نظم

کاروانِ سخت جاں

مصر میں فوجی جارحیت سے برسرِ پیکار اخوانی جیالوں کے نام ایک نظم

نیل کے ساحل پہ پھر اک کربلا ہوتا ہوا
رسمِ شبیریؓ کا قائم سلسلہ ہوتا ہوا
قافلہ بڑھتا ہوا نیزوں پہ رکھے نقدِ جاں
مصلحت کوشوں کی خاطر آئنہ ہوتا ہوا
ایک ضربِ موسویؑ اذنِ خدا ہوتی ہوئی
سینۂ دریا سے پیدا راستہ ہوتا ہوا
ہے یزیدی حکم سی رکھو لبِ حق آشنا
راستہ جاتا ہے یہ دشتِ انا ہوتا ہوا
مشکلیں دشتِ زیاں کی گردِ رہ بنتی ہوئیں
شوقِ منزل خود ہی ان کا رہ نما ہوتا ہوا
☆☆☆
اور پھر دیکھا زمانے نے شبِ دیجور میں
جگنوؤں کے قتل کا اک سانحہ ہوتا ہوا
کشتگانِ راہِ الفت کے لہو سے لالہ زار
انقلابِ رابعہ  بانگِ درا ہوتا ہوا
سلسلہ ہوتا ہوا اس جبر کا جوں جوں دراز
جذبۂ شوقِ شہادت اور سوا ہوتا ہوا
لحظہ لحظہ ظلم کی آندھی یوںہی بڑھتی ہوئی
جسدِ ملت احتجاجاً ہم نوا ہوتا ہوا
ہے عزیمت کا نشاں یہ کاروانِ سختِ جاں
ہر قدم لٹتا ہوا حق پر فدا ہوتا ہوا


☆☆☆
تختِ باطل ہاں ہزیمت آشنا ہونے کو ہے
اک نظامِ عدل و انصاف اب بپا ہونے کو ہے
عرفان وحید۔ ۲/اکتوبر، ۲۰۱۳
مزید دکھائیں

عرفان وحید

عرفان وحید کا تعلق پنجاب کے شہر مالیر کوٹلہ سے ہے۔ آپ پیشے سے انجینیر ہیں۔ عرفان نے اردو اور انگریزی میں قریباً ۲۰ کتابیں ترجمہ کی ہیں۔ آپ انگریزی ماہنامے 'دی کمپینیئن' اور انگریزی پورٹل 'ہیڈلائنز انڈیا' کے ایڈیٹر بھی رہ چکے ہیں۔

متعلقہ

Back to top button
Close