نظم

نظم – یہ دیش اپنا بدل رہا ہے

عامرؔ فاروقی،  گوالیار

یہ دیش اپنا بدل رہا ہے

بدل  رہی  ہیں  ہماری  نظریں

بدل  رہی  ہیں  ہماری  سوچیں

بدل  رہی  ہیں   ہماری  آہیں

بدل  رہی  ہیں  ہماری  چاہیں

عجیب  شکلوں میں ڈھل رہا ہے

یہ   دیش  اپنا  بدل   رہا  ہے

بدل  رہے  ہیں  اُصول  اپنے

مہکتے  گلشن  کے  پھول  اپنے

زمیں  پہ  اُگتے   ببول   اپنے

گلوں کو چھوڑو ہیں  شول  اپنے

یہ ٹوٹے شیشوں  پہ چل  رہا ہے

یہ   دیش  اپنا  بدل   رہا  ہے

ہمارے خوابوں کے رنگ  پھیکے

یہ ماں  کے آنچل لہو  سے  بھیگے

یہ سرد  روحوں کے گرم  جھونکے

نہ کوئی  آگے  نہ  کوئی   پیچھے

یہ جلتے شولوں  پہ  چل  رہا ہے

یہ   دیش  اپنا  بدل   رہا  ہے

یہ  نفرتوں  کی    دُکان   سجنا

گلی  محلوں  میں    زہر    بٹنا

یہ  آبرووں   کا     روز   لُٹنا

جو  خود  کو بھائے اُسی  کی سننا

یہ جیسے خود کو  ہی  چھل  رہا  ہے

 یہ   دیش  اپنا  بدل   رہا  ہے

سبھی کے لب پر   جفا  کی  باتیں

سکوں  ہیں  دیتی  فنا  کی  باتیں

خلوص  امن  و  بقا  کی    باتیں

ہیں  سہمی سہمی  وفا   کی  باتیں

یہ  ریزہ  ریزہ   پگھل  رہا  ہے

 یہ   دیش  اپنا   بدل   رہا   ہے

یوں   فرقہ  مذہب میں بانٹ دینا

دلوں کی  ڈوری   کو  کاٹ  دینا

جو جی میں  آئے  تو  ڈانٹ  دینا

چمن کے  پھولوں کو  چھانٹ  دینا

سنبھل  سنبھل کر پھسل  رہا  ہے

یہ   دیش  اپنا   بدل   رہا   ہے

ہے دال  روٹی بھی دور  حد  سے

اُڑے ہیں چہروں کے نور  حد سے

تھکن سے ہستی ہے چور حد  سے

کہیں پہ  بڑھتا  سرور  حد  سے

فتو ر   ذہنوں  میں  پل  رہا  ہے

یہ   دیش  اپنا   بدل   رہا   ہے

ہماری دھرتی کی شکل  کیا   تھی

ہمارے پُرکھوں کی عقل  کیا  تھی

محبّتوں کی  وہ فصل  کیا   تھی

وہ خوئے جانائے عدل  کیا  تھی

انہیں  بھلا  کر  نکل  رہا   ہے

یہ   دیش  اپنا   بدل   رہا   ہے

تمہیں  یہ  جادوگری   مبارک

زباں  کی بازی گری   مبارک

یہ رنگ  بدلتی  گھڑی   مبارک

یہ جل رہی  پُھل جھڑی  مبارک

سنبھال  لو  تو  سنبھل  رہا ہے

یہ   دیش  اپنا   بدل   رہا  ہے

یہ دحشتوں  سے  بھڑا  ہو ا  ہے

یہ گردشوں   میں گھرا  ہوا   ہے

یہ پھر بھی  ڈٹ کر کھڑا  ہو ا  ہے

یہ حوصلوں  سے  بھرا  ہوا  ہے

یہ  ایکتا   پر   اٹل   رہا   ہے

یہ   دیش  اپنا   بدل  رہا  ہے

ٌٌٌٌٌ           ۔۔۔۔۔

مزید دکھائیں

متعلقہ

Back to top button
Close