آج کا کالمسیاست

ای وی ایم  پر کسے کتنا بھروسہ؟

رويش کمار

حکومت تبدیل کرنے سے کسی پارٹی کے حامیوں میں شکست کی مایوسی تو ہوتی ہی ہوگی، ان کے اندر ایک خوف بھی ہوتا ہے. کئی بار ہارنے والی پارٹی کے کارکن خوف کے اسباب کو سمجھ نہیں پاتے ہیں. اس کی وجہ آسان ہے. جب کسی کی حامی کی پارٹی اقتدار میں آتی ہے تو تھانوں میں بھی آتی ہے. جھوٹے مقدموں اور زمین کے قبضوں کے لئے بھی آتی ہے. نیی بھرتیوں میں سفارش اور تبادلے کے لئے بھی آتی ہے. ٹھیکوں کی تقسیم کے لئے بھی حکومت میں آتی ہے. سرکاری محکموں میں خرید پھروخت کے لئے بھی آتی ہے. ان تمام عمل میں حکومت کے حامیوں کی موج ہو جاتی ہے. وہ راتوں رات امیر ہونے لگتے ہیں. جیسے ہی حکومت جاتی ہے یہ طبقہ غیر محفوظ محسوس کرنے لگتا ہے. نئی حکومت کے حامی اور پارٹی کارکن خوش ہو جاتے ہیں. اب پرانی حکومت کے حامیوں اور کارکنوں نے سب کے لئے کام کرنے والے شفاف نظام کی مانگ کی ہوتی، امتیازی سلوک کی مخالفت کیا ہوتا تو حکومت کے جانے پر خوف کیوں لگتا ہے. حکومت ہمیشہ میری ہوتی ہے، ہماری نہیں ہوتی. جب حکومتیں ہماری ہونے لگیں گی تب شکست سے ڈر نہیں لگے گا. ہماری حکومت کے لئے ضروری ہے کہ سب سوالوں سے، تنقید سے حکومت پر نظر رکھیں اور دیکھتے رہنا کہ حکومت کا فائدہ کوئی نہ اٹھا سکے. اگر آپ کسی پارٹی کے کارکن ہیں تو ایک سوال خود سے پوچھیں کیا آپ اپنی حکومت پر سوال کرتے ہیں؟

اگر ہارنے والی پارٹی کا کارکن یہ بنیادی بات سمجھ لے گا تو وہ خوف سے آزاد ہو کر اگلے انتخابات کی تیاری میں لگ جائے گا. بھارت میں بیلیٹ باکس سے لے کر الیکٹرانک مشین پر الزام لگتے ہیں. اگر ای وی ایم مشین کی سیاست کو سمجھنا ہے تو اس کے سب سے بہتر مثالیں ہیں کیپٹن امرندر سنگھ. گزشتہ سال ستمبر مہینے میں کیپٹن امرندر سنگھ نے ایک بیان دیا کہ 2012 میں انتخابات ہارنے کے بعد انہوں نے چیف الیکشن کمشنر کو لکھا تھا کہ ای وی ایم کے بارے میں تفصیل سے جانچ کی جائے. اسے کس طرح فول پروف بنایا جا سکتا ہے کیونکہ کچھ ممالک نے دوبارہ بیلیٹ پیپر کا استعمال کرنا شروع کر دیا ہے. کانگریس نے پنجاب میں مسلسل کہا ہے کہ ای وی ایم پفول پروف نہیں ہے. 2016 کے ستمبر مہینے میں کیپٹن امرندر سنگھ نے پھر سے ای وی ایم پر سوال اٹھایا اور کہا کہ سرکاری افسر ای وی ایم سے چھیڑ چھاڑ کر سکتے ہیں. اس لیے دوسری ریاستوں سے ای وی ایم مشینں لائیں جائیں. 2017 میں انتخابات جیتنے کے بعد کیپٹن امرندر سنگھ نے جو کہا وہ مزیدار ہے. انہوں نے کہا کہ عام آدمی پارٹی شکست سے بوکھلا کر ای وی ایم میں خرابی کا الزام لگا رہی ہے. امرندر کے تینوں بیانات سے لگتا ہے کہ وہ ہارنے کے بعد، ہار کے خوف سے توای وی ایم پر سوال اٹھا رہے تھے مگر جیتنے کے بعد انہیں ای وی ایم پر اعتماد ہو گیا.

مثال کیپٹن صاحب کی دیا ہے مگر سوال کئی بڑے لیڈروں نے اٹھائے ہیں. یو ٹیوب پر آپ کو بی جے پی رہنما سبرامنیم سوامی کے ای وی ایم مشینوں میں چھیڑ چھاڑ کے ویڈیو مل جائیں گے، جن میں وہ تفصیل سے بتا رہے ہیں کہ کس طرح ای وی ایم کے مرکزی عضو جاپان سے بن کر آتا ہے، مگر وہی جاپان ای وی ایم کا استعمال نہیں کرتا. ای وی ایم مشینوں میں چھیڑ چھاڑ کے امکان کو لے کر سبرامنیم سوامی اہم چہرہ ہیں اور وہ عدالت تک اس جنگ کو لے کر گئے ہیں.

جے للتا اب دنیا میں نہیں ہیں لیکن 2001 میں وہ مدراس ہائی کورٹ چلی گئیں. الزام تھا کہ ای وی ایم میں ووٹر بٹن دباتا ہے، لیکن جب تک پریزائڈنگ افسر بٹن نہیں دباتا، اس کا ووٹ رجسٹر نہیں ہوتا ہے. اگر کسی بھی وجہ سے پریزائڈنگ افسر سے بٹن نہیں دبا تو ووٹر کا ووٹ شمار نہیں جائے گا. جے للتا نے کہا تھا کہ وزیر دفاع جارج فرنانڈیز اور ایم کروناندھی نے بھی وی ایم پر سوال اٹھائے تھے، مگر جیتنے کے بعد خاموش ہو گئے. 2010 میں تیلگو دیشم پارٹی کے رہنما چندر بابو نائیڈو نے کہا تھا کہ ای وی ایم کو ٹیمپر کیا جا سکتا ہے. ٹائمز آف انڈیا کی اگست 2010 کی ایک خبر کے مطابق راجیہ سبھا میں بی جے پی اور لیفٹ کے رہنماؤں نے ای وی ایم کا مسئلہ اٹھایا تھا. ارون جیٹلی نے مطالبہ کیا تھا کہ حکومت اس پر کل جماعتی اجلاس بلائے، کچھ تکنیکی ماہرین کو بھی بلائے تاکہ جو شک ہیں انہیں دور کیا جا سکے.

لال کرشن اڈوانی نے کہا تھا کہ پوری دنیا کے تجربے کے مطابق ایسی کوئی چیز نہیں ہے جسے ٹمپر پروف ای وی ایم کہا جا سکے. مطلب ایسی کوئی مشین نہیں ہے جس کے بارے میں دعوی کیا جا سکتا ہے کہ چھیڑ چھاڑ نہیں ہو سکتی ہے. بی جے پی ترجمان جی وی ایل نرسمہا راؤ نے ای وی ایم مشینوں میں چھیڑ چھاڑ کے امکان کو لے کر ایک کتاب بھی لکھی ہے، جس کا ذکر تازہ تنازعہ کے بعد خوب ہو رہا ہے. اگر اس کتاب کی فروخت بڑھ گئی تو جيويیل کی رایلٹی بڑھ سکتی ہے، ویسے ان کا خیال ہے کہ ایک انتخابی ماہر کے طور پر انہوں نے لکھا تھا، پارٹی کے رکن کی حیثیت سے نہیں. ان کے کچھ سوالوں کو آگے چل کر الیکشن کمیشن نے بہتر بھی کیا ہے. اب ان کی ویسی رائے نہیں ہے. دہلی میں 8 فروری 2015 کو پولنگ ہونے تھے، 3 فروری کو اروند کیجریوال نے ٹویٹ کیا تھا کہ دہلی کینٹ میں چار ای وی ایم مشینوں میں خرابی پائی گئی ہے، ان میں کسی بھی بٹن کو دبانے پر بی جے پی کو ووٹ چلا جاتا تھا.

مارچ 2012 کے انڈین ایکسپریس کی رپورٹ کے آغاز اس لائن سے ہوتی ہے کہ ای وی ایم مشینوں میں چھیڑ چھاڑ کو لے کر مختلف عدالتوں میں اسی اپیل دائر کی گئی ہیں. ان 80 مقدموں کا کیا اسٹیٹس ہے، ہمیں نہیں معلوم. ایکسپریس کے اسی رپورٹ میں بی جے پی لیڈر کریٹ سومیا کا بیان چھپا تھا کہ ریاستوں کے الیکشن کمیشن کو ای وی ایم کو بہتر بنانے چاہئے تاکہ یہ فل پروف بنایا جا سکے.

بمبئی ہائی کورٹ میں کانگریس کے تین رہنماؤں نے اپیل دائر کی کہ اپنی ہار تو قبول کرتے ہیں، مگر چاہتے ہیں کہ ای وی ایم کو فل پروف بنایا جائے. انتخابات سے پہلے ان سافٹ ویئر انجینئر نے رابطہ کیا تھا کہ ہم ای وی ایم میں چھیڑ چھاڑ کر سکتے ہیں. 2010 میں گجرات میں کانگریس نے اس وقت کے وزیر اعلی نریندر مودی پرای وی ایم مشینوں سے چھیڑ چھاڑ کا الزام لگایا تھا. تب کانگریس بلدیاتی انتخابات میں ہار گئی تھی. 2012 میں امرتسر کے ڈی سی نے ریاست انتخابات افسر کے پاس یہ مسئلہ اٹھایا ہے کہ کچھ وارڈ میں دوبارہ سے پولنگ ہوں، جہاں پر کچھ لوگوں نے وائی فائی اور بلوٹوتھ کا استعمال کیا تاکہ ای وی ایم کو ٹیمپر کیا جا سکے. اس کا ذکر کیپٹن امرندر سنگھ نے 2012 میں کیا تھا. اسی سال مہاراشٹر کے ایک آزاد امیدوار نے ریاستی الیکشن کمیشن سے پوچھا کہ اس کی جانچ ہو کہ کم سے کم ان کا اور ان کے خاندان کا ووٹ کہاں گیا، انہیں زیرو ووٹ کس طرح ملے ہیں.

ان مثالوں سے صاف ہے کہ ای وی ایم مشینوں کو لے کر الزام لگانے والے کانگریس کے بھی رہے ہیں، بی جے پی کے بھی ہیں. علاقائی جماعتوں کے رہنماؤں نے بھی لگائے ہیں. تو ای وی ایم کو لے کر شک کرنے کا کام پہلی بار نہ مایاوتی کر رہی ہیں نہ اروند کیجریوال. مایاوتی نے کہا کہ وہ مودی سے نہیں مشین سے ہاری ہیں. مایاوتی نے کہا ہے کہ وہ عدالت بھی جانے والی ہیں. ہر ماہ کی 11 تاریخ کو ان کی پارٹی سیاہ دن مناے گي. مایاوتی کے مطابق یہ وہ تاریخ ہے جس دن جمہوریت کا قتل ہوا ہے. کیجریوال نے کہا کہ 2013 میں سپریم کورٹ نے الیکشن کمیشن سے کہا تھا کہ تمام اسمبلی انتخابات میں وی ایم مشینوں کے ساتھ ایسا نظام ہو کہ بٹن دبانے پر ایک سلپ نکلے جس پر پارٹی کا انتخابی نشان ہو. اسے ایک باکس میں جمع کیا جائے. تاکہ بعد میں تنازعہ ہونے پر گنتی کی جا سکے. کیجریوال نے کہا کہ اس بار پنجاب میں 32 جگہوں پر اس نظام لاگو کیا گیا تھا. یوپی میں بھی کچھ جگہوں پر ہوا ہے. کیجریوال کا مطالبہ ہے کہ ایسے بوتھوں کی گنتی ہونی چاہئے تاکہ پتہ چلے کہ ای وی ایم مشین اور سلپ کے گنتی میچ کرتی ہے یا نہیں.

ایک بات کا یاد رکھئے.ای وی ایم مشینیں خراب نکل جاتی ہیں. خراب ہونا اور ان سے چھیڑ چھاڑ کیا جانا دونوں الگ الگ ہیں. 2014 کے لوک سبھا انتخابات میں صورت میں 161 ای وی ایم مشینوں خراب پائی گئیں تھی. یہ 20 اپریل کے ٹائمز آف انڈیا میں چھپا ہوا ہے.ای وی ایم مشین کو لے کر بھارت میں ہی سوال نہیں اٹھے ہیں. دنیا کے کئی ممالک میں ای وی ایم مشینوں کے خلاف تحریک چلیں ہیں. زبردست مخالفت ہوئی ہے. انہی تحریک کے سائے میں ہندوستان میں یوپی انتخابات کے پہلے سوال اٹھتے رہے ہیں.

امریکہ میں 50 میں سے صرف 5 ریاست میں ہی ای وی ایم کے ذریعہ الیکشن ہوتا ہے، باقی ہر ریاست میں بیلیٹ پیپر سے ووٹنگ ہوتی ہے. یورپ کے کئی ممالک میں ووٹ بیلیٹ سے ہی ہوتا ہے. ہالینڈ کو ای وی ایم مشینوں کا موہرا سمجھا جاتا ہے، مگر اس نے اس کا استعمال بند کر دیا ہے. جرمنی میں عدالت نے الیکٹرانک ووٹنگ مشین کے استعمال کو بہتر نہیں مانا تھا.

ضروری نہیں کہ انتخابات کہیں بیلیٹ سے ہو رہا ہے تو یہاں بیلیٹ سے ہی ہو. امریکہ کی مشین کے مقابلے ہندوستان مشین سے کرنا کہاں تک ٹھیک ہو جائے گا. کیا دونوں کی ٹیکنالوجی ایک ہی ہو جائے گی. ہم نہیں جانتے ہیں. الیکشن کمیشن نے تمام خدشات کو غلط بتایا ہے اور کہا ہے کہ ان مشینوں میں دھاندلی نہیں ہو سکتی ہے. پہلے بھی سوال اٹھے ہیں مگر اس بار سوالات کے ساتھ ساتھ جس طرح سے افواہیں پھیل رہی ہیں اسے لے کر کچھ کیا جانا چاہئے. کیونکہ اب ای وی ایم کو لے کر افواہ یوپی سے آگے جا چکی ہے. مہاراشٹر کے بلدیاتی انتخابات میں ہی اس اشكال کو ہوا ملی تھی جسے پنجاب اور یوپی کے نتائج نے تیز کر دیا ہے. الیکشن کمیشن کو دو چار لفظوں کے بیان سے آگے جاکر کچھ کرنا چاہئے تاکہ عوام کے درمیان ایسے سوالات کے لئے جگہ نہ بچے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی 

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Back to top button
Close