آج کا کالم

 جنگ سے پیشتر وزیراعظم یہ 35 کام ضرور انجام دیں!

رویش کمار

حملہ صرف اڑی کے بیس کیمپ پر نہیں ہوا ہے بلکہ سوشل میڈیا پر بنے بھکتوں کے کیمپ پر بھی ہو گیا ہے. حریفوں کو بھی چھرے لگ گئے ہیں. دونوں چیخ رہے ہیں. جنگ کی للکار اور نہ ہونے پر پھٹکار کی بھرمار ہو گئی ہے. وزیر اعظم کیا کریں، کیا نہ کریں کی باڑھ آئی ہوئی ہے. اسی سیلاب سے گھبرا کر میں نے فیصلہ کر لیا ہے کہ وزیر اعظم کبھی نہیں بنوں گا.

صلاحوں کے اس سیلاب سے مجھے وزیر اعظم سے ہمدردی ہو رہی ہے. ان سے فیصلہ لینے میں جو تاخیر ہو رہی ہے، اس جنگ کے متمنی بے چین ہوئے جا رہے ہیں. میں فیصلہ لینے میں ان کی مدد کرنا چاہتا ہوں. چاہتا ہوں کہ وہ آزادانہ طور سے فیصلہ لیں. آگے اپنے طریقوں کو بتاتے ہوئے جگہ کی کمی کی وجہ سے پرائم منسٹر کو پر م لکھ رہا ہوں. میں نے وزیر اعظم کو جنگ کے لئے پینتیس قدم بتائے ہیں. چونکہ ان کا پتہ جنگ کے ہنگامے کے درمیان ہی بدل گیا ہے، اس وجہ سے ڈاک سے خط بھیجنے کے بجائے یہاں پوسٹ کر رہا ہوں تاکہ عوامی فلاح و بہبود کے راستے پر رہتے ہوئے وہ جنگ کرکے عوامی فلاح وبہبود کا کام کر سکیں.

1) سب سے پہلے پر م کسی جنرل کے ہمراہ چینل کے پینل میں آئیں.

2) پینل میں پندرہ سال پہلے ریٹائر ہوئے جنرل ہی ہوں.

3) ریٹائر جنرل پینل میں جنگ اچھا کرتے ہیں.

4) پر م موجودہ جرنلوں کے ہمراہ پینل میں نہ آئیں.

5) موجودہ جرنلوں کو جنگ کرنا نہیں آتا ہے.

6) چینل کے پینل میں آکر اینکر کو بھروسہ دیں.

7) چینل کے پینل سے پاکستان کو للكاریں.

8) نیوز روم میں گھوم کر جنگ کی تیاری کا جائزہ لیں.

9) صدر کو رپورٹ دیں کہ سارے چینل جنگ کے لئے تیار ہیں.

10) چینلوں کے گرافکس روم میں جا کر وار روم بنانے کے لئے ہدایات جاری کریں.

11) پر م اخباروں میں شائع سارے ادارتی مضمون پڑھنے چلے جائیں.

12) حکومت بالکل بات نہ کرے، حکومت کی بات اینکر کرے.

13) جنگ کے وقت حکومت ڈیٹیل نہ بتائے بلکہ اینکر ڈیٹیل بتائے.

14) اینکر یہ بالکل نہ بتائے کہ یہ حکومت نے بتانے کے لئے کہا ہے.

16) پر م پیوش گوئل کو ہدایات دیں کہ پرائم ٹائم کے وقت کہیں بجلی نہ چلی جائے.

17) پر م تمام چینلوں پر نہ جائیں، نمبر سات کے چینل منتخب کریں جو اس ہفتے کے اس گھنٹے نمبر ون ہو جائے.

18) پر م میرے شو میں نہ آئیں، زیرو ٹی آر پی شو میں جانے سے کوئی فائدہ نہیں.

19) زیرو ٹی آر پی اینکروں کے ساتھ پر م کو دیکھ عوام یقین نہیں کرے گی کہ جنگ ہو جائے گی.

20) پر م پارٹی ترجمان کو بھی زیرو ٹی آر پی اینکروں کے قریب جانے سے منع کر دیں.

21) جنگ کا مجمع نمبر ون سے تین تک کے چینل پر ہی لگے.

22) ویسے تین سے سات نمبر والے چینل بھی جنگ کے لئے کم کوشاں نہیں ہیں.

23) پر م کے ساتھ ہونے والے اس ایكسٹرا سپر پرائم ٹائم کا پرومو خوب چلے گا.

24) چینل کے پینل میں پر م کو تین آپشن دیے جائیں گے.

25) سرجیکل اسٹرائک، كوورٹ اسٹرائک، اسٹرائک.

26) پر م کو ان تینوں میں سے ایک پر بٹن دبانا ہوگا.

27) اس کے بعد ان سے ووٹ ڈالنے کے لئے کہا جائے گا جن کے آدھار نمبر سے ٹوئٹر اور فیس بک اکاؤنٹ کھلے ہوں.

28) جو بھی نتائج آئیں گے، ان میں سے کوئی ایک ریٹائرڈ جنرل چن کر کے بتائیں گے کہ پر م کو کیا کرنا ہے.

29) اس کے بعد پر م کو دوسرے آپشن میں سے ایک پر بٹن دبانا ہوگا.

30) جنگ، سفارت کا انقطاع، اقتصادی تعلقات کا انقطاع.

31) یہ بات اینکر کہے گا کہ وزیر اعظم نے جو بھی بٹن دبایا ہے، دبا ہے وہی جس سے نیوکلیئر اسٹرائک ہوتا ہے کیونکہ ہم نے ہر بٹن کا تار نیوکلیئر بٹن سے جوڑ دیا تھا.

32) اس کے بعد ایک ایکسپرٹ قوم کو بتائے گا کہ نیوکلیئر اسٹرائک میں پچاس کروڑ لوگ مر جائیں گے، پچاس کروڑ بچ جائیں گے.

33) اس بات پر اینکر جھوم اٹھے گا. بریکنگ نیوز ہو جائے گی.

34) پچاس کروڑ مرنے والوں میں اینکر، کیمرہ مین اور ان کے اہل خانہ کا کوئی نہیں ہو گا.

35) جن کے خاندان سے کوئی اینکر ہے وہ کسی جنگ سے نہ گھبرائیں. انہیں کچھ نہیں ہوگا.

سوشل میڈیا اور میڈیا میں وزیر اعظم کو صلاح دینے والوں کی بھیڑ دیکھ کر مجھ سے رہا نہیں گیا. میں نے بھی ان صلاحوں کے حساب سے صلاح دینے کا اپنا خواب پورا کر لیا ہے. مجھ دیکھا نہیں جا رہا ہے کہ سب نے اس وقت وزیر اعظم کو تنہا چھوڑ دیا ہے. جنگ کا فیصلہ ان پر تھوپنا صحیح نہیں ہے. میڈیا کے ذریعہ جو ہوابازی ہو رہی ہے، وہی کافی ہے یہ بتانے کے لئے کہ جنگ ہو چکی ہے اور ہم جیت چکے ہیں. نیوکلیئر اسٹرائک میں پچاس کروڑ ہندوستانیوں کے مر مٹ جانے کی خواہش کرنے والے ایکسپرٹ کو قومی سلامتی کے مشیر نہ بنانے پر میں پہلی بار وزیر اعظم سے استعفی مانگتا ہوں. وہ چاہیں تو پہلی بار میری مانگ کو رجیکٹ کر سکتے ہیں.

میں صرف اتنا چاہتا ہوں کہ وزیر اعظم میرا یہ مضمون پڑھیں، ہنسیں، تھوڑے اداس بھی ہوں. حکومت کتنی بھی اچھی ہو اگر اس کے دور میں میڈیا بندر ہو جائے تو اس حکومت کی کوئی بھی زینت کم پڑ جاتی ہے. میڈیا کو پروپیگینڈے سے آزاد رکھنے کی ذمہ داری بھی حکومت کی ہے. دکھ کی بات ہے کہ یہ بات حکومت میں رہتے ہوئے کبھی کسی حکومت کو سمجھ میں نہیں آتی. پروپیگنڈہ کرنے والا میڈیا اس حکومت کی تمام کوششوں پر پانی پھیر دیتا ہے.

عوام کو حکومت کا کام بھلے نہ سمجھ میں آئے مگر یہ جلدی سمجھ میں آ جاتا ہے کہ میڈیا چاپلوس ہے. میں نے یہ مضمون اسی لئے لکھا ہے تاکہ حکومت چاپلوس میڈیا سے دور رہے. لوگ اپنے رہنما کو بہت پیار کرتے ہیں لیکن لوگ اس رہنما کے چمچوں کو کبھی پیار نہیں کرتے ہیں. بھارتی میڈیا ایک دن اپنی چاپلوسی سے حکومتوں اور سیاست کے تئیں عوام کو خواہ مخواه باغی بنا دے گا.

میری اس تاریخی اور کلاسیکی اعلان کو چار بار پڑھیں اور میڈیا ستیاناش بول کر تین بار کسی بھی دریا کا پانی چھڑکیں. اس لئے کہ جمہوریت میں حکومت اور سیاست کی وفاداری بہت ضروری ہے. یہ بھی تبھی ممکن ہے جب میڈیا کی تھوڑی بہت وفاداری بچی رہے. باقی آپ قاری خود سمجھدار ہیں. چینلوں کے یہ پینل ایک دن آپ کو بیوقوف بنا دیں گے. جلد ہی اس کی تصدیق کوئی ڈاکٹر کرنے والا ہے. حماقت ایک بیماری ہے. یہ بھارتی چینلوں کی دین ہوگی. اس اینکر اور ڈاکٹر کو مشترکہ طور پر نوبل انعام ملے گا.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close