آج کا کالم

ایس سی، ایس ٹی قانون پر جھگڑا: حکومت اور سپریم کورٹ غلط کیوں؟

وراگ گپتا

ایس سی،  ایس ٹی ایکٹ کے تحت سپریم کورٹ کی طرف سے جاری ہدایات سے پلہ جھاڑنے کی کوشش میں وزیر قانون روی شنکر پرساد نے عجیب بیان دیا کہ مرکزی حکومت اس معاملے میں رسمی فریق ہی نہیں تھی. سچ یہ ہے کہ سپریم کورٹ نے اٹارنی جنرل کو اس معاملے پر نوٹس جاری کیا، جس کے بعد ایڈیشنل سولی سٹر جنرل (اے ایس جي) نے معاملے پر مرکزی حکومت کی جانب سے اپنا موقف رکھا. مرکزی حکومت کی جانب سے معاملے میں بحث کی وجہ سے ہی سپریم کورٹ کے 20 مارچ کے فیصلے میں اے ایس جي کا نام شامل ہے، پھر تکنیکی پینچ سے مرکزی حکومت اس معاملے سے کیوں بچنا چاہ رہی ہے. فیصلے میں متعدد قانونی بے ضابطگیوں پر مرکزی حکومت کی طرف سے اگر اس اہم مقدمے میں سپریم کورٹ کو توجہ دلائی جاتی تو اس ریویو کی نوبت ہی کیوں آتی؟

کریمنل معاملہ میں پی آئی ایل جیسا فیصلہ كيوں؟

سپریم کورٹ کے سامنے مہاراشٹر میں ایس سی، ایس ٹی قانون کے غلط استعمال کا معاملہ تھا. اس صورت میں جرم کی بنیاد پر مجرم ملزمان کو بری کرنے کے ساتھ سپریم کورٹ نے قانون میں تبدیلی کی سفارش کی اور حکم عدولی پر قانون شکنی کے تحت کاروائی کی بات بھی کہی. آئین کے آرٹیکل -142 کے تحت سپریم کورٹ کو ایسے احکامات جاری کرنے کے لئے خصوصی طاقتیں ملی ہیں اور اسی لیے سپریم کورٹ کا فیصلہ ملک کا قانون سمجھا جاتا ہے. یہ پی آئی ایل کا معاملہ نہیں تھا اور ذاتی کریمنل کیس میں سپریم کورٹ کی طرف سے جاری ہدایات عدالتی نظم و ضبط کی تصدیق بھی نہیں ہے. عملی صورت حال یہ ہے کہ جب تک کہ پارلیمنٹ کی طرف سے قانون نہیں بنایا جائے تب تک ہدایات کی قانونی اہمیت نہیں ہے تو پھر سپریم کورٹ کی توہین کا سوال کیوں؟

جہیز کے سبب ظلم و ستم پر سپریم کورٹ کی بڑی بنچ کا مقف

 ملک میں متعدد قوانین کے غلط استعمال کی وجہ سے ہو رہی بے وجہ گرفتاریوں پر سبھی کی فکر جائز ہے. ایس سی، ایس ٹی قانون پر فیصلہ دینے والی بینچ نے ہی جہیز کے سبب ظلم و ستم کے معاملے پر بے وجہ گرفتاریاں روکنے کے لئے جولائی 2017 میں ہدایات جاری کی تھیں. اس فیصلے پر خواتین تنظیموں کے احتجاج کے بعد چیف جسٹس نے پورے معاملے پر غور کے لئے تین ارکان کی بنچ قائم کر دی. پرانی ہدایات پر جب تین ججوں کی بڑی بنچ کی طرف سے  دوبارہ غور کیا جا رہا ہے، تب حالیہ ہدایات کو دو ججوں کی بنچ کی طرف سے جاری کرنا کس طرح صحیح ہو سکتا ہے؟

پارلیمانی کاموں میں عدالتی مداخلت كيوں؟

پارلیمنٹ میں کوئی کام کاج نہیں ہو رہا، اس کے باوجود آئین کے مطابق پارلیمنٹ کی بالادستی برقرار ہے. جہیز معاملے میں جاری ہدایات کو چیف جسٹس کی بنچ نے اکتوبر 2017 میں نئے سرے سے غور و خوض کے لئے قبول کرتے ہوئے یہ کہا کہ اس طرح کے معاملات پر قانون اور قانون بنانے کا حق پارلیمنٹ کو ہے. اکتوبر میں جاری اس حکم کو اگر مرکزی حکومت کی طرف سے سپریم کورٹ کے طرف سے  مقدمے پر سماعت کے دوران اگر پیش کیا جاتا تو شاید ایس سی ایس ٹی قانون پر ملک گیر تشدد اور نقصان کی نوبت ہی نہیں آتی.

سپریم کورٹ نے ریاستوں کا موقف کیوں نہیں سنا؟

مرکزی حکومت کی طرف سے دائر ریویو پر سماعت کے دوران سپریم کورٹ نے کہا کہ انہوں نے ایس سی، ایس ٹی قانون میں کوئی تبدیلی نہیں کی. سپریم کورٹ کے مطابق گرفتاری کے بارے  میں سی آر پی سی کی دفعہ -41 میں قانون ہے، جسے کورٹ نے اپنی ہدایات میں دہرایا ہے. سپریم کورٹ نے اٹارنی جنرل سے پوچھا کہ اگر کوئی ان کے خلاف جھوٹی شکایت کرے تو کیا ہوگا اور پھر وہ کس طرح کام کر پائیں گے؟ سپریم کورٹ کی منشا اور سارے دلائل درست ہیں. آئین کے نظام کے مطابق سی آر پی سی قانون میں تمام ریاستوں نے اپنے مطابق حذف اور ترمیم بھی کی ہیں. تمام ریاستوں کو متاثر کردینے والے فیصلے کو سنانے سے پہلے کیا سپریم کورٹ کو ریاستوں کا موقف نہیں سننا چاہیے تھا؟

تمام گرفتاریوں کے غلط استعمال پر روک کیوں نہیں؟

 ایف آئی آر درج کرنے کے بعد پولیس کی طرف سے گرفتاری کا برطانوی رواج آزاد ہندوستان میں بدستور جاری ہے. ریویو پر سماعت کے دوران سپریم کورٹ نے اٹارنی جنرل سے پوچھا کہ کس قانون کے تحت مقدمے درج ہوتے ہی فوری گرفتاری کا قانون ہے؟ گرفتاری کے بعد عدالتوں کی طرف سے بیل نہیں ملنے سے لاکھوں بے گناہ لوگ جیلوں میں بند ہیں، جن میں سے زیادہ تر ایس سی،ایس ٹی، غریب اور کمزور طبقے کے لوگ ہیں. سپریم کورٹ نے ریویو پر سماعت کے دوران یہ درست کہا کہ جھوٹی شکایت پر کوئی بے گناہ جیل نہیں جانا چاہئے. ایس سی، ایس ٹی قانون کے ساتھ تمام معاملات پر سپریم کورٹ کی طرف سے اگر یہ ہدایات جاری کی جاتیں تو شاید ملک گیر تشدد کو روکا جا سکتا تھا.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

وراگ گپتا

وراگ گپتا سپریم کورٹ ایڈووکیٹ اور آئینی امور کے ماہر ہیں۔

متعلقہ

Back to top button
Close