آج کا کالم

بہار کی ناکامی اور اترپردیش کی کامیابی: ایک جائزہ!

محمد آصف ا قبال

 ملک کی پانچ ریاستوں  میں  ہونے والی اسمبلی انتخابات کا مر حلہ اس وقت پورا ہو گیا جب کہ 11؍مارچ کو اس کے نتائج کا اعلان کیا گیا۔ ان نتائج کا سبھی کو بے صبری سے انتظار تھا۔ اس میں  عوام میں  شامل تھے اور وہ سیاسی جماعتیں  بھی جو اپنی سیاسی بساط کے پھیلائو ، اس کے استحکام یاپہلے سے حاصل شدہ دائرہ کو برقرار رکھنا چاہتی تھیں ۔ان پانچ ریاستوں  میں  منی پور، گوا بھی تھے توپنجاب ،اتراکھنڈ اور اترپردیش بھی۔اس سب کے باوجود سب سے زیادہ دلچسپی جس ریاست سے تھی وہ اتر پردیش ہی تھا۔اس کی بنیادی وجہ یہ تھی کہ ایک جانب حالیہ اسمبلی الیکشن میں  اترپردیش ہی وہ ریاست تھی جس میں  اسمبلی سیٹ کے لحاظ سے سب سے زیادہ تعداد تھی وہیں  یہی وہ ریاست بھی تھی جو عموماً ملک کے سیاسی مزاج کو متاثر کرتی ہے۔لیکن جہاں  برسراقتدار اکھلیش حکومت کو اس ریاستی انتخابات اور اس کے نتائج سے حد درجہ دلچسپی تھی وہیں  مرکزمیں  برسر اقتداربھارتیہ جنتا پارٹی کو اکھلیش حکومت سے کچھ زیادہ نتائج کے اعلان کا بے صبری سے انتظار تھا۔بھارتیہ پارٹی کی بے صبری کی ایک وجہ اس کی حد درجہ منظم و منصوبہ بند انداز میں کی جانے سعی و جہد تھی جس کے نتائج وہ اپنی آنکھوں  سے دیکھنا چاہتی تھی۔

وہیں  راجیہ سبھا میں  اس کی کمزور حالت کو مضبوط کرنے کا ذریعہ بھی یہی اتر پردیش کے نتائج تھے۔پھر چونکہ 2014کے آغاز ہی سے جبکہ وہ مرکز میں  برسراقتدار آئے،ان انتخابات کے  شدت سے منتظر تھے۔آخر کار یہ انتظار ختم ہوا اور بھارتیہ جنتا پارٹی کو 403اسمبلی سیٹوں  والی ریاست اترپردیش میں 325نشستوں  پر بڑی کامیابی حاصل ہوئی۔دوسری جانب اترکھنڈ میں  70نشستوں  میں  سے 57نشستوں  پر بی جے پی کو کامیابی حاصل ہوئی ہے۔تیسری ریاست تعداد کے اعتبار سے ریاست پنجاب تھی جہاں  کل 117نشستوں  میں  سے کانگریس کو 77اور عام آدمی پارٹی کو 22سیٹیں  حاصل ہوئی ہیں ۔وہیں  منی پور اور گوا میں  بھی بالترتیب کانگریس کو 28اور17اور بی جے پی کو21اور13نشستیں  حاصل ہوئی ہیں ۔

 انتخابی نتائج نے جہاں  ایک جانب بھارتیہ جنتا پارٹی کے لیڈران اور ان کے کیڈر کو بے انتہا حوصلہ بخشا ہے ۔اس کے برخلاف ناکام ہونے والوں  نے الزام تراشی سے کام لیا ہے۔وہیں  ایک طبقہ ایسا بھی ہے جو ہر مرتبہ ہونے والے الیکشن اور اس کے نتائج کاٹھیکرا دوسروں  کے سر پھوڑتا آیاہے،اس مرتبہ بھی اس نے اپنی پہچان کو برقرار رکھا ہے۔سماج وادی پارٹی کے صدر اور کار گزار وزیر اعلیٰ اکھلیش یادو نے کانگریس سے آگے بھی اتحاد برقرار رکھنے کا اعلان کرتے ہوئے ہے کہ آج کے دور میں  ووٹ سمجھانے سے نہیں  بہکانے سے ملتا ہے۔انتخابات کے نتائج سے مایوس اکھلیش نے کہا کہ کانگریس سے سماجوادی پارٹی کا اتحاد اور راہل گاندھی سے ان کی دوستی آگے بھی برقرار رہے گی۔ساتھ ہی سماجوادی پارٹی کو 29%ووٹ حاصل ہوئے،پھر بھی وہ ہار گئی ،اس کا جائزہ لیا جائے گا۔اکھلیش یادو کی یہ بات کہ ترقی اور ڈولپمنٹ کے کاموں  کو انجام دیتے ہوئے لوگوں  کو اس کے بارے میں  سمجھایا جائے،اس سے ووٹ حاصل نہیں  ہوتے، یہ بات کسی حد تک درست بھی ہے۔اس کے باوجود ناکام ہونے والے ہر فرد کو اپنی خامیوں  ،کمیوں ،کوتاہیوں  اور منصوبہ بندی اور عمل کے درمیان جاری نقائص کا ضرور جائزہ لینا چاہیے۔اکھلیش حکومت گرچہ ترقی کو اپنی تشہیر کا محور بنائے ہوئے تھی اس کے باوجود وہ خوب اچھی طرح سے جانتے ہیں  کہ پارٹی اندرون خانہ اور بیروں  خانہ کن مسائل سے دوچار تھی۔یہاں  تک کہ ان کے گھر اورخاندان خود ان مسائل کے فروغ کا ذریعہ تھا۔ ان حالات میں  یہ کیسے ممکن تھا کہ وہ کامیاب ہو جاتے؟اس سب پر مزید یہ کہ یہی اکھلیش حکومت اور سماج وادی پارٹی جو ہر مرتبہ سچر کمیٹی رپورٹ اور اس میں  موجود مسائل کے حل کے لیے کم از کم اپنے مینوفیسٹو میں  چند وعدے کرتی آئی  ہے،پہلی مرتبہ 2017کے اسمبلی الیکشن میں  اس نے ان مسائل اور اس سے وابستہ کمیونٹی کو نظر انداز کیا ہے۔وہیں  یہ حقیقت بھی پیش نظر رہنی چاہیے کہ اکھلیش حکومت کے برسراقتدار دور میں  جس قدر چھوٹے اور بڑے فسادات ہوئے اور جس طرح متاثرین کو نظر انداز کیا گیا، ان سب نے مل کر مظلومین کے ایک بڑے طبقہ کا دل پہلے ہی اچاٹ کر دیا تھا۔نتیجہ میں  بہوجن سماج پارٹی ،کانگریس پارٹی،ایم آئی ایم،لوک دل اور چھوٹی و بڑی سیاسی پارٹیوں کے ساتھ ساتھ سننے میں  آیا ہے کہ بی جے پی کو بھی مظلومین کا ووٹ ملاہے۔نتیجہ میں  سماج وادی پارٹی اترپردیش اسمبلی میں  ایک کمزور اپوزیشن بن کر سامنے آئی ہے۔

 اسمبلی الیکشن اور اس کے نتائج کا اگر جلد بازی میں  جائزہ لیا جائے تو یہ مناسب نہیں  ہوگا۔اور وہ لوگ جو جلد بازی کا مظاہرہ کر تے نظر آرہے ہیں  یا ناکامی اورافسردگی کے نتیجہ میں  بیان بازیاں  کر رہے ہیں  ،انہیں  چاہیے کہ ذرا ٹھہراکر ، اور اپنی گزشتہ پانچ سالہ سرگرمیوں  کا ٹھنڈے دل سے گہرائی کے ساتھmicro basisپر تجزیہ کرتے ہوئے،بنایات اور لائحہ عمل طے کرنا چاہیے۔لیکن چونکہ الیکٹرانک میڈیا سوالوں  کے جوابات فوراً چاہتی ہے لہذا جس کے منہ میں  جو بات آتی ہے وہ کہ گزرتا ہے۔ممکن ہے اس جلد بازی میں  جاری کیے گئے بیان میں  بھی کچھ سچائی ہو،اس کے باوجود جو بات ٹھہر کر غوروفکر کے بعد پیش کی جائے گی اس میں  آگے کے لیے راہیں  بھی کھلیں  گی اور وہ خود بھی اپنے مسائل کودور کرنے اور اپنی ناکامیوں  کو کامیابیوں  میں  تبدیل کرنے میں  کامیاب ہوں  گے۔فی الحال ہم بہوجن سماج وادی پارٹی کی سپریمو مایاوتی کے اُس بیان کا تذکرہ کرتے ہیں  جس میں  انہوں  نے کہا ہے کہ ان کی اس قدر بڑی شکست کے پیچھے ای وی ایم مشینوں  کی گڑبڑی ہے۔یعنی جن مشینوں  کو ووٹ دینے کے لیے استعمال کیا گیا وہ ٹھیک نہیں  تھیں  ،نتیجہ میں  وہ رزلٹ سامنے نہیں  آیا جو حقیقتاً عوام نے ان میں  بند کیا تھا۔مایاوتی کے اس بیان کا نوٹس الیکشن کمیشن آف انڈیا نے بھی لیا ہے اور ان کے اس بیان کوبے بنیاد بتایا ہے ۔

دوسری جانب اترپردیش ،اتراکھنڈ ،گوا اور منی پور میں بی جے پی کی حکومت بننے کا فیصلہ ہو گیا ہے تو وہیں  پنجاب ایک واحد ریاست ہے جہاں  کانگریس کی حکومت بنتی نظرآ رہی ہے۔اگر پنجاب کی بات کی جائے تو عام آدمی پارٹی کو 117میں  سے صرف 22سیٹوں  پر ہی کامیابی حاصل ہو ئی۔اس کے برخلاف جس قدر بڑے پیمانہ پر اور جتنی محنت اور لگن کے ساتھ عام آدمی پارٹی نے پنجاب کی سیاست میں  حصہ لیا تھا ، اور جس طرح ابتدا میں  کانگریس کے خلاف پنجاب کی فضا ہموار ہوتی نظر آرہی تھی ،ان دو وجوہات کی بنا پر اُنہیں  پوری امید تھی کہ پنجاب میں  عام آدمی پارٹی ممکن ہے حکومت بنالے۔لیکن جس طرح مرحلہ وار وہاں  کی سیاست میں  اتار چڑھائو آیا اور کیپٹن امرندر سنگھ نے اپنی سیاسی تجربہ کاری کی بناپر حالات میں  تبدیلی پیدا کی نیز نوجوت سنگھ سدھو نے بھارتیہ جنتا پارٹی چھوڑ کر کانگریس پارٹی میں  شامل ہونا پسند کیا،ان حالات اور دیگر اندرونی و بیرونی کے مسائل کی بنا پر عام آدمی پارٹی کی بڑھتی مغبولیت پر روک لگ گئی۔اس کے باوجود ایک ایسی سیاسی پارٹی جس کا وجود ہی صرف تین سال پہلے ہواہو،اُس نے دہلی کے بعد پنجاب میں  اپنی سیاسی زمین کو ہموار کیااوربڑی کامیابی حاصل کی ہے۔

 آخر میں  گفتگو کا اختتام اس بات پر کرنا چاہتے ہیں  کہ آپ بھی سوچیئے اور ہم بھی اور وہ لوگ بھی جو کامیاب ہوئے اور جو ناکام ،کہ یہی اسمبلی انتخابات 2015میں  بہار میں  بھی ہوئے تھے۔بی جے پی کے ساتھ ساتھ ریاستی پارٹیاں  وہاں  بھی موجود تھیں  جو 2014کے لوک سبھا انتخابات میں  بری طرح شکست سے دوچار ہوچکی تھیں ۔اس کے باوجود2015میں  بہار اسمبلی انتخابات میں  تو بی جے پی اپنی تمام کوششوں  اور صلاحیتوں  کے باوجودناکام ٹھہرتی ہے اور ریاستی پارٹیاں  کامیاب جاتی ہیں ،ایسا کیوں  ہے؟مزید یہ کہ اُن حالات میں  اور آج کے حالات میں  کیا فرق ہے؟وہ کامیابی اور یہ ناکامی دراصل  کس کی ہے؟عوام کی ،ریاستی سیاسی جماعتوں  کی یا اس پورے کاسٹ سسٹم کی جس پر ہندوستانی سیاست کا آج تک انحصار ہے!

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

آصف اقبال

آصف اقبال دہلی کے معروف کالم نگار ہیں۔ بنیادی طور پر آپ سافٹ ویئر انجینئر ہیں۔ آپ کی نگارشات برصغیر کے مؤقر جریدوں اور روزناموں میں شائع ہوتی ہیں۔

متعلقہ

Close