آج کا کالم

اکھلیش یادو اور راہل گاندھی کی دوستی سے اٹھتے سوالات

کانگریس اور سماج وادی پارٹی کے درمیان چناو پورو سمجھوتہ حالیہ دہائیوں  میں  سب سے زیادہ شاندار اور اہم سیاسی اتحاد میں  ایک ہے. حیرت انگیز اس لئے کہ سماج وادی پارٹی کا عروج اور سیاسی اہمیت کانگریس مخالفت پر ہی ٹکا ہوا تھا، اور اہم اس لئے کہ پہلی بار کانگریس لیڈر راہل گاندھی اور اتر پردیش کے وزیر اعلی اکھلیش یادو نے عوامی طور پر اتحاد سے زیادہ دوستی کا مظاہرہ کیا ہے. دو مخالف رہے سیاسی جماعتوں  کے درمیان دوستی کا یہ کارکردگی کتنا سیاسی ہے یا کتنا حقیقی ہے؟ یہ تو آنے والا وقت ہی بتائے گا. لیکن اس اتحاد کے بعد اتر پردیش کے دو اہم سیاستدانوں، ملائم سنگھ یادو اور مایاوتی کے مستقبل کی راہ کے بارے میں  کچھ اشارے واضح ہونے لگے ہیں.

اتحاد کے بعد ہوئی پہلی مشترکہ پریس بریفنگ میں  راہل نے جس طرح سے مایاوتی کے بارے میں  اپنے خیالات رکھے وہ واضح اشارہ کرتے ہیں  کہ کانگریس کا اعلی قیادت سماج وادی پارٹی کے ساتھ ساتھ بہوجن سماج پارٹی سے بھی كريبيا بنائے رکھنے کا حق ہے. اور یہ تب ہے جب اکھلیش یادو نے نہ صرف مایاوتی کے لئے آپ واقف خطاب ‘پھوپھی’ استعمال کرنے سے انکار کر دیا، بلکہ یہاں  تک کہا کہ سماج وادی پارٹی کانگریس اتحاد میں  مایاوتی جیسے ‘بڑے’ رہنما اور ان کے ‘ہاتھی’ (الیکشن نشان) کے لئے کوئی جگہ نہیں  ہے.

راہل نے مایاوتی کی تعریف شاید یہ جانتے ہوئی تھی کہ اس کا مایاوتی کی عوامی رد عمل پر کوئی اثر نہیں  نظر آئے گا، اور ہوا بھی یہی. مایاوتی نے سماج وادی پارٹی کانگریس اتحاد کو یہ کہہ کر کنارے کیا کہ یہ ‘دل ملے نہ ملے، ہاتھ ملاتے رہیے’ جیسا واقعہ ہے.

دوسری طرف ملائم نے اس اتحاد کی افادیت کو سرے سے مسترد کرتے ہوئے کہا کہ اکھلیش کے اکیلے انتخابات لڑنے پر بھی نتائج اچھا ہوتا، اور وہ خود کانگریس کے ساتھ کسی بھی طرح کے اتحاد کے خلاف ہیں. انھوں  نے یہ بھی دعوی کیا کہ وہ اس اتحاد کے خلاف پرچار کریں  گے.

یہیں  سے ان دونوں  رہنماؤں  (نرم اور مایاوتی) کی سیاسی سوچ میں  آئی تبدیلی کے بارے میں  اشارہ ملنے شروع ہوتے ہیں. مایاوتی نے اپنا سماجی اور سیاسی مقام ایسا بنا رکھا ہے کہ کانگریس ان کی پسند ناپسند کا خیال کیے بغیر ان سے تعلق اچھے بنائے رکھنے کے لئے اپنے اتحاد ساتھی (ایس پی) کے خیالات کے برعکس جانے کو تیار ہے. یہ کانگریس کو اس صورت حال سے نمٹنے کی تیاری نظر آتی ہے جب انتخابی نتائج کے بعد کے ریاضی میں  ایس پی کانگریس کو کچھ اضافی مدد کی ضرورت ہو.

دوسری جانب ہیں  نرم، جو اپنے نظریات کے برعکس بنے اتحاد کا نہ صرف مخالفت کر رہے ہیں  بلکہ اپنے بیٹے کے خلاف تبلیغ کرنے کے لئے بھی تیار ہو رہے ہیں. سال 2012 میں  اکھلیش یادو کو وزیر اعلی بنانے کے بعد سے ہی ملائم نہ صرف اکھلیش حکومت کی تنقید کرتے رہے بلکہ عوامی طور پر ان لوگوں  کا ساتھ دیتے نظر آئے جنہیں  اکھلیش ناپسند کرتے ہیں.  اب، جب اکھلیش ان طاقتوں  کے ساتھ مل کر اقتدار پر بنے رہنے کی کوشش کر رہے ہیں  جنہیں  ملائم پسند نہیں  کرتے، تب بھی ملائم اپوزیشن کے طور ہی پیش آ رہے ہیں.

آج سے تقریبا 25 سال پہلے ملائم نے سماج وادی پارٹی کی بنیاد رکھی تھی، اور اتنے ہی سال پہلے مایاوتی دلت طبقے کے نمائندے کے طور پر ریاست کی سیاست میں  ابھر کر آئی تھیں . تب سے اب تک، جہاں  دونوں  نے کئی بار پردیش کی حکومت کی قیادت کی. جہاں  ملائم نے چاہے، ناپسندیدہ اپنی پارٹی کی قیادت اپنے بیٹے کے ہاتھ میں  دے دیا ہے، جو ایک دوسرے دل (کانگریس) کو ساتھ لے کر اقتدار میں  بنے رہنے کی کوشش میں  ہے، وہیں  مایاوتی اب بھی اپنے ہی دم پر اپنی پارٹی چلا رہی ہیں  اور اقتدار میں  واپس آنے کی تياري کر رہی ہیں.

ایک طرف ہے اتحاد کے ساتھی کانگریس کی طرف سے مایاوتی کی حمایت، اور دوسری طرف ہے نرم طرف اتحاد کی مخالفت-کیا ان میں  کوئی تعلق ہے؟ کیا ملائم اپنے ساتھ ہوئے رویے سے اتنا پریشان اور مایوس ہیں  کہ نئی نسل کی طرف سے کئے جا رہے سیاسی تجربات کے نتائج آنے سے پہلے ہی انہیں  خارج کر رہے ہیں ؟ کیا ایسا کرکے وہ اپنے سیاسی زندگی سے ریٹائرمنٹ لینے کی طرف بڑھ رہے ہیں ؟ یا اس میں  میں  بھی کوئی ایسی سوچ ہے جس کی گہرائی صرف ملائم کو ہی معلوم ہے؟ کیا کانگریس کی طرف سے مایاوتی کے فی نرم رخ انہیں  خدشہ کر رہا ہے؟ کیا وہ ایس پی کانگریس اتحاد کی انتخابی کامیابی کے فی سشكت ہیں ؟ اور کیا ملائم کا تازہ رخ ان کا پیشگی کوشش ہے کہ ایسی ناکامی کا ٹھیکرا کانگریس کے سر پھوڑا جائے؟ اتر پردیش کی سیاست میں  ایسے ٹیڑھی سوال اکثر اٹھتے رہتے ہیں  اور ان کا جواب کبھی بھی براہ راست نہیں  ہوتا.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


ٹیگ
مزید دکھائیں

متعلقہ

Back to top button
Close