2 جی فیصلے کے خلاف اپیل، حکومت کیوں نہ لے ونود رائے کی مدد؟

وراگ گپتا

2 جی معاملے میں فیصلہ دینے والے اوپی سینی کی ایمانداری کی وجہ سے سی بی آئی عدالت کا اسپیشل جج بنایا گیا تھا. ملک میں بدعنوانی کے مقدمات کے خلاف کارروائی کرنے والی سی بی آئی کس طرح بے ایمان ہو سکتی ہے؟ اتنے ایماندار نظام کے باوجود 1.76 لاکھ کروڑ کے گھوٹالے کے ملزمان کو سزا کیوں نہیں ہوئی؟ پیچیدہ معاملات میں حکومت سابق حکام سے قانونی مسائل پر تبادلہ خیال کرتی ہے. سی اے جی سے ریٹائرمنٹ کے بعد ونود رائے ابھی بینکاری بورڈ اور بی سی سی آئی انتظامی کمیٹی کے چیئرمین بن کر این پی اے اور کرکٹ میں بدعنوانی  کو دور کر رہے ہیں. 2 جی معاملے میں پیروی کے لئے يويو للت کی تقرری ہوئی تھی، جو اب سپریم کورٹ کے جج ہیں. تو پھر اس صورت میں مندرجہ ذیل نکات پر اپیل بنانے کی ذمہ داری ونود رائے کو کیوں نہیں دی جانی چاہئے، جس سے سی بی آئی اور ای ڈی کے افسران ہائی کورٹ کو اپیل میں سماعت کے دوران الجھن پیدا نہ کر سکیں.

سپریم کورٹ کے 5 سال پرانے فیصلے کو CBI جج نے نظر انداز کیوں کیا؟

2 جی معاملے میں بدعنوانی اور بے ضابطگیوں کے بعد سپریم کورٹ نے 122 کمپنیوں کے لائسنس منسوخ کرتے ہوئے ان پر بھاری جرمانہ بھی عائد کیا تھا. سپریم کورٹ نے کہا تھا کہ اسپیکٹرم جیسی قیمتی جائیداد کی نیلامی سے ملک کو زیادہ سے زیادہ آمدنی حاصل کرنا چاہئے. اس کے بعد ہوئی نیلامی سے حکومت نے 65000 کروڑ کی آمدنی کا دعوی کیا تھا تو پھر اب آمدنی کے نقصان نہیں ہونے کی بات کیوں کی جا رہی ہے؟ سپریم کورٹ کے فیصلے میں 2 جی لائسنس الاٹمنٹ میں متعدد بے ضابطگیوں کا تفصیل سے ذکر ہوا تھا. آئین کے آرٹیکل -141 کے مطابق سپریم کورٹ کا فیصلہ ملک کا قانون سمجھا جاتا ہے. سپریم کورٹ کی طرف سے بے ضابطگیوں کی تصدیق کے بعد ٹرائل کورٹ ان مسائل پر کس طرح سوال اٹھا سکتی ہے؟

راجا کی بے ضابطگی کی پی ایم او اور جے پی سی نے بھی تصدیق کی تھی

2 جی گھوٹالے پر مشترکہ پارلیمانی کمیٹی کی تشکیل ہوئی تھی، جس نے سی اے جی کے 57666 سے 1.76 لاکھ کروڑ کے خسارے کے اعداد و شمار پر اعتراض ظاہر کرنے کے باوجود راجا کی بے ضابطگیوں کا ذکر کیا تھا. راجا غلط تھے اس لیے انہیں اس وقت کے یو پی اے حکومت کے دور میں گرفتار کیا گیا. پارلیمنٹ میں 2 جی پر ہلہ مچانے والی پارٹیاں، پی اے سی کے ذریعے کاروائی کرکے 2 جی کو انجام تک کیوں نہیں پہنچاتيں؟

ہائی کورٹ میں ان نکات پر ہو سکتی ہے اپیل

سپریم کورٹ نے 5 سال پہلے ہی یہ مان لیا تھا کہ پالیسیوں میں من پسند تبدیلی، ‘پہلے آئیے، پہلے پائیے’ کی پالیسی اور آخری تاریخ میں رددوبدل کرکے راجا نے 2 جی لائسنس کی چہیتی کمپنیوں میں بندر بانٹ کیا تھا. کول بلاک گھوٹالے میں سابق سیکرٹری هرشچندر گپتا کا کوئی مجرمانہ کردار نہ ہونے کے باوجود ان جیسے ایماندار افسر کو دو سال کی سزا ملی. پھر 2 جی جیسے بڑے گھوٹالے میں سول کیس کی دہائی کیوں دی جا رہی ہے؟ سرکاری جائیداد کے ڈرون، غلط استعمال سے پیدا ہوئی بدعنوانی پر سپریم کورٹ کی مہر کے باوجود، انہیں سول کے دائرے میں محدود کرنا عدالتی عمل کا مذاق ہی تصور کیا جائے گا. سی بی آئی، ڈی، سرکاری افسروں اور سرکاری وکلاء کے رویے پر فیصلے کے پیراگراف 1739 سے 1814 تک میں جج نے سخت اور اشتعال انگیز تبصرے کیے ہیں. جج نے فیصلے میں کہا ہے کہ معاملے کو الجھانے کے لئے 80 ہزار کاغذوں کے بوجھ کا استعمال کیا گیا. اگر پیروی غلط تھی تو ہائی کورٹ کی اپیل میں وضاحت لاکر قصورواروں کو سزا کیوں نہ ملے؟

CBI ڈائریکٹر اور وزراء کی کارپوریٹ میٹنگ سے پھیلی بدعنوانی جرم کیوں نہیں؟

ٹیلی کام وزیر اے. راجا کی طرز پر سی بی آئی کے اس وقت کے ڈائریکٹر رنجیت سنہا نے کول بلاک اور 2 جی گھوٹالے سے وابستہ کمپنیوں کے مالکان کے ساتھ بہت سی میٹنگ کی تھیں. بعد میں آئے سی بی آئی کے ڈائریکٹر اے پی سنگھ پر بھی معین قریشی معاملے میں بدعنوانی کے الزام کے ساتھ،2 جی معاملے کی پیروی میں کوتاہی برتنے کا جج کے فیصلے میں ذکر ہے. اسٹاک اور ایف ڈی آئی قوانین سے کھلواڑ کر کھربوں کمانے والی ملزم کمپنیاں سرکاری بینکوں کا پیسہ ہضم کر گئیں، جس کو حل کرنے کی ذمہ داری ابھی ونود رائے کے کندھے پر ہے. جج سینی نے فیصلے میں پی ایم او اور دیگر آئی اے ایس افسروں کی 2 جی گھوٹالے میں کردار پر سوال کھڑے کئے ہیں. سابق آئی اے ایس ونود رائے اب 2 جی مقدمے کو انجام تک پہنچاكر آئی اے ایس برادری پر لگی کالکھ کو کم کر سکتے ہیں، اگر وہ اس معاملے کی اپیل میں اپنا کردار ادا کریں.

ہائی کورٹ میں ہارنے پر حکومت کو لگے گا ہزاروں کروڑ کا چونا

سی بی آئی کورٹ کے فیصلے کے بعد داغدار ٹیلی کمپنیوں کے حصص میں بھاری اضافے آیے ہیں. لوپ ٹیلی جیسی کچھ کمپنیوں نے ہرجانے کے لئے 2012 میں ٹيڈي سیٹ عدالت کا دروازہ کھٹکھٹایا تھا. ہائی کورٹ نے اگر سی بی آئی کورٹ کے فیصلے کو منسوخ نہیں کیا تو غیر ملکی کمپنیاں بیرون ملک میں معاملہ دائر کرکے حکومت کو بھاری ہرجانے کی مقدمےبازی میں الجھا سکتی ہیں.

ٹائم پترکا نے 2011 میں 2 جی کو سب سے بڑا کرپشن بتایا تھا

ٹائم پترکا میں 2011 میں 2 جی گھوٹالے کو اقتدار کے غلط استعمال کے 10 بڑے معاملات میں شمار کیا تھا. جیسکا لال اور آروشی قتل میں ملزمان کی رہائی اور اب 2 جی فیصلے کے بعد عدالتوں کی تصویر بہت ایل ایل بی کی طرح بننے سے بھارت میں آئینی بحران آسکتا ہے. کانگریس پر 12 لاکھ کروڑ کے گھوٹالے کے الزام لگا کر امت شاہ نے بی جے پی کے اقتدار کو اکھل بھارتی جیسا وسع کر دیا ہے. حکومت کو ونود رائے کی مدد سے 2 جی پر مؤثر اپیل کرنا ہی ہوگی. ورنہ اس سوال کا سامنا کرنا پڑے گا کہ گھوٹالوں پر عدالت کی کلین چٹ کے باوجود صرف الزامات کی بنیاد پر حکومت بنانے کا مینجمنٹ کیا آئین کے ساتھ کھلواڑ نہیں ہے؟

مترجم: محمد اسعد فلاحی



⋆ وراگ گپتا

وراگ گپتا

وراگ گپتا سپریم کورٹ ایڈووکیٹ اور آئینی امور کے ماہر ہیں۔

آپ اسے بھی پسند کر سکتے ہیں

ہم جنس پرستی پر فیصلے سے پارلیمنٹ کی بالادستی داؤ پر

کمیشن نے اپنی 172 ویں رپورٹ میں ہم جنس پرستی کو جرم سے آزاد کرنے کی سفارش کی تھی. اس رپورٹ کے مطابق، قانون میں تبدیلی کرنے پر گزشتہ 18 برسوں میں تمام حکومتیں ناکام رہیں. بہت سی دوسرے رپورٹوں میں ہم جنس پرستی سے ایڈز اور بچوں کے جنسی استحصال کے خطرات کی بات کہی گئی ہے. جس بنیاد پر کانگریس کی یو پی اے حکومت نے ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ میں ہم جنس پرستی کی عرضی کی مخالفت میں حلف نامہ دائر کیا تھا. لیکن سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد ششی تھرور نے 2015 میں آي پي سي کی دفعہ 377 کو منسوخ کرنے کے لئے پارلیمنٹ میں پرائیویٹ بل پیش کیا، جس کے حق میں 14 اور مخالفت میں 58 ووٹ پڑے. کانگریس حکومت کے سینئر وزیر کپل سبل نے ہم جنس پرستی کے حق میں سپریم کورٹ میں پختہ دلیلیں دیں، جن پر اب بڑی بنچ میں سماعت ہوگی. بی جے پی کے حامی بابا رام دیو اور آر ایس ایس ہم جنس پرستی کو خاندانی نظام کے خلاف سمجھتے ہیں. دوسری طرف بی جے پی کی طرف سے مقرر اٹارنی جنرل مکل روہتگی نے ہم جنس پرستی کے حکم کو غلط بتاتے ہوئے كيوریٹو درخواست کو ایپروو کر دیا.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے