خصوصی

مردوں  کو بھی "استری مکتی” کا گیت گانا ہوگا

تکنیکی طور پر بنگلور کو ہندوستان سب سے زیادہ جدید شہر منع جاتا ہے. لیکن گزشتہ سال کی آخری رات میں  بھارت کی "سلیکون ویلی” کہے جانے والے اس شہر نے خود کو شرمشار کیا ہے. روشنی سے ٹمٹمانے اور نئے سال کے جشن میں  ڈوبے اس شہر کی گلیاں  اس رات لڑكيو کے لیے تاریک غار ثابت ہوئی، جب بھیڑ کی طرف سے خواتین کے ساتھ بڑے پیمانے پر ہیرا پھیری کی گئی. لیکن جیسے کہ یہ ناکافی رہا ہو اس کے بعد رہنماؤں  کی باری تھی جنہوں  نے خواتین کو لے کر ہماری اجتماعی شعور کا شرمناک کارکرد گی کا مظاہرہ کرنے میں  کوئی کسر نہیں  چھوڑی. پہلے کرناٹک کے وزیر داخلہ جے پرمیشور کا بیان آیا کہ "ایسے واقعات تو ہوتے رہتے ہیں .” پھر سماج وادی پارٹی کے لیڈر ابو اعظمی کہتے ہیں  کہ، "یہ تو ہونا ہی تھا خواتین ننگے پن کو فیشن کہتی ہیں،  وہ چھوٹے چھوٹے کپڑے پہنے ہوئے تھیں .” پولیس بھی پیچھے نہیں  رہی اور ان کی طرف سے اس طرح کے واقعات کے لیے اسمارٹ فون کے بڑھتے استعمال، مغربی ممالک کے برے اثر اور چھوٹے کپڑوں  وغیرہ کی ذمہ دار ٹھہرایا گیا.

عظیم شاعر  ہری شنکر پرساي نے کہیں  لکھا ہے کہ "خدا پانچ لڑکیوں  کے بعد لڑکا دے کر اپنے ہونے کا ثبوت دیتا رہتا ہے”. یہی ہمارے معاشرے کا سچ ہے۔ دراصل خواتین  کو لے کر زندگی کے تقریبا ہر میدان میں  ہماری یہی سوچ اور رویے کا غلبہ ہے جو "آدھی آبادی” کی سب سے بڑی دشمن ہے. تکنیکی زبان میں  اسے پدرانہ سوچ کہا جاتا ہے، ہم ایک پرانی تہذیب ہے وقت بدلا، دور بدلہ لیکن ہماری یہ سوچ نہیں  بدل سکی۔ الٹے اس میں  نئے طول و عرض جڑتے گئے، ہم ایسا خاندان معاشرے اور اسکول ہی نہیں  بنا سکے، جو ہم میں  نسلوں  سے چلے آ رہے ہیں ،اس سوچ کو تبدیل کرنے میں  مدد کر سکیں . ویسے تو اسکولوں  کو تبدیلی کی فیکٹری کہتے ہیں ، لیکن دیکھئے ہمارے اسکول کیا کر رہے وہ پرانے اقدار کو اگلی نسل میں  منتقل کرنے کے ذریعے ثابت ہو رہے ہیں .

اگر ہم عورت مرد مساوات کے تصور کو ابھی تک قبول نہیں  کر سکے ہیں،  تو پھر بلندی کس بات کی ہو رہی ہے؟ سال 1961ء  سے لے کر 2011 تک کی مردم شماری پر نظر ڈالیں  تو یہ بات صاف طور پر ابھر کر سامنے آتی ہے کہ ملک میں  مرد خواتین   کے درمیان فرق مسلسل بڑھتی گئی ہے، گزشتہ 50 سالوں  کے دوران 0-6 سال عمر کے گروپ کے بال لنگ انوپات میں  63 پانٹ کی کمی آئی ہے. سال 2001 کی مردم شماری میں  جہاں  چھ سال تک کی عمر کے بچوں  میں  فی ایک ہزار بچے پر لڑکی کے بچے کی تعداد 927 تھی تو وہی 2011 کی مردم شماری میں  یہ تناسب کم ہو کر 914 (گزشتہ دہائی سے -1.40 پرتشت کم) ہو گیا ہے، توجہ دینے والی بات یہ ہے کہ اب تک کی ہوئی سارے اعداد وشمار میں  یہ تناسب نيونتم ہے، یعنی کمی کی شرح کم ہونے کے بجائے تیزی سے ہوئی ہے. اگر ملک کے مختلف ریاستوں  میں  لنگ انوپات کو دیکھیں  تو پتہ چلتا ہے  کہ یہ تناسب ترقی یافتہ ریاستوں  میں  پسماندہ ریاستوں  کی مقابلے زیادہ خراب ہے۔ اسی طرح سے غریب دیہات کے مقابلے میں  امیر (فی کس آمدنی کی بنیاد پر) شہروں  میں  لڑکیوں  کی تعداد کافی کم ہے. کوڑے کے ڈھیر سے نومولود لڑکیوں ملنے کی خبریں  اب بھی آتی رہتی ہیں  لیکن جدید ٹیکنالوجی نے اس کام کو اور آسان بنا دیا ہے.

 مندرجہ بالا صورت حال بتاتی ہے کہ اقتصادی طور پر ہم نے بھلے ہی بلند کر لی ہو لیکن سماجی طور پر ہم بہت پسماندہ ہیں۔ غیر برابری کی اقدار اور جنسی ناکامیایوں سے   لبالب. نئے دور میں  یہ حالت بھیانک شکل لیتی جا رہی ہے. ویسے تو تعلیم اور روزگار کے علاقے میں  خواتین کی تعداد اور مواقع بڑھے ہیں  اور آج کوئی ایسا کام نہیں  بچا ہے جسے وہ نہ کر رہی ہوں،  جہاں  کہیں  بھی موقع ملا ہے خواتین نے اپنے آپ کو ثابت کیا ہے. لیکن ان سب کے باوجود ہمارے سماجی ڈھانچے میں  لڑکیوں  اور عورتوں  کی حیثیت میں  کوئی بنیادی تبدیلی نہیں  آیی ہے. حقیقی چیلنج اسی ڈھانچے کو تبدیل کرنے کی ہے جو کی آسان نہیں  ہے.

دراصل صنفی مساوات ایک پیچیدہ مسئلہ ہے۔ ہمارے معاشرے میں  شروع سے ہی بچوں  کو سکھایا جاتا ہے کہ خواتین ، مردوں سے کم تر ہوتی ہیں۔  بعد میں  یہی سوچ مردانگی کے نظریات کو مضبوطی دیتی ہے. مردانگی وہ خیال ہے جسے ہمارے معاشرے میں  ہر بیٹے کے اندر بچپن سے ڈالا جاتا ہے، انہیں  سکھایا جاتا ہے کہ کون سا کام لڑکوں  کا ہے اور کون سا کام لڑکیوں  کا ہے. بیٹوں  میں  خود کو بیٹیوں  سے زیادہ اہم ہونے اور اس کی بنیاد پر استحقاق کا احساس تیار کیا جاتا ہے. ہمارا معاشرہ مردانگی کے نام پر لڑکوں  کو مضبوط بننے، درد کو برداشت، غصہ کرنے، تشدد ہونے، دشمن کو سبق سکھانے اور خود کو لڑکیوں  سے بہتر ماننے کی تربیت دیتا ہے، اس طرح سے سماج خاموشی اور مؤثر طریقے کے ساتھ پدرانہ نظام کو ایک نسل سے دوسرے نسل تک منتقل کرتا رہتا ہے.

 جدید دور میں  اس ذہنیت کو بنانے میں  ميڈيا کی بھی حصہ داری ہے. گلوبلائزیشن کے بعد سے تو مردانگی کے پیچھے اقتصادییت  بھی جڑ گیا اور اب اس کا تعلق مارکیٹ سے بھی ہونے لگا ہے.اب خواتین،  بچے، محبت، جنسی، رویے اور تعلقات ایک طرح سے جنس کی شکل اختیار کر لی ہے. جنس، یعنی ایسی چیز جسے خریدا، فروخت یا  تبدیل کیا جا سکتا ہے. آج خواتین اور مردوں  دونوں  کو مارکیٹ بتا رہا ہے کہ کس طرح ان کو نظر آنا ہے، کس طرح برتاؤ کرنا ہے، کیا کھانا ہے، کس کے ساتھ کیسا تعلق بنانا ہے. یعنی انسانی زندگی کے ہر شعبے کو مارکیٹ کنٹرول کرنے کی طرف اپنے حساب سے چلا رہا ہے، یہاں  بھی مرد   پہلے نمبر پر ہے.

آزادی کے بعد ہمارے آئین میں  سب کو برابری کا حق دیا گیا ہے اور ان بھید بھاو کو دور کرنے کے لیے کئی اقدامات بھی اٹھائے گئے ہیں،  نئے قانون بھی بنائے گئے ہیں۔   لیکن ان سب کے باوجود تبدیلی کی رفتار بہت سست ہے . اس لئے ضروری ہے کہ اس صورت حال کو تبدیل کرنے کی کوشش کریں،  بالخصوص اس عمل میں  معاشرے کے مرد اور لڑکے بھی شامل ہوں.

اب یہ خیال تسلیم کیا جانے لگا ہے کہ صنفی مساوات صرف عورتوں  کا ہی مسئلہ نہیں  ہے. صنفی بنیاد پر عدم مساوات اور تشدد کو صرف خواتین ختم نہیں  کر سکتی ہیں،  صنفی انصاف اور مساوات کو قائم کرنے میں  خواتین کے ساتھ مردوں  اور نوجوان بھی اہم کردار بنتے هیں۔ عظیم تبدیلی کے لیے ضروری ہے کہ مرد اپنے خاندان اور ارد گرد کی خواتین کے تئیں  آپ کی توقعات میں  تبدیلی لائیں . اس سے نہ صرف سماج میں  تشدد اور امتیازی سلوک کم ہوگا بلکہ برابری کی بنیاد پر نئے انسانی تعلق بھی بنیں گے. صنفی مساوات کی مہم میں  خواتین کے ساتھ مرد کو بھی شامل کریں  گے اور ایسے طریقے تلاش کرنے ہوں  گے جس سے مردوں  اور لڑکوں  کو خود میں  تبدیلی لانے میں  مد د مل سکے اور وہ مردانگی کا بوجھ اتار کر خواتین اور لڑکیوں  کے ساتھ یکساں  طور سے چلنے کے قابل ہو سکیں . اگر ہم اس سوچ کو آگے بڑھا سکے تو ہر سال 24 جنوری کو منايے جانے والے قومی بالیکا دن کی خوشی اور بڑھ جائے گی.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close