نظم

فضیل جعفری کے سانحۂ ارتحال پر منظوم تاثرات

احمد علی برقی اعظمی

فضیل جعفری دنیا سے ہوگئے رخصت

کہ لازوال صحافت میں جن کی ہے خدمت

ادیب و شاعر و نقاد سرشناس تھے وہ

زیاں ادب کا ہے ان کی یہ ناگہاں رحلت

نگارشات میں ان کی بلا کی تھی تاثیر

کبھی نہ فرض سے اپنے جنھوں نے کی غفلت

سخنوری میں بھی تھا عہد ساز ان کا کلام

دلوں پہ نقش ہے ان کے کلام کی عظمت

تھے انقلاب کی روحِ رواں ادارت میں

وہ جانتے تھے قلمکار کی ہے کیا حُرمت

جو سوگوار ہیں ان کو ملے سکونِ قلب

خدا کے فضل سے ان کو نصیب ہو جنت

ہے ان کی عظمت و حُرمت کا قدرداں برقی

جو چاہتے تھے اُنہیں کم نہ ان کی ہو چاہت

مزید دکھائیں

احمد علی برقی اعظمی

ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی اعظم گڑھ کے ایک ادبی خانوادے سے تعلق رکھتے ہیں۔ آپ کے والد ماجد جناب رحمت الہی برقؔ دبستان داغ دہلوی سے وابستہ تھے اور ایک باکمال استاد شاعر تھے۔ برقیؔ اعظمی ان دنوں آل آنڈیا ریڈیو میں شعبہ فارسی کے عہدے سے سبکدوش ہونے کے بعد اب بھی عارضی طور سے اسی شعبے سے وابستہ ہیں۔۔ فی البدیہہ اور موضوعاتی شاعری میں آپ کو ملکہ حاصل ہے۔ آپ کی خاص دل چسپیاں جدید سائنس اور ٹکنالوجی خصوصاً اردو کی ویب سائٹس میں ہے۔ اردو و فارسی میں یکساں قدرت رکھتے ہیں۔ روحِ سخن آپ کا پہلا مجموعہ کلام ہے۔

متعلقہ

Close