اردو سرگرمیاں

عالمی شام چار شعراء کے ساتھ تنقیدی پروگرام

رپورٹ:  ڈاکٹر سراج گلاؤٹھوی (انڈیا)

28 جون 2018 بروز ہفتہ ادارہ عالمی بیسٹ اردو پوئیٹری کی شاخ بیسٹ اردو پوئیٹری وائرس کی جانب سے واٹس ایپ پر ادارے کا 163 واں منفرد عالمی تنقیدی پروگرام کا انعقاد کیا گیا، پروگرام پاکستان کے وقت کے مطابق شام 7 بجے جبکہ ہندوستانی وقت کے مطابق شام 7-30 بجے شروع کیا گیا جسکی صدارت محترم سید ایاز مفتی صاحب ہوسٹن ٹیکساس امریکہ نے فرمائی جبکہ مہمانِ خصوصی اسکرپٹ رائٹر محترمہ  دلشاد نسیم صاحبہ پاکستان تھیں، پروگرام کی نظامت کے فرائض محترمہ ثمینہ ابڑو صاحبہ پاکستان نے شاندار طریقے سے انجام دے اس پروگرام کے آرگنائزر محترم توصیف ترنل صاحب ہانگ کانگ تھے جو کے اس ادارے کے بانی و چیئرمین بھی ہیں جبکہ تنقید و تبصرے کے فرائض محترم ضیاء شادانی صاحب انڈیا، محترمہ غزالہ انجم صاحبہ بورے والا پاکستان و محترم مائل پالدھوی صاحب انڈیا نے عمدہ طور پر انجام دے

اس پروگرام میں ہر ایک شاعر سے اپنا مختصر تعارف و پانچ غزلیں برائے تنقید پیش کرنے کے لئے کہا گیا تھا.

پروگرام حمد باری تعالیٰ سے شروع کیا گیا جس کے لئے محترم امین جسپوری صاحب کو دعوت سخن دی گئی:

حمد پاک

تو ہی وقف ہے کیا، کس شے میں ہے حکمت تیری

ماروا وہم گمان سے بھی ہے، خلقت تیری

ترجماں تیری ہی عظمت کے ہیں سب لوح و قلم

تیری قدرت کے نشاں، آسماں، جنّت تیری

***

اس کے بعد نعتِ دسول پیش کی گئی جس کے لئے ارشد محمود ارشد صاحب سرگودھا پاکستان کو دعوت کلام دی گئی

نعت رسول

اس لئے دوسروں سے اعلیٰ ہوں

آپ کی نعت کہنے والا ہوں

دھڑکنوں کی صدا ہے نعتِ نبی

آپ کا نام لے کے جیتا ہوں

***

اس کے بعد ایک اور نعتِ رسول پیش کی گئی جس کے لئے محترم اطہر حفیظ فراز صاحب  فیصل آباد پاکستان کو دعوت سخن دی گئی

نعت رسول

مہ و مہر و اختر حضور آپ کے ہیں

یہ گردش پہ محور حضور آپ کے ہیں

سبھی انبیاء سے سبھی اصفیا سے

مقامات بڑھ کر حضور آپ کے ہیں

***

اس کے بعد باقاعدہ مشاعرے کا دور شروع ہوا قارئین کی دلچسپی کے لیے سبھی شعرا کا نمونہ کلام، تنقیدی گفتگو و تبصرے رقم کئے جارہے ہیں

محترم سید ایاز ابنِ مفتی صاحب (صدرِ مشاعرہ)

مجھ کو ساحل کی کہانی نہ سنائیں جائیں

پہلے طوفان سے کشتی کو بچائیں جائیں

میں دیا ہوں تو فقط کام مرا جلنا ہے

آندھیاں کام کریں اپنا بجھائیں جائیں

پوچھئے مت رات میں نے کب کہاں کی سیر کی

فکر نے میرے مکاں کی لا مکاں کی سیر کی

وہ مرے ہمراہ تھا جیسے کہ ہم ہوں بال و پر

خواب کے براق پر تھے کل جہاں کی سیر کی

آئینہء حالات پہ مفتی کی غزل ہے

اک شوخیء جزبات پہ مفتی کی غزل ہے

نازل جو ہوئیں عشق میں اک مضحفِ دل پر

وہ پیار کی آیات یہ مفتی کی غزل ہے

سید ایاز مفتی صاحب کی شخصیت پر اجمالی جائزہ

از قلم !   مائل پالدھوی( بھارت)

ادرارہء عالمی  بیسٹ  اردو پوئٹری (وائرس) نے صرف اس ترقی یافتہ دور میں  اردوادب کی خدمات ہی انجام نہیں دی بلکہ پوری دنیا کے شعراء ادباء و مصنفین کو ایک مرکز پہ لاکر متعارف بھی کروایا اردو کی محبت میں اتنی بڑی قربانی دینا معمولی بات نہیں

ادارءہھذا کے بانی وچیرمن اور تمام انتظاميہ کو دلی مبارکباد

محترم المقام عزیم المرتبت قبلہ سید ایاز مفتی صاحب کے تعارف نامے میں آپ کی ایک جمالیاتی غزل  اور نعت شریف کا ایک بہت ہی خوبصورت شعر پڑھادل کو بے خوشی ہوئ کہ ایسی معتبر شخصیت کے کمالِ فن پہ کچھ کہنے کا موقع ملا کہ جنہوں نے اردوشاعری میں نعت گوئ کو اپنا مرکزِ فکر بنایا

اردوادب میں نعت گوئ کو بنیادی اہمیت حاصل ہے

نعتیہ شاعری مذہبی شاعری کی اولیات میں شامل ہے جس کاتعلق دینی احساس ! صِدق واخلاص سے ہے

حضورؐ کی ذات و صفات کا احاطہ کرنے کے لیۓ ہر عہد کے شعراءنے اپنی ذہنی اور قلبی  صلاحیتوں سے کام لیا اور اپنے عہد کے حساب سے اس میں معنویت اور جدت پیدا کی موصوف کایہ شعر اسی بات پر دلالت کرتا ہے

ساری دنیاکے عطر سے دھویا

لب کو پھر جرت کلام نہیں 

بہترین شعر خوبصورت اندازِ بیان رحمتِ عالمؐ سے سچی عقدتوں کااعلان کرہا ہے

موصوف کا نام ادب کی دنیا میں  محتاجِ تعارف نہیں   آپ کو نعت گوئ میں  ایک مقام حاصل ہے

میں ان کے نعتیہ مجموعہ کلام ”رہبر و رہنما “کی   کامیابی پر مبارکباد پیش کرتے ہوۓ دعاگو کہ اللہ  رب العزت نعت گوئ کے فن کو مذید جِلا بخشےو تماتر مصیبتوں اور بلاوں سے محفوظ رکھے آمین ثم آمین

تبصره  مائل پالدھوی بھارت

****

محترمہ دلشاد نسیم (مہمانانِ خصوصی)

پچھلے پہر کے نیند سے جاگی ہوئی ہوں میں

یہ کیسے اصطراب سے بندھی ہوئی ہوں میں

دھڑکا سا مجھکو بجھنے کا ہے بھی نہیں بھی ہے

جیسے کسی چراغ میں رکھی ہوئی ہوں میں

نہ جانے کیسی محبت کے وعدے رات جلے

جلا جو خط تو سکھی دونوں میرے ہاتھ جلے

گزارا دن جو اداسی میں شام کہنے لگی

بہت اکیلی ہوں میں کوئی میرے ساتھ جلے

درد دل کا کفیل ہوتا ہے

ہجر کا بھی قبیل ہوتا ہے

یاد آیا نہ کر نمازوں میں

میرا سجدہ طویل ہوتا ہے

اشک آنکھوں میں چھپاتے ہوئے روتی ہوں بہت

حالِ دل اس کو سناتے ہوئے روتی ہوں بہت

روشنی کمرے میں تھی وہ یونہی شب بھر جاناں

پر کوئی بات بتاتے ہوئے روتی ہوں بہت

****

محترم احمد علی برقی اعظمی (دہلی انڈیا)

سیاست میں اراکاری جو آگے تھی سو اب بھی ہے

اداکاری و عیّاری جو آگے تھی سو اب بھی ہے

ہے اس کی بد گمانی ایک ذہنی کرب کا باعث

مسلسل اک دلآزاری جو پہلے تھی سو اب بھی ہے

مجھکو بس اس کی رضا درکار ہے

فکر اسبابِ وفا درکار ہے

جس میں شامل شربت دیدار ہو

دردِ دل کی وہ دوا درکار ہے

۔

آپ کا حسنِ عمل حسنِ بیاں تک پہنچے

دل میں جو بات نہاں ہے وہ زباں تک پنہچے

آئیے ایسی فضا امن کی ہموار کریں

حسنِ نیت جو یہاں ہے وہ وہاں تک پنہچے

۔

تھے جتنے یار چپ سادھے ہوئے ہیں

سبھی اغیار چپ سادھے ہوئے ہیں

جو تھے سردار چپ سادھے ہوئے ہیں

پسِ دیوار چپ سادھے ہوئے ہیں

۔

کیوں کریں شکوہ کسی سے اپنی ہم تقدیر کا

صاف جب اپنے لئے ہے راستہ تدبیر کا

اب بھروسہ آٹھ گیا ہے عدل کی زنجیر کا

کیوں بتاتے ہیں عدو وہ مجھکو ہی تعزیر کا

۔

السلام علیکم!

محترم احمد علی برقی ایک زود گو شاعر ہیں اور ہم اکثر گروپ میں ان کی زود گوئی سے فیض یاب ہوتے ہیں۔۔۔ہر موضوع پر شعر کہنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔آپ کی شاعری پر بات کرنا باعث اعزاز ہے۔۔آپ نے اپنے تعارف میں جس طرح اپنی زندگی کے سفر اور ہمسفروں کے بارے میں جس طرح خوبصورتی سے بیان کیا ہے وہ قابل ستائش ہے۔

آپ کی غزل نمبر 1۔ نظر کے سامنے ہے۔۔۔حسب حال ہے۔۔۔معاشرتی مسائل کی خوب عکاسی کی ہے۔ہر شعر میں ایک نیا مسئلہ بیان کیا گیا ہے اور خوب کیا گیا ہے۔۔

غزل نمبر 2۔ اس غزل میں آپ کی زود گوئی کی صلاحیت کا اظہار ہے۔۔اچھی غزل ہے۔ مگر یوں محسوس ہوتا ہے کہ قافیہ بندی پر زور دیا گیا ہے۔یعنی اشعار کی تعداد میں اضافہ اصل  مقصود ہے۔۔

غزل 3۔ مطلع کا دوسرا مصرع کمزور ہے بلکہ ایک رکن اضافی ہے اور تر تیب بہتر نہ ہونے کی وجہ سے روانی بے حد متاثر ہوئ ہے محسوس ہوتا ہے۔ اسی وجہ سے بحر کا بھی مسئلہ دکھائی دیتا ہے۔۔

اس غزل میں روانی کی کمی اکثر جگہوں پر محسوس ہوئی

غزل نمبر 4۔ اچھی ردیف ہے اور خوب نبھائی بھی گئ ہے۔ کہیں کہیں ایک شعر کے دونوں مصرعوں میں باہمی تلازم کی کمی محسوس ہوتی ہے۔۔جبکہ انفرادی حیثیت میں ہر مصرع خوب ہے۔اچھی پر لطف غزل ہے

غزل 5۔۔۔اچھی غزل ہے۔۔۔خیالات بھی اچھے ہیں۔

ایک مصرع شاید ٹاءپنگ مسٹیک ہے

"رخ ہوا کا ایک یہ جانب نہیں رہتا سدا”

اس مصرعے میں یہ کی جگہ شاید” ہی” ہے

قافیہ خوب ہے۔۔اچھا برتا بھی گیا ہے۔۔۔خیال بھی اچھے ہیں۔

مجموعی طور پر احمد علی برقی ایک اچھے شاعر ہیں ۔لفظوں اور خیال پر گرفت رکھتے ہیں۔۔اور ہر خیال کو رنگ سخن دینے کی صلاحیت سے بہرہ مند ہیں۔۔

اللہ پاک ان کی صلاحیتوں اور کامیابیوں میں مزید اضافہ فرمائے۔۔۔

مبصر: غزالہ انجم

—-

جناب احمد علی برقی صاحب ایک ذود گو شاعر ہیں، آجکل ایسے شاعر کم دیکھنے میں آتے ہیں وہ ایک الھامی شاعر معلوم ہوتے ہیں ان کے اشعار میں بہت روانی ہے بہت اچھے شاعر ہیں اس گروپ کے لیے یہ فخر کی بات ہے کہ ان جیسا شاعر یہاں موجود ہے

ضیاء شادانی انڈیا

—-

احمد علی برقی اعظمی صاحب کے کلام میں دریا کی سی روانی ہے، تسلسل کی خوبصورتی سمائے ہوئے ہے ایک ہی مضمون کو ایک سے زائد بار باندھ دیتے ہیں سبھی غزلیں بہت خوبصورت ہیں ایک جیسے مضامین کو ایک سے زائد بار نہ باندھا جائے

سعید احمد صاحب

********

محترمہ ڈاکٹر مینا نقوی صاحب انڈیا

بلندیوں کا تھا جو مسافر وہ پستیوں سے گزر رہا ہے

کہ جیسے دن کا سلگتا سورج سمندروں میں اتر رہا ہے

تمہاری یادوں کے پھول ایسے سحر کو آواز دے رہے ہیں

کہ جیسے ٹھنڈی ہوا کا جھونکا مری گلی سے گزر رہا ہے

۔

یہ مت سمجھنا فقیر ہوں میں

انا کے حق میں کثیر ہوں میں

مجھے ستارا سمجھنے والو

فلک پہ بدرِ منیر ہوں میں

۔

رت میں ہے کیسی سرگم

آنکھیں ہیں پر نم پر نم

آندھی نے کیا ظلم کیا

شاخیں کرتی ہیں ماتم

۔

سرد سرد موسم میں، بھیگتے اندھیرے میں، زندگی گزرتی ہے

شکل ایک مبہم سی، آئینے میں آنکھوں کے، چپکے سے سنورتی ہے

عمر کٹ گئی ساری، یوں ہی دشت و صحرا میں، اک تلاشِ مبہم میں

جانے کس لئے پھر بھی راستوں پہ لاحاصل، جستجو ٹھہرتی ہے

۔

یوں تو کچھ بھی نہیں عیاں مجھ میں

ہے مگر کہکشاں نہاں مجھ میں

ربط رکھتے ہوئے زمین کے ساتھ

جزب سارا ہے آسماں مجھ میں

۔

مینا نقوی کی ہیں غزلیں  دلنشیں 

ان کے حسنَ فکر و فن پر آفریں

ہے نمایاں ان سے عصری حسیت

کرتی ہے ہموار جو فکری زمیں

برقی اعظمی

———

تنقید و تبصرہ 

محترمہ مینا نقوی صاحبہ کا کلام زیر نظر ہے۔۔۔بلاشبہ آپ ایک بلند پایہ شاعرہ ہیں۔۔۔بہت سے ایوارڈز حاصل کر چکی ہیں۔آپ جیسی سینئر شاعرہ کے کلام پر بات کرنا میری خوش بختی ہے۔جس کے لیے میں عالمی ادارہ اردو بیسٹ پوئٹری  اور جناب توصیف ترنل صاحب کی ممنون ہوں۔

بہر طور کوشش کی ہے کہ ذمہ داری کا حق ادا کر سکوں۔

غزل ۔۔۔1۔۔۔بلندیوں کا تھا جو مسافر۔۔۔۔

مترنم اور نازک خیالات پر مبنی غزل ہے۔۔مطلع بہت خوبصورت ہے۔۔۔تشبہیہ کا بہترین استعمال کیا گیا ہے

پوری غزل ہلکے پھلکے خیالات پر مبنی ہے۔ اچھے الفاظ کے ساتھ رواں دواں اور سلاست سے بھر پور غزل  ہے۔۔

غزل نمبر 2۔۔یہ مت سمجھنا فقیر ہوں میں

اس غزل میں محترمہ مینا نقوی صاحبہ بھر پور انانیت اور خود پرستی کے اظہار  کے ساتھ دکھائی دیتی ہیں۔۔۔کبھی کبھی حالات کے دامن میں کچھ ایسی تلخیاں ہوتی ہیں کہ مزاج درشت ہو ہی جاتا ہے اور انسان کی انا اسے مجبور کر دیتی ہے کہ تلخیوں  کا جواب دیا جائے۔۔اور اس جواب کے اظہار اور اپنا آپ منوانے کی خواہش میں انسان خود پرست بھی ہوجاتا ہے اور انا پرست بھی۔محترم شاعرہ اس غزل میں کچھ ایسی ہی کیفیت سے دوچار نظر آتی ہیں جو بہر طور زندگی کا حصہ ہے۔

مطلع۔۔۔دیگر اشعار۔۔۔غرض یہ خود نمائی مقطع تک تمام اشعار میں دکھائی دیتی ہے۔۔۔

کہیں کہیں اسے اس حد تک قبول کیا جانا نا قابل قبول بھی ہو جاتا ہے۔۔۔بہرحال کیفیت کی سچائی شاعر بذات خود ہی سمجھ سکتا ہے۔

غزل 3۔ رت میں ہے کیسی سرگم

 ۔۔خوبصورت مترنم غزل ہے۔۔۔تمام اشعار میں سادگی  سے مفہوم واضح کیا گیا ہے ۔چھوٹی بحر  میں اچھے لفظیات پر مبنی اچھی غزل ہے

غزل 4۔ سرد سرد موسم میں۔

تیسرے شعر میں حبس کی ہواءوں کا ذکر کیا گیا جو عجیب محسوس ہوا۔۔۔کیونکہ  ہوا نہ ہو گھٹن ہو تب حبس کہلاتا ہے۔۔۔۔اگر ہوا گرم ہو تو لو کہلاتی ہے مگر حبس میں ہوا کا ہونا حبس کا خاتمہ ہے۔۔جبکہ ذکر حبس کا ہے۔

آخری شعر کا پہلا مصرع ترتیب میں کچھ اور بہتر ہوسکتا تھا۔۔

باقی اچھی اور منفرد غزل ہے۔۔ماشاءاللہ

غزل 5۔۔۔۔یوں تو کچھ بھی نہیں عیاں مجھ میں

تمام غزل اچھے اشعار پر مبنی ہے۔۔خاص طور پر یہ شعر نہائت خوب صورت ہے کہ

ربط رکھتے ہوئے زمیں کے ساتھ

جذب سارا ہے اسماں مجھ میں

ڈھیروں داد

۔چھوٹی بڑی تمام بحور میں محترمہ مینا نقوی صاحبہ کو عبور حاصل ہے۔نسائی جزبات و خیالات کی بھر پور آئینہ دار ہیں۔لفظوں کی تراش خراش مصرع سازی  اور روانی جیسے بنیادی علم سے واقف ہیں

میری طرف سے ڈھیروں دعائیں محترمہ ڈ اکٹر مینا نقوی صاحبہ کے لیے ۔۔

اللہ مزید عزت شہرت اور کامیابیوں سے نوازے

مبصر: غزالہ انجم

—–

ڈاکٹر مینا نقوی ایک ایسی شاعرہ کا نام ہے جس کو شاعری کا جنون سوار ہے وہ ایک خوبصورت نظامِ مشاعرہ بھی ہیں میں نے ان کو کبھی غصہ کرتے ہوئے نہیں دیکھا وہ ایک اچھی شاعرہ کے ساتھ ایک اچھی انسان بھی ہیں بہت اچھے اشعار کہتی ہیں ان کو الفاظ پر بہت زبردست دسترس حاصل ہے اور خوبصورت اشعار بہت آسانی سے کہہ جاتی ہیں ہندوستان کی اس شاعرہ کا دنیا کی گنی چنی شاعرات میں شمار ہوتا ہے جنکو اللہ نے بہت صلاحیتوں سے نوازہ ہے خوبصورت اشعار کہتی ہیں

ضیا شادانی انڈیا

—-

مینا نقوی کی ہیں غزلیں  دلنشیں 

ان کے حسنَ فکر و فن پر آفریں

ہے نمایاں ان سے عصری حسیت

کرتی ہے ہموار جو فکری زمیں

برقی اعظمی

———-

محترم مسعود حساس صاحب کویت

غزلیں

چکّر میں ترے آکے بہل جاؤں کیا کروں

اے چاک تری ضد پہ بدل جاؤں کیا کروں

ساری حدوں کو توڑ دیا میں نے طیش میں

اب دائرے سے میں بھی نکل جاؤں کیا کروں

۔

بھٹک نہ پائے مگر شخصیت بھگو ہی گئ

وہ ایک بوند تھی جو قلب و روح دھو ہی گئی

خطا معاف مرا حرف حرف سورج تھا

تمہاری آنکھ ہی کچھ دیر تم سے کھو ہی گئی

۔

اک سیل معانی کا کوزے میں ٹھہر جانا

آساں نہیں غزلوں کا کاغذ پہ اتر جانا

دستور غزل کا ہے جزبات کی عکاسی

الفاظِ کی حیئت میں تصویر ابھر آنا

نظمییں

"ہم سایہ”

میں اپنی ذات کی پارہ دری کے آنچل میں

اگرچہ قید میں ہوں اک طویل مدت سے

مگر فتین نگاہوں کا حسنِ ظن یہ ہے

مرا وجود ہے پارا صفت عجب ہیئت

ہزار دام بھی اس کے لئے کھلونا ہے

"انکشاف”

عزاب وقت کے ابرو کی نوک آرائش

عجیب فلسفہ حکمِ امیر سے چسپاں

زمین خون سے رنگین چار سو وحشت

افق پہ دور کہیں حسرتوں کے مرقد پر

اداس گرد میں لپٹی ہوئی ہے قوسِ قزح

جناب مسعود حساس صاحب صدی کے عظیم شخصیت ہیں ان پر کہنے کی جسارت کر رہا ہوں، وہ لوگ جو ترقی کی منازل پار کر چکے ہیں ایسے لوگوں کے لیے ان کے علم کی خوبیاں، ان کے اشعار کی خوبیاں، زبان و بیان کی خوبیاں، الفاظ کا چناؤ، مزاج کی گہرائی کی خوبیاں بیان کرنا ایک مشکل کام ہے وہ ایک صاحب دیوان شاعر ہیں خلیج میں پہلے صاحب دیوان کے اعزاز سے نوازے گئے ہیں ان کے اشعار زبردست ہیں ان کے بارے میں اگر دفتر کے دفتر کہے جائیں تو کم ہیں

ضیاء شادانی انڈیا

——

محترم المقام جناب مسعود حسساس صاحب بہترین  نقاد شاعر وادیب اور قادر الکلام شخصیت ہے جو اپنے موضوعات و خیالات کو فنی پختگی و

فکری صلاحیتوں کے ساتھ ادا کرنے کا ہنر جانتے ہیں

انہوں نے اپنی شاعری میں عصری تقاضوں امتزاج بھی رکھا ہے اور روایات کی پاسداری بھی کی ہے

زندگی کی تلخیوں کو بہت قریب سے محسوس کرنے والے شاعرکے تعلق سے کچھ کہنا میرے لیۓ سورج کو چراغ دکھانے کے مترادف ہوگا

یہ الگ بات ہے کہ ان سے میری ملاقات نہیں مگر ادارہء عالمی بیسٹ اردو پوئٹری کے پلیٹ فارم پر غائبانہ تعارف ضرور ہواہے موصوف نے بارہا میری غزلوں پر اپنے خیالات کا منصفانہ طریقے سے اظہار کیا ہے حضرتِ علیؓ کا قول ہے کہ آدمی زبان کے نیچیے پوشیدہ ہوتاہے اسی قول کے حوالے سے موصوف کے معیارِ فن و شخصیت کا اندازہ ہوتاہے

میں خوش نصیب ہوں کہ ادارہء عالمی بیسٹ اردو پوئٹری کے بانی وچیرمن محترم توصيف ترنل صاحب و جملہ اراکین نے اس قابل سمجھا کہ میں بر صغیر کی معتبر و معروف شخصیت محترم مسعود حسساس صاحب کے کمالِ فن و شخصیت

پر تبصره کروں

میں نے موصوف کی تینوں غزلیں بغور پڑھی

خوبصورت مرصع غزلیں حق آشنا ٍ منبع مشاہدات

بصیرتِ آگہی افکارِ مجمع ؛ اندازِ بیان و اسلوب

 جداگانہ تخلیقی ارتقاء ؛ عمیق مطالعے پر دال ہے

موصوف کے کلام و شخصیت دونوں میں ایسی تاثیر ہےکہ قاری ان سے فوراً متاثر ہو جاتا ہے

غزل( 1)شعر (2 )ساری حدوں !!!!!!! اب دائرے!!!

بہترین شعر احساسات کی بھر پور ترجمانی کر رہا ہے مطلع تا مقطع عمدہ غزل     (مبارکباد )

غزل (2)ٹپک نہ پائ!!!!!!!! وہ ایک بوند!!!!!

یہ ایک جذب کی کیفیت کا ترجمان مطلع ہےمعنی ومفہوم کی پرتیں ورق در ورق ہے  اور بہت عمدہ طریقے سے موصوف نے جذبات کی عکاسی کی ہے

غزل کا ہر شعر بڑا  ہی خوبصورت( گلہاۓ عقیدت)

غزل (3) شعر (2)دستورغزل!!!!!!! الفاظ کی !!!!!!!

کمال کا شعر شاعر کے تجربات کی غمازی کر رہاہے

مگر اسی غزل کا آخری شعر کہنے کو!!!! مقتل کے!!!!

اس شعر کا  ثانی !  مقتل کے سجانے کو بے خوف وخطر جانایہاں میری ناقص راۓ یہ ہے کہ مقتل کو

سجانے نہیں جایا جاتا جانے کے بعد مقتل سج جاۓ یہ الگ بات ہے تاریخ کے پس منظر میں ہم نے دیکھا کہ حق و باطل کی لڑائی میں کئ صداقتوں کے امیں سوۓ مقتل بے خوف وخطر چلے گۓ مگر ارادہ

یا منشا مقتل کو سجانے کا نہیں تھا بہرکیف موصوف کا اپنا خیال  ہے میری راۓ غلط بھی ہو سکتی ہے باقی غزل جمالیاتی و جاذبیت کا مرقع ہے

شاعری میں لفظوں کو تجربات کی سان پر چڑھانااور سخن کے گہرِ نایاب تراشنا کمالِ فن ہے

جو موصوف کی شاعری میں بدرجہ اتم موجود ہے

مبصر مائل پالدھوی بھارت

===

منعکس حساس ہیں آئینۂ احساس میں

جانفزا ہے فکرو فن کا ان کے دلکش تجزیہ

ہے نہایت روٖح پرور ان کا احساسِ جمال

ان کی اردو شاعری ہے ایک روحانی غذا

پیش کرتا ہوں مبارکباد میں اس کی اُنھیں

کرتے ہیں نقدِ سخن برقی جو سب کی برمَلا

برقی اعظمی

——–

تنقید و تبصرہ 

محترم مسعود حساس ایک معروف نقاد کی حیثیت سے اپنا ایک مستند مقام رکھتے ہیں۔باعلم شخصیت ہیں۔مدلل گفتگو کرتے ہیں۔اور باقاعدہ تحقیقی عمل کو مد نظر رکھتے ہوئے تعریف و تنقیص کے مراحل طے کرتے ہیں۔گفتگو میں کمال حاصل ہے۔سامع پر سحر سا طاری کر دیتے ہیں۔برجستگی خوبصورت الفاظ کا چناوء، بات سے بات نکالتے ہوئے موضوع کا خیال بھی رکھنا اور سامع کی دلچسپی بھی قائم رکھنا آپ کی گفتگو کا خاصہ ہے۔

ایک اچھے نقاد اور ایک اچھے مقرر ہونے کے ساتھ ساتھ مسعود حساس بلاشبہ ایک اچھے شاعر بھی ہیں۔ان کی چند غزلیں اور نظمیں نظر کے سامنے ہیں۔جن میں وہ فنی طور پر ایک پختہ کار،  اور تجربہ کار شاعر کی حیثیت رکھتے ہیں۔۔۔

آپ کو فنی اور شعری محاسن پہ عبور حاصل ہے۔تمام کلام خوبصورت الفاظ و خیال پر مبنی ہے۔بحر و اوزان پر گرفت مضبوط ہے۔الفاظ کا چناوء بھی بہترین ہے۔

غزل نمبر 1۔۔۔۔۔

ردیف انتہائی خوب صورت اور دلچسپ ہے۔۔اور تمام اشعار میں نبھایا بھی خوب گیا ہے

"شمع ہوں میرے سر میں لگائی گئی ہے آگ

چیخوں مروں خموش پگھل جاوءں کیا کروں”

شعر بہت اچھا ہے خاص طور پر دوسرا مصرع روانی اور سلاست لیے بہت خوب ہےالبتہ شمع کے سر میں آگ کا ہونا کچھ عجیب تاثر کا حامل ہے۔۔۔۔محترم حساس صاحب ایک کہنہ مشق شاعر ہیں ۔یقینا زیر غور مصرع کے حوالے سے یقینا مدلل اسباب کے حامل ہوں گے۔

غزل نمبر 2۔۔۔۔

جدید اسلوب کی خوب صورت غزل میرے سامنے ہے۔۔بہت خوب مطلع۔۔۔حسن مطلع کمال

البتہ چو تھے شعر کا پہلا مصرع

۔۔۔۔یہ پھر سے آپ نکالے ہیں کیوں وہی موضوع ۔۔۔۔۔

میں زبان و بیان میں کسر محسوس ہوتی یے۔۔

مصرع میں” نے ” کی کمی واضح طور پر ہے۔۔۔آپ نکالے کی بجائے آپ نے نکالا کسی اور باوزن صورت ترتیب میں ہونا چاہیے۔

"

غزل 3۔۔۔۔۔۔۔

بہت پیارا مطلع یے۔۔۔واااہ وااہ

تمام اشعار مفہوم و معانی کے لحاظ سے اعلی تخیلاتی اظہار و عمل کے حامل ہیں۔۔البتہ مقطع کا پہلا مصرع

۔۔۔کج فہم کو سمجھا نا عاقل اسے کہتے ہیں۔۔۔

مزید بہتر ہو سکتا ہے

باقی بے حدددددد خوب صورت غزل ہے۔۔

نظم ہمسایہ

اچھی نظم ہے۔۔۔واااہ ۔۔۔بہت خوب تاثر سحر انگیز موسم طاری کرنے والی

نظم۔۔۔۔انکشاف

پہلا مصرع ہی انتہائی سحر انگیز۔۔پوری نظم بہترین تاثر لیے ہوئے۔۔الفاظ کا چناءو روانی ۔۔۔مرصع اور پختہ نظم

مسعود حساس دور جدید کے بھر پور شاعر و نقاد ہیں۔۔۔آپ کی شخصیت علم و ادب کے لیے سرمایہ ہے۔۔۔میری دعا ہے کہ

"اللہ کرے زور قلم اور زیادہ”

اور وہ اسی طرح علم و ادب کی ترویج و ترقی میں اپنا کردار ادا کرتے رہیں۔اور اپنی زبان کی محبت کا حق ادا کرتے رہیں۔۔۔آمین

مبصر:   غزالہ انجم

—————–

محترم امین اڈیرائی صاحب پاکستان

(تین زبانوں کا شاعر)

درونِ ذات تیقن کی انتہا کو دیکھ

جنونِ عشق اگر ہے تو کربلا کو دیکھ

ہٹا کے چہرے سے اپنے ملوکیت کا غلاف

کسی غریب کی آنکھوں میں التجا کو دیکھ

۔

اس نے جو غم کئے حوالے تھے

ہم نے تا عمر وہ سنبھالے تھے

صحنِ دل میں تمہارے سب وعدے

میں نے بچوں کی طرح پالے تھے

۔

قیس کا نقشِ پا ملا تھا مجھے

تب کہیں راستہ ملا تھا مجھے

تیری بس ایک مسکراہٹ سے

کس قدر حوصلہ ملا تھا مجھے

۔

رکھ دیا میں نے درِ حسین پہ ہارا ہوا عشق

آج کے بعد مری جان تمہارا ہوا عشق

چوٹ گہری تھی مگر پاؤں نہیں رک پائے

ہم پلٹ آئے وہیں ہم کو دوبارا ہوا عشق

۔

سایہء وصل میں آؤں گا چلا جاؤں گا

ہجر کی دھوپ اٹھاؤں گا جلا جاؤں گا

مسکراتا ہے مری ذات میں رکھا ہوا دکھ

آج میں خوب رو لاؤں گا چلا جاؤں گا

محترم *امین اڈیرائی کا دلپذیر تعارف اور ان کے یہ گلہائے سخن ان کے شعور فکر و فن کے آئینہ دار ہیں جن سے مشامِ جاں معطر ہے۔ خاکسار کی جانب سے پرخلوص تبریک و تہنیت قبول فرمائیں۔

برقی اعظمی

—————–

تنقید و تبصرہ

محترم امین اڈیروائی کی غزلیں  میرے سامنے ہیں۔یوں بھی گاہے بگاہے آپ کی شاعری اور دیگر نگارشات سے فیض یاب ہونے کا موقع ملتا رہتا ہے۔۔

بے حد خوبصورت شاعر ہیں۔۔اپ کے ہاں موضوعات کا تنوع، خیال کی بلندی،شعری پختگی اور دیگر محاسن پر مکمل عبور دکھائی دیتا ہے۔بلاشبہ آپ کے کلام میں عظیم شاعری کی تمام علامات بدرجہء اتم موجود ہیں۔

مجھے آپ کی شاعری پر بات کرنے کے لیے چنا گیا اس ذمہ داری کو نبھاتے ہوئے جسارت تو کر رہی ہوں مگر خود کو کسی طور اس قابل نہیں سمجھتی ۔

میرے لیے بہت مشکل امر تھا کہ میں آپ کے کلام سے کمزور کلام ڈھونڈ نکالوں کیونکہ آپ کا سارا ہی کلام بہت خوب صورت اور مضبوط ہے۔

البتہ بمشکل چند اشعار جن میں میری ناقص رائے میں کچھ کہنے کی گنجائش ہے۔۔چنے ہیں۔۔۔مثلا

1۔۔۔درون۔ ذات تیقن کی۔۔

بہت بہت بہت اعلی تخیلاتی غزل۔۔۔واااہ کیا کہنے

بس ایک شعر پر بات کرنا چاہوں گی

۔*****وجود خاک سراپا ہے ارتعاش امین۔۔

لبوں کے تار سے الجھی ہوئی دعا کو دیکھ

اس شعر کے پہلے مصرعے میں لفظ ارتعاش کے ساتھ میں کا ہونا لازم محسوس ہوتا ہے وگرنہ کمی رہتی ہے۔۔۔ارتعاش میں ہونا

سو یہاں ارتعاش کی بجائے لفظ مر تعش مصرعے کو مزید بہتر کر سکتا تھا

2۔۔۔اس نے جو غم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔غزل نمبر 2 کا مطلع کچھ کمزور ہیں۔۔مصرع سازی میں جس قدر الفاظ کی ترتیب نثر کے قریب ہو اتنا ہی بہتر ہوتا ہے۔۔۔مطلع کے پہلے مصرع میں یہی کمی محسوس ہوئ۔۔۔خیال بھی عام ہے۔۔۔

باقی بہترین اشعار ہیں

3۔۔۔۔قیس کا نقش پا۔۔۔۔

پوری غزل  بہت کمال  تو نہیں ۔۔۔البتہ اچھے پر تاثیر اشعار پر مبنی ہے

البتہ بانسری کے سر چھڑنے پر شہر دل کا جلنا کچھ متلازم نہیں معلوم ہوتا۔۔۔بانسری کے سر آس کی جوت جگاتے ہیں۔یاد کی شمع جلاتے ہیں۔۔مگر دل پوری طرح جلتا نہیں۔۔۔دل کی تڑپ کا اظہار کچھ اور طرح ہونا چاہئے تھا۔۔۔بہرحال بعض اوقات شدت ہجر مکمل جلا کےخاک بھی کر دیتی ہے۔۔۔سو اس شعر میں اسی کا اظہار ہے غالبا

4۔۔۔چوتھی غزل

رکھ دیا میں نے در حسن پہ ہارا ہوا عشق۔۔۔

پوری غزل بہت خوبصورت احساسات کی عکاسی ہے

ماشاءاللہ

سکہء وقت بدلتے ہی سبھی چھوڑ گئے

ذات کے شہر میں اک عمر سہارا ہوا عشق

دوسرے مصرعے میں روانی کچھ کم محسوس ہوئی۔باقی مصرعوں کی نسبت ۔۔خیال کی وضاحت میں بھی کچھ کمی ہے۔۔۔

5۔۔۔۔سایہء وصل میں آوءں گا ، چلا جاوءں گا

مطلع تا مقطع خوب صورت اشعار ہیں۔۔

محترم امیں اڈیروائی بلا شبہ بہترین استاد شاعر ہیں۔۔۔اللہ پاک انہیں سلامت رکھے اور ہمیں ان کے کلام سے فیض یاب ہونے کے مواقع فراہم کرتا رہے۔۔

بہت شکریہ

مبصر ” غزالہ انجم

—————

تنقید و تبصرہ 

شاعرِ باکمال امین اڈیرائ

تبصره = از قلم  مائل پالدھوی(  بھارت)

===

محترم امین اڈیرائ صاحب پاکستان کے

صوبہءسندھ سے بہت ہی معورف و کنہ مشق استاد شاعر ہے ادارہ عالمی   بیسٹ اردو  پوئٹری کے حوالےسے ایک عرصہءدراز سے موصوف سے واقفیت ہے ؛ گاہے بہ گاہے ان کی تخلیقات آنکھوں کو زینت و روح کو غذا فراہم کرتی رہتی ہے لفظوں کے  رکھ رکھاٶ  و لہجے کی شگفتگی سے  شاعر کے کمالِ فن کا اعلان ہوتا ہے  ان کے اشعار زندگی کے تجربات کو سمیٹے ہوۓ حقیقت کی عکاسی کرتے ہوۓ نظر آتے ہیں میں خوش قسمت ہوں کہ مجھے ایسی شخصیت کے تعلق سے اپنے اظہار خیال کا موقع ادارءہھذا کے بانی محترم توصيف ترنل صاحب نے فراہم کیا

موصوف کی کچھ تخلیقات پیشِ نظر ہیں

غزل (١)کا مطلع  !درون!!!!جنونِ عشق !!!!!!

بہت ہی خوبصورت مطلع ہے بڑے ہی جامع انداز میں موصوف نے کہدیا شاعر ذات سے کائنات کی بات کرتاہے مطلع میں واضع طور سے بات رکھی گئ ہے کہ ذات میں یقین کی انتہا کا عالم یہ ہو کہ عشق کی بقا کے لیۓ اس کا فنا ہو جانا ضروری ہے رنگِ تصوف کے لحاظ سے بہترین شعر = مرصع

 غزل( دلی تہنیت)

غزل (2)اس نے !!!!٫ ہم نے تا عمر٫!!!!!!!

شعر کا مفہوم بہترین مگر مصرعے اولیَ زبان کی ثلاثت مجروح کر گیا ثانی بڑی روانی کے ساتھ ہواہے تھوڑی کوشش کرتے تو مذید بہتر ہو سکتا تھاباقی غزل کے تمام اشعار ٹھک ہیں

غزل (3) اس غزل کے کچھ اشعار بھلے ہی مفہوم کا تقاضہ پرا نہ کر سکے اس کے باوجود سادہ سلیس لفظوں میں کہی گئ یہ غزل  پرٗلطف ہے

غزل( 4)رکھدیا !!!!!! آج کے بعد!!!!٫٫!!!!!

مطلع تا مقطع بڑی مرصع غزل روایات کے نکھرے ہوۓ عناصرِ لطیف بھی و ندورت ساحرانہ بھی ثلاثت وروانی بھی گیرائ و گہرائی بھی (المبروک)

غزل( 5) سایہء وصل!!!!!! ہجر کی !!!٫٫٫٫!!!!

بڑا ہی رواں دواں مطلع ہے غزل بھی بہت خوب ہے لیکن مقطع کے شعر میں لفظ” قلندر “کا استمعال میری ناقص راۓ کے مطابق غلط ہو گیا

لفظ قلندر کے معنی تو کئ ہوتے ہیں لیکن عام طور سے اصطلاح میں اس کے جو معنی اخذ کیۓ جاتے ہیں وہ ہے ایک ایسا مست فقیر جو روحانی ترقی یہاں تک کر گیا ہو کہ اپنے وجود اور علائق دینوی سے بے خبر اور لا تعلق ہوکر ہمہ تن خدا کی یاد میں متوجہ رہتاہو اور تکلیفاتِ رسمی کی قیود سے چھٹکارا پاگیا ہو شعر میں اگر یہ معنی لیۓ جاۓتو قلندر کبھی سوتاہی نہیں چہ سونے کی جو علامت ہے وہ لاپرواہی بے خبری ہے  غفلت ہے

موصوف اگر لفظ قلندر کی جگہ لفظ آدمی یا کسی اور لفظ کا استمعال کر لیتے تو مفہوم کے لحاظ سے شعر درست ہوجاتا نیز اگر موصوف نے قلندر کے کچھ اور ہی معنی لیۓ ہو تو پھر ان کے حساب سے شعر درست ہوسکتا ہے بحر کیف

میں موصوف کی فنی صلاحیتوں کو سلام کرتا ہوں کہ انہوں نے بڑی تازہ کاری سے اپنے احساسات کی  جو ترجمانی کی ؛ادبی حلقے میں اس کی ضرور پذیرائی ہونی چاہیے

——–

یہ پروگرام دو گھنٹوں سے زیادہ دیر تک چلا سبھی سامعین و ناظرین نے شعرا کے کلام پو دل کھول کر دار و تحسین پیش کی آخیر میں صدرِ مشاعرہ محترم سید ایاز مفتی صاحب نے صدارتی خطبہ پیش کر اور مشاعرے کے اختتام کا اعلان کیا

خطبہ ء صدارت 

سامعین ذی وقار ، اور شعرائے والا تبار

 آج کے مہمان خصوصی ، صاحبان ذی شان، ناقدین شعرائے کرام ، مبصرین کرام ، منتظمین و معاونین کرام !

 آج یعنی مورخہ اٹھائیس/28 جولائی ۲۰۱۸  کو ادارہ، عالمی بیسٹ اردو پوئیٹری ، کی جانب سے 163 ویں منفرد عالمی تنقیدی پروگرام بنام ایک عالمی شام چار شعراء کے نام کے کامیاب انعقاد اور انتظام و انصرام پر بطور صدر   محفل میں دل کی بہتر دھڑکنوں کی جانب سے اور دل کی اتھاہ گہرائیوں سے مبارکباد پیش کرتا ہوںاور اس ضمن میں ادارہ کے چیف آرگنائزر جناب توصیف ترنل صاحب ، امین جس پوری صاحب مدظلہ العالی اور دنیا بھر میں ادارہ  کے تمام معاونین و محبین کو تمام مہمانان ذی احترام کو مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ بالخصوص ان تمام شعراء کی ہمت و جراءت کو بھی سلام پیش کرتا ہوں ۔ جنہوں نے اپنا کلام برائے تنقید پیش کیا اور ان تمام ناقدین کا بھی مشکور ہوں ۔ کہ جن کی شرکت اور خوبصورت ادبی ،اور فنی لحاظ سے دی گئی قیمتی آراء کے بغیر یہ کامیابی ممکن نہ تھی۔ ایک بات یاد رکھیئے کہ عروج ادب مثبت اور تعمیری تنقید  کے بغیر ممکن نہیں ہےکیونکہ تنقید کے حسن سے ہی تو لیلائے اردو ادب کی زلفوں کا حسن دو آتشہ ہوتا ہے۔

 اور یہ کار خیر ادارۂ ہٰذا بڑے تسلسل اور جانفشانی کے ذریعے کررہا ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ عالمی سطح پر کامیابی در کامیابی ادارۂ ہٰذا کی شہرت کو چار چاند لگارہی ہے اور یہ شہرت نہ صرف ادب کے سنہری صفحات میں انہیں ہمیشہ یاد رکھے گی بلکہ یہ ادبی خدمت انہیں اوج ثریا مقدور کرے گی۔ ایک اپنا شعر یاد آگیا ؎

ایک سے ایک ہونگے دنیا میں

مفتی ہم سا نہ دوسرا ہوگا

 ادارہ: عالمی بیسٹ اردو پوئٹری

  یوں تو اقلیم سخن میں بہت سے ادارے ادب کے فروغ کے لئے کوشاں ہیں ۔ مگر کچھ ادارے اپنی انفرادیت اور ہیئت کے اعتبار سے لاکھوں کی بھیڑ میں بھی جا نے اور پہچانے جاتے ہیں ۔ اور بیسٹ اردو پوئٹری کا ادارہ بھی ان گنے چنے اداروں میں سے ایک ہے ۔یہ ادارہ، جو عالمی بیسٹ اردو پوئٹری کے نام سے جانا اور پہچانا جاتا ہے ۔ دورِ حاضر میں دنیا کا منفرد ادارہ ہے جو اِس برقی ترقی یافتہ دَور میں شعراء، نظم کے شہسواروں ا و رمُصنفینِ زبانِ اردو ادب کی ذہنی آبیاری کرتا ہے … ادارۂ ہٰذا میں بیشتر پروگرامز برائے تنقید کئے جاتے ہیں… عالمی سطح پر کامیابی کے ساتھ ادبی تنقیدی پروگرامز کا انعقاد یقیناً ادارۂ ہٰذا کی انفرادیت،مقبولیت کا منہ بولتا ثبوت ہے …

 اللہ جل شانہ سے دعا گو ہوں کہ بانئ ادارہ جناب محترم توصیف ترنل صاحب کی زیرِ سرپرستی، کامیابی کا یہ منفرد سفراسی رفتار سے جاری و ساری رہے ۔

ناظم مشاعرہ کا شکریہ:

 آخر میں اگر میں ناظم ، مشاعرہ محترمہ محترمہ ثمینہ ابڑو پاکستان کا شکریہ ادا نہ کروں ۔ تو تشنگی رہ جائے گی ۔ انہوں نے بہت ہی احسن طریقے سے اس عالمی مشاعرے کی نظامت کی ۔ آخر میں اپنے کلام سے کچھ چنیدہ چیزیں آپ کی نذر کرتا ہوں ۔ ایک دو غزلیں تحت میں اور ایک دو ترنم سے ۔امید ہے صاحبان ذوق کو پسند آئے گا ۔ میرے کلام کے بعد ناظم مشاعرہ آفیشلی طور پر مشاعرے کے اختتام کا اعلان کرسکتی ہیں ۔

غزلیات سے پہلےاس موقع پر میر ی جانب سے دو خصوصی اشعار ادارہ ہٰذا اور توصیف ترنل صاحب کی خوبصورت کاوش کی نذر

سارے جہاں کے اہل ادب کو مرا سلام 

آیا تھا چاند تاروں کے ہمراہ   آج شام 

توصیف  چننے لگتا ہے کلیاں نشاط کی 

تنقید اور کلام جو ہوتے ہیں ہمکلام

مزید دکھائیں

متعلقہ

Close