تاجروں کے لئے سبق: ووٹر بنے رہیں کوئی نہیں لوٹے گا

رويش کمار

جن لوگوں نے جی ایس ٹی کی تکلیفوں کو لے کر آواز اٹھایی کی وہ صحیح ثابت ہوئے. تاجروں نے ڈر ڈر کر اپنی بات کہی. ان کے خوف کو ہم جیسے کچھ لوگوں نے آسان کر دیا. اس کے بارے میں لکھا اور بولا کہ جی ایس ٹی بزنس کو برباد کر رہی ہے. لوگوں سے کام چھن رہے ہے. جواب ملتا رہا کہ یہ تاجر ہی چور ہیں. چوری کی عادت پڑی ہے، لہذا جی ایس ٹی نہیں دینا چاہتے. کیا سانحہ رہا تاجروں کا، جو لٹ رہا تھا، وہی چور کہا جا رہا تھا. اپوزیشن بھی چپ رہا. بعد میں راہل گاندھی نے اسے زوردار انداز سے اٹھایا تو پھر مذاق اڑا کہ راہل کو جی ایس ٹی کی سمجھ نہیں ہے. وہ امیروں اور چوروں کا ساتھ دے رہے ہیں. آخر میں حکومت کو وہی کرنا پڑا جو پہلے کر دینا چاہئے تھا مگر گھمنڈ کے چلتے وہ طویل عرصے تک ان سنی کرتی رہی. سوچئے اگر ایک ہی بار میں لوک سبھا اور اسمبلی کے انتخابات ہو گئے ہوتے تو کیا تاجروں کی آواز سنی جاتی؟

بہت کم میڈیا اداروں نے جی ایس ٹی کے درد کو جارحانہ انداز سے اٹھایا. بڑے تجارتی گھرانے اور صنعت کار بھی خوف سے نہیں بول پا رہے تھے. جتنی تکلیف تھی اس تعداد میں گلی گلی میں بنے تجارتی تنظیم بھی نہیں بول رہی تھیں. کراہ رہے تھے اور نہیں چاہ رہے تھے کہ کوئی آہ سن لے. تکلیف بتاتے تھے مگر یہ بھی تاکيد کر دیتے تھے کہ پلیز میرا نام مت لینا. میں نے بھی جی ایس ٹی کو لے کر شو کیا. جو زمین پر دکھا، اسی کو لکھا. تاجر بی جے پی کے حق نواز مانے جاتے تھے، اپنے حامیوں کے مصائب کو لکھنا بھی چوروں کا ساتھ دینا ہوگیا اور اینٹی مودی ہو گیا. اس مہم میں ترجمان سے لے کر آئی ٹی سیل کے كھلیهر سب شامل تھے. اب یہ تمام بیوقوف بنے. میرے ہی صفحے پر ان بیوقوفوں کے سیمپل مل جائیں گے.

حکومت بھی کئی ماہ سے انسنی کر رہی تھی. چھوٹی موٹی تبدیلیاں لاگو کرتی رہی مگر اہم مطالبات کی طرف توجہ نہیں دی. تمام مان چکے ہیں کہ گجرات میں بی جے پی کی فتح یقینی ہے. اس میں کوئی اگر مگر نہیں ہے. میں نے بھی مانتا ہوں. پھر ایسا کیا ہوا کہ جو حکومت ملک بھر کے تاجروں کو نہیں سن رہی تھی وہ اچانک سننے لگی؟ گجرات انتخابات کے بہانے ہی سہی، ڈرے سہمے اور برباد ہو رہے تاجروں کو فائدہ ہوا ہے. ویسے الیکشن کمیشن کی ضابطہ اخلاق کا اچار پڑ گیا ہے. اب اس ادارے کو بھول ہی جانا چاہئے. اتنے بڑے پیمانے پر ریٹ کٹ ہوئے ہیں. پہلے آپ انتخابات کے دوران پٹرول کی قیمت کم نہیں کر سکتے تھے. خیر، ہم سب اداروں کو شکستہ ہوئے دیکھ رہے ہیں. ایک دن اس کی قیمت آپ ہی چكایٔیں گے.

تاجروں کو سوچنا چاہئے کہ انہیں ڈر کیوں لگ رہا تھا؟ وہ رو رہے تھے مگر کیوں بول نہیں پا رہے تھے؟ ایسا لہذا ہوا کیونکہ وہ حامی اور بھکتی میں خود کو ڈھال کر اپنی طاقت گنوا چکے تھے. وہ بھی طویل عرصے سے اس کھیل میں شامل تھے کہ جو بھی حکومت پر سوال کرے، اسے گالی دو. انہیں پتہ نہیں تھا کہ وہ کیا کر رہے ہیں. وہ گالیوں میں شامل ہوکر جمہوریت میں آواز اٹھانے کے اسپیس کو ختم کر رہے تھے جس کا سب سے پہلے اور سب سے زیادہ نقصان انہی کو اٹھانا پڑا. چھ ماہ میں کتنا نقصان ہوا ہوگا. انہیں پتہ چل رہا تھا کہ گودی میڈیا ان کا ساتھ نہیں آئے گا. آئے گا تو حکومت کی ایجنسیوں کے خوف سے وہ بولنے کے قابل بھی نہیں رہے.

سبق یہی ہے کہ آپ ضرور ایک پارٹی کو کرہپسند کریں، بار بار ووٹ یا کسی کو ایک بار بھی کریں تو بھی آپ اپنی ووٹر کی حیثیت کو بچائے رکھیں. گجرات انتخابات کا خوف نہیں ہوتا تو ان کی مانگیں کبھی نہیں مانی جاتیں. جب تک وہ ووٹر ہیں، شہری ہیں۔ تبھی تک ان کے پاس بولنے کی طاقت ہے. جیسے ہی وہ بھکت اور حامی میں تبدیل ہوتے ہیں، بے کار ہو جاتے ہیں. تب عدم اطمینان ظاہر کرنے پر باغی قرار دیے جائیں گے. جمہوریت میں عدم اطمینان ظاہر کرنے کا حق ہر کسی کے پاس ہونا چاہئے. اگر تاجر پہلے ہی ووٹر کی طرح برتاؤ کرتے تو بزنس کو لاکھوں کا نقصان نہ ہوتا.

تاجروں کے لئے دوسرا سبق یہ ہے کہ جب کوئی حکومت سے سوال کرے تو اس کا ساتھ دیں. آج کے دور میں سوال کرنا آسان نہیں ہے. ملازمت تک داؤ پر لگ جاتی ہے. کوئی سوال کس کے لئے کرتا ہے. اگر جی ایس ٹی پر ہمارے جیسے دو چار دس لوگ نہیں لکھتے تو کیا ہوتا؟ لہذا سوال کرنے والوں کا دفاع کیجیے. ورنہ ایک دن جب پھسیں گے تو آپ کی بات کہنے والا کوئی نہیں ہو گا. آپ جانتے ہی ہیں کہ سننے والے کو اقتدار میں پہنچ کر کویٔی فرق  نہیں پڑتا کہ آپ کیا کہہ رہے ہیں. اپوزیشن کی آواز، سوال کرنے کی روایت کا ساتھ دیجئے، اس کا دفاع کیجیے ورنہ موقع کا فائدہ اٹھا کر محافظ ہی قاتل بن جائے گا. بن ہی گیا تھا.

گودی میڈیا نے تاجروں کی آواز کو دبایا. تاجر بھی یہ محسوس کرنے لگے تھے. لہذا ان تمام صحافیوں کو مبارکباد جنھوں نے جی ایس ٹی کی بربادی کی خبر اگرچہ اندر کے صفحے اور کہیں کونے میں شائع کی.

مترجم: محمد اسعد فلاحی



⋆ رویش کمار

رویش کمار
مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے