نظم

کرسی اور ستّہ 

 نزہت قاسمی

    جنگل جنگل اب بات چلی

   کرسی اور ستّہ کی دوڑ لگی

   بندر بھالو , چیتا ہاتھی

   سب نے اپنی پرچی بھری

   ہرنوں کی نکلی جو ریلی

   گیدڑ نے بھی یہ بات اُڑائی

   میری نہیں کسی سے لڑائی

   کسی میں نہیں کوئی بڑائی

   جیتوں گا میں ہی یہ بازی

   نہیں مجھ میں کوئی برائی

   میری یہاں  اپنی من مانی

   میرے آگے سب بھرتے پانی

   جنتا نے کہا اوہ نیتا جی

   برسوں ہم نے آپ کی مانی

   وعدوں کی ڈالی سنہری

   ہاتھ میں جو ہم کو تھمائی

   بس ایک دو باتیں پیاری

   باقی سب رہ گئیں دھری

   آپ نے نہیں سُنی ہماری

   دہائی انصاف کی دُہائی

   ہم نے اپنے منھ کی کھائی

  تب عقل نے یہ بات سُجھائی

   اب دیکھیں کیا ہوگا جی

   دھوکہ فریب , جادوگری

   جنگل جیسی ہے نیتا گری

   بے ایمانی کی ہے ستّہ گری

   ایسے میں کیا کرے کوئی

   ظلم کی ہے بالا دستی

   جنگل جنگل اب بات چلی

   کرسی اور ستّہ کی دوڑ لگی

مزید دکھائیں

متعلقہ

Close