نظم

گہوارۂ تہذیب کی معمار ہے عورت

احمد علی برقیؔ اعظمی

آرائش و تزئین سے سرشار ہے عورت
فطرت کے ہر اک حسن کا اظہار ہے عورت

۔

ماں، بیٹی، بہن، بیوی کی صورت میں ہمیشہ
بس پیار ہے، بس پیار ہے بس پیار ہے عورت

۔

ماں وہ ہے نہیں جس کا کہیں کوئی بھی ثانی
ہر شخص کی تعظیم کی حقدار ہے عورت

۔

بیٹی و بہن مونس و غمخوار ہیں سب کی
شوہر کی محبت کی طلبگار ہے عورت

۔

ہے شرم و حیا سے نہیں بڑھ کر کوئی زیور
گہوارۂ تہذیب کی معمار ہے عورت

۔

پاکیزگئ نفس ہے عورت کا تقدس
شیرینئ گفتار کا معیار ہے عورت

۔

اس دورِپُر آشوب میں احمد علی برقیؔ
کیوں ظلم سے اور جبر سے دوچار ہے عورت

مزید دکھائیں

احمد علی برقی اعظمی

ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی اعظم گڑھ کے ایک ادبی خانوادے سے تعلق رکھتے ہیں۔ آپ کے والد ماجد جناب رحمت الہی برقؔ دبستان داغ دہلوی سے وابستہ تھے اور ایک باکمال استاد شاعر تھے۔ برقیؔ اعظمی ان دنوں آل آنڈیا ریڈیو میں شعبہ فارسی کے عہدے سے سبکدوش ہونے کے بعد اب بھی عارضی طور سے اسی شعبے سے وابستہ ہیں۔۔ فی البدیہہ اور موضوعاتی شاعری میں آپ کو ملکہ حاصل ہے۔ آپ کی خاص دل چسپیاں جدید سائنس اور ٹکنالوجی خصوصاً اردو کی ویب سائٹس میں ہے۔ اردو و فارسی میں یکساں قدرت رکھتے ہیں۔ روحِ سخن آپ کا پہلا مجموعہ کلام ہے۔

متعلقہ

Close