صدیقی کے شعری متن کی قرأت کا یہ ایک دلچسپ حوالہ ہے۔

عرفان صدیقی کاتخلیقی مزاج ان کی فکرپرحای نظرآتاہے، ان کے یہاں  باضابطہ کسی فکری نظام کی دریافت بھی مشکل ہے اوروہ عرفان صدیقی کا مسئلہ بھی نہیں  تھا۔ انہوں نے خیروشرکے معرکہ میں  اپنافرض تونبھایاہے لیکن یہ فرض انہیں  کسی گہری فلسفیانہ سطح تک نہیں  لے جاتا، یہاں  بھی ان کے شعروں  کاشدیدجمالیاتی آہنگ اورتخلیقی وفورایک دوسرے ہی ذائقے سے آشناکراتاہے۔ اس طرح کے مسائل عرفان صدیقی کے یہاں  ہیں  لیکن ان کی تہذیب اور تراش الگ قسم کی ہے۔

                                             مرے  خدا  مجھے  اس   آگ   سے نکال  کہ تو

                                             سمجھ  میں    آتاہے   ایقان  میں   نہیں    آتا

                                              مجرم   ہوں   اورخرابۂ جاں   میں   اماں    نہیں

                                              اب میں   کہاں  چھپوں کہ یہ گھربھی  اسی   کاہے

                                              پتلیاں    گرمی  ٔ بازار  سے  جل   جاتی   ہیں

                                              آ نکھ کی  خیر   میاں   رونق بازار  پہ     خاک

                                               یوں    ہمیں    روز  نئی  دربدری    بخشتے  ہیں

                                              جیسے بیٹھے ہوں  زمیں  جیب میں  ڈالے ہوئے لوگ

عرفان صدیقی کی شاعری کا سب سے بڑامسئلہ عشق ہے۔ انہوں نے اپنے ایک مجموعے کانام بھی’عشق نامہ‘رکھاہے۔ اس کی ایک وجہ کلاسیکی شعری روایت سے گہراتعلق بھی ہے اورساتھ ہی وہ عشق کو ایک بڑی انسانی قوت اورسرگرمی کے طور پردیکھتے ہیں۔ یہ عشق پوری طرح ماورائی بھی نہیں ہے لیکن اس طرح زمینی بھی نہیں  کہ اس کارشتہ ہوسناکی سے قائم ہوتاہو۔ یہ اشعاردیکھئے:

                                              کہیں  کسی   کے بدن   سے بدن   نہ    چھو جائے

                                               اس احتیاط میں    خواہش  کاڈھنگ  سا کچھ  ہے

                                               میدواروں    پہ    کھلتا     نہیں   وہ بابِ وصال

                                               اوراس  کے  شہرسے  کرتا    نہیں  کنارہ    کوئی

                                              سیربھی جسم کے   صحراکی  خوش    آتی  ہے    مگر

                                               دیرتک    خاک  اڑانا   بھی   نہیں    چاہتا  ہے

                                               لپٹ بھی    جاتاتھا   اکثر    وہ میرے   سینے سے

                                               ا ورایک   فاصلہ    سادرمیاں     بھی     رکھتاتھا

                                               ہو ا  گلاب   کو   چھو  کر گزرتی   رہتی     ہے

                                               سو  میں     بھی   اتنا  گنہگا ر   ہنا چاہتا     ہوں

                                               تیراسراپایامیراتماشاکوئی تو برج زوال    میں    تھا

                                              رات چراغ ساعت ہجراں  روشن طاق وصال میں  تھا

                                              روح میں   کیسی  تھکن    ہے کوئی  تدبیر    کرو

                                               شاید      آسودہ       سربسترتن       ہوجاؤں

                                             کسی  کے وعدہ ٔ فردا  کے    برگ وبار کی  خیر

                                              یہ آگ ہجرکے بن کی  طرف سے  آتی ہے

                                             کیا  ہرن ہے   کہ کبھی رم نہیں   کرتاہم سے

                                               فاصلہ اپنا   مگر   کم نہیں   کرتا   ہم سے

                                              جب قریب آیاتوہم خودسے جدا  ہونے لگے

                                               وہ    حجاب   درمیانِ جان وتن    لگنے لگا

مذکورہ تمام شعروں  میں ہجرووصال، بدن اورروح کے درمیان ایک قسم کی کشمکش کا احساس ہوتا ہے۔  یہ کیفیت فراق کی شاعری میں  بھی جگہ جگہ ملتی ہے، ان کے یہاں  وصل محبوب سے ہمکنار ہونا نہیں  ہے بلکہ لمحۂ وصال ہی ابدی ناسودگی کے احساس کو اورشدید کرتا ہے۔ عرفان صدیقی کے یہاں  اس طرح کی اداسی تونہیں  ہے لیکن لمحۂ وصل اورلمحہ ہجرکے درمیان ایک چیز ہے جسے عشق کی تہذیب کانام دیاجاسکتاہے۔ پہلے شعرمیں  جس احتیاط کاذکرہے اس کاوجود تبھی ممکن ہے جب اندر کسی کے بدن سے چھوجانے کی خواہش موجود ہو، ’ڈھنگ سا کچھ ہے‘کافقرہ بے نام سی لذتوں  سے ہمکنار کرتاہے، عرفان صدیقی کی شاعری کی یہی وہ جہت ہے جسے تنقیدی سطح پرسمجھنااورسمجھانا ممکن نہیں ، ان کے متن میں  کہی گئی باتوں  سے زیادہ ان کہی باتیں  ہوتی ہیں۔ جس کی طرف اشارہ عرفان صدیقی نے ایک جگہ ’سخن بے زباں ‘کی ترکیب سے بھی کیا ہے۔ دوسرے شعرکا مضمون بہت پرانا ہے اورحقیقت تویہ ہے کہ عشق کے باب میں  کوئی نئی بات لانا بہت مشکل ہے، اب شاعرکے لئے یہ بچتاہے کہ وہ ان مضامین کو نئی لفظیات، نئی تراکیب اورتازہ ترحسیت کے ساتھ کس طور پربرتتا ہے۔ عرفان صدیقی کے اس شعر کاساراحسن اس کے اظہاریہ میں  ہے۔ ’باب ِوصال ‘کی ترکیب اوراس کی مناسبت سے لفظ ’کھلنا ‘اس مضمون میں  دلکشی اورنیاپن پیدا کرتا ہے۔ تیسرے شعرکی نوعیت بھی یہی ہے۔ جسم کے صحراکی ترکیب سے عرفان صدیقی  نے بہت کام لیا ہے اورہر جگہ نئے امکانات روشن ہوئے ہیں۔ عشق کے متعلقات کے ذکرمیں  جسم اور بدن کے الفاظ ان کی شاعری میں  کثرت سے ملتے ہیں۔ دراصل یہی وہ نقطہ ہے جوان کے عشق کوارضی بنیاد فراہم کرتا ہے۔ عرفان صدیقی کے یہاں  بدن محبوب کابدن ہے اوروہ اس کی تقدیس کے تمام پہلوتلاش کرتے ہیں۔

                                              جسم سے روح تلک   راہ نوردی  کیلئے

                                              ہوعنایت مرے ہونٹوں  کو بھی پروانۂ لب

                                             میں  تری منزل جاں  تک  پہنچ توسکتاہوں

                                            مگر یہ راہ بدن کی  طرف سے   آتی ہے

                                             سیربھی جسم کے صحراکی   خوش آتی  ہے مگر

                                             دیرتک خاک  اڑانابھی نہیں    چاہتا ہے

                                              وہ   خوش  بد ن نوید  بہارمیرے   لئے

                                             میں  اس کو چھولوں  توسب کچھ نیانیاہوجائے

                                                کب  سے پتھرہوں     بیابان فراموشی میں

                                                میرے ساحرمجھے چھولے کہ بدن  ہوجاؤں

                                                مگر گرفت   میں    آتانہیں    بدن اس کا

                                                خیال    ڈھونڈتا  رہتا   ہے  استعارہ کوئی

                                                کھلتے ہی نہیں  لمس   پہ اس   جسم کے اسرار

                                                 سیاح   عجب   شہر  طلسمات میں  گم ہے

یہ تمام شعرکاروبار عشق میں  بدن کے کردارکونشان زدکرتے ہیں۔ پہلے دونوں  شعروں  میں  بدن روح تک پہنچنے کے ایک ذریعے کے طور پر سامنے آتا۔ منزل جاں تک پہنچنے کی راہ کابدن سے ہوکرگزرنا بدن کی تقدیس کی علامت ہے۔ جسم سے روح تلک راہ نوردی کیلئے لبوں  کا سہارابھی اسی جہت کوروشن کرتا ہے۔ آخری شعرمیں  جسم کی اسرارآمیز فضااس پورے عمل کوہوسناکی سے بہت بلندکردیتی ہے۔ عرفان صدیقی محبوب کے جسم اوراس کے اعضاکی صرف تعریف ہی نہیں  کرتے بلکہ ان سے ایک تعلق بنانا بھی چاہتے ہیں۔ اس روش کوجدید غزل میں  عشق کے بدلے ہوئے تصور کے طور بھی دیکھاجاسکتا ہے۔ ظفر اقبال کے یہاں  یہ پہلواورواضح انداز میں  ابھرتا ہے۔ عرفان صدیقی کا یہ شعر بھی دیکھئے۔

                                               میں  ڈوب گیاجب ترے پیکرمیں توٹوٹا

                                               یہ وہم کہ توخود ہی مری ذات میں  گم ہے

اس شعرسے دونوں  کرداروں  کے بیچ ایک فاصلے کااحساس ہوتاہے۔ گویاعاشق خوداپنے وجود کوالگ قائم رکھنا چاہتا ہے۔ اسی خلاکوپرکرنے کیلئے اسے پروانۂ لب کی ضرورت ہے۔ وحشت کاموضوع کلاسیکی شعری روایت کاحصہ رہاہے۔ جدیدشعرانے بھی اسے اپنے اپنے طور پر برتا ہے۔ عرفان صدیقی وحشت کارشتہ اپنے باطن سے قائم کرکے نیاافق روشن کرتے ہیں۔

                                               خیردنیا  مری وحشت   کیلئے   تنگ سہی

                                               اوریہ عرصۂ   با طن میں    بیاباں   جوہیں

ظاہرہے باطن کے ان بیابانوں  کا رشتہ عشق کی تاراجیوں  سے قائم ہوتاہے۔ یہیں  سے عرفان صدیقی کی شاعری میں  دردکے ایک پورے باب کااضافہ بھی ہوتاہے۔ دردکوعرفان صدیقی نے ایک بڑی قدرکے طورپربرتاہے۔ یہ شعردیکھئے

                                   لشکرعشق نے جب سے خیمے کئے کچھ نہ کچھ روزسرحدبڑھالی گئی

                                   اورپھرایک دن دل کی ساری زمیں  دردکی مملکت میں   ملالی گئی

                                  منصب    درد   سے     دل     نے تمہیں    معزول  کیا

                                  تم   سمجھتے     تھے      یہ جاگیر    تمہارے   لئے   ہے

                                   خانۂ درد      ترے     خاک   بسر      آگئے     ہیں

                                                 اب توپہچان کہ ہم شام کوگھر   آگئے ہیں

                                                 اس ایک نام نے بخشاہے  جوخزانۂ درد

                                                وہ ہم نے وقف کیابحروبرکے   نام تمام

                                               میں  توایک دردکاسرمایہ لئے    بیٹھا ہوں

                                               یہ مری جان کا آزارہے میں    کیاجانوں

درد کی مملکت، منصب درد، دردکاسرمایہ، خزانہ ٔدردیہ سب ترکیبیں  اسی قدرکی طرف اشارہ کرتی ہے۔ پہلے دوسرے اورتیسرے شعرسے جوایک واقعہ اورمنظرنامہ خلق ہوتاہے اسے عرفان صدیقی کی تخلیقی ہنرمندی سے تعبیرکیاجانا چاہئے۔ ان اشعارکاڈرامائی اندازاثرانگیزی میں  اضافہ کرتا ہے۔ درد جدیدشاعری کابنیادی موضوع رہاہے جوعشق کے ساتھ اورکئی صورتحال کازائدہ ہے لیکن اس کاموضوع اورزبان کی سطح پر اتنا تخلیقی اورجمالیاتی اظہاربہت کم ہواہے۔ عرفان صدیقی کاکینوس اپنے کئی معاصرین کے مقابلے میں  محدودہے لیکن ان کے امتیازکااظہاراس بات سے ہوتا ہے کہ جوموضوعات بھی ان کے یہاں  آئے ہیں  وہ ان کی گرفت سے باہرنہیں  رہتے۔ عرفان صدیقی کے یہاں  بہت کم شعرایسے ہیں  جوکسی نہ کسی جہت سے ہمیں  متوجہ نہ کرتے ہوں۔ جدید غزل کو عرفان صدیقی کی یہ بہت بڑی عطا ہے جس کے لئے وہ ہمیشہ یاد رکھے جائیں  گے۔

مزید دکھائیں

حسین عیاض

شعبہ اردو، جواہر لال نہرو یونیورسٹی

متعلقہ

Close