آج کا کالم

بات بات میں  غصہ کیوں، بات بات میں  قتل کیوں؟

رويش کمار

غصے کو قومی طرز عمل کے طور پر اعلان کر دینا چاہئے. دن رات سوشل میڈیا سے لے کر مرکزی میڈیا سے غصے کا جن وترن ہو رہا ہے. پبلک ڈرسٹربيوشن. پہلے ہم نے سوچا کہ بھیڑ صرف سیاسی اور نظریاتی ہے، لیکن اس کے دوسرے نظریے بھی سامنے آنے لگے ہیں. آخر اجمیر میں  سکھوں کو پیٹنے کے کیا وجہ رہی ہوگی جب وہ گاؤں میں  لنگر کے لئے اناج مانگنے گئے تھے. اس کا مطلب اس طرح کی بھیڑ صرف ہندو بمقابلہ مسلمان نہیں  ہے، بلکہ یہ کسی کے بھی خلاف ہو سکتی  ہے، کسی کو بھی مار سکتی ہے. کیوں  بن جاتی ہے ایسی بھیڑ، کیا وجہ ہے کہ وهاٹس اپ پر بچہ چوری کی افواہ پھیلتے ہی لوگ جھنڈ میں  مسلم کو بھی مار دیتے ہیں  اور پھر ہندو کو بھی مار دیتے ہیں. معاشرے کے اندرونی ذہن میں  کچھ تو چل رہا ہے، جو اس طرح لاوے کی طرف پھوٹ رہا ہے.

شمالی مغربی دہلی کے جی ٹی بی شہر میٹرو اسٹیشن پر ہوئی ایک واقعہ کو آپ کس طرح سمجھیں  گے، ای رکشہ چلانے والے روندر نے 2 لڑکوں  کو میٹرو اسٹیشن کے سامنے پیشاب کرنے سے منع کیا اور کہا کہ اندر اندر ٹوائلٹ ہے، پیسے نہیں  ہے تو مجھ سے لے لو مگر یہاں  پیشاب نہ کرو. روندر نے اپنے شہری ہونے کا فرض ادا کیا، شاید کسی کو بھی یہی کرنا چاہئے، مگر جن لڑکوں  کو روندر نے منع کیا، انہیں  یہ بات پسند نہیں  آئی. اسی بات پر جھگڑا ہوا، لڑکے ای رکشہ ہی سے کالج آئے اور امتحان دیا. امتحان کے بعد رات کو لوٹے تو بیس پچیس لڑکوں کے ساتھ میں. گمچھے میں  پتھر باندھ کر لائے. رات آٹھ بجے روندر کو اتنا مارا کہ اس کی موت ہوگئی. ان کے اندر اتنا غصہ بھر گیا کہ کسی نے پیشاب کرنے سے روکا تو چل کر مار ہی دیتے ہیں. جھگڑا تو دو لڑکوں  کے ساتھ ہوا تھا، اس کے ساتھ بیس پچیس لڑکے کس طرح چلے گئے. انہیں  غصہ کیوں  آیا. ہمارے ساتھی مکیش سنگھ سانگر نے لوگوں  سے پوچھا کہ آپ نے کیوں  نہیں  روکا، سب نے ایک ہی جواب دیا کہ وہ اس وقت وہاں  نہیں  تھے. دوسرے ای رکشہ والوں  نے بھی یہی کہا اور دکانداروں  نے بھی یہی کہا.

مرکزی شہری ترقی کے وزیر وینکیا نائیڈو نے روندر کے خاندان والوں  سے ملاقات کی اور پچاس ہزار کا چیک دیا. دہلی حکومت نے پانچ لاکھ کا چیک دیا ہے. میرے حساب سے دونوں  نے بہت کم پیسے دیئے ہیں. جس صفائی مہم کے اشتہارات کے لئے کروڑوں  روپے خرچ ہوتے ہیں، جو حکومت کی ترجیحات میں سب سے اوپر بتایا جاتا ہے، اس کے لئے کسی کے جان دینے کا یہ پہلا واقعہ ہے.

معاوضے سے روندر کا خاندان کتنا سبھلے گا. اس کی بیوی حاملہ ہے. اچھا اور محنتی لڑکا تھا. کیا ہم یہ سیکھ دے رہے ہیں  اس معاشرے کو کہ کسی کو کچھ مت بولو، ٹوكو مت، پتہ نہیں  کب کون ریوڑ لے کر آ جائے اور ٹوٹ پڑے. اس طرح سے ہم بھیڑ کو تسلیم کریں  گے تو پھر کوئی شہری ہونے کا فرض کس طرح نبھا يے گا. روندر سے جھگڑنے کے بعد دونوں  لڑکوں  نے بیئر پی اور پھر امتحان دینے گئے. وہاں  سے لوٹے تو ریوڑ کے ساتھ. بیئر پی کر امتحان دینے والے قتل نہ بھی کرتے تو بھی آگے چل کر کچھ ایسا ہی بڑا نام کرنے والے تھے.

نیوز اینکر سے لے کر لیڈر تک سب کو غور سے دیکھئے. غصے سے بول رہے ہیں. چیخ رہے ہیں ، چیخ رہے ہیں. وهاٹس اپ سے لے کر سوشل میڈیا تک کی زبان غصے کی زبان ہے. یوپی کے رام پور سے ایک ویڈیو وائرل ہوا. یہ واقعہ اس طرح ہے کہ ویڈیو دیکھا بھی نہیں  جاتا، پولیس  تحقیقات کر رہی ہے اور اس کی بنیاد پر کچھ گرفتاری بھی ہوئی ہے. چودہ لڑکوں  نے دو لڑکیوں کو بہکانے کا فیصلہ کس طرح کر لیا. اتنی ہمت ان میں  کہاں  سے آئی. کیا ان ویڈیو سے جن اینٹی رومیو کے نام پر لڑکے لڑکیوں  کو دو چار لوگوں  کی بھیڑ پیٹ رہی ہوتی ہے،وہ ان کی توہین کر رہے ہوتے ہے. ہم اس کی وجہ نہیں  جانتے مگر سوچیں  کہ لڑکیوں  نے جب خود کو چھوڑ دینے کی فریاد تو انہیں  اٹھا کر لے جانے لگے. اس واقعہ کا ویڈیو بھی بنایا اور وهاٹس اپ پر بھی ڈالا. چودہ لڑکوں  میں  تمام قانون ہاتھ میں  لینے کے لئے کس طرح تیار ہو گئے. کیا انہیں  ذرا بھی فکر نہیں  ہوئی کہ حکومت پر جب دباؤ بنے گا تو انہیں  چھوڑا نہیں  جائے گا. لڑکیوں  کے ساتھ کیسا سلوک کرنا چاہئے اسے لے کر آئے دن بحث ہوتی رہتی ہے. کیا اس سے بھی ان لوگوں  کو کچھ فرق نہیں  پڑتا ہے.

کیا کسی طرح لوگوں  میں  یہ تاثر بیٹھ گیا ہے کہ مل کر جھنڈ میں  جرم کرنے سے بچ جائیں  گے. حال فی الحال میں  بھیڑ کے تشدد کتنی بڑھی ہے، ہمارے پاس اعداد و شمار نہیں  ہیں. ریسرچ کے دوران گارڈین اخبار میں  چھپا ایک مضمون ملا، جس سے اس بات کر رہا ہے کہ دہشت گردانہ حملوں  کے وسیع میڈیا کوریج کی وجہ سے ان جگہوں  پر دوبارہ دہشت گردانہ واقعات کا خدشہ زیادہ رہتا ہے. جرمنی اور امریکہ کی دو اداروں  نے مل کر نیویارک ٹائمز میں  1972 سے 2012 کے درمیان 60000، دہشت گردانہ واقعات کے كوریج کا مطالعہ کیا ہے. یہ دیکھا گیا ہے کہ جہاں  كوریج زیادہ ہوتا ہے وہاں  ہفتے بھر کے اندر اندر میں  ایک اور دہشت گردانہ واقعہ ہو جاتا ہے. دہشت گرد گروہ بھی چاہتے ہیں  کہ میڈیا کوریج ملے تاکہ ان کا ایجنڈا آگے بڑھتا رہے. کمزور نوجوان جلدی متاثر ہو سکے.

پروفیسر جیٹر کا کہنا ہے کہ سر کاٹنے کی ویڈیو کی وجہ سے آئی سی سی جیسے دہشت گرد تنظیم کا پوری دنیا میں  تبلیغ ہویی ہے. دنیا میں  روز بھوک سے 1237، بچے مر جاتے ہیں، ان کا کوریج نہیں  ہوتا، دہشت گرد حملے سے روز 42 لوگ مرتے ہیں، ان کا دنیا بھر میں  كوریج ہوتا ہے. مضمون کہتا ہے کہ یہ دیکھ لینے میں  ہرج نہیں  ہے کہ کہیں  تشدد کا ماحول دیکھتے دیکھتے تو نہیں  بن رہا ہے. اس میں  وهاٹس اپ پر بانٹیں  شدہ گئے ویڈیوز کا کتنا ہاتھ ہے. کیا ہمارا برتاؤ تبدیل ہو رہا ہے. اگر یہ بیماری ہے تو علاج بھی ہے اس کا.

دراصل دماغ میں  بادام کے سائز کی ایک ساخت ہوتی ہے جسے امگڈلا (amygdala) کہا جاتا ہے. یہ دماغ کے بیچوں  بیچ سیريبلم اور دماغ خلیہ کے ٹھیک اوپر ٹیپورل لوب میں  ہوتا ہے. دماغ میں  یہی وہ حصہ ہے جو خوف، غصے اور کشیدگی کو طے کرتا ہے. امگڈلا (amygdala) سے ہی طے ہوتا ہے کہ کوئی شخص کسی صورت میں  کس طرح ری ایكٹ کرے گا. سان ڈیاگو میں  سوسائٹی فار عصبی سائنس کانفرنس میں  پیش کئے گئے ایک ریسرچ پیپر کے مطابق جو لوگ زیادہ غصہ ہوتے ہیں، زیادہ رد عمل کرتے ہیں ، ان کے دماغ کے اسی حصے میں  دوسروں  کے مقابلے زیادہ حرکت ہوتی ہے. ایسے نوجوان ضرورت سے زیادہ رد عمل کرتے ہیں. جیسے کسی کو مکا مار دیں، دروازے پر لات مار دیں. اگرچہ بعد میں  وہ اس کے لئے افسوس جتایں، لیکن اس وقت وہ خود کو کنٹرول نہیں  کر پاتے. ایسے افراد میں  دماغ کے پريفیرٹل میں  کم ایكٹوٹي دیکھی گئی. دماغ کا یہ حصہ ہماری سوچنے اور فیصلے لینے کی صلاحیت سے منسلک ہوتا ہے. پريفیرٹل  میں  سستی کی وجہ سے ایسے لوگوں  میں  اپنی حرکتوں  پر قابو پانے کی صلاحیت کم ہوتی ہے، اسی لئے وہ اس وقت اپنی حرکتوں  کے انجام کے بارے میں  نہیں  سوچ پاتے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close