آج کا کالم

جاننے کی کوشش – کس کے لئے کتنا فائدہ مند ہے جی ایس ٹی

رویش کمار

آج گڑگاؤں گیا تھا، DHL کمپنی کے دفتر. یہ کمپنی تمام جگہوں کے مال کو لانے لے جانے کا کام کرتی ہے. کوریئر کمپنی ہے. اس کمپنی کے پریتم بنرجی کو جی ایس ٹی سے کافی امیدیں ہیں. ان کا کہنا ہے کہ اگر ٹھیک سے لاگو ہوا اور ایک دم سے نیا نظام آیا تو بزنس کرنے والوں کو کافی فائدہ ہو گا. پریتم کی دلیل ہے کہ بڑی کمپنیوں کو تو ویسے بھی خاص دقت نہیں ہوتی تھی. ان کے پاس ہر طرح کے وسائل ہوتے ہیں لیکن جی ایس ٹی سے چھوٹے کاروباریوں اور گھر بیٹھے کام کرنے والوں کو فائدہ مل سکتا ہے.

پریتم اور ان کے ساتھیوں نے سیلز ٹیکس کی موجودہ خامیوں کو گنانا شروع کیا. وہ بار بار زور دے رہے تھے کہ حکام کی سوچ میں تبدیلی کی سخت ضرورت ہے ورنہ وہ کسی نہ کسی طریقے کا جگاڑ نکال کر جی ایس ٹی کی روح کو مار دیں گے. انہوں نے کہا کہ حکومت جب اسے لاگو کرنے کے لئے آئی ٹی کا ڈھانچہ تیار کرے تو ہر کام آن لائن کر دے. یہاں تک کہ کوئی افسر ہمارے ٹرک کو روکے تو اسے بھی  آن لائن بھرنا پڑے کہ کیوں روکا، کتنی دیر لگایا اور کیا پایا. یہی نہیں یہ سب کچھ سی سی ٹی وی کیمرے کی نگرانی میں ہو.

ان لوگوں کے تجربات کو سن کر لگا کہ ابھی ہر ناکے والے تمام طرح کی چیکنگ کے نام پر کافی پریشان کرتے ہیں. پن نمبر ہونے کے باوجود طباعت کی معمولی غلطیوں کے بہانے گاڑی کھڑی کر دیتے ہیں. یہاں تک کہ ایک بار گاڑی کے نمبر کا ایک ہندسہ نہیں چھپا تو کافی بڑی رقم جرمانے کے طور پر وصول لیا، جبکہ پن نمبر کے ذریعے ہمارے اور ہمارے مال کے بارے میں ساری معلومات حاصل کی جا سکتی تھی. مگر افسروں نے سنا ہی نہیں. ایک ایک ناکے پر ہمارے ٹرک ہفتوں کھڑے رہتے ہیں. ہمارے ٹرک ڈرائیوروں کی تکلیف کی تو پوچھئے مت.

انہیں امید ہے کہ جی ایس ٹی جب آئے گا تب محصول اور چیک پوسٹ تاریخ ہو جائے گا. ایک بار ٹیکس دے کر مال چلا تو براہ راست منزل پر اترے گا. اگر ایسا نہیں ہوا تو پھر جی ایس ٹی کا فائدہ نہیں. کیا ایسا ہوگا؟ یہ بھی خیال رکھنا ہوگا کہ دہلی میں عدالتی حکم کی وجہ سے ٹرکوں کو سرحد پر گھنٹوں انتظار کرنا ہوتا ہے کیونکہ وہ ایک مقررہ وقت کے اندر ہی دہلی میں داخل ہو سکتے ہیں. ہو سکتا ہے کہ دہلی میں اگلے پانچ چھ سال میں بائی پاس بن جائے لیکن اس کی وجہ سے مال لانے لے جانے میں آٹھ سے دس گھنٹے شامل کیا جا سکتا ہے. مجموعی طور پر جو مال امریکہ سے چوبیس گھنٹے میں گڑگاؤں آ جاتا ہے، اسے گڑگاؤں سے نوئیڈا پہنچانے میں تین چار دن لگ جاتے ہیں. کئی طرح کی کاغذی کارروائیاں پوری کرنی ہوتی ہیں.

ٹیکس ماہر مکل گپتا جی ایس ٹی کے لئے بنی کئی قسم کی مشاورتی کمیٹیوں میں سے ایک میں شامل تھے. مکل گپتا کا کہنا ہے کہ ضروری ہے کہ جی ایس ٹی سے کسی چیز کو باہر نہ رکھا جائے. ہر چیز پر یکساں ٹیکس لگے. تاہم حکومت نے شراب، تمباکو اور پٹرولیم کی اشیاء کو جی ایس ٹی کے دائرے سے باہر رکھا ہے. یہی نہیں کئی قسم کا ٹیکس نظام ہونے سے جی ایس ٹی کو بہت کامیابی نہیں ملے گی. پریتم بنرجی کا کہنا ہے جی ایس ٹی سے چھوٹی صنعتوں کو فائدہ ہو گا.

مکل گپتا بھی حکام اور ملازمین کی ذہنیت میں تبدیلی کی بات کرتے ہیں. ان کا کہنا ہے کہ یہ اس بات پر بھی بہت زیادہ انحصار کرے گا کہ حکومت جی ایس ٹی کا کیسا خاکہ بناتی ہے. جی ایس ٹی کی وجہ سے چھوٹی صنعتوں کو ٹیکس ادا کرنے کا نیا نظام اپنانا ہوگا. اس سے ان کی لاگت بڑھ جائے گی. اس سے درمیانہ قسم کے نوکری پیشہ لوگوں پر مہنگائی کا بوجھ بڑھے گا، خاص طور پر جن کی تنخواہ دس سے پندرہ ہزار کے درمیان ہے.

مکل گپتا اس رائے کے نہیں لگے کہ جی ایس ٹی کی وجہ سے کارپوریٹ اور اعلی آمدنی والوں کے ٹیکس میں کمی کی جائے جیسا کہ کئی ممالک میں ہوا ہے. ایسا ہوا تو جی ایس ٹی کے بہانے سارا فائدہ کارپوریٹ کو چلا جائے گا. مکل گپتا بھی زور دے کر کہہ رہے ہیں کہ اگر اسے ایمانداری سے لاگو کیا گیا تو بزنس کرنے کا ماحول بنے گا. اب بہت سے لوگ ایماندارانہ طریقے سے بزنس کرنا چاہتے ہیں. اگر سب کے لئے ایک ہی نظام بنے گا تو ان کا اعتماد بڑھے گا.

دونوں اس نقطہ نظر سے آگے جاکر جی ایس ٹی کے اثرات کی پیشن گوئی کرنے سے بچنا چاہتے ہیں. اس وقت وزیر خزانہ کہہ رہے ہیں کہ وقت کے ساتھ ساتھ ٹیکس کم ہوں گے لیکن دنیا بھر میں ٹیکس ریٹ بڑھے ہیں. ہماری معلومات میں کہیں بھی وقت کے ساتھ ٹیکس ریٹ کم نہیں ہوا ہے. جن ممالک میں نافذ ہوا وہاں ریوینو میں خاص اضافہ نہیں ہوا. اس پر پریتم بنرجی اور مکل گپتا دونوں کا خیال ہے کہ ہندوستان کے تجارتی نظام میں کالا دھن یورپ یا دیگر ممالک کے مقابلے میں زیادہ ہے. اگر جی ایس ٹی سے ان میں اسی فیصد کی بھی کمی آ گئی تو بہت ہے.

جی ایس ٹی ہمارے دور کا ایک نیا ٹیکس نظام ہے. اس کے بارے میں زیادہ سے زیادہ معلومات جمع کرکے ہم اس نئے نظام کے تئیں اپنی سمجھ بڑھا سکتے ہیں. سمجھ بڑھانی چاہئے. میڈیا میں جی ایس ٹی کو لے کر استقبال کرنے والوں کی تعداد زیادہ ہے. عام طور سے دیکھنے والوں کی بھی ٹھیک ٹھاک تعداد ہے. تنقیدی طور پر دیکھنے والے کم ہیں. پھر بھی ہمیں خود سے بھی جاننے کی کوشش کرنا چاہئے. طرح طرح کی معلومات ہی ذمہ داری کو وسعت دیتی ہے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close