خصوصی

نظام عدل کی شرمناک ناکامی کے 24سال

 ڈاکٹر عابد الرحمن
اس سال بابری مسجد کی مسماری کو 24 سال کا لمبا عرصہ بیت چکا ۔بابری مسجد دراصل مسلمانوں سے زیادہ نظام عدل کا مسئلہ ہے ۔اور اس میں نظام عدل شرمناک حد تک ناکام ہو چکا ہے۔بابری مسجد کی موجودگی میں یہ معاملہ ہندو مسلمانوں میں متنازعہ تھا تو بھی نظام عدل اسے قانون کے مطابق حل کرنے میں پوری طرح ناکام رہا ۔ اسی طرح بابری مسجد کی حفاظت بھی قانون اور نظام عدل کی ذمہ داری تھی یعنی بابری مسجد کی مسماری غیر قانونی تھی اور نظام عدل مسجد مسماری کی اس غیر قانونی کارروائی کو روکنے میں بھی بری طرح ناکام رہا ۔کچھ لوگوں نے اپنے سیاسی مفادات کے لئے اکثریتی عوام کے مذہبی جذبات بھڑ کا کر اور انہیں مسلم منافرت کا تڑ کا دے کر بابری مسجد کی مسماری پراکسایااور اس طرح قانون کی آنکھوں میں دھول جھونکی ۔خیر ان دونوں ناکامیوں کے بعد باری آتی ہے کہ اس غیر قانونی حرکت کر نے والوں کو ماخوز کرنا اور انہیں سزا تک پہنچا نا لیکن اب مسماری کے ربع صدی گزر جانے کے بعد بھی ایسا نہیں ہو سکا ۔ابھی یہ تو نہیں کہا جا سکتا کہ بابری مسجد کے ملزمین چھوڑ دئے گئے لیکن جس طرح سے یہ مقدمہ چل رہا ہے اس سے ایسا ضرور لگتا ہے کہ ان ملزمین کو مجرم ثابت کر نے کی نیت ہی نہیں ہے ۔اس کے اصل ذمہ دار اسے عوام کا بے ساختہ ردعمل قرار دے کر اس کی کسی پیشگی منصوبہ بندی سے انکار کر رہے ہیں ،وہ دراصل نظام عدل کو بیوقوف بنانے کی کوشش کر رہے ہیں اور اس میں کامیاب ہوتے بھی نظر آرہے ہیں ۔ حالانکہ بابری مسجد مسماری کے بعد چانچ سال کے عرصہ میں ہی یہ مقدمہ فرد جرم عائد (Charge frame) کر نے تک پہنچ گیا تھا جس میں لکھنؤ سیشن کورٹ کے جج عزت مآب جے پی سریواستو نے صاف طور پر کہا تھا کہ ’ رام جنم بھومی بابری مسجد کے متنازعہ ڈھانچے کی مسماری کے ضمن یہ بالکل واضح ہے کہ ملزمین کچھ حرکات و افعال میں جی بھر کے ملوث (indulge (تھے ۔1990 میں اڈاوانی نے سومناتھ سے ایودھیا تک رتھ یاترا نکالی تھی جس کے دوران وہ مذہبی فرقوں اور سیاسی پارٹیوں کے مختلف لیڈروں سے ملے تھے اور ان کا اہم مقصد بابری مسجد کے متنازعہ ڈھانچے کو گرانا ہی تھا ۔جہاں تک دفعہ 120 کے تحت مجرمانہ سازش رچنے کا سوال ہے تواس کے لئے ثابت شدہ شواہد(proved evidence (کی ضرورت نہیں کیونکہ سازش تو خفیہ طور پر ہی رچی جاتی ہے اور یہ سازش دوسرے ملزمین تک آہستہ آہستہ اور بتدریج پہنچی اس سازش کا اندازہ ان لیڈروں کی تقاریر اور افعال سے بخوبی ہوجا تا ہے۔مسجد مسماری کی مجرمانہ سازش 1990 سے ہی شروع ہو گئی تھی اور 6 دسمبر1992 کو اختتام پذیر ہو گئی تھی اڈوانی اور دیگر نے مختلف اوقات میں اور مختلف مقامات پرمتنازعہ ڈھانچے کو گرانے کی اسکیمیں تیار کی تھیں اسی لئے اس کیس میں ان تمام ملزمیں کے خلاف مجرمانہ سازش رچنے کے الزام کے تحت مقدمہ چلانے کے لئے بادی النظر میں ابتدائی بنیاد(prima facia base (موجود ہے۔‘اگر اس آرڈر کے مطابق چارج فریم ہوتے اور ملزمین پر مقدمہ چلایا جاتا تو ابھی تک کچھ نہ کچھ نتیجہ ضرور نکل گیا ہوتا لیکن ملک کے اقتدار پر قابض لوگ ایسا بالکل نہیں چاہتے تھے اور ایسا نہ ہو سکے انہوں نے اس کی تیاری پہلے ہی سے کر رکھی تھی۔اس کیس میں ابتداء ہی سے ایک ایسی قانونی خامی رکھی گئی جس نے اس کیس کو قانونی تکنیکی طور پر متنازعہ بنا دیا جس کی وجہ سے آج تک یہ مقدمہ جہاں کا تہاں پڑا ہوا ہے۔ہوا یہ کہ بابری مسجد کی مسماری کے بعد دو مختلف ایف آ ئی آر درج کئے گئے تھے ایک کرائم نمبر197ان لاکھوں کار سیوکوں کے خلاف تھا جو مسجد مسماری میں عملی طور پر شریک تھے اور دوسرا کرائم 198، اڈوانی اور مذکورہ دیگر افراد کے خلاف تھا جو 6 دسمبر 1992 کے دن اسٹیج پر موجود تھے اور تقاریر وغیرہ کر رہے تھے اس میں صرف اشتعال انگیزی اور فرقہ وارانہ منافرت پھیلانے کا الزام لگا یا گیا تھا اس میں مسجد مسماری کی سازش رچنے کا کوئی الزام نہیں تھا ۔ان ایف آئی آر میں سے ابتداء ہی سے کرائم 197 کی جانچ سی بی آئی کے سپرد کردی گئی تھی اور کرائم198کی جانچ ابتداءًً صوبائی کرائم برانچ و سی آئی ڈی نے کی لیکن بعد میں مزید تحقیق کے لئے اسے سی بی آئی کے سپرد کر دیا گیا ۔اس کیس کے مقدمات کے لئے للت پور پھر رائے بریلی اور پھر لکھنؤ میں خصوصی عدالتیں قائم کی گئیں۔ 5 اکتوبر 1993 کو سی بی آئی نے بابری مسجد مسماری سے متعلق تمام کیسوں کی ایک مشترک چارج شیٹ داخل کی اس چارج شیٹ میں تمام ملزمین پر مسجد گرانے کے لئے مجرمانہ سازش رچنے کا الزام لگایا گیا تھا۔اورلکھنؤ کی عدالت نے اسی چارج شیٹ کی بنیاد پر ملزمین کے خلاف چارج فریم کا آرڈر دیا تھا لیکن ملزمین میں سے کچھ لوگوں نے اس آرڈر کو الہٰ آباد ہائی کورٹ میں چیلنج کیا اور 12 فروری 2001 کو الہٰ آباد ہائی کورٹ کے عزت مآب جج جگدیش بھلا نے قانونی کارروائی کی کمی (lack of legal procedure (کی بنیاد پر کرائم 198 کو اس مشترک چارج شیٹ سے مستثنیٰ قرار دیا کیونکہ ریاستی سرکار نے ہائی کورٹ سے مشاورت کے بغیر ہی تمام کیسس لکھنؤ کی خصوصی عدالت میں ٹرانسفر کر نے کا نوٹیفیکیشن جاری کردیا تھا جبکہ قانونی طور پر ہائی کورٹ سے مشاورت ضروری تھی۔اس آرڈر میں جسٹس بھلا نے جہاں کرائم198 کو اس کیس سے خارج کیا وہیں یہ بھی کہا کہ قانونی کارروائی مکمل کرنے کے بعد یہ کیس اسی عدالت میں چلا یا جا سکتا ہے ۔ اس کے بعد سی بی آئی نے یو پی کی راج ناتھ سنگھ حکومت سے قانونی نوٹیفیکیشن جاری کرنے کی درخواست کی جو مسترد ہونا تھی سو ہوئی ۔ راجنا تھ سنگھ کے بعد مایاوتی اور ملائم سنگھ کی حکومتوں نے بھی وہ قانونی کام پورا نہ کیا۔ اس دوران لکھنؤ کی عدالت نے ہائی کورٹ کے مذکورہ فیصلے کے بعد 2001 میں ہی کرائم 198 کو اس چارج شیٹ سے الگ کردیا کہ وہ اس کامقدمہ کو چلانے کی مجاز نہیں لیکن اس عدالت نے کرائم197 سے بھی جس کا مقدمہ اس کے سامنے تھا ،مجرمانہ سازش کے الزامات ہٹا دئے ۔جس کے بعد سی بی آئی نے ٹرائیل کورٹ کے فیصلے کو الہٰ آباد ہائی کورٹ میں چیلنج کیا لیکن جب سپریم کورٹ نے جسٹس بھلا کے مذکورہ فیصلے کو چیلنج کرنے والی عرضیوں پر یہ فیصلہ کیا کہ کرائم198 رائے بریلی کی اسپیشل کورٹ میں علٰحیدہ چلا جائے تو مئی 2003 میں سی بی آئی نے رائے بریلی کورٹ میں کرائم 198 کی علٰٰٰٰحیدہ چارج شیٹ داخل کی اور تعجب خیز امر یہ کہ جس بات کے لئے اتنے پاپڑ بیلے گئے اسی بات کا چارج شیٹ میں ذکر تک نہیں تھا یعنی سی بی آئی نے نئی چارج شیٹ میں اڈوانی اینڈ کمپنی کے خلاف مسجد مسماری کے لئے مجرمانہ سازش رچنے کے الزام عائد نہیں کئے بلکہ پہلے سے موجود الزامات میں غیر قانونی اجتماع (دفعہ 149)اور فساد برپا کرنے(دفعہ 147) کے الزامات پر ہی مطمئن ہو گئی۔شاید اس لئے کہ اس وقت بے جے پی اقتدار میں تھی اوراڈوانی جی وزیر داخلہ اور نائب وزیر اعظم بھی تھے ۔اور شاید اسی لئے رائے بریلی اسپیشل کورٹ نے بھی چارج فریمنگ کے دوران ہی اڈوانی کو تمام الزامات سے بری کردیا تھا جبکہ بقیہ سات افراد کے خلاف چارج فریم کر کے مقدمہ چلانے کی شروعات کردی تھی۔اس فیصلے کے خلاف سی بی آئی نے3 مہینے کی مہلت کے دوران یا اس کے بعد ہائی کورٹ میں اپیل بھی نہیں کی تھی جس کو دیکھتے ہوئے دو افراد حاجی محبوب اور حاجی محمد صدیق نے اس کو ہائی کورٹ میں چیلنج کیا تھا2005میں جس پر ہائی کورٹ نے رائے بریلی کورٹ کے مذکورہ فیصلے کو غیر قانونی اور نا مناسب قرار دیتے ہوئے اڈوانی پر مقدمہ چلانے اور خود اڈوانی کو رائے بریلی کورٹ میں حاضر ہونے کا حکم دیا تھا۔ مقدمہ شروع تو ہوا لیکن اس چارج شیٹ کی بنا پر جس میں مجرمانہ سازش کے الزامات نہیں تھے ،مقدمہ ابھی بھی چل رہا ہے ۔رہی بات مجرمانہ سازش کی تو ان ملزمین کے خلاف مجرمانہ سازش کا معاملہ ابھی تک بھی عدلیہ میں طئے نہیں ہو پایا ہے ۔ اور یہ دراصل سی بی آئی کی مختلف و متضاد موقف کی وجہ سے ہی ہوا ۔سی بی آئی نے ہمیشہ بر سر اقتدار سیاسی پارٹیوں ہی کی ترجمانی کی ہے ۔کانگریس حکومتوں کے دور میں سی بی آئی نے اس کیس میں سازش کی دفعات لگائیں لیکن جیسے ہی بی جے اقتدار میں آئی اس نے سازش کے الزامات ہٹا دئے۔پھر اقتدار بدلا اور کانگریس بر سر اقتدار آئی تو اس نے ملک کے سیاسی حالات کے مطابق سازش سازش چلا نا شروع کردیا ۔اور اب مودی جی کی مکمل اکثریت والی حکومت آئی تو کیا ہوگا اس کا اندازہ لگانا مشکل نہیں ۔حالانکہ اب بھی عزت مآب سپریم کورٹ نے اڈوانی اینڈ کمنی کو نوٹس بھیجے ہیں اور یہ صرف مسلمانوں کی قانونی چارہ جوئی کی وجہ سے ہی ممکن ہو سکا ہے ۔ اور اس کیس میں آگے کا راستہ قانونی چارہ ہی ہے کہ حکومت چاہے کوئی وہ اس معاملہ میں مخلص نہیں اوراس معاملہ میں کوئی بھی حکومتی اقدام قابل اعتماد نہیں ۔
یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

عابد الرحمن

ڈاکٹر عابدالرحمان مشہور کالم نگار ہیں۔

متعلقہ

Back to top button
Close