آج کا کالم

امریکہ میں نفرت کے تشدد میں گئی ایک ہندوستانی کی جان

پچھلی بار آپ نے کب نفرت اور تشدد کی باتوں کی مخالفت کی تھی. یہ سوال آپ ہندوستان میں بیٹھ کر پوچھيے اور بھارت سے امریکہ گئے ہندوستانیوں سے پوچھيے. مجھے نہیں معلوم کہ امریکہ میں جب سیاہ فام کو گولی ماری جاتی ہے، تو اس تشدد کے خلاف اترنے والے تمام طرح کے امریکی شہریوں میں بھارتی کتنے ہوتے ہیں. کچھ نہ کچھ تو ہوتے ہوں گے لیکن امریکہ میں رہ رہے بھارتی کمیونٹی کی ایسی کوئی شناخت ہے کہ گاندھی کے ملک سے آئے یہ لوگ نسلی اور مذہبی تشدد کا ہر حال میں مخالفت کرتے ہیں. کیا وہاں رہنے والے لوگ یہاں ہونے والی تشدد کی سیاست کے خلاف سڑک پر اترتے ہیں. کہیں ایسا تو نہیں کہ ہندوستان کو لے کر ان کی خاموشی، امریکہ میں ایک بھارتی کے قتل کو لے کر بھی چپ کر رہی ہے. جب وہاں نہیں بولے تو یہاں کس منہ سے بولوگے. امریکہ میں ریاست، زبان، مذہب، ذات کے حساب سے ہندوستانیوں نے تنظیموں کی دکان کھول رکھی ہے. امید ہے کہ سب مل کر نفرت کے سپر مال میں تبدیل کرنے جا رہے ماحول کی مخالفت کر رہے ہوں گے.

امریکہ کے كےسس کے اولیتھ شہر میں شرين کو ایک امریکی شہری نے گولی مار دی. نوجوان بیٹے کو اس کی ماں نے کسی حادثے میں کھویا نہیں ہے بلکہ نفرت اور تشدد کی مسلسل پھیلتے شعلوں کے سامنے ہماری آپ سب کی خاموشی نے مارا ہے. ہم امریکہ میں ہو رہی ایسی چیزوں کے خلاف لاچار اور چپ نظر آتے ہیں، ہم بھارت میں ہو رہے ایسی چیزوں کے خلاف لاچار اور چپ نظر آتے ہیں. والد سائنسی رہے ہیں. کسی کو مسلمان تو کسی کو سیاہ فام سمجھ کر نشاندہی ہو رہی ہے. ہم سب ڈرائینگ روم میں بیٹھ کر ایسی باتوں کو ہوا دے رہے ہیں. طرح طرح کی تصورات پال رہے ہیں. اور اب ہمیں سمجھ نہیں آ رہا ہے کہ جب اسی نفرت کی آندھی نے شری نواس کی جان لے لی تو کیا کریں.

وزیر خارجہ نے امریکی سفارت خانے سے رابطہ کیا ہے اور واقعہ کی مذمت کی ہے. بھارتی سفارت خانے كےسس کے واقعہ پر نظر رکھ رہا ہے اور مدد کی کوشش کر رہا ہے. سشما سوراج اس معاملے میں ویسے بھی کبھی پیچھے نہیں رہتی ہیں. سوال یہ ہے کہ  کیا بھارتی کمیونٹی وہاں اور یہاں نفرت کی سیاست کی مخالفت کر رہا ہے، کیا وہ ان خطرات کو سمجھ رہا ہے، جس کا شکار وہ خود ہو سکتا ہے. شری نواس اور آلوک كیسس کے ایک ميخانے میں اپنی شام گزار رہے تھے. ٹی وی پر باسکٹ بال دیکھ رہے تھے. تبھی نشے میں دھت امریکی شہری آدم پريٹن نے سمجھا کہ یہ لوگ مشرق وسطی ممالک کے ہیں. یعنی عرب ہو سکتے ہیں، یعنی مسلمان ہو سکتے ہیں یعنی رنگ سے وہ امریکی نہیں ہیں تو یہ ضرور غیر قانونی طریقے سے امریکہ میں نوکری کر رہے ہیں. یہ آدمی خود ہی شری نواس اور آلوک سے الجھ گیا کہ میرے ملک سے باہر جاؤ. یہ آواز آپ کو بھارت میں روز سنائی دیتی ہے مگر آپ خاموش رہتے ہیں. پريٹن وہاں کے حساب سے تو نو فوجی ہے. حب الوطنی کا سرٹیفکیٹ تو اسی کے پاس ہو گا کیونکہ وہ فوجی ہے. اسے نہ تو تاریخ معلوم، نہ مذہب معلوم، نہ شہریت بس نفرت نے اتنا سنكا دیا تھا کہ جنوبی بھارت کے سرینواس کو ملک چھوڑ کر جانے کے لئے کہنے لگا. یہی زبان ٹی وی چینلز پر فوج سے ریٹائر ہوئے لوگ روز بولتے ہیں. پريٹن بار سے گیا اور لوٹ کر آیا. براہ راست گولی مار دی. شری نواس کی موت ہو گئی اور اس کا دوست آلوک زخمی ہو گیا.

ایک ہندو کو مسلمان سمجھ کر مار دیا. اگر آپ اس بات سے سمجھ سکتے ہیں تو ایسے ہی بات سمجھیں. رنگ اور هليے سے ہم کہاں اتنے الگ الگ نظر آتے ہیں. اسی لئے پوچھا کہ ہندوستان سے لے کر امریکہ میں جب کوئی نفرت کی بات کرتا ہے تو کیا آپ کی مخالفت کرتے ہیں. مگر ركيے. 24 سال کے ایان گرلٹ کے بغیر یہ کہانی کس طرح مکمل ہو جائے گا. اس لڑکے نے پريٹن کی باتوں کی مخالفت کی. اسے لگا کہ پريٹن کی بندوق میں گولی نہیں ہے، وہ روکنے کے لئے آگے بڑھا. پريٹن نے سنک میں اپنے ہی شہری کو نہیں بخشا. کیونکہ وہ بحری ہے، حب الوطنی کا سرٹیفکیٹ لے کر گھوم رہا ہوگا. سینے اور ہاتھ میں گولی مار دی. ایئن نے کہا کہ وہ صرف انسانیت کے ناطے بچانے گیا تھا. اس کے دوست اس کے علاج کے اخراجات کے لئے چندہ مانگ رہے ہیں. امریکہ میں بھارتی سفارت خانے کو نہ صرف سرانیواسن اور آلوک کے خاندان کی مدد کرنی چاہئے بلکہ ایئن گرلٹ کے علاج کا خرچہ بھی اٹھانا چاہئے. یہ وہ نوجوان ہے جو تاریخ میں اسی بات کے لئے درج ہوگا کہ جب طاقتور لوگ وزیر اعظم اور صدر بن کر اشاروں اشاروں میں یا صاف صاف نفرت کی باتیں پھیلا رہے تھے تو وہ اپنی جان خطرے میں ڈال کر ایک بھارتی کی جان بچانے گیا تھا.

ٹوئٹر چلانے والوں کا سیاسی گروہ اگر اس تشدد پر نہیں بول سکتا ہے تو کم سے کم ایان گرلٹ کے لئے تو بول ہی سکتا ہے. ایک ایان گرلاٹ بھارت میں بھی ہے. یہیں دہلی میں. رامجس کالج میں تشدد ہوئی تو طالب علموں کو بچانے کے لئے گئے. اتنا مارا گیا کہ ان کی پسلیاں میں گہری چوٹ آئی ہے. پروفیسر پیسیفک چکرورتی نے بھی پرواہ نہیں کی، صرف وہ تشدد میں گھرے کسی طالب علم کو بچانے نکل گئے. بتاتے ہیں کہ مفلر سے ان کا گلا گھونٹا گیا. اب وہ گھر واپس آئے ہیں. مگر ڈاکٹروں نے کہا ہے کہ پرشانت کو دو ہفتے کے لئے آرام کروں گا.

ایان اور پیسیفک کی تقدیر ایک سی ہے. ایسے لوگ ہمیشہ اکیلے آگے بڑھتے ہیں اور اکیلے رہ جاتے ہیں. باقی لوگ ڈرائینگ روم میں بیٹھ کر نفرت کی سیاست پر ایسے چپ رہتے ہیں جیسے ان کا کام صرف ووٹ دینا ہے. اسی لئے ہم نہ تو شری نواسن کے لئے بول پاتے ہیں نہ پیسیفک کے لئے. کھل کر ایک مذہب کو نشانہ بنایا جا رہا ہے. نفرت یہاں تک آ گئی ہے کہ مشہور باكسر محمد علی کے بیٹے جب امریکہ کے کسی ایئر پورٹ پر جمیکا سے پہنچے تو ان سے پوچھا گیا کہ تمہارا مذہب کیا ہے. افسر احمق ہے۔ جس کا نام محمد علی ہے، ظاہر ہے مسلمان ہی ہوگا، مگر اس کا مقصد ایک ہی تھا، نام اور مذہب اور رنگ دیکھ کر کسی کو ذلیل کرنا.

جنوری کا مہینہ تھا. ٹرمپ حلف لے چکے تھے. انتخابی مہم میں ہی عورتوں کو لے کر اناپ شناپ باتیں کی جا رہی تھیں. دوسرے ملکوں سے آکر امریکہ میں کام کرنے والوں کو باہر نکالنے کی بات کی جا رہی ہے. مسلمانوں کے خلاف نفرت پھیلائی جا رہی ہے. اس کے خلاف امریکہ بھر سے عورتیں لڑکیاں اور مرد واشنگٹن پہنچے اور واشنگٹن کو ویسے پوسٹروں بینرز سے بھر دیا جن پر لکھا تھا کہ ہمیں اس طرح کی باتیں برداشت نہیں ہیں. امریکہ کے لوگوں نے اتنا تو کیا کہ حلف برداری کے فورا بعد اس جتا دیا لیکن جب الیکشن چل رہا تھا تب ان لوگوں نے نفرت کی باتوں کو سنجیدگی سے نہیں لیا. جب بڑے لیڈر کسی کمیونٹی کو ایسے ٹارگٹ کریں گے تو ان کے کارکن اور حامی ایسی خواہشات کا شکار ہوں گے ہی. انہیں بھی لگے گا کہ امریکہ کی اقتصادی تنگی کے لئے دوسرے ملک سے آیا کوئی انجینئر مجرم ہے. اس لیے وہ رنگ کی بنیاد پر اس انجینئر کو مسلمان سمجھتا ہے اور گالی مار دیتا ہے.

آپ نفرت کی اس سیاست کا فارمولا سمجھنا ہوگا. یہ صرف مسلمان کے خلاف نہیں ہے. یہ ان کے خلاف بھی ہے جن کا رنگ سفید امریکیوں جیسا نہیں ہے، ان کے خلاف بھی ہے جو دوسرے ملک سے آکر وہاں نوکری کرتے ہیں. زہر اتنا مل گیا ہے کہ ان سب سے زیادہ ایک ہی شناخت بنی ہے. کون بیرونی ہے. کون اندرونی ہے. جس میں بیرونی ہے وہ مسلمان ہونے کی وجہ سے بھی مارا جا سکتا ہے، آئی ٹی انجینئر کی وجہ سے بھی اور حیدرآبادی ہوتے ہوئے بھی سعودی عرب کا سمجھ کر مارا جا سکتا ہے. آپ کو اس سیاست کا فارمولا بھارت میں بھی تلاش کر سکتے ہیں. آسانی سے مل جائے گا. لیکن پوری دنیا ایسی نہیں ہے.

18 فروری، 2017 کے دن اسپین کے تمام شہروں کی سڑکوں کو لاکھوں لوگوں نے بھر دیا. بارسلونا، میڈرڈ سب جگہ لوگ اس بات کو لے کر گھروں سے نکلے کہ ان کی حکومت شام، افغانستان، عراق سے آئے پناہ گزینوں کو بسانے میں تاخیر کیوں کر رہی ہے. 17000 لوگوں کو بسانے کا وعدہ تھا، ابھی تک 1100 پناہ گزینوں کو ہی کیوں بسایا گیا. ان لاکھوں لوگوں کو اس بات سے کوئی خوف نہیں ہے کہ یہ مسلمان ہوں گے، یہ دوسرے ملک سے ہوں گے. مگر جنگ اور تشدد کے شکار ان پناہ گزینوں کے جینے اور بسنے کے حق میں باہر نکلے. کیا آپ ایسے کسی کارکردگی کا تصور ہندوستان میں کر سکتے ہیں.

شری نواسن کا دوست آلوک مداساني زخمی ہے. ان کے والد جگن موہن ریڈی نے کہا ہے کہ امریکہ میں جس طرح نفرت اور اندھ قوم پرستی کا ماحول ہے، اس سے یہ ملک اب ہندوستانیوں کے لئے محفوظ نہیں لگتا ہے. انہوں نے کہا کہ یہ پاگلپن اچھا نہیں ہے کیونکہ ہمارے بہت سے بچے وہاں رہتے ہیں. یہ نفرت ٹھیک نہیں ہے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی 

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close