اردو سرگرمیاں

تلنگانہ میں مجوزہ عالمی اردو کانفرنس تجاویز اور عملی اقدامات

عالمی اردو کانفرنس کے انعقاد سے قبل ایک تفصیلی لائحہ عمل طے کرنے کی ضرورت ہے۔ تاکہ ریاست میں فروغ اردو کا جو کام ہورہا ہے اس کے ٹھوس نتائج عالمی سطح پر بھی مرتب ہوں۔ تلگو کانفرنس کے لئے حکومت نے ذائد از پچاس کروڑ روپئے منظور کئے اور اب اردو کی عالمی کانفرنس کے انعقاد کے لئے حکومت تلنگانہ دس سے پندرہ کروڑ روپئے منظور کرنے تیار ہے۔ اردو کے فروغ کے لئے یہ خطیر رقم ہے جس کا منصوبہ بند سے طریقے سے استعمال فروغ اردو کا ضامن ہوسکتا ہے۔

مزید پڑھیں >>

ڈپارٹمنٹ آف لینگویجیز اینڈ کلچرکی جانب سے خواتین کا سہ لسانی مشاعرہ کا اہتمام

ڈپارٹمنٹ آف لینگویجیز اینڈ کلچرکی جانب سے خواتین کا سہ لسانی مشاہرہ کا اہتمام کیاگیا۔ جس میں محفل خواتین سے وابستہ اوردیگر زبانو ںکی معروف شاعرات نے اپنا کلام پیش کیا۔ پروگرام کے پہلے سیشن سے معروف افسانہ نگار محترمہ قمرجمالی نے خطاب کرتے ہوئے عصرحاضراوردکن کی نسائی شاعری کے تعلق سے تفصیلی روشنی ڈالی۔

مزید پڑھیں >>

تلنگانہ میں اردو مترجمین کے تقررات: امیدواروں کے لئے سنہری موقع

موجودہ حالات تلنگانہ میں اردو کے فروغ کے لئے سازگار ہیں اور ان اردو افسران کے تقررات سے حکومتی سطح اور ضلعی دفاتر میں اردو کا چلن عام ہوگا۔ اردو والے ہر سرکاردی دفتر میں تلگو اردو سیکھیں بورڑ شروع کریں ار سائن بورڈ اور بسوں اور ریل گاڑی اسٹیشنوں پر اردو کو عام کریں تب ہی ریاست میں سابقہ ریاست حیدرآباد کی طرح اردو ماحول فروغ پائے گا جس کے لئے ریاست کے سبھی اردو دانوں کو سنجیدگی سے کام کرنے کی ضرورت ہے۔

مزید پڑھیں >>

 نعتیہ مجموعے ’بلغ العلی بکمالہ‘ کی رسم اجراء اور کل ہند مشاعرہ

باباغلام شاہ باد شاہ یونیورسٹی راجوری میں یو نیورسٹی کے یوم تاسیس کے موقع پرقومی کونسل برائے فروغ اردو زبان ( حکومت ہند)اوردبستان ہمالہ راجوری کے تعاون سے کل ہند مشاعرے کا انعقاد کیا گیا۔ مشاعرے کی صدارت شیخ الجامعہ پروفیسر جاوید مسرت نے فرمائی۔یونیورسٹی کے رجسٹرار پروفیسر اقبال پرویز، ہمالین ایجوکیشن مشن کے سرپرست اعلی فاروق مضطر، بزرگ ادیب نذیر قریشی، ماہر زبان اردو ایم این قریشی،سماجی دانشور عبد السلام بہار، انگریزی کے ادیب وشاعر اقبال شال،معروف افسانہ نگار زنفر کھوکڑ اور پہاڑی زبان کے ادیب وسماجی کارکن نثار راہی بحیثیت اور عمر فرحت مہمان ذی وقار تشریف فرما تھے۔

مزید پڑھیں >>

غالب اکیڈمی میں ماہانہ ادبی نشست کا اہتمام

گزشتہ روز غالب اکیڈمی نئی دہلی میں ایک ادبی نشست کا اہتمام کیا گیا جس کی صدارت ڈاکٹر جی آر کنول نے فرمائی ۔انھوں نے اپنی تقریر میں کہا کہ ادبی نشستوں سے کچھ نہ کچھ حاصل ہوتا ہے۔آج کی نشست میں مضامین پڑھے گئے، افسانہ بھی پڑھا گیا،ڈرامہ بھی پڑھا گیا اور شاعری بھی سننے کو ملی،اس طرح کی نشستیں ہوتی رہنی چاہئے۔

مزید پڑھیں >>

ڈاکٹر شمس کمال انجم کو ’ممتاز محقق ایوارڈ برائے 2017ء ‘

شیخ الجامعہ کے علاوہ مہمان خصوصی کابینی وزیر نعیم اختر اور ایم ایل اے راجوری قمر چودھری نے بھی سامعین کو اپنے ذریں خیالات سے نوازا۔ تقریب میں یونیورسٹی کے مختلف اسکولوں کے ڈین، شعبوں کے صدور، طلبہ وطالبات کے علاوہ ضلعی انتظامیہ کے آفیسران بشمول ضلع کمشنر، ایس ایس پی راجوری، مختلف ادباء وشعراء اور سیاسی وسماجی شخصیات نے شرکت کی جن میں ایڈمنسٹریٹر اوقاف راجوری عبد القیوم ڈار،ہمالین ایجوکیشن مشن کے سرپرست اعلی جناب فاروق مضطر، خورشید بسمل، نثار راہی، اعظم شاہ، پروفیسر شکیل رینہ،بشیر ماگرے، تعظیم ڈار،مولانا شمسی وغیرہ قابل ذکر ہیں ۔

مزید پڑھیں >>

حمدیہ و نعتیہ مشاعرہ

آئی ایف سی ادبی فورم ریاض کی زیر اہتمام۸؍دسمبر کو ہوٹل نیاگرا میں ایک شاندار حمدیہ و نعتیہ مشاعرہ اور نثری نششت ہوئی، جس کی صدارت حیدرآباد سے تشریف لائے مشہور و معروف علمی و عبقری شخصیت محترم ڈاکٹر و مفتی محمد کاظم حسین صاحب نے کی، جب کہ مہمان خصوصی کی حیثیت سے تنظیم ’ہم ہندوستانی، کے صدر عالی وقار محمد قیصر صاحب اسٹیج پر جلوہ افروز تھے۔ آئی ایف سی ادبی فورم ریاض کی روایات کے مطابق یہ نشست بھی نثر اور نظم دو حصوں پر مشتمل تھی۔

مزید پڑھیں >>

بزم کیف کے زیرِ اہتمام افروز عالم (کویت) کے اعزاز میں شعری نشست 

 شہر عظیم آباد کی مشہور ادبی انجمن بزمِ کیف کی طر ف سے آج شام کویت سے تشریف لائے ہوئے شاعر افروز عالم کے اعزاز میں ایک شعری نشست کا اہتمام بزم کے دفتر نیو عظیم آباد کالونی ، پٹنہ میں ہوا۔ نشست کی صدارت مولانا مظہر الحق عربی و فارسی یونیورسٹی کے سابق وائس چانسلر اور پٹنہ کالج کے پرنسل پروفیسر اعجاز علی ارشد نے کی جبکہ نظامت کے فرائض معروف ناقد ڈاکٹر شہاب ظفر اعظمی نے انجام دئیے۔

مزید پڑھیں >>

جشن ریختہ:  دلی میں اردو زبان اور تہذیب کے جشن کی آمد

دسمبر کی سردی میں دلی اور اس  کے آ س پاس  کے لوگوں کے لئے اس سے بہتر کیا ہوسکتا ہے کہ انہیں ایک ہی جگہ پر ادب، زبان، کلچر، رقص، موسیقی اور قوالی کے تمام رنگوں سے لطف اندوز ہونے کا موقع مل جائے۔ ۸۔۹۔۱۰ دسمبر کو میجر دھیان چندنیشنل  اسٹیڈیم میں منعقد ہونے والا چوتھا جشن ریختہ انہیں تمام چیزوں پر مشتمل ہوگا۔ گذشتہ برسوں کی طرح اس بار بھی ادب، فلم، تھیٹر اور دوسرے فنون لطیفہ سے تعلق رکھنے والے ۱۰۰سے زیادہ فن کار جشن میں شرکت کررہے ہیں۔

مزید پڑھیں >>

معروف فکشن نگار ارشاد امروہوی نہیں رہے!

ان کے مزاحیہ افسانے کا مجموعہ، ’’خیر مقدم کا ہوکا‘‘ طنز وظرافت کا بہترین نمونہ ہے، ارشاد امروہوی طنز ومزاح کے انداز میں بھی اپنی بات کہنے کے ہنر سے واقف تھے، ان کا ایک افسانوی مجموعہ ’’گونگا درد‘‘ ابھی حال ہی میں فخرالدین احمد میموریل کمیٹی لکھنؤ کے مالی اشتراک سے شائع ہوا، اور اس کتاب پر انھیں گزشتہ حکومت میں وزیرا علیٰ جناب اکھلیش یادو کے ہاتھوں اعزاز سے بھی نوازہ گیا تھا۔

مزید پڑھیں >>