نظم

نظم

خدمتِ خلق سے دل جیت!

ادریس آزاد

آج کا دن بھی اُسی
رنگ میں بیتا
وہی آہنگ، وہی صوت و صفت
آج بھی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اب تو ازبر ہیں
یہ الوان، یہ اصوات، یہ سب
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کون سا نام مجھے یاد نہیں؟
۔۔۔۔۔۔

کس کے آغاز کا انجام مجھے یاد نہیں؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خودکشی تک جو
حقیقت میں نہیں ہوسکتی
۔۔۔۔۔۔۔۔

خود کشی نفس کی رجعت ہے مدام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پھر تغیرکی بقا ہرزہ۶ ِ متروک نہیں؟
۔۔۔۔۔۔۔۔

ٹھیک؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اب یوں ہے کہ
اِک راستہ ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یا کوئی تازہ ہنر
یا کوئی تابندہ خیال
شعر یا گیت یا گیٹار یا تصویر یا تال
۔۔۔۔۔۔۔۔

یوں بدل!
پھر بھی نہ بدلے تو!
پھر اِک راستہ ہے
روز کے کام کو انجام
نئے رنگ سے دے!
۔۔۔۔۔۔۔۔

خدمتِ خلق سے دل جیت!
تو پھر مِیت بہت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

طائر ِ دل کے تلذذ کے لیے گیت بہت

مزید دکھائیں

ادریس آزاد

ادریس آزاد (7 اگست 1969ء) پاکستان کے معروف لکھاری، شاعر، ناول نگار، فلسفی، ڈراما نگار اورکالم نگار ہیں۔ انہوں نے فکشن، صحافت، تنقید، شاعری، فلسفہ، تصوف اور فنون لطیفہ پر بہت کچھ تحریر کیا ہے۔ ان کا اصل نام ادریس احمد ہے تاہم اپنے قلمی نام ادریس آزاد سے جانے جاتے ہیں۔ بطور شاعر انہوں نے بے شمار نظمیں تحریر کی ہیں جو روایتی مذہبی شدت پسندی کے برعکس روشن خیالی کی غماز ہیں۔ ان کی مشہور کتب ’عورت، ابلیس اور خدا، ’اسلام مغرب کے کٹہرے میں‘ اور ’تصوف، سائنس اور اقبالؒ‘ ان کے مسلم نشاۃ ثانیہ کے جذبے کی عکاسی کرتی ہیں۔ روزنامہ دن، ’آزادانہ‘ کے عنوان سے ان کے کالم شائع کرتا ہے ۔

متعلقہ

Back to top button
Close