آج کا کالم

آگیا اقتصادی خبروں کا جھٹكا مار بلیٹن

رويش کمار

سال 2017 میں بھی کام نہیں ملا، 2018 میں ملنے کی امید بہت کم ہے. یہ کہنا ہے CMIE کے مہیش ویاس کا، جو روزگار پر باقاعدگی سے تجزیہ پیش کرتے رہتے ہیں. ہم نے ان کے کئی مضامین کے ہندی ترجمہ کر پیش کیے ہے. CMIE مطلب Centre for monitoring Indian Economy، ان کے تجزیہ کی کافی ساکھ مانی جاتی ہے.

آج کے بزنس اسٹینڈرڈ میں مہیش ویاس نے لکھا ہے کہ ستمبر سے دسمبر 2017 کے روزگار کے متعلق سروے آ گئے ہیں. انہیں حتمی شکل دی جا رہی ہے لیکن جو ابتدائی نشانیاں ہیں اس سے یہی ثابت ہوتا ہے کہ روزگار میں صرف 0.5 فیصد اضافہ ہوا ہے. تعداد میں 20 لاکھ. اس کے اندر اندر جاکر دیکھنے پر شہری روزگار میں 2 فیصد اضافہ نظر آتا ہے اور دیہی روزگار میں 0.3 فیصد کی کمی نظر آتی ہے.

روزگار حاصل کرنے کے قابل عمر کی گنتی میں 15 سال اور اس سے زیادہ کے لیے رکھا جاتا ہے. 2017 میں اس عمر کے قریب ڈھائی کروڑ لوگ منسلک ہوئے مگر اس میں سے بہت ہی کم لیبر مارکیٹ میں گئے. اسی کو لیبر شرکت شرح کہتے ہیں. مہیش ویاس کہتے ہیں کہ بھارت میں لیبر شرکت شرح گلوبل اوسط سے بہت کم ہے. گلوبل اوسط 63 ہے، بھارت میں 2017 میں 44 فیصد پر آ گیا جو 2016 میں 47 فیصد پر تھا. مہیش ویاس کہتے ہیں کہ قاعدے سے 1 کروڑ 10 لاکھ لوگوں کو روزگار کے لیے مارکیٹ میں آنا چاہیے تھا، مگر ڈیڑھ کروڑ لوگ اس مارکیٹ سے نکل گئے. اس طرح لیبر شرکت کی شرح 46.6 فیصد سے گھٹ کر 43.9 فیصد ہو گئی.

لیبر شرکت کی شرح میں کمی آنے کا مطلب ہے کہ لوگوں کو نوکری یا کام ملنے کی بہت کم امید ہے. لیبر شرکت میں آرہی گراواٹ کو تین مختلف اداروں نے اپنے سروے میں درج کیا ہے. لیبر بیورو، نیشنل سیمپل سروے سنگھٹن اور سي ایم آي اي کے سروے میں یہ بات سامنے آئی ہے. ناامیدی کی وجہ سے بہت سے بے روزگار کام کی تلاش بند کر دیتے ہیں. پھر بھی 2017 میں 2 کروڑ لوگ کام تلاش کر رہے تھے. ان میں سے 80 لاکھ شہروں میں تھے. کام تلاش کرنے والوں میں 34 فیصد شہری بھارت کے ہوتے ہیں مگر شہری بھارت میں 41 فیصد لوگ بے روزگار ہیں.

روزگار کم ہونے کی وجہ سے ہی سرمایہ کاری بہت کم ہو رہی ہے. نئی سرمایہ کاری کی پیشکش گر کر 8 ٹریلین ڈالر پر آ گئی ہے. دو سال پہلے 15 خبر ڈالر ہوا کرتی تھی. اگر یہی حال رہا تو 2018 میں بھی توقع نہیں کی جا سکتی ہے. 2018 کے پہلے ہفتے میں بے روزگاری کی شرح 5.7 فیصد تھی. گزشتہ 12 ماہ میں یہ سب سے زیادہ ہے.

مودی حکومت نے ہر سال دو کروڑ روزگار دینے کا وعدہ کیا تھا. حکومت کے پاس ہر طرح کے اعداد و شمار ہیں، مگر روزگار کے اعداد و شمار کبھی وہ ٹویٹ نہیں کرتے ہیں. وزیر اور ممبر پارلیمنٹ بیمار کی طرح روز کسی نہ کسی کی جینتی، برسی ٹویٹ کرتے ہیں. اس کی جگہ ان کی وزارت میں موجود مواقعوں کو ٹویٹ کرنے لگیں تو کتنا اچھا ہوتا. نوجوانوں کو جھانسے میں رکھنے کے لئے عظیم لوگوں کو یاد کرنے کی نوٹنکی چل رہی ہے.

یہ درست ہے کہ بی جے پی ہر الیکشن جیت لیتی ہے. اس کے لئے روزگار پر مضمون لکھنے والوں کو گالی نہ دیں، بلکہ ووٹ دینے والوں کا شکریہ ادا کریں.

اسٹاک مارکیٹ میں سرمایہ کاری کرنے والوں کے لئے اچھی خبر ہے. ابھی ایک سال سے کم وقت میں فروخت کرنے سے ٹیکس دینا ہوتا ہے. اس کے بعد ٹیکس فری مال ہو جاتا ہے. حکومت غور کر رہی ہے کہ اب اسٹاک کو خریدنے کے تین سال کے اندر فروخت پر بھی ٹیکس لیا جائے تاکہ آپ کو زیادہ سے زیادہ ٹیکس دینے کا موقع ملے. ابھی تک حکومت ایک سال کے اندر اندر فروخت پر ہی ٹیکس لے کر آپ کو ٹیکس دینے کے فخر سے محروم کر رہی تھی.

بزنس سٹینڈرڈ کی خبر کے مطابق، وزارت خزانہ اس پر غور کر رہا ہے. ٹیكس بھكت اینكروں کے لئے یہ عظیم موقع ہے کہ وہ مطالبہ کریں کہ یہ ایک سال یا تین سال کیا ہوتا ہے، جب بھی آپ کمائیں، ٹیکس دینا چاہئے. اس سے بھکتوں کو بھی ملک کے لئے کچھ کرنے کا موقع ملے گا. میں کچھ بھی ٹیکس فری نہیں چاہتا، یہاں تک کہ اگر حکومت ٹینشن کے علاوہ کچھ نہ دے. اسکول نہ دے، اچھا کالج نہ دے اور ہسپتال نہ دے. پوچھنے پر جیل-ویل بھی بھیجے.

گجرات انتخابات گزرنے کے فورا بعد لوگ مہنگی پٹرول اور ڈیزل خریدنے کے قابل ہو گئے ہیں. دہلی میں پیٹرول 70 روپے اور ڈیزل 60 روپے کے پار جانے لگا ہے. یہ اچھی خبر ہے. مایوس نہ ہوں، پھر کوئی انتخابات آ ہی رہا ہو گا. تب بیلنس کر لیجیے گا.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close