نظم

’ایک تھی روحی پر‘ پر منظوم تاثرات

احمد علی برقی اعظمی

‘ایک تھی روحی‘ ہے ایسی داستانِ دلفگار

سنگ دل بھی جس کو ہو جائے گا سن کر بیقرار

جانفزا جاوید دانش کا ہے انداز بیاں

دے جزائے خیر انھیں اس کے لئے پروردگار

ان کے سینے میں دھڑکتا ہے دلِ درد آشنا

ان کے طرزِ فکر و فن سے ہے یہ سب پر آشکار

ہیں دلوں پر حکمراں وہ اپنے طرزِ فکر سے

داستاں گوئی کے ہیں عہد رواں میں شہریار

بارہا میں نے سنا ہے، آپ سن کر دیکھ لیں

چاہتا ہے ہے دل اُنھیں سنتے رہیں ہم بار بار

نام کا لگتا ہے ان کے کام پر بھی ہے اثر

زندۂ جاوید ہیں ان کے ادبی شاہکار

قدرداں ہے فکر و فن کا ان کے برقی اعظمی

ہیں وہ اقصائے جہاں میں آج فخرِ روزگار

مزید دکھائیں

احمد علی برقی اعظمی

ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی اعظم گڑھ کے ایک ادبی خانوادے سے تعلق رکھتے ہیں۔ آپ کے والد ماجد جناب رحمت الہی برقؔ دبستان داغ دہلوی سے وابستہ تھے اور ایک باکمال استاد شاعر تھے۔ برقیؔ اعظمی ان دنوں آل آنڈیا ریڈیو میں شعبہ فارسی کے عہدے سے سبکدوش ہونے کے بعد اب بھی عارضی طور سے اسی شعبے سے وابستہ ہیں۔۔ فی البدیہہ اور موضوعاتی شاعری میں آپ کو ملکہ حاصل ہے۔ آپ کی خاص دل چسپیاں جدید سائنس اور ٹکنالوجی خصوصاً اردو کی ویب سائٹس میں ہے۔ اردو و فارسی میں یکساں قدرت رکھتے ہیں۔ روحِ سخن آپ کا پہلا مجموعہ کلام ہے۔

متعلقہ

Close