تاریخ ہندخصوصی

بھارت چھوڑو آندولن کے 75 سال: کیا سیکھا ہم نے آندولن سے؟

رويش کمار

کرکٹ کی دنیا میں عظیم کھلاڑیوں کی بہترین علامات میں ایک علامت یہ بھی سمجھی جاتی ہے کہ آؤٹ ہونے پر وہ امپائر کے فیصلے کا انتظار نہیں کرتا، خود میدان سے چلا جاتا ہے. اس پیمانے پر ویسے تو کئی کھلاڑی ہیں لیکن سب سے اوپر آسٹریلیا کے سلامی بلے باز ​​ایڈم گلکرسٹ کا نام آتا ہے. 2003 کے ورلڈ کپ میں سری لنکا کے خلاف کھیلتے ہوئے گلکرسٹ کے بلے سے ڈی سلوا کی گیند چھوکر پیچھے گئی. امپائر کو لگا کہ گیند پیڈ پر لگی ہے. لہذا آؤٹ نہیں دیا لیکن گلکرسٹ خود پچ چھوڑ کر چلے گئے. عظیم کھلاڑی کھیل کے ایمان سے سمجھوتہ نہیں کرتے ہیں. وہ تھرڈ امپائر یا الیکشن کمیشن کے لئے میدان میں کھڑے نہیں رہتے ہیں.

سیاست میں گلکرسٹ نہیں ہوتے لہذا 8 اگست کی رات الیکشن کمیشن کے سامنے بی جے پی کے کئی وزیر اور کانگریس کے بڑے لیڈروں کی نقل و حرکت کو لے کر سوال تو ایک ہی ہونا چاہیے تھا کہ یہ جو ایم ایل اے توڑ تحریک چل رہی ہے اس کے پیچھے اقتدار نے کون سا کھیل رچا ہے. سوال تو اٹھے مگر جلد ہی میڈیا کی توجہ کا مرکز پالیسی سازوں کی تعریف کی طرف چلا گیا جہاں کم خطرہ تھا. پوری رات دونوں کناروں سے کئی وزیر اور کئی ترجمان باری باری کمیشن کے اندر اندر جاتے رہے اور باہر آکر ایک ہی بات کو باری باری کہتے رہے تاکہ دیر تک ٹی وی کی سکرین پر ڈٹے رہیں . کوئی بھی ایڈم گلکرسٹ کی طرح عظمت نہیں دکھانا چاہتا تھا. یہی کرتے کرتے 9 اگست کی رات آ گئی لیکن میڈیا اسی حساب میں لگا رہا کہ کون سا ممبر اسمبلی بکا ہے، کون سا ممبر اسمبلی جھوٹ بول رہا ہے. واقعہ گجرات کا ہی تھا جس کے گاندھی کی زندگی کا انتہائی مشکل اور شاندار کارنامہ تھا بھارت چھوڑو آندولن. رات کی روشنی اور دن کے اندھیرے میں صاف صاف دکھا کہ بھارت کی سیاست میں نہ تو کوئی گلکرسٹ نہ ہی گاندھی ہے.

ایسی کمزور اور خوفناک رات کے بعد آتی ہے 9 اگست 1942 کی سالگرہ والی صبح. وہی سیاست اب خود کو بھارت چھوڑو آندولن کا وارث قرار دیتے ہوئے اس طرح کے اعلان کرتی ہے جیسے 9 اگست کے دن بھارت میں اخلاقیات کی کوئی نئی صبح آ گئی ہو. کئی جماعتوں نے تابڑ توڑ بھارت چھوڑو آندولن کے نام پر اپنے آپ تحریکوں کے برانڈ لانچ کر دیے. لالچ بھارت چھوڑو آندولن، ملک بچاؤ ملک بناؤ آندولن اور بی جے پی بھارت چھوڑو آندولن. وزیر اعظم نے بھی 6 قسم کے آندولن لانچ کر دیے ہیں . قرارداد سے سدھی. بدعنوانی، نسل پرستی، دنگا مکت بھارت کی قرارداد کے اشتہارات کئی اخبارات میں شائع. کہیں ایسا نہ ہو جائے کہ 9 اگست کا دن اصلی 9 اگست 1942 کو بھولنے کا دن بن جائے اور سارے دل آج شروع ہوئے اپنے آپ کی تحریکوں کی سالگرہ منانے لگ جائیں گے.

پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں میں ایک الگ ہی بے چینی نظر آئی. سب اپنے اپنے علاقے اور کچھ اپنے خاندان کی تاریخ کو ایوان کے اندر اندر رکھنے کے لئے جوجھتے نظر آئے. میرا بمقابلہ تیرا تاریخ کا انصاف دنیا کی کسی عدالت میں نہیں ہو سکتا. بہتر ہے زیادہ سے زیادہ لوگ تاریخ کا مطالعہ کریں اور لکھیں، مگر تاریخ کے نظم و ضبط پر عمل کرتے ہوئے نہ کہ وزیر کی مرضی سے. میرا مطالبہ ہے کہ سیاست میں تاریخ کی مقبولیت کو دیکھتے ہوئے حکومت ہند دس ہزار کروڑ کی ایک تاریخ فنڈ بنائے. اس پیسے سے بھارت بھر میں پھیلی تاریخ کی عدم مساوات کو دور کیا جائے گا. کئی لیڈروں کی تقریر میں تاریخ کا جرم بھی جھانکتا رہا. سیتا رام یچوری نے فوری طور پر جواب دیا کہ غلط بات ہے کہ کمیونسٹوں نے تحریک کا بائیکاٹ کیا. کئی مثالیں پیش کر دیں.

سماجوادی لیڈر نے کہا کہ کانگریس نے لوہیا اور جے پی کو چھوڑ دیا. غلام نبی آزاد نے یونین کے کردار پر نہیں بولا مگر سبھاش چندر بوس سے لے کر بھگت سنگھ اور چشے كھر آزاد کو یاد کیا. کمیونسٹوں کی طرح سنگھ کا بھی دعوی ہے کہ اس کے کارکنان نے بھارت چھوڑو آندولن میں حصہ لیا تھا. جبکہ دوسرے لوگوں کا دعوی ہے کہ حصہ نہیں لیا تھا. اچھا ہوتا کہ اس سوال کا ایوان کے اہم مقررین کی طرف سے سامنا کیا جاتا. راجیہ سبھا میں ارون جیٹلی اور لوک سبھا میں وزیر اعظم اس سوال کو کنارے لگا گئے. وزیر اعظم مودی تاریخ کی تاریخوں کو جشن میں تبدیل کرنے کے لئے اتنے شوقین رہتے ہیں تب پھر وہ کیوں تاریخ کے ان سوالات سے گریز کرتے ہیں. کم از کم پتہ تو چلتا کہ سنگھ کے کردار پر ان کی کیا رائے ہے جس کے سویم سیوک ہونے پر انہیں فخر ہے. ان کی ایک بات کی تعریف کی جانی چاہئے کہ وہ گاندھی کو لے کر یونین کی طرح تذبذب کی حالت میں نہیں رہتے ہیں.

بلیا کے چتتو پانڈے، ستارا کے نانا پاٹل اور بنگال کے ستیش سامنت اور اجے مكھرجي کو یاد کیا گیا اور انہیں لے کر کوئی نہیں جھگڑا. کئی بار لگتا ہے کہ ہماری سیاست کی تاریخ کا سامنا کرنے کے لئے ذہنی طور پر تیار نہیں ہے. تاریخ میں کردار نہیں ہونے کی بنیاد پر کیا کسی کو آج کے وقت میں مسترد کیا جا سکتا ہے. میرے حساب سے نہیں. 9 اگست 1942 کی تاریخ بڑے رہنماؤں کے ساتھ بھارت کی ہزارہا عوام کی تاریخ ہے. یہ تاریخ بتاتی ہے کہ جب سارے لیڈر جیل چلے گئے، کوئی قیادت کرنے والا نہیں رہا تو بھی بھارت کے عوام نے اقتدار کے غرور کو کچل دیا. کسان، مزدور اور طالب علموں کا زبردست کردار تھا.

پٹنہ کا یہ شہید کسی کو یاد بھی رہے. 11 اگست 1942 کو بہار سیکرٹریٹ پر ترنگا لہرانے کے لئے انگریزوں کی گولیاں کھا گئے اور شہید ہو گئے. پٹنہ ضلع کے رامانند سنگھ اور رامگوود سنگھ، سلہٹ کے دیوی پرساد چودھری، گیا کے جگپت کمار، بھاگلپور کے ستیش پرساد جھا اور سارن کے اوماکانت پرساد سنگھ اور راجیندر سنگھ تھے. سارن ضلع میں ایسا عوامی ہنگامہ ہوا کہ انگریز حکومت نے پورے سارن ضلع کو مجرم قرار دے دیا. 1943 کے آخر تک 91836، لوگ گرفتار ہوئے، جن میں سب سے زیادہ بمبئی پریسی ڈنسی  کے 24416، متحدہ صوبہ یعنی آج کے یوپی کے 16796، اور بہار کے 16202، لوگ گرفتار ہوئے تھے. آل انڈیا تحریک تھی، بہار، پووچ متحدہ صوبے، کرناٹک، مہاراشٹر، اڑیسہ اور بنگال میں لوگ سب سے زیادہ فعال تھے. بہار میں عوام نے 72 تھانوں پر قبضہ کر لیا. پٹنہ کے ارد گرد جہاز سے گولیاں برسائی گئی تھیں. یوپی کے اعظم گڑھ میں بھی انگریزی حکومت نے خوفناک تباہی برپا کی تھی. میلوں تک دیہات کو جلا دینے کا حکم دیے دیا گیا تھا اور آج ہم اس اعظم گڑھ کے بارے میں کیا کیا پرچار کرتے پھرتے ہیں. تملك، ستارا، بلیا سمیت کئی مقامات پر عوام نے اپنی حکومت بنا لی تھی. یہ ساری معلومات سمت حکومت کی کتاب جدید بھارت سے ماخوذ ہے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close