آج کا کالم

این ایس جی میں ہندوستان کو ‘جھٹکا ٹائپ’ تجزیہ سے جھٹکا

رویش کمار

ہندوستان کو نيوكلیئر سپلائر گروپ میں داخلہ نہیں ملا. یہ ایک حقیقت ہے لیکن اسے لے کر جس طرح کے رد عمل پڑھنے کو مل رہے ہیں ان میں حقیقت سے زیادہ جذبات ہیں. میں نے پرائم ٹائم میں کہا تھا کہ سب کی نظر نتیجے پر ہے مگر نتیجے سے پہلے ہندوستان کی اس کوشش سے جو کھلبلی مچی ہے کچھ قصے وہاں بھی پڑے ہوں گے. ہندوستان نے ان کے رد عمل سے کیا حاصل کیا اور کیا گنوايا اس کا متوازن تجزیہ ہونا چاہئے. کیا ہندوستان کو کوشش نہیں کرنی چاہیے تھی؟ پھر ہندوستان کو کیا کرنا چاہیے تھا؟

یہ بھی صحیح نہیں ہو گا کہ اس واقعہ کے بعد آ رہی ہر رائے کو مودی مخالف کے فریم میں ہی دیکھا جائے. ناقدین کی کچھ باتیں مکمل طور سے لا یعنی لگتی ہیں. لیکن ان کی باتوں میں بھی ایک قسم کے تفوق کا غرور جھلکتا ہے کہ مودی جیسا نپٹ گنوار خارجہ پالیسی کیا جانے. خارجہ پالیسی تو چھری چمچ سے آم کھاتے ہوئے اور شراب پیتے ہوئے ہی ہو سکتی ہے. آپ چاہے جتنا بھی اسے سنگین بتانے کی کوشش کریں، ہم جیسے دنیا کو سمجھنے کی کوشش کر رہے نئے تعلیم یافتہ صحافی خارجہ پالیسیوں کے تماشے کو دیکھ لیتے ہیں. ایسا نہیں ہے کہ خارجہ پالیسی ہمیشہ باریک اور سنگین تضادات کے ذریعہ ہی سمجھی جاتی ہے. خوب نوٹنکی اور چركوٹئي ہوتی ہے. خارجہ پالیسی کے لئے کی جانے والی ہر کوشش کو کامیابی اور ناکامی کے فریم میں دیکھا جانا ٹھیک نہیں ہو گا، یہ بات لٹين دہلی کے ان صحافیوں اور ماہرین کو سمجھانے کی ضرورت نہیں ہے جو خود کو سفیر سمجھنے کا بھرم پالے رہتے ہیں.

نيوكلیئر سپلائر گروپ کے لئے ہندوستان کی کوشش ‘ہندوستان کو لگا جھٹکا’ ٹائپ ٹی وی چینلز کی نظر سے دیکھیں گے تو آپ یہی سمجھ پائیں گے کہ سپریم کورٹ میں مودی کی ضمانت منسوخ ہوئی ہے. جب ہندوستان کی دعویداری کی خبریں آ رہی تھیں تب ٹی وی چینل اس کو عدالتی فیصلے کی طرح فلیش کر رہے تھے. ایک لائن میں فلیش کے حدود سمجھتا ہوں مگر اس ناکامی کو جھٹکے کے فریم میں اتنا جوش و خروش سے کیوں دیکھا گیا؟ کیا سب کے پاس ہر طرح کی معلومات تھی؟

ہندوستان نے اپنی کوشش سے کچھ تو حرکت پیدا کی جسے لے کر چین کو کھل کر اپنا پتا سامنے رکھنا پڑا. امریکہ ہندوستان کے لئے اپیل کر کے خاموش ہو گیا. اب ہمیں معلوم نہیں کہ عوامی اپیل کے بعد اس نے ہندوستان کا پتا کاٹنے کی کوشش کی یا واقعی ایمانداری سے فعال تھا. کچھ ملک عوامی حمایت کا وعدہ کرکے پلٹ گئے. یہ ان پر بھی تبصرہ ہے یا صرف ہندوستان کی کوششوں پر. ہمارا غصہ سوئيزرلینڈ پر کیوں نہیں ہے، ہندوستان پر کیوں ہے؟ ٹھیک ہے چین نے کئی ممالک کو اپنے ساتھ  لے کر ہندوستان کو گھیر دیا مگر کیا اس سے امریکہ کی انا کو ٹھیس نہیں پہنچی ہوگی؟ نيوكلیئر سپلائر گروپ کی اس سیاست کے ابھی سارے سوالات آؤٹ نہیں ہوئے ہیں! کیا ہندوستان نے ان دو ہفتوں میں پاکستان اور چین کو بے چین نہیں کر دیا تھا؟ دونوں ملک ہانپنے نہیں لگے تھے؟

یقینی طور پر ہندوستان کی یہ ناکامی ہے پر اس کے ساتھ ساتھ یہ میڈیا میں خارجہ پالیسی کو لے کر رچے جا رہے مصنوعی امنگوں کی ناکامی بھی ہے. وزارت خارجہ اور حکومت کو اس سے بچنا چاہئے. خاص کر ہندی میڈیا سے بہتر بات چیت ضروری ہے کیونکہ ایسا لگتا ہے کہ مودی اپنی خارجہ پالیسی کو ‘صدیوں کے تسلسل’ کے فریم سے نکال کر 2014 کے بعد کی پالیسی کے طور پر پیش کرنا چاہتے ہیں. اگر ایسا ہے تو نہ صرف وزیر اعظم بلکہ سشما سوراج کو بھی ہندی کے صحافیوں کے ساتھ خارجہ پالیسی پر بحث کرنی چاہئے. شاید کرتے بھی ہوں گے. کرتے ہوتے تو ہندی چینل ان کے خارجہ دوروں کو میلہ گھومنے جیسا پیش نہیں کرتے. بہتر ہے وزیر اعظم، وزارت خارجہ کور کرنے والے صحافیوں کو ہی جہاز میں لے کر جائیں. اتنا عدم تحفظ اور رازداریت ٹھیک نہیں ہے. خرچ بچانے جیسی دلیل چلتی نہیں ہے. سب دیکھ رہے ہیں کہ حکومت اشتہارات  پر کتنا خرچ کر رہی ہے. ایسا کرکے وہ خارجہ پالیسی کے معاملے میں خود ہی ناخواندگی کی حوصلہ افزائی کر رہے ہیں. صحیح ہے کہ ان کے نہ لے جانے کے بعد بھی صحافی الگ سے جا رہے ہیں. نتیجہ وہ خارجہ پالیسی کے لحاظ سے پیش کم کرتے ہیں، فروخت ہو رہی ہے لندن میں جلیبی اور برلن میں بھی لٹي کی دھوم ٹائپ کہانی ناظرین پر مسلط کرتے ہیں. اچھا ہے میں ٹی وی نہیں دیکھتا.

حکومت میڈیا میں چل رہے ان کے مباحثوں کو آئینہ سمجھ  کر خود بھی اپنا چہرہ دیکھنے لگی جس کے پیچھے اسی کے لوگ کسی جشن کی سابقہ تیاری میں لگے تھے. وزیر خارجہ سشما سوراج وزارتی نوعیت کے مناسب حال میڈیا سے دور رہتی ہیں لیکن سوشل میڈیا کے ذریعہ اس کمی کی تلافی بھی کرتی ہیں. سوشل میڈیا پر ان کی سرگرمی کے انسانی پہلو تو ہیں مگر ان کے کام کی اصل نوعیت صرف وہی نہیں ہے کہ کسی بحران میں پھنسے شخص کی فوری طور پر مدد کر دی. سشما سوراج کا یہ شاندار پہلو ہے مگر وہ غیر ملکی پالیسی کو لے کر سوشل میڈیا میں بات چیت نہیں کرتیں. وزیر اعظم خارجہ پالیسی کی نمائندگی کرتے ہیں لیکن اس کا مطلب یہ نہیں کہ وزیر خارجہ کو خارجہ پالیسی سے مطلب ہی نہیں ہوتا.

اس کا بہت بڑا نقصان ہوتا ہے. وزیر خارجہ کی پالیسیوں سے دوری کی وجہ سے وزارت خارجہ کو کور کرنے والی میڈیا کہیں اور دیکھ کر قیاس آرائیاں کرنے لگتی ہے. وہ جس وزارت کو جانتی ہے اسے چھوڑ پی ایم او اور قومی سلامتی کے مشیر کے ذریعہ خارجہ پالیسی کی حیویت کو سمجھنے کی کوشش کرنے لگتی ہے. حکومت بھی اس کام کی خوب حوصلہ افزائی کرتی ہے. ایجنڈے اور پروپیگنڈے کا فرق مٹنے سے نقصان حکومت کو ہی ہوتا ہے.

نيوكلیئر سپلائر گروپ کی ناکامی حکومت کی طرف سے بات چیت کی ناکامی بھی ہے. حکومت کی جانب سے ہی پیغام دیا گیا کہ کچھ بڑا ہونے والا ہے. کریڈٹ لینے کا لالچ غالب ہو گیا. اس سے وزیر خارجہ بھی نہیں بچ سکیں. میڈیا میں بیان دینے لگیں کہ وہ بہت سے ممالک سے خود رابطے میں ہیں. ‘میں رابطے میں ہوں’ کا ارادہ کیا یہ بھی تھا کہ فیصلے کے کریڈٹ کا ٹھیک سے بٹوارا ہونا چاہئے. حالانکہ میری اس پر کوئی رائے نہیں ہے کیونکہ عام طور پر یہی لگتا ہے کہ سشما سوراج وزیر خارجہ کے طور پر تن تنہا وزیر ہیں. كل ملاكر حکومت نے اتنا ہنگامہ تو کھڑا نہیں کیا جتنا میڈیا نے پہلے کیا. میڈیا اب اپنے رچے ہنگامے کو حکومت کا بتا رہی ہے رام جانے سچ کیا ہے؟

سفارت کاری بے ایمانی بھی ہوتی ہے. اس کی برائی ہمیشہ باریک اور خفیہ نہیں ہوتی. کئی بار گاؤں کے پٹيداروں کی طرح کھلے عام بھی نظر آتی ہے. چین اور پاکستان کیا باریک بینی اور سفارت کاری کے آداب سے عوامی بیان دے رہے تھے؟ کیا یہ کسی کو نہیں دکھا؟ کیا اس سے کوئی مجروح نہیں ہوا؟ پھر بھی دو باتیں جاننا چاہتا ہوں. کیا ہندوستان کو چپ چاپ رہنا چاہئے تھا؟ مطلب کوشش ہی نہیں کرنا چاہیے تھا؟ اور کیا ہندوستان نے صرف تماشا کیا؟ مطلب کیا ہم جانتے ہیں کہ ہندوستان کی وزارت خارجہ کے حکام نے اس کے لیے کتنی سیر کی، کتنی کوشش کی؟ ناکامی اگر حقیقت ہے تو اس کے پیچھے کے عمل میں چھپے قصوں پر خاموشی بھی ایک حقیقت ہیں.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close