آج کا کالم

بنگال میں تشدد کے پیچھے سازش؟

رويش کمار

بنگال میں وزیر اعلی ممتا بنرجی اور گورنر كےشريناتھ ترپاٹھی کے درمیان بات چیت کا مسئلہ اتنا حاوی ہو گیا کہ جن فرقہ وارانہ واقعات کو لے کر اس کی نوبت آئی اسی کی ڈٹیل سامنے نہیں آ رہی ہے. فیس بک پوسٹ اور وهاٹس اپ کی دنیا میں ہر روز سینکڑوں میسج کسی نہ کسی مذہب کو مجروح کرتے ہوئے لکھے جا رہے ہیں. جب یہ لوگوں کو معلوم ہے تو پھر یہ کون لوگ ہیں جو بھیڑ لے کر سڑکوں پر اتر آتے ہیں. ان خلاف کیا ٹھوس کارروائی ہو رہی ہے.

آپ یقین کریں گے کہ کولکاتہ سے 70 کلومیٹر دور بادريا کی یہ تصویر اس لیے ہے کہ کسی نے فیس بک پر پوسٹ کیا ہے. ہم کیا حماقت کی مثال قائم کرنے کے لئے اتاولے ہو رہے ہیں. ان لوگوں کو کس نے سڑک پر اتارا، بجائے اس کے قانون کا راستہ کیوں اختیار نہیں کیا. بی جے پی کا دعوی ہے کہ 2000  میں مسلمانوں نے ہندو خاندانوں پر حملہ کیا ہے. بتایا جا رہا ہے کہ کئی دکانیں جلا دی گئیں ہیں اور گھروں پر پتھراؤ کیا گیا ہے. ہماری ساتھی موني ديپا بنرجی اس علاقے کے ایک حصے میں گئی تھیں، جہاں کے گھروں کے شیشے ٹوٹے ہوئے تھے، ان پر پتھراؤ کیا گیا تھا اور ایک قریبی کلب کے سامانوں کو تباہ کر دیا گیا تھا. لوگوں نے موني ديپا کو بتایا کہ وہ بہت ڈرے ہوئے ہیں. پولیس تھانے پر حملہ کرنے اور پولیس کی گاڑیاں جلانے کی بھی اطلاعات ہیں. رہنما کی گاڑی پر بھی حملہ ہوا ہے. سمجھنا مشکل ہے کہ کون کس کے ساتھ کیا کر رہا ہے لیکن بھیڑ کا حوصلہ سمجھ آ رہا ہے. پولیس اس بھیڑ کے آگے بے بس نظر آ رہی ہے. اس کی موجودگی میں کسی کے ساتھ کام اڑا ہوتی لگ رہی ہے. سڑکوں پر ٹائر جلائے گئے ہیں. منگل کو مونی ديپا کی اطلاع کی تصویر بتاتی ہے کہ تشدد کافی ہوا ہے. 17 سال کے لڑکے کی پوسٹ کے جواب میں جن لوگوں کو اتارا گیا، ان میں سے بہت سے نوجوانوں عمر کے نظر آ رہے ہیں.

یہ سوال تو کرنا ہوگا کہ 17 سال کے ایک بچے کے فیس بک پوسٹ کو لے کر کیا شہر یا محلے میں آتش زد گی کی جائے گی، راستہ جام کیا جائے گا تو پھر معاشرے کا کیا ہوگا. کیا ہمارے تعلقات اتنے کھوکھلے ہو چکے ہیں. فیس بک پوسٹ کی وجہ سے مذہبی جذبات مجروح ہو رہے ہیں تو اس کا مطلب ہے جذبات کو ہی بیماری لگ گئی ہے. ایک بات سب کو یاد رکھنی چاہئے. اکثریت فرقہ واریت اسی فراق میں رہتا ہے کہ کب اقلیتی فرقہ واریت حرکت کرے یا کچھ ایسا کرے جسے فرقہ وارانہ رنگ دے کر اس کے جواب میں اکثریت کو اکسایا جا سکے. بھیڑ کا جواب بھیڑ سے دینے والے دونوں طرف کے لوگ اچھی طرح جانتے ہیں کہ وہ جواب نہیں دے رہے ہیں بلکہ ایک دوسرے کا ساتھ دے رہے ہیں. اگر ممتا بنرجی بی جے پی کی حکومتوں میں فرقہ وارانہ تشدد کرنے والی حکومت نواز جماعتوں یا دھڑوں کو تحفظ دینے کا الزام لگاتی ہیں تو خود ممتا بنرجی کا اپنا معیار کیا ہے. انہوں نے دونوں عناصر کے خلاف کیا کارروائی کی ہے، یہ بتانا چاہئے نہ کہ گورنر کے ساتھ ہوئے تنازعہ کو اہمیت دینی چاہئے.

بہار انتخابات سے پہلے ‘انڈین ایکسپریس’ کے لئے اپپو ایتھوس سریش نے ایک شاندار رپورٹنگ کی تھی. 21 اگست 2015 کی اس رپورٹ میں اپپو نے بتایا تھا کہ بی جے پی اور جے ڈی یو کے الگ ہونے کے بعد بہار میں فرقہ وارانہ تشدد تین چوتھائی بڑھ گئی. جب دونوں ساتھ تھے تو پورے بہار میں ساڑھے تین سال کے دوران 226 فرقہ وارانہ تشدد کے واقعات ہوئے تھے. جون 2013 میں دونوں الگ ہوئے اور الگ ہونے کے دو سال کے اندر فرقہ وارانہ تشدد اور کشیدگی کی 667 واقعات درج کیے گئے. زیادہ تر واقعات مندر مسجد میں گوشت پھینکنے کو لے کر شروع ہوئے تھے. نتیش کمار نے اپنی مہم کے ہر تقریر میں کہا تھا کہ گوشت پھینک پر مت بھڑكيے گا. ممتا کو اپنے ہی ساتھی سے سیکھ لینا چاہئے. ‘انڈین ایکسپریس’ کی مارچ 2014 کی ایک رپورٹ ہے جس میں پولیس ریکارڈ کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا گیا ہے کہ دیہی بنگال میں فرقہ وارانہ جھگڑے بڑھ گئے ہیں. 2008 میں فرقہ وارانہ تشدد کی 12 واقعات درج ہوتے ہیں، وہیں 2013 میں بڑھ کر 106 ہو گئے تھے. نیشنل کرائم ریسرچ بیورو کے اعداد و شمار کے مطابق 2015 میں ملک کے 53 بڑے شہروں میں فسادات کے 6،270 کیس درج ہوئے ہیں، جس سے کولکتہ میں 293 کیس درج کئے گئے.

2016 میں بنگال اسمبلی کا انتخاب ہوا تب ممتا کو 211 نشستیں آ گئی اور بی جے پی کو 3 سیٹ ملی، لیکن ہر بار نقصان نہیں کرے گا اس کی کوئی ضمانت نہیں ہے. ایسا لگ رہا ہے جیسے کوئی بنگال کو مسلسل ابال پر رکھنا چاہتا ہے. مذہبی جلوسوں اور دوروں کا پیمانہ ضرورت سے زیادہ بڑا کیا جا رہا ہے. ان جلوسوں کے ذریعہ صدیوں پرانے وہی ڈھول بجائے جا رہے ہیں کہ لاؤڈ سپیکر کی آواز تیز تھی یا کسی نے گوشت پھینک دیا. مسلم سماج کا ایک حصہ اس کھیل کو سمجھ بھی رہا ہے، تبھی کولکاتا کے ٹیپو سلطان مسجد کے شاہی امام بركتي ​​کو امام کے عہدے سے ہٹا دیا گیا. شاہی امام بركتي ​​کے ذاتی البم میں ان لیڈروں کی بھی تصاویر ہیں جو ان کے بیانات کو لے کر سیاست کرتے ہیں. مگر مئی کے مہینے میں جب اس شخص نے بیان دیا کہ ہم امام ہیں کسی کے غلام نہیں. آپ کی گاڑی سے لال بتی نہیں اتاریں گے تب میڈیا میں خوب بیان بازی ہوئی. مقامی مسلم معاشرے اور مسجد کا بورڈ محتاط ہو گیا کہ اسے لے کر اکثریت کے درمیان کس طرح کی باتیں پھیلائی جائیں گی. امام کو گدی سے اتار دیا. امام صاحب کہتے رہے کہ انہیں وزیر اعلی کی حمایت حاصل ہے، مگر گدی نہیں بچا سکے. بعد میں ترنمول کانگریس کے وزیر نے بھی امام کے خلاف مسجد کے باہر مظاہرہ کیا. امام نے پاکستان نواز بیان دے دیا تھا. اس امام کا یہی کام تھا کہ کچھ بیان دے دو جس بحث چھڑے اور فرقہ واریت کا خوراک ملے. بہت لوگوں کی دکان ہی اس طرح کے بیانات سے آگے بڑھ رہے ہیں.

اگر اس طرح کے واقعات کو نظر انداز کیا جاتا رہا اور معاشرے کے اندر سے معاشرے کے لئے آواز نہیں آئی تو لوگ ایک دوسرے کو پہچاننے اور دعا سلام کرنے کے قابل نہیں بچیں گے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close