آج کا کالم

خونِ شہیداں رنگ لائے گا

(بنگلہ دیش کی نئی شہادت کے پس منظر میں)

ڈاکٹر محمد رضی الاسلام ندوی

         3 ہزار افراد پر مشتمل فوج شام کی جانب روانہ ہوئی تو اس کا مقابلہ کرنے کے لیے دشمن کے ایک لاکھ فوجیوں پر مشتمل لشکر جرّار موجود تھا۔ پھر کیا کریں؟ جنگ کا ارادہ بدل دیں؟ کمک کا انتظار کریں؟ یا جو کچھ ہمارے بس میں ہے وہ کر گزریں؟ آخری آپشن  اختیار کیا گیا۔ شام کے ایک مقام ‘مُوتَہ’ پر جنگ ہوئی۔ 3 ہزار کا ایک لاکھ سے کیا مقابلہ۔ خاصا جانی نقصان ہوا۔ ایک ایک کرکے 3 سپہ سالار (حضرت زید بن حارثہ، حضرت جعفر بن ابی طالب اور حضرت عبد اللہ بن رواحہ رضی اللہ عنہم) بھی شہید ہوگئے۔ تھکی ہاری فوج واپس پہنچی تو بعض نے طعنہ دیا۔ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ و سلم نے فوراً فرمایا :”یہ راہِ فرار اختیار کرنے والے نہیں، بلکہ تازہ دم ہوکر پھر حملہ آور ہونے والے ہیں۔ "

           یہ ہے تحریک اسلامی سے وابستہ فوجیوں کی شان۔ اپنی تعداد کی قلّت، دشمنوں کی کثرت، حالات کی ناسازگاری، شہادت پر شہادت، انھیں ہراساں نہیں کرتی اور وہ پوری آن بان کے ساتھ شاہ راہِ حق پر اپنا سفر جاری رکھتے ہیں۔

         بنگلہ دیش سے ایک اور شہادت کی اطلاع آئی ہے۔ وہاں جماعت اسلامی کے ایک اور رہ نما، عظیم دانش ور، مدبّر، ماہرِ اقتصادیات جناب سید میر قاسم علی(ولادت 31 دسمبر 1952) کو پھانسی دے دی گئی ہے اس طرح وہ بھی قافلہ شہداء میں شامل ہوگئے ہیںاس سے قبل اسی طرح ایک ایک کر کے چار رہ نماؤں کو پھانسی دی جا چکی ہے۔ سب کا تعلق ایک دینی جماعت سے ہے۔ سب ایک ہی فکر کے علم بردار ہیں۔ سب کا جرم ایک ہے۔ وَ مَا نَقَمُوا مِنھُم إلا أن یُومِنُوا بِاللہِ(البروج:8)أن کا جرم صرف یہ ہے کہ وہ اللہ پر ایمان رکھنے والے اور حق کے پرستار ہیں۔

          یہ کائنات فطرت کے اصولوں سے جکڑی ہوئی ہے۔ جس طرح زمین میں اگایی جانے والی کھیتی پانی پاکر تازگی حاصل کرتی ہے۔ اسے جتنا کھاد پانی دیا جائے اتنا ہی وہ لہلہاتی ہے اسی طرح ایمان کی کھیتی خون سے لہلہاتی ہے اس کی راہ میں جتنی قربانیاں اور جتنی شہادتیں پیش کی جاتی ہیں اتنا ہی اس کی شادابی، جمال و رعنائی اور استحکام میں اضافہ ہوتا ہے۔

         بس دیکھنے اور جائزہ لیتے رہنے کی ضرورت یہ ہے کہ جو لوگ اسلامی تحریک سے اپنی وابستگی کا اظہار کر رہے ہیں، کہیں ان کے عزائم میں کم زوری اور ارادوں میں فتور تو نہیں آ رہا ہے۔

            غزوہ احد(3ھ) میں 70 مسلمان شہید ہویے، بہت سے مسلمان زخمی ہوئے، قیمتی جانوں کا نذرانہ پیش ہوا، بیواؤں اور یتیموں کے مسائل پیدا ہویے، اس کے 2 سال بعد پورا عرب ایمان والوں کو صفحہ ہستی سے نابود کرنے کے لیے چڑھ دوڑا۔

            ایسے انتہائی نازک حالات میں ایمان کے علم بردار کن جذبات سے سرشار تھے، قرآن نے اس کا نقشہ ان الفاظ میں کھینچا ہے :

       مِنَ المُؤمِنِينَ رِجَالٌ صَدَقُوا مَا عَاهَدُوا اللّه عَلَیہ، فَمِنهُم مَن قَضَى نَحبَه وَ مِنهُم مَن يَنتَظِر وَ مَا بَدَّلُوا تَبدِيلاً (الأحزاب :23)

             "ایمان لانے والوں میں ایسے لوگ موجود ہیں جنھوں نے اللہ سے کیے ہوئے عہد کو سچ کردکھایا ہے۔ ان میں سے کوئی اپنے عہد کو پورا کرچکا اور کوئی وقت آنے کا منتظر ہے۔ انھوں نے اپنے رویّے میں کوئی تبدیلی نہیں کی۔ "

            روایات میں آتا ہے کہ جب کسی صحابی کو اللہ کی راہ میں شہادت نصیب ہوتی تو دوسرے صحابہ کہتے :”یہ بھی ان لوگوں میں سے ہیں جنھوں نے اللہ سے کیے ہوئے عہد کو پورا کردیا ہے۔ "

        بنگلہ دیش کی سرزمین بھی گواہ ہے کہ اس کے جیالوں نے اللہ سے جو کچھ عہد کیا تھا، اس کو سچ کر دکھایا ہے۔ انھوں نے اس راہ میں ذرا بھی کم زوری نہیں دکھائی ہے اور آزمائشوں، مصائب، قید و بند، پھانسی کے پھندوں، کسی سے وہ نہیں گھبرائے ہیں۔ ان میں سے کچھ نے اپنی نذریں پوری کردی ہیں اور اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرکے اپنے دعووں پر مہرِ تصدیق ثبت کردی ہے اور بقیہ کے قدم بھی راہِ استقامت پر ڈٹے ہوئے ہیں اور ان کے عزائم میں ذرا بھی ڈگمگاہٹ نہیں آئی ہے۔

      اے اللہ! ہم نے بھی حق کی حمایت اور طرف داری کا اعلان کیا ہے۔ اے اللہ! تو ہمیں بھی استقامت عطا فرما۔ اے اللہ! ہمیں جتنے دن بھی زندگی عطا فرما، اسلام پر قائم رکھ اور جب موت آنی ہو تو ایمان کی حالت میں ہمیں اٹھا۔ آمین، یا رب العالمین!

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

محمد رضی الاسلام ندوی

ڈاکٹر محمد رضی الاسلام ندوی معروف مصنف اور دانش ور ہیں۔ موصوف تصنیفی اکیڈمی، جماعت اسلامی ہند کے سکریٹری اور سہ ماہی مجلہ تحقیقات اسلامی کے نائب مدیر ہیں۔

متعلقہ

Close