آج کا کالم

جی ایس ٹی – اندیشے وامکانات

رویش کمار

بھارت میں مرکز سے لے کر ریاست میں حکومت بھلے ہی الگ الگ پارٹیوں کی ہو مگر اقتصادی پالیسیاں کم و بیش ایک جیسی ہی ہیں. سب کا ماڈل ایک ہی ہے لیکن اب ہر ریاست میں ایک ہی طرح کا ٹیکس نظام ہوگا جس کا نام جی ایس ٹی ہے. گڈز اینڈ سروسز ٹیکس. یہ ترمیم عام صارفین کو متاثر کرنے کے ساتھ ساتھ بڑی کمپنیوں سے لے کر گاؤں قصبوں میں چل رہے چھوٹے کارخانے اور مصنوعات کو بھی متاثر کرے گی. اس سے کہیں زیادہ مرکز اور ریاست میں ٹیکس وصولی کا جو موجودہ ڈھانچہ ہے اس میں بھی تبدیلی آئے گی. جتنی الجھن عام دکاندار کو آئے گی، اتنی ہی پریشانی بڑے بڑے ٹیکس آفیسروں کو بھی آ سکتی ہے. ون انڈیا ون ٹیکس کا نعرہ دیا گیا ہے. ون ٹیکس لگ رہا ہے یا ٹیکس لگانے کا کوئی یکساں نظام لایا جا رہی ہے؟ دونوں میں فرق ہے. کیونکہ جی ایس ٹی کے تحت بھی مرکز کے ٹیکس الگ ہیں، ریاست کے ٹیکس الگ ہیں اور شراب، تمباکو اور پیٹرولیم کے ٹیکس الگ ہیں. جی ایس ٹی ایک چھتری ہے جس کے نیچے کئی كمانيا ہیں یا جی ایس ٹی بغیر کسی کمانی کی چھتری ہے. تكنيکی معاملہ ہے لیکن عام عوام کو بھی اس کا سامنا کرنا ہی پڑے گا، سمجھنے میں اور برتنے میں بھی.

آئین کا 122 ویں ترمیمی بل راجیہ سبھا میں پیش کر دیا گیا ہے. (یہ بل ایوان بالا سے بھی پاس ہو چکا ہے۔ ادارہ) یہ بل لوک سبھا میں پاس ہو چکا ہے. وزیر خزانہ نے کہا کہ یہ ریاستوں کی خود مختاری کی خودسپردگی نہیں ہے بلکہ مرکز اور ریاست مل کر پہلے سے بہتر اور جدید ٹیکس نظام کی سمت میں آگے بڑھ رہے ہیں، جس سے زیادہ ریوینیو ہوگا اور ہندوستانی معیشت کو رفتار ملے گی. جی ایس ٹی کی وجہ سے ہندوستان میں مصنوعات کی نقل و حرکت پہلے سے کہیں زیادہ آسان ہو جائے گی. ٹیکس چوری بند ہو جائے گی. انسپکٹر راج اور ٹیکس پر ٹیکس لگنے کا دور چلا جائے گا. اس سے مرکز اور ریاست دونوں کو فائدہ ہو گا.

راجیہ سبھا سے پاس ہونے کے بعد صدر اسے تمام ریاستوں کی اسمبلی کے پاس بھیجیں گے. جن میں سے 15 اسمبلیوں کو منظوری دینی ہوگی. اس کے بعد جی ایس ٹی کونسل بنانے کا کام شروع ہو جائے گا. جی ایس ٹی کونسل کے لئے بیوروکریسی کا نیا ڈھانچہ مرکز اور ریاست میں بنے گا. مثلا مرکز میں پرنسپل چیف کمشنر آف سینٹرل جی ایس ٹی جیسے عہدے ہوں گے تو ریاست میں اسٹیٹ جی ایس ٹی کمشنر ہوں گے. اس کے لئے آفیسروں کی تربیت شروع بھی ہو چکی ہے. مرکزی حکومت کو دو جی ایس ٹی قانون بنانے ہیں، مرکزی جی ایس ٹی اور انٹر اسٹیٹ جی ایس ٹی. ریاستی حکومتوں کو اپنے اپنے یہاں اسٹیٹ جی ایس ٹی قانون پاس کروانا ہوگا. لیکن اس سے پہلے ان تینوں قوانین کے مسودے پر جی ایس ٹی کونسل میں بحث ہوگی.

جی ایس ٹی کونسل میں کسی معاملہ کو تین چوتھائی ووٹوں سے ہی پاس کرایا جا سکے گا. دو تہائی ووٹ کا حق ریاستوں کو دیا گیا ہے. ایک تہائی ووٹ دینے کا حق مرکز کے پاس رہے گا. بغیر دونوں کی شامل رضامندی کے جی ایس ٹی کونسل میں کوئی تجویز پاس نہیں ہو سکے گی. مرکز کا ریاستوں پر ویٹو ہوگا اور ریاستوں کا مرکز پر.

وزیر خزانہ نے کہا ہے کہ ان تینوں قوانین کے بننے کے بعد اور اسے لاگو کرنے کے لئے انفارمیشن ٹیكنالوجی کا ڈھانچہ کھڑا ہوتے ہی جی ایس ٹی نافذ کر دی جائے گی. انہوں نے کوئی تاریخ تو نہیں بتائی مگر کہا کہ بہت تاخیر نہیں ہوگی. بہت سے لوگوں کا کہنا ہے کہ جدید ٹیکس نظام کے معرض وجود میں آنے میں ہو سکتی ہے. ایک سے تین سال کا وقت لگ جائے، کیونکہ ابھی وہ یکساں شرح کیا ہوگی اس کا فیصلہ جی ایس ٹی کونسل میں ہونا ہے. یکساں ٹیکس ریٹ کو لے کر لگتا نہیں کہ ایک دو ملاقاتوں میں معاملہ طے ہو جائے گا. ایک طرح سے ریاستوں کا بجٹ کیا اب جی ایس ٹی کونسل میں بننے لگے گا. غیر بی جے پی اور غیر کانگریس پارٹیوں نے ریاستوں کے حقوق کو لے کر سوالات اٹھائے ہیں.

بی جے ڈی رکن پارلیمنٹ اے یو سنگھ دیو نے کہا کہ مرکز کے پاس ویٹو پاور کیوں ہونا چاہئے. … ریاستوں کو زیادہ ویٹو پاور ہونا چاہئے. بی ایس پی کے ستیش مشرا نے کہا کہ جی ایس ٹی کونسل میں وائس چیئرمین کا عہدہ ہونا چاہئے جو مرکز میں حکومت چلا رہی پارٹی اور اپوزیشن پارٹی سے الگ ہو تاکہ توازن قائم رہے. این سی پی کے پرفل پٹیل نے کہا کہ برهن ممبئی ميونسپل کارپوریشن کا ریوینیو کئی ریاستوں سے زیادہ ہے. اگر وقت پر پیسہ نہیں ملا تو ممبئی جیسے شہروں کا کام رک جائے گا. شیوسینا نے بھی کہا کہ جی ایس ٹی کے ذریعہ ممبئی کو کمزور کرنے کی کوشش ہو رہی ہے، ممبئی نے کبھی مرکز سے پیسہ نہیں مانگا لیکن اب ممبئی کا کیا ہوگا؟

ترنمول کانگریس کے ایم پی ڈیریک او برائن نے جی ایس ٹی کو گرگٹ سمجھوتہ ٹیکس کہا ہے. ان کی پارٹی جی ایس ٹی کی حامی رہی ہے لیکن ڈیریک او برائن کا کہنا تھا کہ اسے لے کر کانگریس اور بی جے پی نے بچوں سی سیاست کی ہے. اسے فوری طور پر نافذ کرنا چاہئے. ماہر اقتصادیات نریندر جادھو نے کہا کہ جی ایس ٹی نافذ ہونے سے جی ڈی پی 1.5 فیصد سے دو فیصد تک بڑھ جائے گی. حکومتوں کے لئے ٹیکس وصولی کا دائرہ بڑھ جائے گا اور کالا دھن کم ہوگا. پر نریندر جادھو نے یہ بھی کہا کہ صرف جی ایس ٹی سے معیشت کی ساری برائیاں دور نہیں ہو جائیں گی. جہاں بھی جی ایس ٹی مناسب طریقے سے لاگو نہیں ہوا ہے وہاں اس کا فائدہ نہیں ہوا ہے. نریندر جادھو نے کہا کہ اگر جی ایس ٹی کی شرح زیادہ ہوئی تو غریب لوگوں پر مار پڑے گی. سروس سیکٹر میں ٹیکس کی شرح زیادہ ہوئی تو معیشت کو نقصان پہنچے گا. قلیل عرصہ کے لئے صحت، تعلیم اور ٹیکسٹائل کافی مہنگا ہو سکتا ہے.

کانگریس پارٹی کی جانب سے خطاب کرتے ہوئے پی چدمبرم نے حکومت سے اپیل کی ہے کہ حکومت بل میں ہی 18 فیصد کے اسٹینڈرڈ ٹیکس ریٹ شامل کر دے. دنیا بھر میں ٹیکس ریٹ 14.1 سے لے کر 16.8 فیصد ہے. ہندوستان میں بھی زیادہ سے زیادہ شرح طے ہو جانی چاہئے. اگر جی ایس ٹی آنے کے بعد بھی 24 سے 26 فیصد کا ٹیکس لگتا رہے تو کوئی فائدہ نہیں ہوگا. چدمبرم نے کہا کہ جی ڈی پی کا 57 فیصد سروس سیکٹر سے آتا ہے. اگر سروس ٹیکس 14.5 سے بڑھ کر 24 فیصد ہوا تو مہنگائی بڑھ جائے گی. اس لئے 70 فیصد سامانوں اور خدمات پر 18 فیصد سے زیادہ ٹیکس نہیں لگنا چاہئے.

سی پی ایم کے رہنما سیتارام یچوری نے جی ایس ٹی کو لے کر ریاستوں کے حقوق میں کٹوتی کو اجاگر کیا. انہوں نے کہا کہ ٹیکس طے کرنے کا حق ریاست کا ہونا چاہئے. یچوری نے سیلز ٹیکس پر آئین ساز اسمبلی میں ڈاکٹر امبیڈکر کے بیان کا ذکر کیا. انہوں نے کہا، ‘مجھے ایسا لگتا ہے کہ اگر ہم صوبوں کو سیلز ٹیکس لگانے دیتے ہیں تب صوبوں کو آزادی ہونی چاہئے کہ وہ اپنے حالات کے مطابق سیلز ٹیکس کی شرح میں تبدیلی کر سکیں. اس لئے اگر مرکز کی جانب سے سیلینگ لگائی گئی تو سیلز ٹیکس کو لے کر بہت دشواریاں آئیں گی. بہتر ہے سیلز ٹیکس طے کرنے کا حق صوبوں کے پاس رہے کیونکہ مرکز کے پاس دستیاب وسائل ہوتے ہیں.

یچوری کا کہنا ہے کہ اب ریاستوں کے پاس سیلز ٹیکس کا حق نہیں رہے گا. ریاست اپنے وسائل کس طرح بڑھائیں گے. یچوری نے کہا کہ جی ایس ٹی بالواسطہ ٹیکس ہے. اس کی وجہ سے غریبوں پر بوجھ پڑتا ہے. جیسے اس بجٹ میں وزیر خزانہ نے کہا کہ ہندوستان میں 37.7 فیصد ٹیکس بلاواسطہ ٹیکس سے آتا ہے، جسے آپ انکم ٹیکس کے طور پر جانتے ہیں. 62.3 فیصد بالواسطہ ٹیکس سے آتا ہے، سیلز ٹیکس ویٹ ٹیکس وغیرہ. انڈونیشیا جیسے ملک میں بلا واسطہ ٹیکس کا حصہ 55.8 فیصد ہے، جنوبی افریقہ میں 57.5 فیصد ہے.

یچوری دلیل دے رہے تھے کہ ایک وقت ایوان میں ہی جی ایس ٹی کا ریٹ 27 فیصد بتایا گیا تھا. اگر ایسا ہوا تو معیشت چرمرا جائے گی. تو یہ سب دلیلیں دی گئیں. اندیشوں اور امکانات کو لے کر باتیں ہوئیں. ٹیکس کے نظام میں تبدیلی اب طے ہے. کیا ہو گا ہم نہیں جانتے ہیں. فرانس میں 1954 میں ہی جی ایس ٹی لاگو ہوئی تھی. فرانس کی جی ڈی پی 1.16 فیصد ہے. 140 ممالک میں جی ایس ٹی ہے. چین کی جی ڈی پی 6.81 فیصد ہے، جاپان کی جی ڈی پی 0.59 فیصد ہے، جرمنی کی جی ڈی پی 1.51 فیصد ہے، برطانیہ کی جی ڈی پی 2.52 فیصد ہے، امریکہ میں جی ایس ٹی نہیں ہے. وہاں کی جی ڈی پی 2.57 فیصد ہے. بھارت میں اس وقت جی ایس ٹی نہیں ہے. ہندوستان کی جی ڈی پی 7.26 فیصد ہے. ساری تقریریں تو نہیں سنیں لیکن جتنے بھی مقررین کو سنا ان کی باتوں میں دنیا بھر میں جی ایس ٹی کے کیا تجربات رہے ہیں اس کا نام محض ضمنی ہی رہا. ایک شہری کے طور پر ہم ان ممالک کے تجربات کو جاننے سے محروم رہے. ہمیں نہیں معلوم کہ جن 140 ممالک میں جی ایس ٹی لاگو ہوئی کیا سب کی جی ڈی پی میں اضافہ ہوا؟ بھارت میں جی ایس ٹی کے بعد ڈیڑھ سے دو فیصد کی اچھال کے دعوی کی بنیاد کیا ہے؟ کیا ان ممالک میں ٹیکس چوری کم ہو گئی؟ کالا دھن کم ہو گیا؟ اس میں کوئی شک نہیں کہ ہندوستانی ٹیکس کے نظام میں بنیادی اصلاحات کی ضرورت ہے. کیا اب سے محصول ختم ہو جائے گا؟ ٹرکوں کو کوئی نہیں روکے گا؟ ٹیکس چوری نہیں ہوگی؟ مختصر اور درمیانہ صنعت میں کروڑوں لوگ کام کرتے ہیں. ان چھوٹے کارخانوں کو کیا ویسا ہی فائدہ ہو گا جو بڑے کارخانوں کو ہوگا؟

نیا نظام ہے. اس کے نئے نئے تجربے ہوں گے اور اصلاح ہوتی رہے گی. اتنی بڑی تبدیلی سے ایک بار میں تمام خوبیاں تو حاصل نہیں ہو سکتیں لیکن جو خوبیاں اور خامیاں ہیں اس پر ہم بات تو کر سکتے ہیں، تاکہ ہم سب کی اس مسئلے پر سمجھ بہتر ہو. اگر اس کے امکانات کے بارے میں پڑھنا ہے تو آپ فلپ كارٹ کے سچن بنسل کی تحریر پڑھ سکتے ہیں جو 25 جولائی کے دن اكونامک ٹائمز میں شائع ہوا تھا، جس میں وہ دعوی کرتے ہیں کہ جی ایس ٹی سے ای کامرس میں زبردست اچھال آئے گا. ان کا کہنا ہے کہ جی ایس ٹی سےٹیکس نظام پہلے سے بہتر ہو جائے گا جس کا فائدہ ہر سیکٹر کو ملے گا. سخت تنقید پڑھنی ہو تو آپ 19 دسمبر 2015 کے روز کیچ نیوز پر شائع دیویندر شرما کا مضمون پڑھ سکتے ہیں.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close