آج کا کالم

انصاف کی چوکھٹ پر اتنا ظلم کیوں؟

رويش کمار

میڈیا کی فیکٹری میں ہر روز ایک بڑی کہانی پیدا ہوتی ہے. اب تو میڈیا کے لئے ہر روز کہانیاں پیدا بھی کی جاتی ہیں، جیسے آپ کو پانی میں جہاز لے آئے یا اگلے دن مندر کی سیڑھیاں چڑھتے ہوئے درشن کے لئے چلے گئے. میڈیا پہلے اپنے صحافیوں کو ٹریننگ دیتا ہے کہ آج کی کہانی ہی بڑی کہانی ہوتی ہے اور پھر اس کے ساتھ آپ کو ٹریننگ ملتی چلی جاتی ہے کہ جو آج ہے وہی کہانی ہے. اگلے دن جب یہ کہانی میڈیا سے دھکا دے کر باہر کی جاتی ہے تو کیا ہم صحافیوں یا پھر آپ حاضرین میں سے کسی کو پتہ بھی رہتا ہے کہ یہ کہانیاں کس طرح اپنا سفر کرتی ہیں. کون ان کہانیوں کو منزل تک لے جاتا ہے. کون سی کہانیاں جھوٹی ثابت ہو جاتی ہیں اور کس کہانی کا کبھی کوئی آخر ہی نہیں ہوتا. اسے کوئی آپ کی پیٹھ پر ڈھو رہا ہوتا ہے.

میڈیا میں آنے کے بعد بھی اور میڈیا سے باہر ہو جانے کے بعد بھی کہانیوں کا انجام انصاف کی منزل تک پہنچے گا، اس کی کوئی گارنٹی نہیں ہے. انصاف حاصل کرنے سے پہلے کی جو سیڑھیاں ہیں، انہیں بہت پیسے والا ہی چڑھ سکتا ہے. غریب بھی چڑھ جاتا ہے مگر وہ ٹوٹ جاتا ہے. سسٹم کے ستم میں ہم آپ کو ایک گھر دکھانا چاہتے ہیں. ہم چاہتے ہیں کہ آپ تصور کریں کہ اس گھر میں آپ رہ رہے ہوتے تو کیا انصاف کے لئے لڑنے کی ہمت جٹا پاتے.

ٹِن کے اس گھر میں رہتے ہوئے کیا آپ تین سال تک اپنے بیٹے، بھائی، یا والد کی موت کا انصاف حاصل کرنے کی جنگ لڑ سکتے ہیں. ہم جس بھارت کا جشن ٹی وی پر مناتے ہیں، پانی میں اس جہاز کو اتار سینہ پھلاتے ہیں جو دوسری عالمی جنگ سے دنیا بھر میں پانی میں اتر رہا ہے، کیا اس بھارت کے اس مکان میں رہتے ہوئے آپ معاشرے اور انصاف کے نظام سے لڑتے ہوئے انصاف حاصل کر سکتے ہیں. کیا مکان کی یہ حالت آپ کو ہمت دیتی ہے، آپ کو دلاسہ دے رہی ہے کہ لڑیں گے مگر انصاف لے کر رہیں گے. اگر آپ میں انصاف کے لئے لڑنے کی ہمت آتی ہے تو آپ واقعی کمال کے شخص ہیں. آپ ان چند لوگوں میں ہیں جو اپنا سب گنوا دیتے ہیں مگر انصاف کی لڑائی نہیں چھوڑتے ہیں. لیکن ہمارا نظام کیا اس لڑائی کو آسان بناتا ہے، جتنی آسانی سے سابرمتی میں پانی کا جہاز اتر گیا اور اڑ گیا. کیا اتنی آسانی یہ نظام پرواز کرنے دیتا ہے.

سسٹم کے ستم میں آج ہم ٹِن کے اس مکان میں رہنے والے ایک والد راجو آگے کی بات کریں گے. مہاراشٹر کا ایک ضلع ہے احمدنگر، اس ضلع کے جامكھیڑ تعلقہ کے ایک گاؤں ہے كھرڈا. اسی گاؤں کے رہنے والے ہیں راجو آگے. آئیے آپ کو كھرڈا گاؤں ہی لے چلتے ہیں. گاؤں کے باہر آپ کو قصبے کا احساس کراے گا. چہل پہل کے مطابق گاؤں سے زیادہ لگتا ہے. 15 ہزار کی آبادی والا یہ بڑا گاؤں ہے. اسی گاؤں کے ایک سرے پر ہے راجو آگے کا یہ مکان جو ٹِن سے بنا ہے. اس چھت پر ڈش ایٹنا ہے. گھر کے اندر ٹی وی ہے مگر دیوار پر امبیڈکر ہیں، بدھ خدا ہیں اور دونوں کے ساتھ ایک لڑکے کی تصویر ہے جس کا نام ہے نتن آگے. نتن آگے کا تین سال پہلے قتل کر دیا گیا تھا، جس کے انصاف کے لئے راجو آگے لڑائی لڑ رہے ہیں.

راجو آگے اور نتن آگے کی ذات کا ذکر بہت ضروری ہے کیونکہ ذات کی وجہ سے ہی نتن آگے کا قتل ہوا تھا. 15 ہزار کی آبادی میں دلتوں کی آبادی محض 1 ہزار ہے. نتن اس وقت الیون کا طالب علم تھا. وجہ آگے بتاؤں گا پہلے آپ اس گھر اور خاندان کو مناسب طریقے سے دیکھ لیجئے جو نظام سے لڑ رہا ہے. نتن کے والد راجو آگے مزدوری کرتے ہیں. پتھر توڑنے کا کام کرتے ہیں. مہینے میں تین سے چار ہزار کما لیتے ہیں. قرض لے کر بیٹے کا مقدمہ لڑ رہے ہیں. ڈھائی سے تین لاکھ خرچ کر چکے ہیں.

مهار ذات کے ہیں راجو آگے. 17 سال کا تھا نتن آگے جب 28 اپریل 2014 کو اس کا قتل ہو گیا. والد کا الزام ہے کہ اونچی ذات کی ایک لڑکی سے نتن بات کرتا تھا. لڑکی دسویں کلاس میں پڑھتی تھی. اعلی ذات کے لوگوں کو یہ بات اچھی نہیں لگی. نتن کو گاؤں کے درمیان پیٹ پیٹ کر مار ڈالا گیا. ایک 17 سال کے لڑکے کی زندگی اس لیے ختم کر دی گئی کیونکہ وہ دلت تھا. نتن کا قتل کس نے کیا یہ ثابت نہیں ہوا مگر نتن کا قتل ہوا ہے، اسے ثابت کرنے کی ضرورت نہیں ہے. بتانا بھول گیا، ہم راجستھان کے راجسمند میں ایک مزدور افراضل کے مار دیے جانے، جلا دیے جانے اور ویڈیو بنانے کے واقعہ پر خاموش ہیں. نتن کے ساتھ بھی ایسا ہی کچھ ہوا، لوگوں نے اسے پیٹ پیٹ کر مار دیا اور پھر درخت پر لٹکا دیا. درخت سے لٹکا دیا. وسودھیو كٹبكم والا بھارت، عدم تشدد والا بھارت، وہاں ایک دلت لڑكے کو مار کر درخت پر لٹکا دیا جاتا ہے، کیونکہ وہایک اعلی ذات کی لڑکی سے بات کرتا تھا. درخت پر لٹکانے سے پہلے اسے مارنے کے لئے گاؤں کے بہت سے لوگ جمع ہوتے ہیں.

پولیس نے نتن کے قتل کے معاملے میں 13 لوگوں کو ملزم بنایا تھا. 13 میں سے ایک ملزم کی جیل میں ہی موت ہو گئی. 12 میں سے 3 ملزم نابالغ تھے. 28 اپریل 2014 کو نتن کا قتل ہوا تھا. 23 نومبر 2017 کو احمد نگر کے ایک کورٹ نے ثبوتوں کی عدم موجودگی میں تمام ملزمان کو رہا کر دیا. والد کا الزام ہے کہ قتل سے پہلے نیو انگلش ہائی اسکول كھرڈا میں نتن کے ساتھ کچھ لڑکوں کی مارپیٹ ہوئی. وہاں پر استاد اور پروفیسر بھی موجود تھے. ان سب نے باہر جاکر جھگڑا کرنے کو کہا جیسا کہ ہر جگہ ہوتا ہے.

راجو کے مطابق اسکول کے باہر لے کر جاکر نتن کو مبینہ طور پر ننگا کر دیا گیا، مارا پیٹا گیا اور گرم سريا سے بدن پر وار کیا گیا. پھر پھانسی پر لٹکا دیا گیا. راجو مراٹهی بولتے ہیں. مزدور ہیں ٹی وی کا قاعدہ معلوم نہیں، ترجمان کی طرح هیڈلان کے انداز میں بھی نہیں بول پاتے ہیں، لہذا آپ سے درخواست ہے کہ راجو کی بات کو آرام سے سنیے، مراٹهی بالکل اچھی اور سادہ زبان ہے، احتیاط سے سننے پر سمجھ آ جاتی ہے.

یہاں یہ بھی احتیاط ضروری ہے کہ کئی بار میڈیا کو بھی مینیپلیٹ کر خبریں چھپوائی جاتی ہیں اور جو ملزم نہیں ہوتے انہیں بھی بنا دیا جاتا ہے. ہمارے ملک میں فرضی مقدمہ دائر کرنے، کسی کو جھوٹے کیس میں پھنسا دینا عام بات ہے. یہ احتیاط بے حد ضروری ہے اسی کہانی کے لئے نہیں بلکہ تمام کہانی کے لئے. پھر بھی 2014 میں اس واقعہ کو میڈیا نے کافی کور کیا تھا. اس وقت ملک میں لوک سبھا کا الیکشن ہو رہا تھا، ظاہر ہے گہما گہمی کسی اور بات کو لے کر تھی پھر بھی سمراٹ، جنپرواس، لوكمتھن. پن نگری، پونے مرر، نیو انڈین ایکسپریس، ہندو، اکنامک ٹائمز، مہاراشٹر ٹائمز، لوک ستا نے اس واقعہ کو شائع کیا تھا. کچھ اخبار قومی ہیں کچھ مقامی اور کچھ مہاراشٹر کے بڑے اخبار ہیں.

6 دسمبر کو نتن آگے کے والد راجو آگے بی جے پی راجیہ سبھا ممبر پارلیمنٹ امر سابلے کے ساتھ وزیر اعلی دیویندر پھڑويس سے ملے تھے. وزیر اعلی نے راجو آگے کو یقین دلایا کہ انہیں انصاف ملے گا. یہ واقعہ سیاسی طور پر بھی حساس تھا، ہم اس بات کو بھی بتانا چاہتے ہیں تاکہ آپ کو دھیان رہے کہ رہنماؤں کے مظلوم خاندانوں سے ملنے،انھیں یقین دہانی کرانے، تصویر كھيچانے اور مظاہروں سے کیا حاصل ہوتا ہے. کیا ان کا کچھ اثر ہوتا ہے.

دونگت گوپی ناتھ منڈے بھی اس متاثرہ خاندان سے ملے تھے. واقعہ کے بعد رام داس اٹھاولے سب سے پہلے متاثرہ خاندان سے ملے اور تسلی دی. رام داس اٹھاولے آج کل مرکزی حکومت میں وزیر ہیں. مہاراشٹر کے تاتكالين وزیر داخلہ آر آر پاٹل بھی متاثرہ خاندان سے ملے تھے. انہوں نے کہا تھا کہ یہ معاملہ فاسٹ ٹریک کورٹ میں چلایا جائے گا اور خاص سرکاری وکیل کی تقرری کی جایی گی۔ اس  وقت مخالف پارٹی کے رہنما اور بی جے پی کے رادھاكرش وکھے پاٹل بھی ملے تھے. احمد نگر کے تاتكالين پالک وزیر مدھوکر پچڑ بھی ملے تھے. پرکاش امبیڈکر، پرکاش گجابھمے جیسے لیڈروں نے بھی متاثرہ خاندان سے ملاقات کی تھی. کانگریس لیڈر رمیش باگوے نے بھی متاثرہ خاندان سے ملاقات کی تھی. شیوسینا کے رہنما نیلم گونهے بھی متاثرہ خاندان ملے تھے. مہاراشٹر پردیش کانگریس کے تاتكالين صدر ماكراو ٹھاکرے بھی ملنے گئے تھے.

اتنی ملاقاتوں سے خبر تو بن جاتی ہے. علاقے میں لوگ جان جاتے ہیں کہ اتنے لیڈر آ رہے ہیں تو انصاف مل رہا ہے. ان سب کو ارون جادھو نزدیک سے دیکھ رہے تھے. ارون جادھو وکیل بھی ہیں اور سماجی کارکن ہیں. ارون راجو مزید مدد بھی کر رہے ہیں. ہم نے ارون سے پوچھا کہ وکیل ہوکر بھی اور ایک متاثرہ خاندان کے ساتھ ہو کر لڑتے ہوئے انہوں نے سسٹم کو کس طرح دیکھا.

تین سال سے نتن آگے کے قتل کے معاملے میں مجرم ثابت نہیں ہوتا ہے. جو گرگرفتار ہوتے ہیں، ایک ایک کر چھوٹ جاتے ہیں. اس پورے معاملے میں 26 گواہ تھے. اس میں وہ بھی تھے جنہوں نے نتن کے گھر جا کر مار پیٹ کی اطلاع دی تھی. اسکول کے استاد اور پروفیسر بھی گواہ تھے. عدالت میں تمام اپنے بیان سے مکر گئے. راجو آگے نے بتایا کہ کچھ لوگوں نے گواہی کے لئے ان سے بھی پیسے مانگے تھے. ہم نے ان الزامات کی تصدیق نہیں کی ہے. سال میں جو پتھر توڑ 18 ہزار بھی نہیں کماتا ہوگا کیا وہ پیسے کے دم پر انصاف حاصل کر سکتا ہے.

ایک بار پھر اس گھر کو دیکھئے. کیا اس گھر میں رہنے والا، پتھر توڑنے والا ایک مزدور گواہوں کو پیسے دے سکتا ہے؟ کیا وہ مقدمہ لڑ سکتا ہے؟ راجو نے بتایا کہ جب 23 نومبر کو فیصلہ آیا تب انہیں معلومات بھی نہیں تھی کہ فیصلہ آنے والا ہے. راجو کے رشتہ داروں نے بتایا کہ ملزم رہا ہو گئے ہیں. عدالت کا فیصلہ آ گیا ہے. اگر راجو آگے کا یہ الزام درست ہے تو فکر کی بات ہے. کاش ہم تصدیق کر پاتے لیکن آپ سوچئے کہ غریب کو انصاف ایسے ملے گا. کیا آپ اپنے بارے میں سوچئے کہ کہیں کسی دن نظام کی گاڑی کے نیچے آ گئے تو کیا آپ اتنی آسانی سے اور بہت جلد انصاف لے لیں گے. عدالتی فیصلوں کی بنیاد انکوائری نظام پر منحصر ہے. آخر ہماری پولیس کی تحقیقات کے لیے پیشہ ورانہ طریقے سے منزل پر کیوں نہیں لے جا پاتی ہے. اسی اندھیرے میں کچھ نوجوان وکیل بھی مل جاتے ہیں جو اپنے اخراجات پر مدد کرنے کی کوشش کرنے لگتے ہیں. شاید یہی کچھ لوگ ہیں جن کے مل جانے سے بھروسے کی عمر تھوڑی لمبی ہو جاتی ہے. ممبئی کے وکیل نتن سنکیت جب راجو آگے نے اپنا قصہ سنایا تو رو بیٹھے.

راجو آگے اپریل 2014 سے کورٹ، پولیس اور لیڈروں کے چکر لگا رہے ہیں. اس دوران ان کا کام بھی چھوٹ جاتا ہے. کیا راجو کے بیٹے کے قاتلوں کا تو پتہ نہیں چلا کیونکہ وہ غریب ہیں، کمزور ہیں. اگر وہ کمزور ہیں تو پھر آخری عوام کی خدمت کرنے والے لیڈر لوگ کہاں ہیں. اورنگ آباد کے کورٹ نے اپنے فیصلے میں لکھا ہے کہ ریکارڈ دکھاتے ہیں کہ ابھییوجن پکش نتن اور پوجا کے درمیان محبت تھی. اس بات کو لے صرف زبانی گواہی سے دلائل پیش کر پایا، کوئی ٹھوس ثبوت پیش نہیں کر سکا. ابھییوجن لڑکی جس کا نام پوجا ہے اس ایگزامن کرنے یعنی پوچھ گچھ کرنے میں ناکام رہا. پوجا ملزم نمبر ایک سچن کی بہن ہے. نتن کے قتل کا مقصد ثابت کرنے کے لئے ابھییوجن ٹھوس ثبوت پیش کرنے میں ناکام رہا.

عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا ہے کہ ریکارڈ پر جو ثبوت آئے ہیں وہ نتن کی موت اور ملزمان کے سلسلے کو ثابت کرنے کے لئے کافی نہیں ہیں. یہ ثبوت نہیں ثابت کرتے ہیں کہ نتن کے قتل میں ملزم شامل تھے. اس لئے یہ ملزم بری کئے جاتے ہیں. ظاہر ہے ثبوتوں کی بنیاد پر ہی سزا ہو گی. کیا ثبوتوں کو جمع کرنے میں پیشہ ورانہ انداز اپنائے گئے، پولیس نے بغیر دباؤ کے کام کیا. یہ سب سوال تو ہیں ہی. اگر ان ملزمان کے خلاف پولیس ثبوت نہیں جٹا سکی تو نتن کا قتل کیسے ہوا. اس کا جواب ابھی تک نہیں ملا ہے. مہاراشٹر کے وزیر اعلی نے کہا ہے کہ وہ اس معاملے میں اپیل فائل کروائیں گے. عدالتوں میں یہ معاملہ تو چلتا رہے گا لیکن کیا پولیس کی سطح پر کوئی جانچ ہوگی، کچھ ایسا ہوگا جس میں پتھر توڑنے والے مزودر راجو آگے کو بھروسہ ہو کہ اس کے بیٹے کے قاتلوں کو سزا ملے گی.

 اس کہانی میں دوسرا فریق نہیں ہے، لیکن انصاف کی جنگ کے دوران جو سفر کیا اس کا کوئی دوسرا پہلو ہو سکتا ہے. کیا اس بات کا دوسرا پہلو ہونا چاہئے کہ بیٹے کو سرعام مار کر لٹکا دیا اور تین سال تک کوئی پکڑا ہی نہیں گیا. ہمارے ساتھی سوهت مشر کی اس کہانی پر نظر نہ پڑتی اگر یہ لوگ 6 دسمبر کو ممبئی کے شیواجی پارک میں یہ ڈرامہ منڈلی نتن آگے کے قاتلوں کو پکڑوانے کے لئے کونا ڈرامہ نہ کر رہی ہوتی. سوهت مصر اس دن بابا صاحب امبیڈكر کے مهاپری نروان کے موقع پر آزاد میدان گئے تھے. وہاں بہت سے تنظیم جما ہو کر انہیں یاد کرتے ہیں. اسی اندھیرے میں کچھ آرٹسٹ مل جاتے ہیں، کچھ نوجوان مل جاتے ہیں جو بے آواز کو آواز دے دیتے ہیں. یہ نوجوان یہ بھی دکھا رہے ہیں کہ انصاف کے ترازو پر ذات پات کے نظام کا پلڑا بھاری رہتا ہے. اکثر ہم یا آپ ان نوجوانوں کو کسی اور کیسی نگاہ سے دیکھتے ہیں. صاف صاف کہیں تو انہیں فالتو سمجھتے ہیں، پر سوچئے یہی وہ لڑکے ہیں جو ایک مزدور کے والد کے بیٹے کے لئے ڈرامہ بھی کھیل رہے ہیں.

سماج صرف نیوز چینل کے اینکر اور سیاسی ٹیم لیڈر سے نہیں چلتا ہے. یہی لوگ چلا رہے ہوتے ہیں. یہی نہیں سات دسمبر کو ممبئی میں راجو آگے کے ساتھ قانون کی پڑھائی پڑھنے والے کچھ لوگ بھی ساتھ آئے. ایک پریس کانفرنس بھی کی. مجھے پتہ ہے آپ کی توجہ فوری طور پر ان بہترین نیت والے ان ساہسک نوجوانوں پر شفٹ ہو جائے گی. ہونا بھی چاہئے، مگر آپ اپنی نظر اس نظام پر ٹکائے رکھیے اور پوچھئے کہ کیا کسی قصبے کے تھانے میں بیٹھی پولیس، بھیڑ اور سیاسی جماعتوں کے دباؤ کو ٹالتے ہوئے کسی غریب کو انصاف دلا سکتی ہے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close