آج کا کالم

رانا ایوب کی کتاب سے کون ڈر گیا!

Anatomy of a cover up رانا ایوب کی یہ کتاب آ گئی ہے. اس کتاب کے آنے کی خوبی یہ ہے کہ اسے کوئی آنے نہیں دینا چاہتا تھا. نہیں چاہنے کے بعد بھی آ گئی ہے. اس ملک میں کچھ اینکر اب بھی ہیں جو صدیوں سے اسٹڈيو کی میز پر بیٹھے ہوئے ہیں. دھوپ، گرمی اور برسات سے محفوظ یہ اینکر سہراب الدین اور عشرت جہاں معاملے میں خوب بحث کئے جا رہے ہیں. بیچ بیچ میں نئی نئی فائلوں کو تلاش لاتے ہیں. امید ہے کہ وہ اس کتاب کے بہانے بھی گجرات کے فرضی انکاؤنٹر کی بحث کریں گے اور رانا ایوب سے خوب سخت سوال کریں گے. ویسے مجھے نہیں لگتا کہ وہ بات چیت کریں گے کیونکہ ڈر اینكرو کو بھی لگ سکتا ہے. ہمارے اینکر آپ کو ڈرا دیتے ہیں اسی لئے ان کو بھی ڈر لگتا ہوگا.

میں ہمیشہ اس انکاؤنٹر کی کہانی سے بچتا رہا، وجہ جن دنوں یہ سب معاملے ہوتے تھے میں گاؤں گلی گھوم رہا تھا. معصوم تھا. آدھی ادھوری معلومات پر لکھ دیتا تھا، رائے بنا لیتا تھا. اس لیے اڑتی اڑتی باتیں سنی اور جب کبھی بحث کی تو یہی سوچا کہ فوری ختم ہو جائے اور بھاگو. یہ معاملہ انتہائی پیچیدہ ہے اس لیے نہیں بلکہ یہ معاملہ آپ سے جرات کے ساتھ ساتھ سخت جوابداري کا بھی مطالبہ کرتا ہے. رانا ایوب کی یہ کتاب میرے جیسوں کے لئے ایک موقع ہے. جن واقعات کا ذکر ہم بے بسی کے عالم میں دیکھتے رہتے ہیں اور کوئی ایک تار پکڑ بات چیت کی شام کی نيا پار کر لیتے ہیں، ان کے لئے نئے سرے سے جاننے کا موقع ہے. کچھ اینکر اس کے ماہر ہیں اور کچھ رپورٹر بھی. شاید انہیں بھی اس کتاب سے کچھ فائدہ ملے.

عشرت جہاں اور سہراب الدین کا انکاؤنٹر آج تک ہو رہا ہے. تفتیشی ایجنسی اور عدالت کے باہر. اس بحث میں تفتیشی ایجنسیوں کے کچھ مہرا نما ملازم بھی ہیں، جو میڈیا میں دعوی کر کہیں غائب ہو جاتے ہیں. حکومت بدلتی ہے، بحث کی شکل بدل جاتی ہے. جن رپورٹوں کے لئے رانا ایوب کی تعریف ہوتی تھی انہیں بھدی گالیاں دی جاتی ہیں. جمہوریت کے احترام کی نوٹنکی کہیں کھیلی جاتی ہے تو وہ اپنا ملک ہے. رانا اب پسندیدہ نہیں ہیں. ناپسندیدہ ہوتی جا رہی ہیں. ہمت کی داد مت دیجئے، کتاب خرید کر پڑھ لیجئے کہ کوئی اب بھی نہیں ہارا ہے. اب بھی کسی میں جنون بچا ہے.

ان معاملات میں جیل گئے امت شاہ اب باہر ہیں اور کانگریس جو انہیں جیل بھیج کر شاہ بن رہی تھی اب اسی امت کو ثابت نہیں کر پا رہی ہے کہ وہ امت ہے. امت کانگریس کو مٹا رہے ہیں اور کانگریس امت کا استعمال کرتی رہی، اپنے دس سال کی حکومت میں اس کیس کو انجام پر نہیں پہنچا پائی. کانگریس نے امت شاہ کی جتنی مدد کی ہے اتنی کسی نے نہیں کی ہوگی. معاملے کو لٹكائے رکھا اور سیاسی استعمال کیا.

فرضی انکاؤنٹر کے دوسرے ہیرو ہیں آئی پی ایس ونجھارا. ونجھارا سالوں تک جیل میں رہے. جب باہر آئے تو حال اور حلیہ دیکھ کر لگا کہ یہ جیل نہیں گئے تھے. جیل میں ضرور تمام حکومتوں نے اچھے سے رکھا تھا تاکہ جب باہر جائیں تو لگے کہ لندن سے آ رہے ہیں. ونجھارا صاحب کا احمد آباد ایئر پورٹ پر ترنگے کے ساتھ خیر مقدم ہوا اور ترنگے کو لے کر جذباتیت پیدا کرنے والی تنظیمیں اور ان سے اتفاق رکھنے والے اینکر چپ رہے. مجھے ٹھیک سے یاد نہیں مگر رانا اور کچھ صحافیوں کی بے تحاشا رپورٹگ کی وجہ سے کئی آئی پی ایس افسر جیل بھی گئے.

ونجھارا اب آسارام باپو بچاؤ مہم کے راستے ہندو کی نفسیات میں داخل ہوتے ہوئے قوم پرستی کے نئے سمبل بننے کی تیاری میں ہے. جلدی آپ  اپنی قوم پرستی کی پیاس ونجھارا کی سرگرمیوں سے بجھاتے ملیں گے. مرينڈا بولیں گے. وہ اب سنگھ کی قسمیں کھا رہے ہیں اور ایسی خبر بھی آئی تھی کہ سنگھ کے پروگرام میں گئے تھے. نیک زندگی جینے والے سنگھ کو ونجھارا جیسوں کو تسلیم کرنے میں کیا حاصل ہے مجھے نہیں معلوم.

ماں باپ کے پیسے کو برباد کر تمام اداروں میں ہندی صحافت کا ناقص مطالعہ کرنے پر مجبور معصوم طالب علموں کو ایک مشورہ ہے. وہ چار پانچ سو روپیہ اور برباد کریں اور اس کتاب کو پڑھیں. خاص کر لڑکیاں ضرور پڑھیں .یہ سمجھنے کے لئے کہ تحقیقاتی صحافت کس طرح کی جاتی ہے اور لوگوں نے کیسے کیا ہے. ہندی میں اس طرح کے گہری رپورٹنگ کی مثالیں کم ہیں. ہر طالب علم کے کمرے میں یہ کتاب ہونی چاہئے. وہاں بھی جہاں کے وائس چانسلر طالب علموں کو سیاسی نظریاتی تربیت دے رہے ہیں. رات کو چھپ کر پڑھ لینے سے طالب علم کم از کم طریقہء کار اور ہمت کا اندازہ کر سکتے ہیں اور آپ اس طریقہء کار کا فائدہ اٹھا کر ان جماعتوں کی کسی کارستانی کا انکشاف کر سکتے ہیں جن کے مخالف ان کے وائس چانسلر اور استاد ہیں. اس سے عوام کا ہی بھلا ہوگا. ویسے ان دنوں حکومتی ادارہ مخالف صحافت کی جگہ اپوزیشن مخالف صحافت کی خوب تعریف ہو رہی ہے!

مایوس کرنے والی بات یہ ہے کہ ایک شہری کے ناطے ہمارے پاس کوئی ایسی ایجنسی نہیں ہے جس کی تحقیقات پر یقین کر پاتے اور وقت پر فیصلہ ہو جاتا. کاش ہم صحیح صحیح جان پاتے کہ کون مجرم ہے یا نہیں. یہ کتاب ہرین پانڈیا کے قتل کی پرتوں کو بھی ادھیڑنے کا دعوی کرتی ہے. جب پانڈیا کا قتل ہوا تھا تب اس کی بیوی اور والد خوب ٹی وی پر آکر مودی اور نہ جانے کس کس کو کوستے تھے. جب خبر آئی کہ اس کی بیوی بی جے پی میں شامل ہو گئیں ہیں تو مجھ پر لرزہ طاری ہو گیا. انوراگ کشیپ کی گلال فلم گھومنے لگی اور سوچتا رہا کہ کیا انہیں صحیح میں ندامت ہوئی ہوگی کہ جذباتیت میں آکر کئی لیڈروں کو بے وجہ قتل کا ملزم بتایا یا …. مجھ میں نہ تو ہمت ہے اور نہ تجسس کہ آگے کی لائن بھر دوں. اس لئے چار نقطے لگا کر چھوڑ دیا.

rana1

دیر رات تک رانا ایوب خود اس کتاب کی ہارڈ کاپی پر اسٹیکر لگاتی رہیں. کسی نے چھاپا نہیں تو رانا نے خود چھاپ دیا ہے. اکیلے خطرہ مول لینا اور پھونک پھونک کر قدم رکھنا آسان نہیں ہے. رانا اور ان کے خاندان کے لوگ شدید تناو سے بھی گزرے ہوں گے. اکیلے تناو اور جوکھم بھرے اس کام نے تھکا دیا ہوگا. اسی لئے اجرا کے ایک دن پہلے رانا کو بخار بھی ہو گیا ہے. شدید طریقے سے قانونی تجربہ کیا ہے کیونکہ اس کی معلومات ملک کے دو طاقت ور لوگوں کو پریشان کر سکتی ہے. گزشتہ پانچ چھ سالوں سے رانا گجرات کی اپنی رپورٹنگ کے دوران جمع کئے دستاویزات کو لے کر گھوم رہی تھیں. تب تو مودی حکومت نہیں تھی. پھر بھی کسی نے ان سے یہ دستاویز نہیں مانگے اور کسی نے چھاپا نہیں. اچھا ہی ہوا کیونکہ اس وقت الزام لگتا کہ کانگریس کے اشارے پر چھاپا ہے لیکن یہ سوال اٹھنا چاہیے کہ کانگریس پھر کیسے الگ  تھی. یو پی اے کے مبینہ طور پر طویل عرصے میں نہ تو کسی نے چھاپا نہ کسی نے کارروائی کی.

تو دوستوں جمعہ یعنی 27 مئی کو دہلی کے انڈیا ہیبی ٹیٹ سینٹر کے املتاس ہال میں اس کا رسم اجرا ہے. شام چھ بجے. 295 روپے کی یہ کتاب ای بک کی شکل میں آ گئی ہے. ایمیزون اور فلپ كارٹ پر دستیاب ہے لہذا بہت سے لوگوں کے ہاتھ پہنچ گئی ہے. آپ شام چھ بجے ہیبی ٹیٹ جاکر رانا کو ضرور سنیے. هرتوش سنگھ بہل اور راجدیپ سردیسائی نے ان کے ساتھ بات کرنے کی ہمت جٹائی ہے. ویب سائٹ میں کارواں، وایر اور اسکرول نے اس کے بارے میں چھاپا ہے. بات چیت اور اجرا کی ہمت اٹھانے والے کارواں کا شکریہ. باقی سب کے لئے آمین.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close