متفرقات

غزل – صبح سویرے خوشبو پنگھٹ جائے گی

عزیز نبیل

صبح سویرے خوشبو پنگھٹ جائے گی

ہر جانب قدموں کی آہٹ جائے گی

سارے سپنے باندھ رکھے ہیں گٹھری میں

یہ گٹھری بھی اوروں میں بٹ جائے گی

کیا ہوگا جب سال نیا اک آئے گا؟

جیون ریکھا اور ذرا گھٹ جائے گی

اور بھلا کیا حاصل ہوگا صحرا سے

دھول مری پیشانی پر اٹ جائے گی

کتنے آنسو جذب کرے گی چھاتی میں

یوں لگتا ہے دھرتی اب پھٹ جائے گی

ہولے ہولے صبح کا آنچل پھیلے گا

دھیرے دھیرے تاریکی چھٹ جائے گی

نقّارے کی گونج میں آخرکار نبیلؔ

سنّاٹے کی بات یونہی کٹ جائے گی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

عزیز نبیل

پردیس میں گیسوئے اردو کو سنوارنے والوں میں ایک اہم نام عہد حاضر کے نامور شاعر عزیز نبیل کا بھی ہے۔ آپ کا وطن ممبئی ہے لیکن آپ گزشتہ ایک عشرے سے قطر میں مقیم ہیں۔ آپ انجمن محبان اردو کے جنرل سیکرٹری ہیں۔ خواب سمندر آپ کا مجموعہ کلام ہے۔

متعلقہ

Close