خصوصی

مسائل کے بجائے الزام تراشی میں الجھیں سیاسی جماعتیں

اتر پردیش کے انتخابات کے تقریبا آدھا کام نپٹ گیا اور اب تک یہ پتہ نہیں چل پا رہا کہ وہاں اہم مددا کیا ہے. چوتھے مرحلے کی پولنگ کے لیے انتخابی مہم کی میعاد ختم ہوگئی. یعنی کل تو تہائی کام مکمل ہو جائے گا. سو بچے-كھچے وقت میں کوئی نیا مددا آنے سے رہا. ظاہر ہے کہ گزشتہ دس دنوں میں چار دور میں جو بھی انتخابی مہم چلا ہے اسی کی بنیاد پر یوپی کے ماحول کا جائزہ لینے کا صحیح وقت آ گیا ہے.

ہر سیاسی پارٹی کے اپنے اپنے مددے

جب تمام سیاسی جماعتوں کے رہنما مرہ لمبے لمبے تقریر دے رہے ہیں تو یہ کہنا بھی ٹھیک نہیں ہوگا کہ یوپی انتخابات میں مددے کی باتیں ہو نہیں رہی ہیں . جس کی اپنی جو خاصیت، مہارت ہوتی ہے وہ ضرور چاہتا ہے کہ انتخابات میں اس کی خاصیت ہی اہم مددا بن جائے. سو یہ بات یوپی میں گزشتہ دس دنوں میں خوب دکھائی دی. اس طرح ایک سے بڑھ کر ایک انتخابی کھلاڑیوں نے اپنے مخالف کھلاڑی کی بات کا جواب دینے کی بجائے صرف اپنی بات ہی کہنا ٹھیک سمجھا. اکھلیش نے هرچد کوشش کر لی کہ ترقی مددا بن جائے اور وہ اتر پردیش میں پانچ سال میں اپنے کئے کاموں کو گنانے کا موقع پا لیں . انتخابات کے ٹائم آؤٹ کے بعد مودی اور امت شاہ دھاارمك بنیاد پر تفریق کی باتیں زیادہ کرنے لگے. مایاوتی سروجن ہتائے ‘کی اپنی پہلے سے طے باتوں کا اعادہ چلی آ رہی ہیں .

ادھر، کانگریس نے پہلے مان رکھا تھا کہ اس کے لئے یوپی کا انتخابات اگلے لوک سبھا انتخابات کے لئے اہم ہے اور اس نے اسی کے لحاظ سے قواعد کی. اگر چاروں اہم سیاسی کھلاڑیوں کی حکمت عملی کو ایک نظر میں دیکھیں تو یہ حقیقت بھی اہم ہے کہ انتخابی ریلیوں میں اپنے براہ راست سامعین اور ٹی وی پر دیکھ سن رہے بالواسطہ سامعین کے لئے کشش اور سنسنی خیز باتیں بھی کرنی پڑتی ہیں . اس کے لئے ایک دوسرے پر چھوناشك حملے کرنا روایتی ہتھیار کی طرح ہوتے ہیں . سو یہ ہتھیار خوب چلے. اسی عمل میں کئی سنسنی خیز باتیں ہونے لگیں . یوپی انتخابات کے اس كالبد پر دو اہم باتیں سنائی دیں . ایک مذہبی بنیاد پر امتیازی سلوک کی بات کو زور سے اچھالا جانا اور دوسری امیتابھ بچن ابنیت اشتہار میں گجرات کے گدھے کا اعلان. آئیے پہلے ان دونوں باتوں کی بات کر لیں .

گجرات کے گدھے کا پرچار

اس کا ذکر اکھلیش یادو نے کیا تھا. یہ بات انہوں نے اس سلسلے میں کہی کہ اتر پردیش میں طویل طویل شاہراہ اور ترقی کے دوسرے کام کی تشہیر ہوتا نہیں ہے اور امیتابھ بچن گجرات کے گدھے کا hottie منادی کرتے ہیں . یہاں اکھلیش سے یہ پوچھا جانا چاہئے تھا کہ وقت رہتے اپنے کاموں کا اتنے ہی کارگر طریقے سے تبلیغ کرنے سے انہیں کس نے روکا تھا. تبلیغ کے لئے وہ بھی خرچہ نکال لیتے. ویسے جو ہوا سو ہوا، آگے سے اکھلیش کو سمجھ لینا چاہئے کہ کام چاہے نصف رہ جائے لیکن اتنا بچا پیسہ بچا کر اس کی تبلیغ پر خرچ کرکے نصف کام کو بھی ڈیڑھ گنا بتایا جا سکتا ہے.

مذہبی امتیازی سلوک کا بھی چھڑا ذکر

امتیاز تو اپنے نام سے ہی جذباتی ہے. اسی لئے اس کی شدت کو کوئی نہیں انکار پاتا. امتیاز کے آگے لگے لفظ مذہبی کی وجہ سے اس بھاواتمكتا دسیوں گنی بڑھائی جا سکتی ہے. ظاہر ہے کہ یوپی کے الیکشن میں اس کا استعمال کرنے سے روک پانا بہت مشکل تھا. حیرت تو یہ ہونا چاہئے کہ ریاست میں تین راؤنڈ کے انتخابات تک یہ بھاوناتمكتا رکی کس طرح رہی؟ یہ سوال پیچیدہ ہے سو اس کا صحیح تجزیہ سیاست نفسیات کے بڑے عالم یا الیکشن انتظام کے ٹکنالوجسٹس ہی کر پائیں گے. لیکن یہ براہ راست تجربہ ہے کہ بھارتی انتخابی جمہوریت میں اس بھاواتمكتا کچھ بےسري کی طرف ہے. اس غور سے دیکھنے سمجھنے کے لئے عالم لوگ چاہیں تو 2014 کے امچناو اور گزشتہ بہار اسمبلی انتخابات کے حقائق کو دیکھ سکتے ہیں یعنی ہم آسانی سے اندازہ لگا سکتے ہیں کہ قبرستان بمقابلہ شمشان کی مددا آخر کچھ گھنٹوں کے آگے قبضے کیوں نہیں ؟

کون کہاں تک پہنچا اب تک

یوپی میں ووٹروں کا رجحان پتہ نہ چل پانا خود میں ایک مدعا بن گیا ہے، لیکن اس درمیان اتنا تو دکھائی دے ہی چکا ہے کہ ریاست میں دو تہائی ووٹر ووٹ ڈال رہے ہیں اور ہمیشہ کی طرح ووٹوں کی گنتی کے بعد کسی نہ کسی کی حکومت بنے گی ہی. رجحانات پتہ نہ چلنے کی بنیاد پر کوئی بھی فی الحال اندازہ یہی لگائے گا کہ ریاست میں تینوں اہم جماعتوں کے درمیان باریک فرق رہ سکتا ہے. اگر یہ صورت بنی تو کانگریس اور آر ایل ڈی بہت ہی زیادہ اہم ہو جائیں گے. چونکہ کانگریس پہلے ہی سماج وادی پارٹی کے ساتھ ہے سو سب سے زیادہ فائدہ میں اس ہی رہنے کے آثار کیوں نہیں بنیں گے؟ اور ویسے بھی جن سے زیادہ داؤ پر ہی نہ لگا ہو اس خسارے میں رہنے کا امکان بھی سب سے کم رہے گی ہی. بہر حال یوپی میں اب تک کے ماحول کا تو مختصر میں موضوعاتی تجزیہ کریں تو یہ کہا جا سکتا ہے کہ تین تین سو سیٹوں کا دعوی کر رہے تینوں اہم دعویداروں کو بس یہی دیکھنا ہے کہ ان کو نقصان کتنا کم ہوتا ہے .

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Back to top button
Close