آج کا کالم

جھارکھنڈ میں قاتل بنتی بھیڑ: ہندو بھی مارے گئے اور مسلمان بھی!

رويش کمار

جھارکھنڈ میں بھیڑ ہی عدالت ہوتی جا رہی ہے. کبھی مذہب کے نام پر کسی مذہب کے خلاف تو کبھی کسی کے بھی خلاف. کہیں حلیم اور نعیم کو بھیڑ نے مار دیا تو کہیں گوتم کمار اور گنگیش کمار کو بھی بھیڑ نے مار دیا. کیا ایسا ہو سکتا ہے کہ کوئی گروپ یہ ٹیسٹ کر رہا ہو کہ مختلف افواہوں کی وجہ سے بھیڑ کسی کو مار سکتی ہے یا نہیں . کبھی یہ بھیڑ گائے کے نام پر بن جا رہی ہے تو اب سننے میں آ رہا ہے کہ بچہ چوری کے نام پر بن رہی ہے. اس سوال پر سنجیدگی سے سوچا جانا چاہئے کہ وهاٹس اپ پر گروپ بنا کر افواہ بنانے والے کیا یہ ٹیسٹ کر رہے ہیں کہ لوگ واقعی کتنے بے وقوف ہیں اور انہیں کن کن مسائل میں بھیڑ کی طرح ہانک کر ‘قاتل’ میں تبدیل کیا جا سکتا ہے. ایسی بھیڑ کے سامنے انتظامیہ بھی بے بس نظر آتی ہے. کچھ تو ہے کہ نہ انتظامیہ اس بھیڑ کی سیاست کو سمجھ رہا ہے اور نہ ہی معاشرہ اور نہ ہی سیاست. جھارکھنڈ میں بچہ چوری کے واقعہ ہوا تو یہ پولیس کا کام ہے کہ وہ اس کی جانچ کرے یا بھیڑ کسی کو بھی شک کی بنیاد پر گھیر کر مار دے گی. حال فی الحال میں جھارکھنڈ میں ایسی کئی وارداتیں ہو گئی ہیں.

 جھارکھنڈ کے ایک گاوں راج نگر  میں صبح صبح بچہ چوری کے شک میں چار لوگوں کو پیٹ پیٹ کر مار دیا گیا. مقتول تمام مسلمان تھے اور کاروباری تھے. بھیڑ کا حوصلہ دیکھئے کہ چاروں کا قتل مختلف جگہوں پر لے جاکر کیا گیا. ایک کا قتل شوبھاپور میں، دوسرے کی ڈانڈومیں، تیسرے شخص کی لاش سوسومالي گاؤں میں ملی، جبکہ چوتھے شخص کی لاش دھوبو ڈنگری کے جنگل میں ملی. ہلدي پوكھر کے رہنے والے شیخ حلیم، محمد نعیم، سجاد اور سراج رات دو بجے راج نگر کی طرف جا رہے تھے. اچانک ان کی گاڑی روکنے کی کوشش کی گئی. ڈر کر پڑوس کے گاؤں میں رشتہ دار کے گھر چلے گئے. لیکن بھیڑ وہاں بھی پہنچی، براہ راست دھمکی دی گئی کی سب کو سونپ دو نہیں تو پورے گھر کو آگ لگا دیں گے. اور پھر ں کو بھیڑ اپنے ساتھ لے گئی اور قتل کر دیا.

اتنی ہمت لوگوں میں کہاں سے آ رہی ہے کہ وہ کسی کو گھر سے نکال کر لے جاتے ہیں اور جہاں چاہتے ہیں وہاں گھیر کر مار دیتے ہیں . اس کام میں ہم صرف مرنے والے کو دیکھتے ہیں ، یہ نہیں دیکھتے کہ اس بھیڑ کی سیاست میں ہمارے نوجوان قتل ہو رہے ہیں . ہندوستان اخبار کے سینئر صحافی انیس خان نے جو معلومات وہاں لوگوں سے بات کر بتائی وہ واقعی خطرناک ہے. بچہ چوری کی افواہ کو لے کر واٹس اپ گروپ بنایا گیا، پھر نوجوانوں کی ٹولی پیدا ہویی اور بچہ چوری کی بات پھیلائی جانے لگی. یہی اس مسئلے کی جڑ ہو سکتی ہے، کیا کوئی گروپ ہے جو مختلف افواہوں کے ذریعہ یہ ٹیسٹ کر رہا ہے کہ بھیڑ کسی کو گھیر کر مار سکتی ہے یا نہیں . ابھی تک ہم اسے اس طور میں دیکھتے رہے ہیں کہ ہجوم نے مسلمانوں کو گھیر کر مار دیا لیکن گوتم کمار ورما، وکاس کمار ورما اور ان کے دوست گنگوش کمار بھی اس بھیڑ کے شکار ہوئے ہیں .

یہ واقعہ 18 مئی کی رات ہے. باگبوڑا کے ناگاڈي گاؤں میں بچہ چوری کے الزام میں جگس لابي کے گوتم کمار ورما، وکاس کمار ورما اور اس کے دوست گنگوش کمار کو پیٹ پیٹ کر قتل کر دیا گیا. یہی نہیں ، 65 سال کی رام چندر دیوی کی بری طرح پٹائی کی گئی. ان کی حالت نازک ہے. گوتم اور وکاس سگے بھائی ہیں . ان کے تسيرے بھائی اتم کو بھی بھیڑ نے پکڑ لیا تھا، لیکن وہ بچ کر فرار ہونے میں کامیاب رہے. اتم نے ہی بتایا کہ ہجوم نے ان سے پوچھ گچھ کی اور اچانک بچہ چور کی بات کہہ کر ان پر حملہ بول دیا گیا. جھارکھنڈ کے سارے اخبارات ان خبروں سے بھرے پڑے ہیں . انہی سے پتہ چلتا ہے کہ گوتم اور وکاس کو پہلے بجلی کے کھمبے سے باندھ کر پیٹا گیا. وہاں ارد گرد کے گاؤں کے لوگ بڑی تعداد میں جمع ہوئے تھے. حیرت کی بات ہے کہ اتنی بڑی تعداد میں لوگ جمع ہو گیے مگر کسی نے روکا نہیں . ایس ایچ او صاحب ساڑھے آٹھ بجے پہنچے، بھیڑ کو سمجھانے کی کوشش کی، لیکن الٹا پولیس پر بھی حملہ کیا گیا. ایس ایچ او زخمی ہو گئے. آخر رات 10 بجے سٹی ایس پی پہنچے، تب جاکر کارروائی شروع ہوئی. تب تک گوتم ترقی اور گنگوش قتل ہو چکے تھی.

کچھ تو ہے جسے اب نظر انداز نہیں کیا جا سکتا ہے. ہم دیکھنا ہی چاہئے کہ یہ بھیڑ کس پیٹرن پر بن رہی ہے، کون ہے جو بھیڑ بنا رہا ہے. صرف بچہ چوری کی افواہ کے ذریعہ نہیں ، بلکہ طرح طرح کے الزام لگا کر بھی بھیڑ نے قانون اپنے ہاتھ میں لیا ہے اور بے گناہوں کا قتل کر دیا. ہمارے ساتھی ہری ونش نے بتایا کہ جھارکھنڈ میں مسلسل ایسے معاملے بڑھتے جا رہے ہیں . اس میں زیادہ تر تعداد مسلمانوں کی  ہے، لیکن بھیڑ نے دوسرے کمیونٹی کو بھی نہیں چھوڑا ہے. كولهان ڈویژن جس میں پانچ ضلع ہیں ، وہاں 8 لوگوں کے قتل ہو چکی ہے. اگر پورے جھارکھنڈ کی بات کریں تو اب تک افواہ کے نام پر 18 لوگوں کے قتل کی جا چکا ہے. گزشتہ ماہ بوکارو میں شمس الدین کی بھیڑ نے پٹائی کی اور ہسپتال میں علاج کے دوران ان کی موت ہو گئی.

2 مئی 2017: ڈمريا میں 60 سال کے بزرگ کو اسی طرح قتل کر دیا گیا تھا۔

2 مئی: جادو گوڑا کے يوسل بیراج کے پاس جان انتھونی کی پٹائی کی گئی۔

2 مئی: گالوڈي میں بچہ چوری کے الزام میں ایک نامعلوم شخص کی بری طرح پٹائی کی گیی۔

1 مئی: آسنبني تالاب کے پاس محمد اسیم کے قتل، اسی دن راکھا مائنس اسٹیشن کے قریب صدام انصاری عرف چھوٹو کو بھیڑ نے پیٹا۔

– گالوڈي کے پتڑو گاؤں کے قریب سدھیر سنگھ کا پیٹ پیٹ کر قتل کر دیا گیا. سدھیر بھیک مانگ کر گزارا کرتے تھے.

13 مئی: گھاٹ شلا تھانہ علاقہ میں سلمان میاں کو پیٹا گیا۔

14 مئی: جمشید پور کے پوٹكا تھانے میں ایک شخص کو پیٹ پیٹ کر مار ڈالا گیا۔

14 مئی: جادو گوڑا میں ذہنی طور پر کمزور عورت کو بری طرح پیٹا گیا۔

15 مئی: سندر نگر  کے كھكراڈي میں ستیہ پال سنگھ کو ہجوم نے پیٹا۔

16 مئی: گھاٹ شلا میں دماغی طور پر کمزور نوجوان کی پٹائی کی گئی۔

17 مئی: جادو گوڑا میں مشتعل ہجوم نے دماغی طور پر کمزور نوجوان پر بچہ چوری کا الزام لگایا اور اس کی پٹایی کی۔

ان ہلاکتوں کے بعد لوگوں میں  ناراضگی نظر آنے لگی ہے. مظاہرین نے جگس لاي ریلوے پھاٹک سڑک کو جام کر دیا اور گاڑیوں کی ٹریفک کو روک کر انتظامیہ کے خلاف جم کر نعرے بازی کی. پولیس بار بار کہہ رہی ہے کہ بچہ چوری کے واقعات ریاست میں نہیں ہو رہی ہے. جو بھی افواہ پھیلا رہا ہے، اسے پکڑنے کی کوشش کی جا رہی ہے. سوال ہے کہ کیا پولیس اب جاگی ہے جب چند گھنٹوں کے اندر اندر 8 لوگوں کی بھیڑ نے قتل کر دیا؟

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Back to top button
Close