آج کا کالم

بھوپال جیل میں رما شنکر یادو کا قتل کیسے ہو گیا؟

رویش کمار

منگل کو بھوپال میں ہیڈ کانسٹیبل رما شنکر یادو کا پورے احترام کے ساتھ آخری رسم ادا کیا گیا۔ رما شنکر یادو یوپی کے بلیا کے رہنے والے تھے، مگر ان کا خاندان بھوپال میں ہی بس گیا تھا. بچے بھی یہیں پلے بڑھے ہیں۔ رما شنکر یادو نے بھوپال سینٹرل جیل کے پیچھے اهليا شہر میں اپنا مکان بنایا۔ یہیں سے 9 دسمبر کو ان کی بیٹی سونیا یادو کی شادی طے تھی. رما شنکر یادو کے دو بیٹے ہیں۔ بڑا بیٹا حولدار شمبھوناتھ36-37سال کا ہے، جو آسام میں ہے. چھوٹا بیٹا لانس نايك پربھوناتھ حصار میں تعینات ہے۔ دونوں بیٹوں کی شادی ہو گئی ہے، لیکن بیٹی کی شادی کے بارے میں خاندان فیصلہ کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہے کہ 9 دسمبر کو ہوگی یا اس سےٹالا جائے۔ ساری تیاریاں تقریبا آخری مرحلے میں ہی تھیں. جیل میں رما شنکر یادو چیف وارڈن کے عہدے پر تعینات تھے۔ ہندی میں اس عہدے کو چیف واچ ڈاگ کہا جاتا ہے۔ رما شنکر یادو کی ڈیوٹی حد درجہ حفاظتی سیل میں ہی تھی۔ دیوالی کی رات سینٹرل جیل سے فرار ہوئے دہشت گردی معاملے سے جڑے آٹھ ملزمان نے ان کا قتل کر دیا تھا۔ اهليا شہر میں جیل کے کئی ملازمین نے اپنا گھر بنایا۔ ہمارے ساتھی سدھارتھ رنجن داس اور نیتا شرما سے خاندان کے ارکان نے بات چیت میں بتایا کہ جسم پر چوٹ کے نشان بتاتے ہیں کہ رما شنکر یادو نے مقابلہ کیا تھا۔ بیٹے نے کہا ہے کہ ان کے والد کے قتل کی تحقیقات ہونی چاہئے۔

 بیٹے کا بھی سوال ہے کہ یہ بات کلیئر ہونی چاہئے کہ باپ کو قتل کر وہ کس طرح بھاگ نکلے۔ اس پورے معاملے میں تین قسم کے سوال اٹھ رہے ہیں. پہلا سوال یہ ہے کہ رما شنکر یادو کا قتل کیسے ہو گیا، باقی سکیورٹی نے کیا کیا، کیا ان کی توجہ بالکل ہی رما شنکر پر نہیں گئ۔ دوسرا سوال یہ ہے کہ دہشت گردی کے کیس کے آٹھ ملزم کس طرح بھاگ گئے اور تیسرا سوال انکاؤنٹر کو لے کر اٹھ رہا ہے۔

 اهليا شہر جہاں رما شنکر یادو کا گھر ہے، وہاں رما شنکر یادو کو سرکاری اعزاز کے ساتھ آخری وداعی دی گئی۔ وزیر اعلی شیوراج سنگھ بھی آخری خراج عقیدت پیش کرنے پہنچے۔ انہوں نے اهليا شہر کا نام رما شنکر نگر کرنے کا اعلان کیا ہے۔ احترامی رقم کے طور پر دس لاکھ اور بیٹی کو سرکاری نوکری کی پیشکش کی ہے۔ شیوراج سنگھ چوہان نے بھی لاش کو اٹھایا۔ ان کے جانے کے بعد حال ہی میں وزیر بنے مقامی ممبر اسمبلی وشواس نارنگ نے رما شنکر یادو کو کندھا دیا اور وہ شمشان گھاٹ تک گئے۔ پولس کے افسران بھی موجود تھے۔ وزیر اعلی کہہ رہے ہیں کہ سوال نہیں ہونا چاہئے۔ لوگ رما شنکر یادو کے لئے کم بول رہے ہیں، ان دہشت گردوں کے لئے کیوں زیادہ بول رہے ہیں؟

 رما شنکر یادو کے ساتھ ایک اور سپاہی چندن اہروار کے بھی زخمی ہونے کی خبر آئی تھی۔ ان کے بارے میں پتہ چلا ہے کہ بھاگنے والے سیمی کارکنوں نے رسی سے باندھ کر سیل میں ڈال دیا تھا. ہمارے ساتھی شری نواسن جین نے چندن اہروار جی سے بھی بات کرنے کی کوشش کی، چندن صدمے میں ہیں، بتایا کہ ان کے پاس ہتھیار نہیں تھا۔

 گھر والوں نے بتایا کہ 58 سال کے رما شنکر یادو دہشت گرد کو رکھے جانے والے سیل میں تعینات تھے اور دوپہر سے درمیانی شب کی ڈیوٹی پر تھے۔ ایک بیرک کے اندر بہت سے سیل ہوتے ہیں۔ ہر سیل کا اپنا دروازہ ہوتا ہے. اس کے بعد بیرک کے باہر بھی ایک دروازہ ہوتا ہے جس پر تالا لگا ہوتا ہے۔ پہلا سوال اسی کو لے کر اٹھا کہ دو دروازے توڑ کر کوئی کیسے باہر آ گیا۔ کیا لکڑی کی چابیاں یا چمچ کی چابی کی بات صحیح ہو سکتی ہے۔ ہمارے ساتھی شری نواسن جین نے ہیڈ جیلر ایس. کے. ایس. بھدوريا سے بھی بات کی۔ بھوپال سینٹرل جیل آئی ایس او سے تصدیق شدہ جیل ہے تب بھی اس کے سربراہ کہہ رہے ہیں کہ سیمی کے اتنے لوگ بند رہیں گے تو جیل بریک کا واقعہ ہو سکتا ہے۔ کیا انہوں نے حکومت سے یہ بات تحریری طور پر کہی تھی۔ پولیس سے لے کر ہیڈ جیلر تک تمام کہہ رہے ہیں کہ تمام مختلف سیل میں تھے۔ پیر کو آئی جی یوگیش چودھری نے بھی کہا تھا کہ بھاگنے والے تمام قیدیوں کو الگ الگ بیرک میں رکھا گیا تھا جو الگ الگسیکٹرس میں تھے۔

 جیل کی تین دیواروں کو سمجھنا ضروری ہے۔ جس سیل میں دہشت گرد رکھے جاتے ہیں، پہلی دیوار اس سےستر سے اسی فٹ دور تھی۔ یہ دیوار قریب 35 فٹ اونچی تھی۔ اس کے بعد دوسری دیوار 20 فٹ کی ہوتی ہے۔ سب سے باہر دیوار جسے ہم باؤنڈری وال کہتے ہیں، وہ چار یا پانچ فٹ کی ہوتی ہے۔ بیرونی چاردیواری کا دائرہ دو کلومیٹر ہے. جیل کے اندر 42 سی سی ٹی وی کیمرے لگے ہیں۔ دہشت گردی کے ان ملزمان کو بی اور سی سیکشن میں رکھا گیا تھا، جس کے چار سی سی ٹی وی کیمرے کام نہیں کر رہے تھے۔ ہماری ساتھی نیتا شرما کا کہنا ہے کہ ان سے کچھ بھی نہیں ملا ہے۔ اب یہ صاف نہیں ہے کہ ایک بیرک جس کے اندر بہت سے سیل ہوتے ہیں، وہاں چار ہی سی سی ٹی وی کیمرے ہوتے ہیں یا اس سے بھی زیادہ ہوتے ہیں۔ جیلر نے بتایا کہ جیل میں 5-6 کیمرے 360 ڈگری پرگھومنے والے ہیں۔ کیا ان سےبھی آٹھوں کے آٹھوں بچ گئے۔

 اس واقعہ نے جیل کے نظام کو ایكسپوز کیا ہے اس لئے بھاگے جانے کو لے کر سوال اٹھ رہے ہیں کہ کوئی بغیر کسی مزاحمت کے اتنی بڑی تعداد میں کس طرح بھاگ گیا، وہ بھی ایک نوجوان کو قتل کر کے۔ جیل وزیر نے شری نواسن جین کے ساتھ بات چیت میں مانا کہ ان کی ذمہ داری بنتی ہے، لیکن وہ ڈیڑھ مہینہ پہلے جیل وزیر بنے ہیں۔ یہ بات بھی ٹھیک ہے۔ وزیر کو ہٹا دینے سے سوالات کے جوابات مل جاتے ہیں، کیونکہ جیل کی تعمیر تو ڈیڑھ ماہ پہلے نہیں ہوئی ہے۔

سی سی ٹی وی کی فوٹیج اب بھاگنے والوں سے زیادہ رما شنکر کے قتل کا پتہ لگانے کے لئے زیادہ ضروری ہے، کیونکہ اگر رما شنکر کی شہادت کے نام پر سوالات کو مشکوک کیا جا رہا ہے تو کم سے کم ان کے قتل کا معاملہ ضرور کھلنا چاہئے. جیل کی پولس اور ریاست کی پولیس دو الگ الگ ادارے ہیں۔ مدھیہ پردیش کے وزیر داخلہ نے پیر کو ‘پرائم ٹائم’ میں بتایا تھا کہ 12 سے 3 بجے کے درمیان واقعہ ہوا اور ساڑھے چار بجے کے قریب ریاستی پولیس کو اطلاع ملی۔ ڈیڑھ گھنٹے کی تاخیر ہوئی۔ بھاگنے والوں کے پاس اتنے ہتھیار کیسے آ گئے، اگر ہتھیار آئے تو فرار کے لئے گاڑی بھی مل سکتی تھی، اور جیل سے ملحقہ شاہراہ کی طرف بھی توجہ جا سکتی تھی. ہماری ساتھی نیتا شرما نے انکاؤنٹر کی جگہ کا معائنہ کرتے ہوئے دکھایا کہ چوٹی سے تھوڑی دور ایک جھونپڑی ہے وہاں پر پہلے یہ چھپے ہوئےبتائے جا رہے تھے۔ اگر کوئی رات اندھیرے کسی سیکوریٹی عملہ کو قتل کر بھاگےگا تو یہاں اس جھونپڑی میں کیوں چھپےگا۔ وہ بھی ان میں سے تین بھاگنے والے پہلے بھی کھنڈوا جیل سے بھاگ چکے ہیں. وہ کافی لمبے وقت تک فرار رہے تھے اور ان پر مبینہ طور پر کئی طرح کی مجرمانہ اور دہشت گردانہ سرگرمیوں میں شامل رہنے کا الزام بھی لگا۔

 رما شنکر یادو کا قتل، جیل انتظامیہ کی لا پرواہی ان دو سوالات کے بعد آتا ہے، انکاؤنٹر کا سوال۔ کئی طرح کے آئے بیانات اور ویڈیو فوٹیج نے بھی سوال کی گنجائش پیدا کی ہے۔ ایک بیان آیا کہ یہ جیل سے بھاگ کر واردات کرنے والے تھے۔ جب یہ پتہ تھا کہ واردات کرنے والے تھے تو کیا یہ پتہ نہیں لگا کہ یہ جیل سے بھی بھاگنے والے تھے۔ یہ بات بھی صحیح ہے کہ اگر ان کا انکاؤنٹر نہیں ہوتا، یا یہ پکڑے نہیں جاتے تو آج مدھیہ پردیش پولس اور سیکورٹی ایجنسیوں کی حالت خراب ہوتی۔ لیکن اس طرح سے انکاؤنٹر کا ہونا آپ چاہیں بھی تو سوالات سے نہیں بچ سکتے ہیں۔ شری نواسن جین نے آئی جی یوگیش چودھری سے بھی بات کی۔ انکاؤنٹر کے چوبیس گھنٹے بعد بھی آئی جی یوگیش چودھری کہہ رہے ہیں کہ تین نوجوان دھاردار ہتھیار سے زخمی ہوئے ہیں۔ فرار قیدیوں کی جانب سے پولس کی جانب گولیاں چلائی گئیں۔ پھر دھاردار ہتھیار یعنی شارپ ویپن سے جوان کس طرح زخمی ہو گئے۔ کیا یہ انکاؤنٹر بالکل پاس پاس ہو رہا تھا؟ تیز ہتھیار سے زخمی تو تبھی ہوگا جب دونوں ایک دوسرے کے قریب ہوں۔ گاؤں کے سرپنچ موہن سنگھ مینا نے بھی نیوز ایجنسی اے این آئی سے بات کی۔ مینا کے جواب سے معلوم پڑتا ہے کہ وہ پتھر چلا رہے تھے۔ پولیس کہتی ہے کہ ان کے پاس دیسی بندوقیں تھیں، مگر انکاؤنٹر میں جو تین سپاہی زخمی ہوئے ہیں وہ دھاردار ہتھیار سے زخمی ہوئے ہیں۔ کیا پتھر بھی شارپ ویپن میں شمار کیا جاتا ہے؟

 بہت سے لوگ مارے گئے آٹھ افراد کو دہشت گرد کہہ رہے ہیں۔ ہمیں صحافت میں سکھایا گیا ہے کہ ثابت ہونے سے پہلے تک ملزم یا مبینہ طور پر ملزم لکھنا چاہیے۔ مگر سب دہشت گرد کہہ رہے ہیں جبکہ کسی کو سزا نہیں ہوئی ہے۔ ماضی میں کئی ایسے معاملے ہوئے ہیں، جن میں دہشت گردی کے معاملے میں لوگ دس بیس سال تک جیل میں بند رہے، انہیں دہشت گرد ہی کہا جاتا رہا مگر ان کے خلاف کوئی ثبوت نہیں ملا اور وہ سپریم کورٹ سے بری ہو گئے۔ دہشت گردی کے الزام میں تمام عدالتوں سے بری ہوئے 24 ایسے لوگوں کی کہانی مرتب کر جامعہ ٹیچرس سولڈیرٹیي ایسوسی ایشن نے ایک کتاب شائع کی تھی۔ کتاب کا نام ہے Framed Dammed Aquitted اس کتاب میں بری ہوئے ہر کیس کے پیچھے میڈیا کی کلیپنگ بھی ہے، جس میں آپ دیکھ سکتے ہیں کہ گرفتاری کے وقت میڈیا کس طرح دہشت گرد کہنے لگتا ہے۔ میڈیا ہی نہیں، رشتہ دار، دوست یار تمام دوری بنا لیتے ہیں۔

مترجم:شاہد جمال

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close