نظم

تم نہیں تو کچھ نہیں، ایسا نہیں 

آمنہ تحسین

(ممبرا تھانہ )

اور بھی ھیں زندگی میں واسطے

اوربھی قدموں تلے ھیں راستے

اک تمھارا غم نہیں تنہا مجھے

اور بھی غم ھیں دل نا شاد کو

اک تمھارے ھجر کا ماتم نہیں

اور بھی دکھ ھیں دل برباد کو

تم نہیں تو کچھ نہیں ایسا نہیں 

آج بھی دھڑکن رواں ھے مستقل

آج بھی لو دیکھ لو ذندہ ھے دل

آج بھی روشن ھیں دل میں کچھ چراغ

آج بھی پھولوں سا مہکے من کا باغ

آج بھی ھونٹوں پہ نغمے ھیں جواں

آج بھی دل میں ھیں کچھ خواہش رواں

آج بھی امید ہے اک آس ھے

اور جینے کو بہت کچھ پاس ھے

سوچتے ھو ھاں مگر جیسا یہاں ویسا نہیں

تم نہیں تو کچھ نہیں ایسا نہیں

مزید دکھائیں

متعلقہ

Back to top button
Close