آج کا کالم

جھوٹ پر لاٹھا لاٹھي اور میڈیا کا طرز عمل!

رویش کمار

اروندھتی رائے کا نام سنتے ہی وهاٹس اپ پر چلنے والی جعلی یونیورسٹی کے طالب علموں کے ذہنوں میں غصہ پھوٹ پڑتا ہے. اسے عام بول چال میں وهاٹس اپ یونیورسٹی کہتے ہیں ، جہاں جھوٹ کی پڑھائی ہوتی ہے اور جہاں پڑھنے والا طالب علم قسم کھاتا ہے کہ جھوٹ کے علاوہ کبھی کسی کو سچ نہیں سمجھے گا. جھوٹ ہی سچ ہے اس کے لئے پولیٹکل ٹریننگ چلتی رہتی ہے. اس یونیورسٹی کے طالب علموں نے بھیڑ بنانے میں قومی کردار ادا کیا ہے جس کی سب سے بڑی کامیابی ہے جہاں تہاں لوگوں گھیر کر مار دینا. ان دنوں آپ جھارکھنڈ کے وزیر اعلی، پولیس کے سربراہ کسی کے بیان سنئے، لگتا ہے کہ وہ وهاٹس اپ کی افواہوں سے خاصے پریشان ہیں .

ہوا یوں کہ بھاجپا ایم پی پریش راول نے ٹویٹ کیا کہ اروندھتی رائے کو جیپ کے آگے بٹھا کر پتھربازوں کے سامنے لے جانا چاہئے. ٹوئٹر پر بحث شروع ہویی اور جلد ہی یہ بحث ٹی وی اسٹوڈیو میں پہنچ گئی. چند گھنٹے میں پریش راول کا غصہ قومیت کے رنگ میں تبدیل ہو گیا. اینکرز لوگ غضبناک انگریزی بگھارنے لگے. بھارت میں ایسے اینگر ہیں جنہیں دیکھ کر لگتا ہے کہ یہ ایننگر دوسری عالمی جنگ کے وقت کیوں نہیں تھے؟ ایسے موقعوں پر اینکروں میں غضب کی قومیت کی جاگ اٹھتی ہے، لگتا ہے کہ یہ نہ رہیں گے تو ہمارے سناتن ملک کو نہ جانے کون اٹھا کر لے جائے.  میں نے تو اب ان کی وندنا کرنے لگا ہوں . دودھ، گھی، چندن اور پھول چڑھانا باقی ہے. آپ بھی ان اینكروں کی مسلسل عبادت کیجیے ورنہ آپ کے گھر میں مکڑی روز جالا بنانے لگے گی.

ٹی وی اور TWEETER کی بحث میں سب کچھ ٹھیک چل رہا تھا کیونکہ پریش راول نے بھی کسی دی نیشنلسٹ فیس بک کا صفحہ کا لنک شیئر کر دیا تھا جس کے مطابق اروندھتی رائے نے کشمیر دورے کے دوران ایسا کوئی بیان دیا تھا کہ بھارت سات لاکھ کی جگہ ستر لاکھ فوج لگا دے، پھر بھی کشمیر کو اپنا نہیں بنا سکے گا. ایک دن تک ماحول گرم رہا مگر دی وائر نام کی ویب سائٹ نے سارا کھیل بگاڑ دیا. پتہ چلا کہ اروندھتی رائے کے جس بیان پر میڈیا ورزش کر رہا تھا، وہ بیان اروندھتی رائے نے دیا ہی نہیں .

دی نیشنلسٹ پاکستان سے چلنے والی ایک ویب سائٹ ہے. وائر نے چیک کیا کہ اس پر جو خبر ہے وہ بھارت سے چلنے والی ویب سائٹ postcard.news سے آئی ہے. اس ویب سائٹ کا حوالہ پہلے بھی جعلی نیوز کے میدان میں قابل ستائش کام کے لئے ہو چکا ہے. پوسٹ کارڈ ڈاٹ نیوز پر لکھا تھا کہ اروندھتی نے ہندوستانی فوج اور کشمیر والا بیان حال ہی میں پاکستانی اخبار ٹائمز آف اسلام آباد کو دیا. وائر کو پتہ چلا تو چلتا ہی گیا. satyavijayi.com اور theindianvoice.com پر بھی چھپا ہے. theresurgentindia.com، revoltpress.com، virathindurashtra.com جیسی ویب سائٹ نے بھی اروندھتی رائے کے بیان کو شایع کیا.

اروندھتی رائے نے کہا کہ یہ سب بکواس ہے. انہوں نے حال فی الحال کشمیر گئی ہی نہیں ہیں . کشمیر پر سال بھر پہلے آؤٹ لک میگزین میں ایک مضمون لکھا تھا. اس کے بعد سے کوئی بیان ہی نہیں دیا ہے. ہم نے تفتیش پر اپنی کوئی تفتیش نہیں کی ہے لیکن وائر کی یہ تلاش تمام اخبارات اور چینلز پر نہیں ہوگی، جہاں آپ نے اروندھتی رائے کے جعلی بیان کو دیکھتے ہوئے اپنا بلڈ پریشر بڑھا لیا ہوگا. یہاں تک کہ میڈیا پر نگرانی کرنے والی نيوذلوڈري سے بھی چوک ہو گئی.

نیوز لوڈري نے کسی ميك سنگھ کی غصے والی رائے میلے ابذرور نام کی ویب سائٹ سے اٹھا کر پرنٹ دی. نیوز لوڈري اور میلے ابذرور نے چیخ چیخ کر صفائی دی ہے تاکہ ان کے قارئین کو پتہ چل جائے کہ غلطی ہوئی ہے. پھرپوسٹ پر ناظم نقوی نے اسی جعلی انٹرویو کا حوالہ دیتے ہوئے لکھ دیا کہ اروندھتی کو بھی تو ایسا نہیں بولنا چاہیے تھا، جبکہ وہ بولی ہی نہیں تھیں .

سوچئے کسی کے خلاف اكسانا کتنا آسان ہے. پاکستان سے چلنے والی ویب سائٹ پر آپ، ہمارا نام لے کر کچھ بھی لکھ دے اور لوگ دیوانہ ہو جائیں . جھارکھنڈ میں آپ گوتم، گنگیش اور سے Hum کے والد سے پوچھ لیں ، ان کی آنکھوں کے سامنے ہجوم نے پتھر سے مار کر بیٹوں کو ختم کر دیا. نعیم حلیم کو بھی ایسے ہی مارا. رہنما پریش راول نے خط جاری کیا ہے کہ مجھ پر اروندھتی رائے کے ٹویٹس ڈیلیٹ کرنے کا دباؤ بنایا گیا تھا ورنہ میرا ٹوئٹر کے اکاؤنٹ بلاک ہو جاتا. پریش راول نے غلط خبر کو ٹویٹ پر افسوس نہیں ظاہر کیا ہے. ویسے بھی اب بات میڈیا پر آگئی ہے کہ اس نے اروندھتی کے بیان کی تحقیقات کئے بغیر اتنا بڑا ہنگامہ کھڑا کر دیا.

ابھی آتے ہیں آج کے موضوع پر. میجر گوگوئی نے ہی جیپ پر فاروق احمد ڈار کو بٹھا دیا تو بحث ہوئی کہ ایسا کیوں کیا. ڈار تو پتھر چلانے والوں میں نہیں تھا بلکہ وہ ان سات فیصد لوگوں میں سے تھا جنہوں نے سرینگر ضمنی انتخاب میں ووٹ کیا تھا. جس شخص کا ہندوستانی جمہوریت میں یقین ہو، اس کا استعمال جمہوریت کی مخالفت کرنے والوں کے سامنے کیوں ہوں . سوال اٹھے تو میجر کی حمایت میں زیادہ ہی لوگ آئے. میجر کی حمایت میں مکمل حکومت کھڑی ہو گئی، کیا یہ کافی نہیں تھا. پنجاب کے وزیر اعلی کیپٹن امریندر سنگھ نے مضمون لکھا، عزت کا مطالبہ کیا. فوج اور آرمی چیف میجر کی حمایت میں ہیں . کشمیر کے حالات عام نہیں ہیں . میجر کے فیصلے کی مشکلوں کو سمجھا جا سکتا ہے. فوج کا افسر موقع پر کیا فیصلہ لے گا یہ طے تو نہیں ہو سکتا ہے. پھر بھی ان پہلوؤں پر بات ہو سکتی ہے. آپ میجر کو بولتے دیکھئے کتنے پرسکون طریقے سے انہوں نے اپنی بات رکھی. وہ اینكرو کی طرح چیخ نہیں رہے. جنہیں چیلنجوں کا سامنا ہے وہ پرسکون ہیں .

رام چندر گہا نے بدھ کو ٹویٹ کر کہا ہے کہ فوج کا یہ طرز عمل مناسب نہیں ہے. کیا ان دو چار لوگوں کی ٹویٹس کا اتنا اثر ہوتا ہے کہ فوج کو صفائی دینے کے لئے آپ کی خدمت میجر کو میڈیا کے سامنے کرنا پڑ جائے. پھر بی جے پی-پی ڈی پی حکومت کی پولیس نے میجر کے خلاف ایف آئی آر کیا رام چندر گہا سے پوچھ کر کیا تھا. باقاعدہ وزیر اعلی محبوبہ مفتی نے اپنے فیس بک پیج پر اس ایف آئی آر کی معلومات دی تھی. میجر گوگوئی نے کہا ہے کہ ڈار پتھر چلانے والوں کو اکسا رہا تھا مگر ڈار کے خلاف تو ایف آئی آر نہیں ہوئی ہے. کیا اس سے فوج کے حوصلے پر اثر نہیں پڑا. پوری دنیا میں فوج کو لے کر سوال ہوتے ہیں ، احترام بھی اتنا ہی ہوتا ہے. بھارت کی حکومت فوج کا استعمال نہیں کرتی ہے، مگر دنیا بھر میں منتخب کردہ رہنما فوج کا استعمال کرتے ہیں اور جھوٹ کی بنیاد پر کرتے ہیں .

گزشتہ جولائی میں برطانیہ کی پارلیمنٹ میں سر چلكاٹ کمیٹی کی رپورٹ پیش کی گئی. اس کا کام تھا یہ پتہ کرنا کہ 2003 کے عراق جنگ میں برطانیہ کے شامل ہونے کا فیصلہ کیا صحیح حقائق اور تمام اختیارات کی بنیاد پر لیا گیا تھا. 6000 صفحات کی رپورٹ میں کہا گیا کہ برطانیہ نے جنگ میں شامل ہونے سے پہلے امن کے اختیارات کا استعمال نہیں کیا. تب برطانیہ کے اس فیصلے کے خلاف وہاں دس لاکھ لوگوں نے مظاہرہ کیا تھا. اس رپورٹ کے بعد عراق جنگ میں مارے گئے برطانوی فوجیوں کے خاندان والوں نے اپنے سابق وزیر اعظم ٹونی بلیئر کو دہشت گرد کہا اور فوج قائدین نے بلیئر سے کہا کہ معافی مانگیں . میڈیا کس طرح رنگ تبدیل کرتی ہے اس کا بھی نمونہ دیکھئے. 2003 میں وہاں کے اخبار نے کہا تھا کہ وہ بلیئر کی حمایت کرتا ہے لیکن سر چلكاٹ کی رپورٹ آئی تو کور پر لکھا کہ ویپن آف ماس ڈسیپشن. مطلب عوام کو دھوکہ دینے کا ہتھیار.

بدھ کو خبر آئی کہ پاکستان ایئر فورس کے لڑاکو طیاروں نے سیاچن گلیشیر کے پاس اپنی حد میں پروازیں بھری ہیں . بھارتی فضائیہ نے کہا ہے کہ اس کی حد کی تجاوز نہیں ہوا ہے. کہیں کشیدگی کے حالات کشیدگی سے زیادہ تو نہیں ہیں؟

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close