ترکی میں تختہ پلٹ کی کوشش

26

ہری موہن مشرا

ترکی میں بغاوت کی کوشش پہلی نظر میں اردوگان واد بمقابلہ كمال واد کا نتیجہ لگتی ہے. لیکن کچھ خبروں کے مطابق گزشتہ سال سے جاری بم دھماکوں اور دہشت گردانہ واقعات سے لوگ کافی تنگی محسوس کر رہے ہیں. شام اور اسلامی اسٹیٹ (آئی ایس) کے خلاف مہم، باغی کرد جنگجوؤں سے لڑائی نے بھی ترکی کے عوامی زندگی کو کافی تباہ کیا ہے. لہذا، یہ حالات بھی فوج میں عدم اطمینان اور صدر اردوگان مخالف عناصر کو شہ دینے کی وجہ بنے ہوں گے.

ترکی، شامی پناہ گزینوں کے مسئلہ کو بھی جھیل رہا ہے اور وہ پناہ گزینوں کو یورپ روانہ کرنے کا بھی اہم دروازہ ہے. صدر اردوگان شام میں بشارالاسد کی شیعہ حکومت کے خلاف باغیوں کی مدد تو کر ہی رہے تھے، نیٹو کا اہم ٹھکانا ہونے کے ناطے ترکی ہی آئی ایس کے خلاف بین الاقوامی مہم کا بھی اہم مرکز ہے. بغاوت ہونے کے حالات میں شام کی دارالحکومت میں جشن کا ماحول تھا، لیکن یہ ناکام ہونے پر سناٹا چھا گیا. اس سے گزشتہ سال سے ہی ترکی میں سیاحوں کی آمد اور کاروبار تقریبا ٹھپ ہو گیا تھا. ایک خبر میں ترکی کے ایک دانشور کو یہ کہتے ہوئے مثال دی گئی ہے کہ ” ہم ٹھگا سا محسوس کرتے ہیں. ترکی معاشرے میں اب اور توانائی نہیں بچی ہے. ہم کچھ ہونے کا انتظار کر رہے ہیں، گویا ترکی کے نئے عروج کا انتظار کر رہے ہوں. ” ظاہر ہے، وہ وجودیت کے قائل ڈرامہ نگار سیموئیل بیکٹ کے شاہکار ” ویٹینگ فار ٹرکی ” (ویٹنگ فار گوڈو) کا ذکر کر رہے تھے.

دراصل ترکی کا معاشرہ ایک عجیب صورت حال سے دوچار ہے. اس کے تمام بڑے شہروں میں بم دھماکے تقریبا روزمرہ کی بات ہو چلی ہے. یہ معاشرے بری طرح بٹا ہوا ہے. وہاں کچھ لوگ کسی بھی وقت خانہ جنگی چھڑنے کا خدشہ جتانے لگے ہیں. ملک کی جنوب مشرقی سرحد پر کرد علیحدگی پسند نئے سرے سے فعال ہو گئے ہیں. اس کے جنوب کے ممالک عراق اور شام تو خوفناک جنگ کی زد میں ہیں ہی، جس کی آگ سے وہ جھلس رہا ہے.

لیکن سب سے بڑی تبدیلی تو شاید ترکی کے معاشرے میں آئی ہے اور اس کے لئے اس کے تیز طرار صدر اردوگان ہی ذمہ دار ہیں. اردوگان اس سیکولر نظام کو مسلسل جھٹکے دے رہے ہیں جو 1920 کی دہائی میں مصطفی کمال اتا ترک نے قائم کیا تھا. انہوں نے اپنے اسلامی نقطہ نظر کو ترجیح دے کر طویل عرصے سے محروم مسلم آبادی کے عروج کی کوششیں تو کیں اور غریب علاقوں کی ترقی کے لئے اقتصادی پالیسیاں بھی اپنائیں، مگر اس عمل میں ان کی حکومت بے لگام بھی ہو گئی. ان کے قریبی لوگوں کی جائیداد میں کافی اضافہ ہوا. اس سے ایک تاثر گھر کرنے لگا کہ پرانے نظام کی جگہ وہ جو شریعت قائم کرنا چاہتے تھے، وہ بے پناہ کرپشن سے ڈھہتا جا رہا ہے. لہذا، 2013 میں اردوگان کے خلاف بھاری مظاہرے ہوئے جسے انہیں سختی سے ٹھنڈا کرنا پڑا. انہوں نے اس وقت کے مخالفین کو ” كمال وادی” کہہ کر کھلی اڑائی تھی. پھر ان کی پارٹی ایک جون 2015 کے انتخابات میں پارلیمنٹ میں اکثریت کھو بیٹھی. تب بھی حزب اختلاف نے حملے تیز کر دیئے. لیکن اردوگان نے فورا وسط مدتی انتخابات کا اعلان کر کے انہیں ٹھنڈا کر دیا.

اردوگان اپنی عوامی حمایت حاصل کرنے کے لئے ترکی کے عثمانیہ سلطنت کا اعزاز واپس لانے کی بات کرتے ہیں اور آٹھ دہائیوں کے كمال واد کے سیکولر نظام کو بے معنی قرار دیتے ہیں. اصل میں کمال اتا ترک نے 20 ویں صدی کے آغاز میں اپنے اس وقت کے انقلابی خیالات کے ساتھ ترکی کو ایک جدید ریاست کے طور پر قائم کیا تھا. حالاں کہ اس میں کسانوں اور کرد جیسے مقامی اقلیتوں کو محرومیت کا سامنا کرنا پڑا تھا. شاید اردوگان اسی احساس کو بھڑكاكر اپنا اقتدار قائم رکھنے میں کامیاب ہوئے ہیں.

قریب 2003 سے اقتدار پر قابض اردوگان موجودہ تختہ پلٹ کی کوشش کو ملک میں لبرل اور اپوزیشن جماعتوں کی سازش بتا رہے ہیں. ان کے مطابق یہ فتح اللہ گولن کے حامیوں کا کارنامہ ہے. فتح اللہ گولن ایک لبرل مذہبی رہنما ہیں جو پہلے اردوگان کے حامی تھے اور بعد میں ان کے کٹر مخالف بن گئے. وہ اب امریکہ کے پینسیلونيا میں خود ساختہ جلاوطنی میں رہتے ہیں. حالاں کہ فتح اللہ گولن حامی ایلائنس فار شیئرڈ ویليوز نے اس سے انکار کیا ہے اور سیاست میں کسی طرح کی فوجی دخل اندازی کی مذمت کی ہے. فتح اللہ گولن صوفیانہ اسلام پر یقین رکھتے ہیں اور جمہوریت، تعلیم، سائنس اور مختلف مذاہب میں مشترکہ اقدار کے حامی ہیں. ان کے حامی اسکول، اسپتال، رفاہی ادارے، ایک بینک اور ایک بہت مؤثر میڈیا ہاؤس چلاتے ہیں. اردوگان ان پر کافی عرصے سے مخالفت بھڑکانے کا الزام لگاتے رہے ہیں.

حالاں کہ یہ بھی صحیح ہے کہ فوج میں كمال وادي عناصر کئی بار بغاوت کی کوشش کر چکے ہیں لیکن انہیں 1980 کے بعد سے کامیابی حاصل نہیں ہو پائی ہے. ایک چھوٹی کوشش 1997 میں بھی ہوئی تھی. اس بار بھی چھٹیاں منا رہے اردوگان نے واپس لوٹ کر لوگوں سے بغاوت کرنے کی کوشش کرنے والوں کے خلاف اٹھ کھڑے ہونے کا اعلان کیا تو لوگ سڑکوں پر اتر آئے، فوجی ٹینکوں کے سامنے کھڑے ہو گئے.

مگر عدم اطمینان کی اصل وجہ شاید مسلسل جنگی حالات سے خستہ ہوتی ملک کا نظام ہی ہے. اس لئے مغربی ایشیا کے حالات اور دہشت گردی سے جنگ پر نیا نقطہ نظر درکار ہے. جنگی حالات مسلسل نہیں چل سکتے. دہشت گردی کا یہ دور تو تقریبا ڈیڑھ دہائیوں سے جاری ہی ہے، بلکہ ہم اس کا پس منظر امریکہ اور یورپ کی تیل پیاس میں بھی تلاش کر سکتے ہیں.

امریکی صدر بش سینئر کے دور میں عراق جنگ کو یاد کیجئے. وہ تیل پر قبضے کی جنگ سے ہی شروع ہوا تھا جب صدام حسین نے روس اور یورپی ممالک سے ڈالر کے بدلے ان کی کرنسیوں میں لین دین شروع کر دی تھی. امریکہ کو چیلنج کرنے کے لئے صرف صدام نے کویت پر قبضہ کرنے کی پالیسی بھی اپنائی تھی، جو ان کے لئے مہلک ثابت ہوئی. بہر حال، اس جنگ کے اب کئی طرح کے مہلک اثرات ظاہر ہوتے جا رہے ہیں. اس لئے نئے نقطہ نظر کی فوری ضرورت ہے.

تبصرے