نظم

 مہِ رمضان

یاسرعرفات طلبگار

دُدھوت ڈوڈہ

مسلمانو! عبادت کا مہینہ آ گیا ہے

اطاعت کی ریاضت کا مہینہ آ گیا ہے

سہارا دو یتیموں، بے بسوں کو، بے کسوں کو

یتیموں سے سخاوت کا مہینہ آ گیا ہے

زباں کی فحش گوئی سے بچو دل کو سنوارو

زبانوں کی حفاظت کا مہینہ آ گیا ہے

غلاظت نفس کی دھونے، دلوں کو پاک کرنے

دل و جاں کی طہارت کا مہینہ آ گیا ہے

تدبر بھی، تفکر بھی کرو قرآں پہ ہر پل

اٹھو پھر سے تلاوت کا مہینہ آ گیا ہے

ثواب و اجر ملتا ہے عمل سے بھی زیادہ

منافع کی تجارت کا مہینہ آ گیا ہے

کرو بیمار لوگوں کی عیادت ہے یہ سنت

مریضوں کی عیادت کا مہینہ آ گیا ہے

اٹھو مانگو مرادیں اپنے رب سے روز و شب میں

دعاؤں کی اجابت کا مہینہ آ گیا ہے

ہیں روزہ دار کی خاطر ہزاروں نعمتیں اس میں

کہ گوناگوں ضیافت کا مہینہ آ گیا ہے

بٹاؤ ہاتھ کاموں میں ذرا اپنے غلاموں کا

غلاموں سے رعایت کا مہینہ آ گیا ہے

چمن میں رونقیں ہی رونقیں بکھری ہوئی ہیں

جو ایماں کی طراوت کا مہینہ آ گیا ہے

ہزاروں ماہ سے افضل مبارک شب ہے اس میں

مبارک شب کی ساعت کا مہینہ آ گیا ہے

کرو حاصل دعاؤں سے عنایت اپنے رب کی

مسلمانو! عنایت کا مہینہ آ گیا ہے

مہِ رمضان برکت اور رحمت ساتھ لایا ہے

جہنم سے براءت کا مہینہ آ گیا ہے

خدا کے ذکر سے یاسر کریں ایمان تازہ

کہ ایماں کی حرارت کا مہینہ آ گیا ہے

مزید دکھائیں

یاسر عرفات طلبگار

دُدھوت ڈوڈہ جموں و کشمیر

متعلقہ

Close