نظم

پچیس دسمبر ہے مرا یومِ ولادت

ہو میرے لئے آج کادن وجہہِ سعادت

احمد علی برقیؔ اعظمی

پچیس دسمبر ہے مرا یومِ ولادت
ہو میرے لئے آج کادن وجہہِ سعادت

جو بیت گئی عمرِ گذشتہ کی ہے میت
اللہ کی کرتی رہے ہر سانس عبادت

سوغات ہے ماں باپ کی میرے لئے یہ روز
احباب کو ہے یاد، یہ ہے ان کی عنایت

جمعیتِ خاطر ہے مجھے ہدیۂ تبریک
یہ جذبۂ الفت رہے تاعمر سلامت

اشعار میں ہے داغؔ و جگرؔ کا یہ تصرف
شیرینئ گفتار میں ہے جو بھی حلاوت

اقبالؔ کی ہو جراء ت رندانہ میسر
کرتے تھے جو تا عمر روایت سے بغاوت

احباب کا ممنون ہے احمد علی برقیؔ
فیضانِ نظر برقؔ کا ہے جس کے فراست

مزید دکھائیں

احمد علی برقی اعظمی

ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی اعظم گڑھ کے ایک ادبی خانوادے سے تعلق رکھتے ہیں۔ آپ کے والد ماجد جناب رحمت الہی برقؔ دبستان داغ دہلوی سے وابستہ تھے اور ایک باکمال استاد شاعر تھے۔ برقیؔ اعظمی ان دنوں آل آنڈیا ریڈیو میں شعبہ فارسی کے عہدے سے سبکدوش ہونے کے بعد اب بھی عارضی طور سے اسی شعبے سے وابستہ ہیں۔۔ فی البدیہہ اور موضوعاتی شاعری میں آپ کو ملکہ حاصل ہے۔ آپ کی خاص دل چسپیاں جدید سائنس اور ٹکنالوجی خصوصاً اردو کی ویب سائٹس میں ہے۔ اردو و فارسی میں یکساں قدرت رکھتے ہیں۔ روحِ سخن آپ کا پہلا مجموعہ کلام ہے۔

متعلقہ

Back to top button
Close