آج کا کالم

جہاں پٹرول پمپس کے ذریعہ ہو رہا ہے جیل سدھار

ڈاکٹر ورتكا نندا

(ڈاکٹر ورتكا نندا جیل مصلح ہے. جیلوں پر ایک منفرد سیریز، ’تنکا تنکا‘، کی مصنف ہیں اور دو بار لِمکا بک آف ریکارڈز میں شامل ہو چکی ہیں۔ ‘تنکا تنکا تہاڑ’ اور ‘تنکا تنکا ڈاسنا’، جیلوں پر ان کی مشہور کتابیں ہیں).

تلنگانہ جانے کی ایک بڑی وجہ ان پٹرول پمپس کو دیکھنا تھا جو کہ جیل سدھار کی نئی کہانی لکھ رہے ہیں. ویسے تو ماڈل پرجن مینيول میں ملک بھر کی جیلوں کو لے کر اصلاح کے بہت سے راستے تجویز کیے گئے ہیں لیکن ان پر عمل کم ہی جیلیں کر پائی ہیں. ان میں تلنگانہ کی جیلوں نے ایک منفرد مثال قائم کی ہے.

تلنگانہ جیل ہیڈ کوارٹر کے ٹھیک باہر ایک پٹرول پمپ ہے اور ایک  کچھ فاصلے پر کھلی جیل کے ساتھ ہے. اس طرح تلگانا میں کل 14 ایسے پٹرول پمپ ہیں، جن کا  ذمہ مکمل طور پر قیدیوں کے ہاتھوں میں ہے. انڈین آئل كارپوریشن لمیٹیڈ کی ملکیت میں چلنے والے یہ پمپ پورے ملک میں الگ نوعیت کی  شناخت بنا کر رہے ہیں. یہاں کام کرنے والے قیدی 3 شفٹوں میں ان پٹرول پمپس کو رات دن چلا رہے ہے. اس کے علاوہ 2 پٹرول پمپ ایسے ہے، جنہیں مکمل طور پر خواتین قیدی چلاتی ہیں. ان قیدیوں کو ان کے کام کے بدلے میں 12 ہزار روپے ماہانہ تنخواہ بھی دی جاتی ہے. یہ ایک ایسی تنخواہ ہے جس کا تصور ملک کے کسی بھی جیل کا قیدی نہیں کر سکتا. کبھی کبھی جیل کے ریٹائرڈ ملازم بھی ان کی مدد کرتے ہیں. 2017 میں ان پٹرول پمپس نے قریب 12 کروڑ روپے کا منافع کمایا جو 2016 کے مقابلے میں دوگنا تھا. اس منافع کا استعمال جیل کی ترقی کے کاموں میں کیا جاتا ہے.

تلنگانہ کی جیل کے ڈائریکٹر جنرل ونے کمار سنگھ اور یہاں کے سپريٹیڈینٹ بی. سدیيا کہتے ہیں کہ ہر سال 100 سے 120 کروڑ روپے کا پٹرول یہاں سے فروخت کیا جاتا ہے. ایک دن کی فروخت قریب 28،000 سے 30،000 لیٹر ہے. آج یہ پٹرول پمپ اتنے کامیاب ہیں کہ ارد گرد کے تمام پٹرول پمپس نے اپنی ساری امید ان 14 پٹرول پمس پر چھوڑ دی ہے. اگرچہ اس بات سے انکار نہیں کیا جا سکتا کہ یہ پٹرول پمپ ان قیدیوں کے لئے ایک بڑی امید لے کر آئے ہیں، لیکن ایک سچ یہ بھی ہے کہ باہر سے آنے والے لوگ کئی بار ان قیدیوں کے ساتھ بہت برا سلوک کرتے ہیں. لیکن اس سے جیل کے حکام، ملازمین یا پھر قیدیوں کا جوش کم نہیں ہوا ہے. ان جیلوں سے بدعنوانی تقریباً مٹ گئی ہے. 2014 میں شروع کئے گئے وديادانم نامی پروگرام سے 32،514 قیدیوں کو خواندہ بنایا گیا ہے.

ایک دوسرا سچ یہ بھی ہے کہ آج تک ان میں سے کسی قیدی نے یہاں سے فرار ہونے کی کوشش نہیں  کی. ہر روز ان قیدیوں کو جیل کی بس میں لایا جاتا ہے. وہ اپنی شفٹ کو پورا کرتے ہیں اور واپس جاتے ہیں. کچھ قیدی کھلی جیل سے بھی آتے ہیں. ایک پٹرول پمپ کھلی جیل کے ساتھ ایک دم سٹا ہوا ہے. وہ چل کر آتے ہیں اور اپنے آپ لوٹ جاتے ہیں. ان کے چہرے پر خوشی صاف نظر آتی ہے. یہاں کام کرتے تمام قیدی اپنی آنکھوں میں خواب سجاتے ہیں. انہیں اب اس بات کا یقین ہو گیا ہے کہ جیل سے باہر جانے کے بعد انہیں باقی قیدیوں کی طرح اپنی شناخت اور اپنے نام کو چھپانا نہیں ہوگا. انهے یقین ہے کہ ان کی سزا پوری ہونے پر باہر کی دنیا ان کو قبول کر لے گی اور اگر کسی وجہ سے باہر کی دنیا نے انہیں قبول نہیں بھی کیا تو بھی تلنگانا کے یہ پٹرول پمپ انہیں ایک نوکری ضرور دے دیں گے اور ساتھ میں اعتماد بھی.

اب بھارت سرکار کا وزارت داخلہ پٹرول پمپس کے اس انوکھے خیال کو کچھ اور جیلوں میں لانے کا بھی ذہن بنا رہا ہے. اصل میں بھارت میں جیلیں ریاستوں کے تابع آتی ہیں. اس لیے ریاستوں کی خواہش- طاقت کے بغیر کچھ بھی ممکن نہیں. حکومت ہند کا بي پي آر این ڈي ابھی جیلوں کو لے کر دہلی میں کبھی کبھار اجلاس بھی کرتا ہے لیکن بہت سی ریاستیں ان اجلاسوں میں جھانکنے تک نہیں آتے. بہت سی ریاستوں میں جیلوں کے سپریم افسر خود کو جیل اصلاحات کی بنیادی ضروریات سے جوڑ نہیں پاتے. نتیجے کے طور پر اس کا خمیازہ جیلیں چكاتي ہیں اور ان میں بند قیدی.

پٹرول پمپ کی ایک مثال میڈیا کے لئے خبر ہو سکتی ہے لیکن یہ سچ اب بھی میڈیا اور سماج سے دور ہی ہے کہ جیلوں کے اندر کی توانائی کے مثبت استعمال میں ہم اب بھی پیچھے ہیں. راج نیتاؤں، اداکاروں یا پھر بڑے تاجروں کے جیل میں جانے پر جیلیں سنسنی کی وجہ تو بن جاتی ہیں لیکن جیلوں کے اندر بھرے جا رہے چھوٹے قدموں پر چٹکی بھر خوشی اور تھوڑی سی مدد دینے والے چاہ کر بھی ڈھونڈنا مشکل ہی لگتا ہے. یہی جیلوں کے سچ ہے.

 مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

محمد اسعد فلاحی

معاون تصنیفی اکیڈمی، مرکز جماعت اسلامی ہند

متعلقہ

Close