متفرقات

وزیر اعظم ظالم ہیں  یا مظلوم فیصلہ آپ کریں

اپنے ملک کے وزیر اعظم پر بے انتہاظلم ہوں  اور اس کے بارے میں  کچھ نہ لکھا جائے یہ اس سے بھی بڑا ظلم ہے۔ جالندھر کے ایک انتخابی جلسہ میں  تقریر کرتے ہوئے وزیر اعظم نے درد بھرے انداز میں  کہا کہ تین مہینوں  میں  میرے اوپر کیا کیا ظلم ہوئے ہیں  یہ میں  ہی جانتا ہوں  لیکن میں  ظلم کے سامنے جھکتا نہیں  ہوں۔

یہ بات ہم نہیں  کئی حضرات نے کہی ہے کہ مودی جی کو جھوٹ بولنا بہت پسند ہے۔ وہ یہاں  بھی شاید اس لیے جھوٹ بول گئے کہ کوئی دوسرا یہ نہ کہہ دے کہ وزیر اعظم گزشتہ تین مہینوں  میں  125 کروڑ عوام پر جیسے ظلم کیے ہیں  ان کو برداشت نہ کرتے ہوئے 125 نے تو جان دے دی اور باقی سخت جان تھے جو زندہ تو ہیں  مگر مسکرانا اور خوش ہونا بھول گئے۔ مودی جی نے اس سے بھی بڑا جھوٹ بولا کہ میں  ایمانداری اور غریبوں  کے حق کی لڑائی لڑتا رہا ہوں ۔ جب کہ ہوا یہ ہے کہ انھوں  نے غریبوں  کے حق کی لڑائی نہیں  لڑی بلکہ غریبوں  سے ان کے منہ کا نوالا چھیننے کی لڑائی لڑی اور اس مہنگائی کے زمانہ میں  لاکھوں  غریب مزدوروں  کو بے کار کرکے واپس گائوں  بھیج دیا۔

جس پنجاب میں  وہ یہ سب باتیں  کہہ رہے تھے وہاں  جتنے کارخانہ ہیں  اتنے تو اترپردیش میں  بھی نہیں  ہیں  اور ان کارخانوں  میں  پوری اترپردیش، بہار اور اڑیسہ کے غریب مزدور کام کرتے ہیں  جو ۸؍ نومبر کے بعد تمام کارخانے بند ہونے کی وجہ سے ٹرینوں  میں  بھر بھر کر آئے اور ان میں  سے 80 فیصدی ابھی اس کا انتظار کررہے ہیں  کہ سردار جی کب بلائیں  اور ہم کب جائیں ؟ وزیر اعظم نے جو ظلم کیے ہیں  وہ ہندوستان کی تاریخ میں  جو سیاہ باب لکھے جائیں گے ان میں  ایک اہم باب یہ ہوگا کہ جمہوری حکومت میں  اس سے زیادہ آمرانہ کوئی فیصلہ اگر تھا تو وہ ایمرجنسی تھا لیکن اس میں  بھی یہ نہیں تھا کہ ملک کی پوری آبادی چیخ پڑی ہو بلکہ چند مخصوص پارٹیاں  اور افراد تھے جو بند کردئے گئے۔ لیکن مودی کے ظلم نے تو ماں  کی چھاتی کا دودھ بھی خشک کردیا اور دودھ پیتا بچہ بھی اپنا پیٹ نہ بھر سکا۔

وزیر اعظم پر اگر ظلم ہوئے تو صرف یہ کہ وہ اس کے عادی ہیں  کہ وہ جو چاہیں  کریں  اور ان کا نام نہ ہو۔ لیکن نوٹ بندی میں  انھوں  نے خود اپنے اوپر ظلم کیا اور حکومت کا شوق پورا کرنے کے لیے 1000 اور 500کے نوٹ بند کرنے کا اعلان خود کیا تاکہ لوگ انہیں  ملک کا بادشاہ سمجھیں  اور اگر فریاد کریں  تو صرف ان سے ۔ اسے اور یقینی بنانے کے لیے یہ کہانی گڑھی کہ یہ فیصلہ میرے مکان کے دو کمروں  میں  کیا گیا اور میں  نے راز داری کے خیال سے یہ پابندی لگادی کہ سب لوگ صرف گجراتی میں  بات کریں گے تاکہ کسی اور کے کان میں  کچھ پڑے تو وہ سمجھ نہ سکے۔ لیکن نوٹ بندی کے نتیجہ میں  خودکشی کرنے اور لوگوں  کے فاقوں  سے مرنے کی خبریں  آنا شروع ہوئیں  تو ساری بادشاہت نکل گئی اور کہہ دیا کہ ریزروبینگ آف انڈیا کے مشیروں  نے یہ فیصلہ کیا تھا میں  نے صرف اعلان کیا تھا۔

اتنی بات سچ ہوسکتی ہے کہ وہ اناڑی ہونے کی وجہ سے ایک اعلان کرتے تھے اور جب RBIکی طرف سے کہا جاتا تھا کہ یہ غلط ہے تو عوام کی نظر میں  ان کی اہمیت کم سے کم ہوتی جاتی تھی۔ اس طرح کے کم از کم 20 فیصلے ہیں  جو وزیر اعظم نے کیے اور ریزروبینک نے اسے الٹ دیا۔ انتہا یہ ہے کہ وہ آخری فیصلہ جسے اب تک برابر سنوایا جاتارہا کہ پرانے نوٹ بدلنے کی آخری تاریخ 30 دسمبر ہے۔ اس کے بعد ہر بینک میں  نہیں  ریزرو بینک کی برانچوں  میں  31؍ مارچ تک نوٹ بدلے جائیں گے۔ ریزروبینک نے 30 دسمبر کے بعد صاف انکار کردیا ۔ ہوسکتا ہے کہ مودی اسے ظلم سمجھ رہے ہو ں  یا ان کے نزدیک یہ ظلم ہو کہ جس کانگریس سے بھارت کو 2014ء میں  ان کی آواز میں  آواز ملا کر نجات دلادی تھی اس کانگریس کے کالے بالوں  والے لڑکے نے ان پر سہارا سے چالیس کروڑ روپے کی رشوت لینے کا الزام ہی نہیں  لگایا بلکہ سب کو سنایا کہ کس کس تاریخ کو ڈھائی کروڑ اور کس کس تاریخ کو 5 کروڑ لیے ہیں ۔ ا ور وہ انکار نہ کرسکے اور جب پرشانت بھوشن ایڈوکیٹ سپریم کورٹ میں  فریاد کی تو انھوں  نے یہ کہہ کر سزا دینے سے انکار کردیا کہ ایک ڈائری کے اندراجات ثبوت کے لیے ناکافی ہیں ۔اس کے بعد مودی کی عزت جاتے جاتے رہ گئی لیکن داغ لگ گیا۔

اور ہوسکتا ہے وہ اسے بھی ظلم سمجھ رہے ہوں کہ بینکوں  کی لائن لگ کر اور اپنے ہی روپے نکالنے میں  ناکام رہ کر موت کی نیند سوجانے والے جتنے اترپردیش کے لوگ تھے ان سب کو اکھلیش یادو نے دو دو لاکھ روپے دئے۔ ہوسکتا ہے مودی جی اسے بھی ظلم سمجھ رہے ہوں  کہ میں  نے کسی کو کچھ نہیں  دیا بلکہ بینکوں  کی لائنوں  کو میں  نے آندولن کہا اور کالے بال والے ایک لڑکے نے دو دو لاکھ کے در مجھے ذلیل کردیا۔ بہرحال جو بھی ہوا ان کے اوپر کوئی ظلم کیا کرے گا۔ جن کی پہچان ہی ظلم کرنے والوں  کے ہاتھ نہ روکنے کا حکم دینا ہے اور یہ بات 15 برس پرانی ہونے کے باوجود ابھی اتنی ہی نئی ہے جتنی 2002ء میں  تھی اور کہنے والے کہہ بھی رہے ہیں  اور لکھنے والے لکھ بھی رہے ہیں ۔

وزیر اعظم نے ا علان کیا کہ جس کے گھر شادی ہے وہ شادی کارڈ لے کر بینک جائے اور اپنے ڈھائی لاکھ روپے نکال لائے۔ ملک میں  لاکھوں  شادیاں  ہونے والی تھیں ۔ یہ اعلان سن کر لوگ کارڈ لے کر دوڑ پڑے۔ وہاں  کہا گیا کہ میرج ہال کا بل لائیے، کھانے والے کابل لائیے اور ہر خرچ والوں  سے لکھواکر لائے کہ ان کا اکائونٹ نہیں  ہے۔ یہ ایسی ہی شرطیں  تھیں  جیسے ایک گرام چیل کا موت لائے ایک ماشہ بلبل کے آنسو لائے اور 10 گرام نرگس کے پھول لائے۔ اب شادی والوں  سے معلوم کیا جائے کہ کیا کسی کو ڈھائی لاکھ روپے ملے؟ یہ مودی نے ظلم کیا یا مودی پر ظلم ہوا؟ حیرت ہے کہ جالندھر والوں  نے سنا اور چپ رہے۔ انھیں  تو وہیں  ان سے حساب کتاب کرلینا چاہیے تھا۔ بھارت کا باسی وزیر اعظم پر کیا ظلم کرپائے گا ان پر تو صرف اوپر والا کرے گا جس نے فیصلہ محفوظ کرلیا ہے ا ور جو 11؍ مارچ کو سنایا جائے گا۔

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

حفیظ نعمانی

حفیظ نعمانی معروف سنیئر صحافی، سیاسی مبصر اور دانش ور ہیں۔

متعلقہ

Close