آج کا کالم

بینکوں کے اندر کی غلامی

رويش کمار

"اگر کوئی بینک ملازم بیمار ہوتا ہے اور اسے طبی وقفے کی ضرورت ہو تو وہ ہیڈ کوارٹر میں ہی رہ کر اپنا علاج کروئے گا اور متعلقہ کاپی علاقائی دفتر پر منتقل کرے گا۔ بصورت دیگر طبی درخواست منظور  نہیں کی جائے گی اور اسے بلا معاوضہ کیا جائے گا.”

شمالی بہار دیہی بینک کے احکامات کا یہ حصہ ہے. 5 مارچ کو جاری ہوا ہے. اس کا مطلب یہ ہے کہ اگر کسی بینکر کو ہارٹ اٹیک ہوا تو وہ ضلع سے باہر نہیں جا سکتا ہے. جگر یا گردے میں کچھ ہوا یا دست ہی ایمرجنسی حالت میں پہنچ گئے تو وہ ضلع یعنی ہیڈکوارٹر سے باہر نہیں جا سکتا ہے.

کیا اس طرح کے احکامات بھی جاری ہوتے ہیں؟ کیا بینک کے سربراہ نے برانچ کے ساتھ ہسپتال بھی بنا دیا ہے؟ ایسے حکم کی بنیاد پر ہی آرڈر دینے والے سربراہ کو جیل بھیج دینا چاہئے. برانچ کے ملازم اور افسر  خود کو کتنا ذلیل محسوس کرتے ہوں گے.

یونائیٹڈ بینک آف انڈیا کے 8 سب سے خراب کارکردگی کرنے والے برانچ کے بارے میں ایک حکم آیا ہے. ان شاخوں سے فوری طور پر ہی ایئر کنڈیشن، جنریٹر کی سہولت ہٹا لینے کے احکامات دیے گئے ہیں. برانچ منیجر اور ڈپٹی مینیجر کی موجودگی لینڈ لائن سے چیک کی جائے گی. موبائل فون پر بھروسہ نہیں ہے.

اس طرح کے حکم پڑھ کر ہی بینک کی شاخوں کے لوگ کتنا ذلیل محسوس کرتے ہوں گے. آرڈر میں لکھا ہے کہ برانچ منیجر اور ڈپٹی منیجر کی سیلری روک دی جائے. میڈیکل بل ادا نہیں کیا جائے. کسی کو چھٹی نہ دی جائے. آل انڈیا بینک آفیسر ایسوسی ایشن (AIBOA) نے اس کی مذمت کی ہے. مگر ان احکامات کو پڑھ کر دیکھئے، کسی کی بھکتی کیجیے مگر یہ تو آپ ہی کے شہری ہیں، رشتہ دار ہیں. سوچئے ان پر کیا گزر رہی ہے.

آپ جانتے ہیں کہ 21 میں سے 11 سرکاری بینک ایسے ہیں جن کا این پی اے 6 فیصد زیادہ ہو گیا ہے. بلیک سوٹ والے صنعتکار بینک لوٹ گئے ہیں. اس لیے ریزرو بینک نے یونائیٹڈ بینک کو PROMPT CORRECTIVE ACTION میں لگا رکھا ہے. اگر ایسی ہی تشویش ناک صورتحال ہے تو سب سے پہلے چیئرمین اور ایگزیکیٹو ڈائریکٹرز کی سیلری اور چھٹی روک دی جانی چاہئے. ان کے کمرے سے ایئر کنڈیشن نکلوا لینا چاہئے. 20 ہزار کمانے والے کلرک کی سیلری روک کر کیا ثابت کرنا چاہتے ہیں؟

"25 اپریل 2018 تک بینک شاخوں کے سربراہان اور عملے کی چھٹیاں منسوخ کر دی جاتی ہیں. جنہوں نے منظوری کی درخواست بھیجی ہیں ان کی چھٹی منسوخ سمجھی جائے. "

یہ حکم بھی ایک بینک کا ہے. بینکوں میں مارچ کا مہینہ مشکل ہوتا ہے، لیکن اس طرح کے احکامات کا ایک حوالہ ہے. شاخ کی سطح پر روز انشورنس اور میچول فنڈز فروخت کرنے کا حکم دیا جاتا ہے. لوگ لینا نہیں چاہتے ہیں، مینیجر کب تک جھوٹ بول کر کسی کا انشورنس کر تے رہیں گے. اٹل پنشن یوجنا کا ٹارگیٹ ہر دن دیا جاتا ہے تاکہ حکومت اپنی واہ واہی کر سکے.

اس یوجنا کو کوئی خود سے لینے نہیں آتا. بینکر دباؤ ڈال کر یا جھانسہ دے کر بكوا دیتے ہیں. مگر ان کا کہنا ہے کہ دو تین ماہ کے بعد پیسہ دینا بند کر دیتا ہے. جو دو تین مہینہ پیسہ دیتا ہے اسے واپس لینے کا عمل بہت مشکل ہے. بینکر بھی جب ہیڈکوارٹر بھیجتے ہیں تو ایسی درخواستوں کو نظر انداز کر دیا جاتا ہے. لہذا ایک غریب کسان کا دو تین مہینے کے 500-1000 روپیہ انشورنس کمپنی کے اکاؤنٹ میں چلے جاتے ہیں. لوگ بھی لٹ رہے ہیں اور بینکر بھی لٹ رہے ہیں.

آج کل ہر بینک کا اپنا ایک سافٹ ویئر ہے. اس سافٹ ویئر کا کسی ٹیكنالوجي کے ایکسپرٹ کو جائزہ لینا چاہئے. ان میں کئی ایسے ٹولز ہیں جو بینک کے منیجر پر طرح طرح کے کنٹرول رکھتے ہیں اور انہیں ذہنی طور پر پریشان کرتے ہیں. جیسے کل اورينٹل بینک آف کامرس نے اپنے تمام منیجروں کو ٹارگیٹ بھیجا اور سسٹم کو فکس کر دیا. عام زبان میں آپ یوں سمجھیں کہ جب تک آپ دس اٹل پنشن یوجنا نہیں بیچیں گے، سسٹم میں نہیں بھریں گے اور آپ کمپیوٹر سے لاگ آؤٹ ہی نہیں ہو سکتے ہیں.

لاگ آؤٹ نہیں ہونے پر آپ گھر نہیں جا سکتے ہیں. کل اس بینک کی ملک بھر میں پھیلی بہت سی شاخوں میں لوگ رات کے ساڑھے آٹھ بجے تک بیٹھے رہے. بہتوں کا ٹارگیٹ پورا نہیں ہوا تھا اور وہ بند کرکے گھر نہیں جا سکتے تھے. جب تک ہدف پورا نہیں ہو گا تب تک وہ کمپیوٹر کی سکرین پر فلیش کرتا رہے گا. خوفناک ٹارچر ہے. اسے CSO LOP سسٹم کہتے ہیں. CLOSE FOR SOL OPEARATON کئی بار بینک کئی ہفتوں کے لئے یہ جاری کر دیتا ہے. کل رات کو جب یہ لاک ہٹا تب جاکر بینک کے ملازم گھر جانے کو تیار ہوئے.

دینا بینک کا بھی ایسا ہی حکم آیا ہے. ان بینکوں کی اپنی انشورنس پالیسی ہے. مطلب انشورنس کمپنی سے معاہدہ ہے. انشورنس کمپنیاں ایک نیا روزگار نہیں دے رہیں بلکہ بینک کے منیجروں سے ہی اپنا انشورنس بكوا رہی ہیں. آرڈر میں لکھا ہے کہ 5 اٹل پنشن یوجنا بیچنی ہے اور 2 چولامنڈلم میڈكلیم.

ٹارگیٹ کا حال یہ ہے کہ جن کے سیونگ اکاؤنٹ ہیں ان کے بھی جن دھن کھاتے کھولے گئے ہیں تاکہ واہ واہی لوٹی جا سکے. جن ریاستوں میں قرض معافی کا اعلان ہوتا ہے ان ریاستوں میں بینکروں پر پہاڑ ٹوٹ پڑتا ہے.

 ایک بینکر نے بتایا کہ کسان کو قرض معافی کے فارم میں 66 کالم بھرنے پڑتے ہیں. بہت سی جگہوں سے بینکروں نے بتایا کہ بغیر استحقاق اور ضمانت کے کرنسی لون تقسیم کیا جا رہا ہے. کرنسی لون دلوانے کے لئے سیاسی دباؤ بہت بڑھ گیا ہے. حکومت اور اپوزیشن دونوں کے ایم پی اور ممبر اسمبلی دباؤ ڈال رہے ہیں.

بہت سے بینکروں نے کہا کہ جلد ہی کرنسی لون بینکوں کو اندر سے بٹھا دے گا. کرنسی لون کا این پی اے بھی نظر آنا شروع ہو جائے گا. کب تک اکاؤنٹس کی دھاندلی سے اسے چھپایا جائے گا. بہت شاخوں میں آج بھی کیش کی شدید کمی ہے جس کی وجہ سے مینیجر گاہکوں سے گالی سن رہے ہیں.

میں بینکوں پر مسلسل لکھ رہا ہوں. بینکوں کے اندر سے آواز کے باہر آنے کے راستے بند تھے. وہ آواز باہر لانے کے طریقے تلاش کر رہے ہیں. آپ شہریوں کا فرض بنتا ہے کہ آپ بینکروں کی مدد کریں. ان کی حیثیت کسان اور مزدور سے بھی بیکار ہو چکی ہے. ایک خاتون نے لکھا ہے کہ میری جس سے شادی ہونی ہے، وہ بینکر ہے مگر ہدف اور ٹرانسفر کے دباؤ کی وجہ سے ڈپریشن میں آ گیا ہے. بینکوں میں غلامی کی سیریز میں کئی باتیں بار بار آتی ہیں. آپ اس سے یہ نہ سوچیں کہ یہ تکلیف پرانی ہے. دیکھی اور سنی ہوئی ہیں. اگر آپ ایسا نظام کو برداشت کریں گے تو یاد رکھئے اسی میں آپ کو بھی ایک دن جانا ہے. بینکروں کی حالت بہت خراب ہے. انہیں آپ کی مدد کی ضرورت ہے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close