آج کا کالم

دلتوں کو ہراساں کرنے پر لگام کیسے لگے؟

رویش کمار

ایک بار پھر راجیہ سبھا میں دلت کو ہراساں کرنے پر بحث ہوئی. ایک بار پھر تمام اعداد و شمار پڑھے گئے. ایک بار پھر تشویش ظاہر کی گئی. ایک بار پھر کئی اراکین نے کہا کہ یہ کام ہم ایک بار پھر تو کر رہے ہیں مگر افسوس کہ کچھ ہوتا نہیں. آج گجرات پرسکون رہا، مگر تھوڑی دیر کے لئے اتر پردیش گرم ہو اٹھا. بی جے پی کو نہ صرف دياشنكر سنگھ کو نکالنا پڑا، بلکہ پارٹی کے رہنماؤں نے مایاوتی کو باقاعدہ مطلع بھی کیا کہ کارروائی ہو گئی ہے. نتیجہ راجیہ سبھا میں مایاوتی بدھ کی طرح جارحانہ تو نہیں لگیں، مگر ان کے غصے کی کمی لکھنؤ کے حضرت گنج چوراہے پر ان کی پارٹی کے حامیوں نے پوری کر دی.

یہ عام مظاہرہ نہیں تھا. اس طرح کے مظاہرے دیگر جگہوں پر بھی ہوئے. دياشنكر سنگھ نے جس لفظ کا استعمال کیا تھا، اس نے بی ایس پی کے حامیوں کو بھڑکا دیا. ہمارے ساتھی کمال خان نے بتایا کہ لکھنؤ کی زبان سے لے کر تیور تک پر غصہ تیر رہا تھا. زبان پر بھی وہ لفظ سنائی دینے لگے جو عام طور پر بی ایس پی کے مظاہروں میں نہیں ہوتا ہے. غصے میں کئی بار دياشنكر جیسی ہی زبان بولنے لگے. یہاں تک کہ ایک بینر کی زبان بھی بی ایس پی کے اخلاقیات کے خلاف تھی. چنڈی گڑھ سے بی ایس پی لیڈر کا بیان آ گیا کہ دياشنكر کی زبان کاٹ کر لانے والے کو 50 لاکھ ملے گا. لکھنؤ میں بی ایس پی لیڈر اسٹیج سے للكارنے لگے کہ جب تک دياشنكر سنگھ کو گرفتار نہیں کیا جائے گا تب تک دھرنا جاری رہے گا. مایاوتی کے خلاف تبصرہ کی مخالفت میں کانگریس کے نئے صدر راج ببر بھی دھرنے پر بیٹھ گئے. پولیس نے کہا کہ دياشنكر سنگھ کو تلاش کیا جا رہا ہے. وہ گھر سے بھاگے ہوئے ہیں. جلد ہی گرفتار ہو جائیں گے. اس کے بعد مایاوتی نے 36 گھنٹے کے لئے دھرنا ٹال دیا. مایاوتی نے صفائی دی کہ کیوں لوگوں کا غصہ جائز ہے.

 لوگ مجھے اپنا لیڈر مانتے ہیں اور دیوی بھی مانتے ہیں. آپ کی دیوی کو کوئی کچھ کہتا ہے تو غصہ آتا ہے کہ نہیں. اس لئے ان کو غصہ آیا ہے. ایسا کچھ کہا ہے مایاوتی نے.

ہماری سیاست کی اخلاقیات کسی بھی طرح سے عورت مخالف ہے. رہنماؤں کے بولنے کا انداز، الفاظ، تقریب، دیکھ کر آپ سمجھ سکتے ہیں کہ یہ عورت کے مطابق نہیں ہے. تمام جماعتوں کے رہنما اس پیمانے پر فیل ہوئے ہیں اور آگے بھی فیل ہوں گے، مگر ان سب سے الگ جب آپ ایک دلت لیڈر یا دلت عورت کے خلاف بولتے ہیں تو اس کا جرم دوگنا ہو جاتا ہے. ورنہ تو ایسے بیان دے کر تمام لیڈر آرام سے بچ جاتے ہیں، لیکن دياشنكر سنگھ اس بار کوئی رحم حاصل نہیں کر سکے.

گزشتہ ہفتہ ہی دياشنكر سنگھ کو ریاست بی جے پی کا نائب صدر جیسا سینئر عہدہ دیا گیا. اسی کی خوشی میں مشرقی اتر پردیش کے مئو میں دياشنكر سنگھ کے استقبال کی تیاری کی گئی تھی. انہوں نے مایاوتی کے خلاف بول کر اپنی استقبالیہ تقریب کو پارٹی سے ہی الوداعی تقریب میں تبدیل کر دیا. 1997-98 میں لکھنؤ یونیورسٹی میں اسٹوڈنٹ یونین کے جنرل سکریٹری بنے. 1999 میں اسٹوڈنٹ یونین کے صدر بنے. اکھل بھارتیہ ودیارتھی پریشد کے امیدوار تھے. 2000 میں بھارتیہ جنتا یوا مورچا کے ریاستی جنرل سکریٹری، 2003 میں بھارتیہ جنتا یوا مورچا کے ریاستی نائب صدر، 2004 میں بھارتیہ جنتا یوا مورچا کے قومی سربراہ بنے. 2005 میں بھارتیہ جنتا یوا مورچا کے قومی نائب صدر بنے. 2007 میں بلیا سے بی جے پی نے ٹکٹ دیا تو پانچویں نمبر پر آئے تھے. 2012 میں ٹکٹ نہیں ملا، لیکن وہ یوپی کے تین سیکرٹریوں میں سے ایک تھے. راج ناتھ سنگھ کے بیٹے پنکج سنگھ کو جنرل سکریٹری بنایا گیا تو مخالفت میں اپنا عہدہ چھوڑ دیا. کافی آزاد خیال والے جرات مند لیڈر معلوم پڑتے ہیں. ان کی اہمیت نہ ہوتی تو 1 مئی 2016 کو دياشنكر سنگھ کے اسمبلی حلقہ سے ہی وزیر اعظم نے اجولا اسکیم شروع کی تھی. تاہم وزیر اعظم نے اسٹیج سے جن لوگوں کا نام لیا تھا، ان میں دياشنكر سنگھ کا نام نہیں تھا. اس کے بعد جون میں ایم ایل سی کا ٹکٹ ملا. ہار گئے.

آپ سوچ رہے ہوں گے کہ میں دياشنكر سنگھ کا بایوڈاٹا کیوں پڑھ رہا ہوں. اتنا طویل تعارفی مکتوب ان لوگوں کے لئے پڑھا جو سیاست میں آنا چاہتے ہیں. وہ اپنے اندر چیک کریں کہ ذات اور عورت کو لے کر کس کس طرح کے تکبر ہیں. پتہ لگا کر کسی اچھے سماجی علوم کے ماہر سے علاج کرا لیں.

اب آتے ہیں گجرات کی طرف. جمعرات کا دن عام طور پر پرامن رہا. آج جو ہلچل رہی وہ رہنماؤں کے دورے سے رہی. این سی پی لیڈر پرفل پٹیل کے علاوہ … کانگریسی نائب صدر راہل گاندھی بھی سمڈھيالا گاؤں گئے جہاں کے ایک ہی خاندان کے چار دلت نوجوانوں کے ساتھ تشدد کا واقعہ ہوا تھا. راہل گاندھی نے پانچ لاکھ روپے کی امدادی رقم دینے کی بات کی ہے. خاندان والوں نے بتایا کہ ان کے ساتھ پہلے سے ہی ایسے واقعات ہوتے رہے ہیں. راہل جس جیتو سرويا سے بات کر رہے تھے وہ بابو بھائی سرويا کے بھتیجے ہیں، جن کے چار بیٹوں کے ساتھ یہ واقعہ ہوا ہے. اس خاندان میں جیتو سرويا اکیلے ایسے طالب علم ہیں جو پڑھے لکھے ہیں اور انجینئرنگ کے طالب علم ہیں. جیتو نے راہل کو بتایا کہ کوئی کام آسانی سے نہیں ملتا تو وہ لوگ مجبورا یہ کام کرتے ہیں. ہم سماج کا گند صاف کرتے ہیں اور بدلے میں سماج ہمیں ہی گند سمجھتا ہے. اس کے بعد راہل گاندھی راجکوٹ کے دین دیال اپادھیائے اسپتال گئے جہاں 11 نوجوانوں کا علاج چل رہا ہے، جنہوں نے زہر پی کر خودکشی کی کوشش کی تھی. راہل گاندھی نے سب سے ملاقات کی.

اترپردیش یا مہاراشٹر کی طرح گجرات میں خصوصی طور پر کوئی بڑا دلت لیڈر نہیں ہے. پھر بھی وہاں جس طرح کا رد عمل ہوا اسے دیکھ کر دلت سیاست پر نظر رکھنے والے بھی حیران ہیں. کئی مقامات پر لوگ پہلی بار اس طرح کے مظاہرے میں حصہ لینے گئے. ایک دلت نوجوان نے بتایا کہ اس سے پہلے وہ 14 اپریل کے روز بابا صاحب کی سالگرہ پر نکلنے والے بھیم سفر میں ہی جایا کرتا تھا، لیکن اس بار کام بند کرکے مظاہروں میں گیا، کیونکہ جب اس نے مقامی چینلوں پر اپنے سماج کے لوگوں کو کار سے باندھ کر پٹتے دیکھا تو اپنے غصے کو روک نہیں پایا.

بدھ کو میں نے آپ ناظرین کی ملاقات وجے دیوان سے کرائی تھی جو ایک برہمن خاندان سے آتے ہیں مگر طے کیا کہ خود مردہ جانوروں کی کھال اتاریں گے تاکہ اس کام سے جڑی ذات پات کی سوچ ختم ہو. ونوبا بھاوے کے شاگرد دیوان صاحب چاہتے ہیں کہ دلت اس کام کو چھوڑ دیں. جن لوگوں کو ایسے کام کرنے والوں سے مسئلہ ہے وہ یہ کام کریں. گائے سے اتنا لگاؤ ہے تو اس کو دفن بھی خود کریں.

دلتوں پر یہ کام تھوپا گیا. اس لیے چھوڑ ہی دینا چاہئے، لیکن آج اس کام نے دلت سماج کے ایک طبقے کو اقتصادی طاقت بھی دی ہے. ویسے تبدیلی تو ان کی سوچ میں ہونی ہے جو لاٹھی سے ان لوگوں کو مارتے ہیں. کیا اپنا کام چھوڑ دینے سے لاٹھی والے غنڈوں کی سوچ بدل جائے گی جو خود کو گئو رچھک کہتے ہیں.

آج آپ کا تعارف بھاونگر کے 21 سال کے یوگیش سے کراتا ہوں. یوگیش بچپن سے ہی مری ہوئی گائے کو لانے اور کھالیں اتارنے کا کام کرتا ہے. اس نے تین سال تک پیسے بچا کر کیش دے کر بلیٹ خریدی ہے. شوق تھا کہ بلیٹ خریدیں. پہلے ہونڈا اسپلینڈر خریدی، پھر رویل اینفلڈ. یوگیش نے زور دے کر کہا کہ لون نہیں لیا، بلکہ ایک لاکھ 55 ہزار دے کر خرید لایا. ہم صحافیوں کے نام نہاد ماہرین سماجیات کے سوالوں کو سمجھنے اور جواب دینے میں یوگیش کو تھوڑی مشکل تو ہوئی، کیونکہ وہ بنیادی طور پر گجراتی بولنے والے ہے. یوگیش نے بتایا کہ سال بھر پہلے تک کھال اتارنے کے کام سے وہ روز دس سے پندرہ ہزار کما لیتا تھا. اس میں چھ سات لوگوں کی 5000 مزدوری بھی نکل آتی تھی، لیکن دو سال سے گئو رچھکوں نے پریشان کر دیا تھا، اس لئے جن سے گائے لے کر آتے تھے، ان کا نمبر بھی لاتے تھے، کیونکہ ان لوگوں کی بات کرانی ہوتی تھی. اونا واقعہ کے بعد جوش میں کام چھوڑنے کی بات تو کرتا ہے مگر یہ بھی کہتا ہے کہ اتنا آسان نہیں ہے. یوگیش نے کہا کہ پہلے ایک چمڑے کا ہزار روپیہ مل جاتا تھا، مگر اب پانچ سو روپیہ بھی نہیں ملتا. کمائی کم ہونے کی وجہ یہ گئو رچھکوں کی دہشت گردی بھی ہے.

زائیلو کار میں سوار گئو رچھا کے نام جو غنڈے آئے تھے وہ اگر بلیٹ سوار یوگیش کو دیکھتے تو ان کی پہلی رائے کیا ہوتی. ایسے ہی، بائی دی وے پوچھ رہا ہوں. مگر سمڈھليا گاؤں کے جس خاندان کے دلت نوجوانوں کو غیر انسانی طریقے سے مارا پیٹا گیا، ان کی اقتصادی حالت شہر میں رہنے والے یوگیش کے مقابلے میں بہت خراب ہے. اب ہم نے اسی کام میں لگے سوراشٹر کے ایک بڑے تاجر سے بات کی. ہيرا بھائی رام جی بھائی چاوڑا. ہيرا بھائی کے پاس فورڈ اینڈیور کار ہے.

وہ سوراشٹر علاقوں میں کھال اتارنے والے، چمڑے اتارنے والے دلیپ نوجوانوں سے کھالیں خریدتے ہیں. خود کے پاس بھی کئی گاڑیاں ہیں جو مردہ گایوں کی اطلاع ملنے پر انھیں لانے جاتی ہیں. ہيرابھائی کے سسٹم میں 60-70 لوگ کام کرتے ہیں. ہيرابھائی ان سب سے کھال لے کر کانپور، مدراس اور کلکتہ کی پارٹیوں کو فروخت کرتے ہیں. ہيرابھائی بھی ان لوگوں میں شامل ہیں جنہوں نے اپنی گاڑی میں مردہ گایوں کو رکھ کر سریندر کے کلیکٹر آفس میں مردہ گائے کو چھوڑ دیا کہ لو خود کر لو دفن. اب ہم نہیں کریں گے. بجرنگ دل والوں سے کروا لو.

بہت پڑھے لکھے تو نہیں لگے، نہ ہی وہ میرے ہندی میں پوچھے گئے سارے سوالات کو ٹھیک ٹھیک سمجھ پا رہے تھے، اس لئے ان کے جواب میں ہوئی کسی بھی چوک کو چھوٹ دینی ہوگی. ان سے بات چیت کرکے پتہ لگا کہ گئو رچھا اور پولیس والے دونوں اس دہشت گردی کے نام پر وصولی کرتے ہیں. دوسرے لوگوں سے بات کرکے پتہ چلا کہ مردہ گائے لے جانے والی گاڑیوں کو روک کر 2000 سے 5000 روپے تک کی وصولی کی جاتی ہے. ہمارے پاس پولیس کا بیان نہیں ہے، مگر ان باتوں سے ظاہر ہوتا ہے گئو رچھا صرف اعتقاد کا معاملہ نہیں ہے، اعتقاد کے نام پر دہشت گردی سے اقتصادی پہلو بھی جڑے ہے. جتنی دہشت گردی، اتنی کمائی. ویسے ہيرابھائی نے بتایا کہ ‘ہم ان پڑھ لوگ ہیں ان پڑھ لوگوں سے چمڑے خریدتے ہیں. صدیوں کا پیشہ ہے. دوسرے سماج کے لوگ یہ کام نہیں کرتے، اس لئے حکومت بھی توجہ نہیں دیتی ہے. حکومت کو ہمیں لائسنس دینا چاہئے تاکہ ہم دکھا سکیں کہ ہم اس کا کاروبار کرتے ہیں. پولیس والا ہم سے بل مانگتا ہے. ہم نہیں دے سکتے. گاؤں کے غریب لوگ بل کہاں سے دیں گے. کولکتہ، مدراس کی پارٹی کو مال بھیجتے ہیں تو اس کا بل بنا کر بھیجتے ہیں. پھر بھی ڈر لگا رہتا ہے کہ راستے میں کچھ غلط نہ ہو جائے. ہم حکومت کو ٹیکس بھی دیتے ہیں. ‘ ہيرابھائی رام جی بھائی چاوڑا نے بتایا کہ مارکٹ گرنے کی تکلیف نے بھی ان کے سماج کے غصے کو بھڑکایا.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close