نظم

یاد رفتگاں: بیاد محمد رفیع

تاریخ وفات : ۳۱ جولائی ۱۹۸۰

احمد علی برقیؔ اعظمی

زباں پر ہے نامِ محمدرفیع
درخشاں ہے کامِ محمد رفیع

اُنھیں اپنے فن پر تھا حاصل عبور
ہے ارفع مقامِ محمد رفیع

ہے اظہر من الشمس ان کا ہُنر
نہ بھولے گی شامِ محمد رفیع

دلوں پر سبھی کے تھے وہ حکمراں
تھا دلکش پیامِ محمد رفیع

جو ہے فلمی دنیا کا جاہ و حشم
نہ ہو کیوں بنامِ محمد رفیع

تھے سرشار سب اس سے پیر و جواں

تھا لبریز جامِ محمد رفیع

ملے خلد میں ان کو ابدی سکوں
رہے احترامِ محمد رفیع

جیو اور جینے دو برقیؔ ہمیں
یہی ہے پیامِ محمد رفیع

مزید دکھائیں

احمد علی برقی اعظمی

ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی اعظم گڑھ کے ایک ادبی خانوادے سے تعلق رکھتے ہیں۔ آپ کے والد ماجد جناب رحمت الہی برقؔ دبستان داغ دہلوی سے وابستہ تھے اور ایک باکمال استاد شاعر تھے۔ برقیؔ اعظمی ان دنوں آل آنڈیا ریڈیو میں شعبہ فارسی کے عہدے سے سبکدوش ہونے کے بعد اب بھی عارضی طور سے اسی شعبے سے وابستہ ہیں۔۔ فی البدیہہ اور موضوعاتی شاعری میں آپ کو ملکہ حاصل ہے۔ آپ کی خاص دل چسپیاں جدید سائنس اور ٹکنالوجی خصوصاً اردو کی ویب سائٹس میں ہے۔ اردو و فارسی میں یکساں قدرت رکھتے ہیں۔ روحِ سخن آپ کا پہلا مجموعہ کلام ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ

Close