آج کا کالم

خواندگی کو لے کر عوامی نمائندوں کو چھوٹ کیوں؟

گزشتہ کچھ وقت سے نظر آ رہا ہے کہ سیاست میں اصلاحات کے پیروکار بھی امیدواروں کی تعلیمی قابلیت کے لحاظ سے دفاعی آ جاتے ہیں. ان کی دلیل ہوتی ہے کہ یہ جمہوریت کے خلاف ہے، آئین کے خلاف ہے. یہ کسی غریب، پسماندہ، دلت، قبائلی کے لئے نقصان دہ ہو گا.

جواہر لال نہرو نے آئین ساز اسمبلی میں کہا تھا کہ جن ان پڑھ لوگوں نے آزادی میں اپنا سب جھونک دیا، تعلیمی قابلیت کی مہر لگا کر انہیں الیکشن لڑنے کے حق سے محروم نہیں رکھا جا سکتا.

وزیر اعظم کی اس دلیل سے میں بالکل متفق ہوں. لیکن کیا نہرو آج کے سلسلے میں بھی یہی کہتے؟ اس وقت کے مجاہد آزادی آج الیکشن نہیں لڑ رہے ہیں. 1947 سے 2017 کے انسانی وسائل میں فرق بھی آیا ہے. اس وقت ملک کی بڑی تعداد کے لئے وسائل مہیا نہیں تھے، تو ملک کو یہ حق بھی نہیں تھا کہ اس طرح کی کوئی قانون مسلط کیا جائے. تب ملک کے لوگ 90 سال تک آزادی کے لئے جدوجہد کر رہے تھے. خواندگی کی شرح 12 فیصد تھی. آج ماحول مختلف ہے، وسائل بہتر ہیں. ملک کی خواندگی 74٪ کے آس پاس ہے. ایسے میں کیا کم از کم تعلیمی قابلیت آٹھویں پاس بھی نہیں رکھی جا سکتی؟ آئین ساز اسمبلی کے اس معاملے میں حوالہ جات کو سمجھئے اور وقت کو ذہن میں برداشت، ضروری نہیں کہ وہ آج بھی متعلقہ ہے.

کچھ ریاستوں نے گرام پنچایتوں کے انتخابات کے لئے تعلیمی لازمی ہے، لیکن وہ بھی پانچویں، آٹھویں اور دسویں پاس تک ہی. مثلا، ہریانہ حکومت نے گرام پنچایت کا الیکشن لڑنے کے لئے تعلیمی قابلیت دسویں پاس رکھی. خواتین اور دلتوں کے لئے پیمانہ دسویں سے کم ہی رکھا گیا ہے. اسے سپریم کورٹ میں چیلنج بھی دیا گیا۔ لیکن سپریم کورٹ کو اس فیصلے میں غیر قانونی یا امتیازی سلوک جیسا کچھ نہیں لگا. تاہم یہ فیصلہ دو ججوں کی بنچ نے ہی دیا تھا. اس سے پہلے بھی کئی بار سپریم کورٹ نے مختلف فیصلوں میں کہا ہے کہ انتخابات لڑنا قانونی حق ہے، آئینی نہیں. کچھ فیصلوں میں اسے آئینی بھی کہا گیا. لیکن راج بالا vs اسٹیٹ آف ہریانہ میں سپریم کورٹ نے گرام پنچایت میں کم از کم تعلیمی قابلیت کو صحیح ٹھہرایا.

 اس فیصلے پر تنقید بھی ہوئی جس میں اہم نقطہ یہی رہا کہ ایک بڑے طبقے کا الیکشن لڑنے کا حق چھین لیا گیا. لیکن یہ حق کسی بنیادی حق کی خلاف ورزی نہیں ہے اور نہ ہی اسے کوئی ثابت کر پایا. آئین کے آرٹیکل 243F کے مطابق اگر ریاست نے ایسا کوئی قانون بنایا ہے جس سے گرام پنچایت کا الیکشن لڑ رہا امیدوار نااہل قرار ہوتا ہے تو یہ جائز ہے. کس بنیاد پر یہ غیر آئینی بتایا جا رہا ہے. اس فیصلے کے بعد موجودہ وزیر دسویں کا امتحان دے رہے ہیں کیونکہ اگلی بار انہیں انتخابات لڑنے میں دقت ہو سکتی ہے. اس کا تو خیر مقدم ہونا چاہئے.

تاہم اس قانون کو بنانے والی ہریانہ حکومت کی اسمبلی کے اپنے کچھ اراکین اسمبلی کے پاس یہ اہلیت نہیں ہے. ایسے میں یہ بھی ضروری ہوتا ہے کہ ممبران اسمبلی اور ممبران پارلیمنٹ کے لئے بھی ایک کم از کم تعلیمی قابلیت کے آغاز کی جائے.

کیا ایک نمائندے کے لئے آٹھویں اور دسویں پاس کرنا بھی دوبھر ہے؟ ملک میں اوپن اسکول بھی چل رہے ہیں. حق چھینا نہیں جا رہا، آپ حق کے لئے محنت کرنے کو کہا جا رہا ہے۔ جیسے ملک میں تمام سرکاری ملازمتوں اور انفرادی پیشوں کے لئے کوالیفائنگ مقرر کی گئی ہے. یہ قابلیت کچھ چھوٹ کے ساتھ دلت، پسماندہ، قبائلی سب کے لئے ہے. اگر دلتوں اور قبائلیوں کو اس معاملے میں نقصان ہو رہا ہے تو پھر باقی علاقوں میں بھی ہو رہی ہوگی. تو صرف سیاستدانوں کے لئے ہی چھوٹ کیوں لی جارہی ہے؟ اگرچہ تمام علاقوں میں ریزرویشن کا بندوبست ہے.

یہ بھی غور کرنے والی بات ہے کہ کس طرح لوگ ہماری جمہوریت میں نمائندہ بن رہے ہیں، یہ ‘کاسٹ’ سے زیادہ ‘کلاس’ کا تعین کرتی ہے. پیسے والا ہی الیکشن لڑ پا رہا ہے. ٹکٹ اسی کو مل پا رہی ہے یا کسی رہنما کے بہت خاص شخص کو. رشتہ دار تو پہلی پسند ہیں ہی. ہمدردی پیدا کرنے کے لئے ایک اور طول و عرض دکھایا جاتا ہے کہ امیدوار دلت ہے، پسماندہ ہے، مسلم ہے. اس کا کم پڑھا لکھا ہونا جائز ٹھہرانے کی کوشش بھی ہوتی ہے.

 یاد کیجئے کہ آج کتنے ایسے سیاستداں ہیں جو سچ میں دلت، پسماندہ اور اقلیتی کی زندگی جی رہے ہیں. اتر پردیش انتخابات میں پہلے مرحلے میں 231 ایس ایس امیدوار کھڑے ہوئے. ان میں بی ایس پی کے 52 ایس ایس امیدوار تھے، 44 ایس پی + کانگریس کے اور ان میں مسلم اور پسماندہ اور دلت سب ہیں. سالوں سے مجرمانہ پس منظر کے امیدواروں کا ریکارڈ بنتا آ رہا ہے اور تقریبا تمام ٹیم ایسے امیدواروں کا پارٹی میں خیر مقدم کرتے ہیں، پھر چاہے اس پارٹی کی تصویر غریبوں کے رہنما کی ہو یا دلتوں / پسماندہ طبقات / اقلیتوں کے رہنما کی.

بہار کے وزیر شاندار یادو کو کس بات کی کمی رہ گئی کہ وہ آٹھویں تک ہی پڑھ پائے. صرف شاندار یادو ہی کیوں، اور بھی کئی امیر پس منظر کے نمائندے کم پڑھے لکھے یا ان پڑھ مل جائیں گے. کیوں کسی پڑھے لکھے دلت / پسماندہ / غریب پس منظر کے نوکر شاہ کو یا ملازم کو مجبور کیا جائے کہ وہ ایسے وزیر / ایم پی / رکن اسمبلی کے ماتحت کام کرے. جس طرح کے نمائندے ہمیں ریاست اور مرکز میں مل رہے ہیں، ان کو دیکھ کر قطعی نہیں لگ رہا کہ انہیں دسویں یا بارہویں پاس بھی نہیں ہونا چاہئے. کس حساب سے کچھ لوگوں کو لگ رہا ہے کہ ایک عام غریب پسماندہ شخص یا قبائلی آسانی سے الیکشن لڑنے کا اپنا حق لے پا رہا ہے، فتح پا رہا ہے اور اس کے دسویں پاس ہونے کی شرط اسے روک لے گی.

آج ہر بی ایس پی، ایس پی، جے ڈی یو، شیو سینا، بی جے پی وغیرہ کا امیدوار سوشل میڈیا پر آنے کی کوشش کر رہا ہے. راجیہ سبھا اور لوک سبھا میں زیادہ تر نمائندہ پھر یہ کون سی صورت حال کی بات کی جا رہی ہے جہاں پانچویں پاس ہونا بھی لازمی نہیں ہو سکتا.

ایک عجیب سی دلیل دی جاتی ہے کہ کسی ان پڑھ نے بدعنوانی نہیں کیا. ٹھیک ہے، یہ تو ایک ریسرچ کا موضوع ہے. چلئے، مان لیا جائے کہ پڑھے لکھے لوگ بدعنوانی میں ملوث تھے، لیکن کیا بدعنوانی کرنے کی وجہ ان کا پڑھا لکھا ہونا ہے؟ دوسرا سوال یہ بھی اٹھتا ہے کہ کیا ان پڑھ لوگ بدعنوانی پکڑ پاتے ہیں؟ اسے روک پائیں گے؟

 Representation of the People Act، 1951 میں ترمیم کی جا سکتا ہے اور کم از کم تعلیمی قابلیت کو شامل کیا جا سکتا ہے لیکن دلچسپی کوئی نہیں لے رہا اور ظاہر ہے گرام پنچایت کے انتخابی قوانین کی تمام تنقید کے درمیان کوئی دباؤ بھی بنایا نہیں جا رہا.

 جب بھی ہم مسلمانوں کا ذکر کرتے ہیں پھر ہم ان کی تعلیم کے لئے بڑے فکر مند ہو جاتے ہیں. سچر کمیٹی کی رپورٹ کو لاگو کرنے کی بات کرتے ہیں. لیکن مسلمانوں کے نمائندے جب خود تعلیم کو کچھ نہیں سمجھیں گے تب اپنے معاشرے میں تبدیلی کیا لائیں گے. امبیڈکر بھی تعلیم یافتہ ہو کر ہی دلتوں کی نمائندگی بہتر کر سکے. ساوتريباي پھلے کیوں تعلیم کے لئے لوگوں کا کیچڑ جھیل رہیں تھیں اگر ملک کو تعلیم نمائندوں کی ضرورت نہیں. انتخابات تجزیہ مانتے ہیں کہ سیاسی سمجھ ہونا ایک الگ بات ہے، اس کے لئے پڑھا لکھا ہونا ضروری نہیں. لیکن کیا صرف ووٹ بٹورنے تک کی ہی سیاسی سمجھ ضروری ہے؟ گورننس کے بارے میں کیا خیال ہے!

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close