آج کا کالم

ستیہ گرہ کے نام پر غندہ گردی

رویش کمار

سیاست سے یہ سوال کریں گے تو جواب نہیں ملے گا. اتنے ہنگامے کے بعد جب مضبوط لوک پال نہیں آیا اور کئی سالوں کی لڑائی کے بعد بھی پولیس اصلاحات کے اقدامات ادھورے رہ گئے تو پھر بات کس سے کی جائے. عدالت عظمی کے فرمان کے بعد ان گنت بات چیت کا حال ہم دیکھ چکے ہیں. تھوڑے تھوڑے وقفے کے بعد انتظامیہ اور پولیس کے کھوکھلے ہو جانے کی کہانی سامنے آتی ہے اور غائب ہو جاتی ہے. ہریانہ میں ہی جب پرکاش سنگھ کمیٹی کی رپورٹ آئی کہ کس طرح انتظامیہ یا تو مشتعل ہجوم کا ساتھ دے رہی تھی یا ان کے ساتھ ملی ہوئی تھی، تھوڑے دنوں بعد عوامی طور پر اس رپورٹ کی ایسی مذمت ہونے لگی جیسے تشدد، پرکاش سنگھ رپورٹ کی وجہ سے ہوا ہے. اس لیے اترپردیش پولیس کو خود سے یہ سوال پوچھنا ہوگا کہ وہ کب اپنے پیش کے نظام کو نظام کی شکل دے پائیں گے.

آئی پی ایس افسر مکل دویدی اور سب انسپکٹر سنتوش یادو کی تصاویر کو یوپی پولیس اہلکار جلد ہی بھول جائیں گے. تھوڑے دنوں بعد انتخاب ہو گا اور  لاء اینڈ آرڈر کے نام پر ہنگامہ ہوگا. پھر انتخاب ہو جائے گا اور نظام ویسا کا ویسا رہ جائے گا. 2013 میں پرتاپ گڑھ کے ایک گاؤں کی بھیڑ نے پولیس کے ایک ایماندار ڈی ایس پی ضیاء الحق کو گھیر کر مار دیا. بات معاوضے کی نہیں ہے. بات ہے حوصلے کی. وردی مجبوری نہیں ہے. وردی والے کو بھی شہری حقوق حاصل ہیں. متھرا میں ایس پی مکل دویدی کی آخری رسومات پوری کر دی گئیں. صحافی سے لے کر شہری تک سب نے کہا صاحب اچھے آدمی تھے. سیاست اور انتظامیہ کے گٹھ جوڑ کا شکار ہو گئے. اترپردیش پولیس کا ادنی ہو یا اعلی ہو اگر وہ ان تصاویر کو دیکھ رہا ہے تو اپنے ایمان اور ضمیر میں بھی جھانک کر دیکھے. پوچھے کہ ان کی اس حالت کے لئے کون ذمہ دار ہے اور اگر ان حالات کے وہ وجوہات ہیں تو کیا وہ کچھ کریں گے یا پھر بھول جائیں گے. وہ جانتے ہیں ان دو اموات کے پس پردہ سچ کیا ہے. میں انتظار کر رہا ہوں کہ وہ اب آف ریکارڈ کی باتوں کو آن ریکارڈ کریں گے. سنتوش یادو ان چھٹیوں میں اپنے بیٹے کو کمپیوٹر اور ویدک ریاضی سکھانا چاہتے تھے تاکہ اس کی گنتی درست ہو جائے. مکل دویدی کے خاندان کی تصاویر کو دیکھ کر کیا یہ امید کی جا سکتی ہے کہ صدر سے تعیناتی کا مکتوب لے کر آنے والے تمام آئی پی ایس اپنے اس ساتھی کی موت کے حالات کی تحقیقات کے لئے کھڑے ہوں گے.

وہیں ایس او سنتوش یادو کے گھر جونپور میں ماتم ہے. گھر والوں کا رو رو کر برا حال ہے. متھرا کے واقعہ کے بعد کئی سطح کے پولیس والوں سے بات کرتے ہوئے لگا کہ ان کا حوصلہ ٹوٹ گیا. وہ بولتے بولتے خود کو کوسنے لگتے ہیں. کہیں تھانے میں انسپکٹر کی جگہ سب انسپکٹر انچارج ہے، تو کئی مقامات پر ایک ہی ذات کے ایس ایچ او بٹھا دیے گئے ہیں. کئی مقامات پر آئی پی ایس افسر کو ضلع نہیں مل پاتا، مگر بہت سے ترقی یافتہ افسروں کے پاس ضلع کا چارج ہے. کسی نے بتایا کہ کئی سال سے پروموشن نہیں ہوا ہے. ظاہر ہے ان چیزوں کے تئیں اترپردیش یا کسی بھی ریاست کی پولیس اب روادار ہو چکی ہے. پولیس نے اپنے اندرونی نظام کو اتنا کھوکھلا کر لیا ہے کہ کبھی بھی کوئی بھی سپاہی یا افسر اس کا شکار ہو سکتا ہے. یہ سب جانتے ہیں. کیا سب یہ نہیں جانتے تھے کہ 2 جون سے پہلے متھرا شہر کے مجسٹریٹ نے حکم دیا تھا کہ 16 اپریل کی شام 5 بجے تک سوادھین بھارت ودھک ستياگرهي جواہر پارک خالی کر دے. 2015 سے ہائی کورٹ کا حکم تھا کہ اس پارک کو خالی کرایا جائے. مگر انتظامیہ کی حالت دیکھئے. اس پارک کے بغل میں ہی ضلع مجسٹریٹ کا گھر ہے. روز آتے جاتے دیکھتے ہی ہوں گے کہ غیر قانونی قبضہ ہوا ہے. اسے خالی کرانا چاہئے. مگر لگتا ہے کہ فرق نہ پڑنے کے قومی فرض کے شکار ان افسران کو فرق ہی نہیں پڑا ہوگا.

16  اپریل کو کوشش ہوئی، مگر ناکام ہو گئے. کھلے عام اسلحہ جات کا مظاہرہ کرتے رہے اور خود کو ستياگرهي کہتے رہے. مظاہرین کو ستیہ گرہ کا مطلب تو نہیں ہی معلوم ہوگا، مگر لگتا ہے انتظامیہ کو بھی نہیں معلوم کہ کوئی بندوق لے کر ستياگرهي ہونے کا دعوی کرے تو اس سے خطرناک کچھ نہیں ہو سکتا. شہرکے مجسٹریٹ نے ایس ایچ او صدر بازار کو حکم دیا کہ زمین خالی کرائے. نوٹس جاری کرنے سے پہلے ضلع انتظامیہ نے ڈرون کیمرے سے پارک کا سروے بھی کیا تھا. اضافی فورس بھی منگوائی تھی. 15 اپریل کے دن پی ٹی آئی کے حوالے سے یہ خبر بزنس اسٹینڈرڈ میں شائع ہوئی ہے.

میں یہ معلومات اس لئے دے رہا ہوں تاکہ پتہ چلے کہ کچھ بھی اچانک نہیں ہوا. جواہر پارک 16 اپریل کی شام 5 بجے تک خالی نہیں کرایا جا سکا. تب دینک جاگرن کے متھرا ایڈیشن اور امر اجالا نے اسے کافی تفصیل سے کور کیا تھا. 5 اپریل کے دینک جاگرن کے متھرا ایڈیشن کے پہلے صفحے پر خبر شائع ہوئی. متھرا کے جواہر باغ آندولن کاریوں کا تحصیل میں تانڈو. لاٹھی ڈنڈوں سے لیس جواہرباغ کے دو درجن آندولن کاریوں نے ڈھٹائی کا مظاہرہ کرتے ہوئے پیر کی دوپہر 4 اپریل دوپہر 3 بجے صدر تحصیل پر حملہ بول دیا. تحصیل کے ملازمین، وکیلوں اور راہگیروں کو دوڑا دوڑا کر پیٹا. تحصیل کی فائلیں پھینک دیں، فرنیچر توڑ ڈالے اور گاڑیوں کو نشانہ بنایا. آدھے گھنٹے تک تانڈو مچاتے رہے اور فورس پہنچنے سے پہلے فرار ہو گئے. تحصیل ملازم 5 اپریل سے ہڑتال پر چلے گئے. ڈی ایم نے ہڑتال کو غیر قانونی قرار دیتے ہوئے کہا کہ وہ 16 اپریل سے کام پر واپس آئیں ورنہ ان کے خلاف کارروائی ہوگی. یعنی یہ ہڑتال لمبی چلی تھی.

اس طرح کے کئی واقعات ہوتے رہے. 22 جنوری 2015 کے دن ضلع مجسٹریٹ نے صدر بازار کے تھانہ انچارج پردیپ پانڈے کو پارک میں بھیجا. نوٹس تھی کہ یہ لوگ سبھاش چندر بوس کی جینتی پر گیٹ بنا رہے ہیں. مبینہ طور پر ستیہ گرہیوں نے پردیپ پانڈے کو گھیر لیا اور مار پیٹ کی. امر اجالا نے 24 جنوری کو چھاپا کہ تھانہ صدر بازار کے علاقے میں 2 جنوری کی رات کو گیٹ لگانے کو منع کرنے گئی صدر پولیس اور انتظامی افسران پر ستیہ گرہیوں نے حملہ کر دیا. معاملے میں دونوں جانب سے فائرنگ بھی کی گئی. صدر تھانہ انچارج پردیپ پانڈے نے سینکڑوں لوگوں کے خلاف جان لیوا حملہ کرنے کے معاملے درج کرائے. اس مار پیٹ میں پردیپ پانڈے زخمی ہو گئے. زخمی پردیپ پانڈے نے اس واقعہ کی ایف آئی آر کرائی لیکن آپ جاننا چاہیں گے کہ کیا ہوا. الٹا پردیپ پانڈے کا تبادلہ کر دیا گیا.

جنوری 2015 میں امر اجالا نے لکھا کہ مارچ 2014 میں جب ان لوگوں کا جواہرباغ میں آنا شروع ہوا تو ان کی تعداد 500 سے 700 تھی. جنوری 2015 میں یہ تعداد 3000 کے آس پاس جا پہنچی. مردوں کے ساتھ ساتھ خواتین بچے بھی شامل تھے.

جواہر باغ یوپی کے محکمہ باغات کی زمین ہے. امر اجالا نے لکھا ہے کہ اس میں آم، بیل اور آملا کے درخت تھے. اس بہترین پارک کوستیہ گرہیوں نے تباہ کر دیا تھا. جواہر باغ کے اندر محکمہ باغات کا دفتر تھا. مگر یہ لوگ ملازمین سے مارپیٹ کرتے تھے، جن کے سبب انہوں نے دفتر جانا بند کر دیا تھا. انتظامیہ نے ایکشن کیوں نہیں لیا. موجودہ ضلع مجسٹریٹ راکیش مینا کافی دنوں سے متھرا میں ہیں. تو اتنے دنوں میں انھیں حل تو نکالنا ہی چاہئے تھا. ایس ایس پی راکیش سنگھ بھی کافی دنوں سے ہیں. سوا دو سال پہلے جے گرو دیو کی موت کے بعد کئی گٹ دعویدار بن گئے. کہا جاتا ہے کہ سماج وادی پارٹی کے لیڈر شیوپال یادو کی شہ پر جے گرودیو کے ڈرائیور کو گدی کا انچارج بنا دیا گیا. پنکج اٹاوہ کے ہی رہنے والے ہیں. رام ورکش یادو کو جواہر باغ بھیج دیا کہ آپ وہاں جا کر دھرنا پردرشن کیجئے. شیو پال یادو کا کردار کیا ہے یہ کسی منصفانہ تحقیقات سے ہی ثابت ہو سکتا ہے، اگر کہیں تحقیقات منصفانہ ہوتی ہوگی تو، ورنہ سیاست میں کسی کو بھی کچھ بھی کہہ دینے کا چلن تو ہے ہی.

اب سوال ہے کہ دھرنے پر بیٹھے ان لوگوں کا جواہر باغ میں اتنا بڑا نظام کس طرح تیار ہو گیا. کس کے کہنے پر اندر گیس سلنڈر کی سپلائی ہونے لگی. ٹیوب ویل کس کے حکم سے لگا. کس کے حکم سے بجلی کی سپلائی دی گئی. دینک جاگرن اخبار نے لکھا ہے کہ جواہر پارک کے  اندر ایک نظام بن گیا تھا. یہ لوگ پارک کی زمین پر سبزیاں اگا رہے تھے. ستیہ گرہیوں کا مکمل حساب کتاب رکھا ہوا تھا. گھر جانے کے لئے چھٹی کی درخواست دینی ہوتی تھی. باقاعدہ رجسٹر میں انٹری ہوتی تھی. اینڈیور، سفاری، انووا جیسی نصف درجن گاڑیاں پارک کے  اندر تھیں. مدھیہ پردیش کے نمبر کی یہ گاڑیاں رام ورکش یادو کی بتائی جاتی ہیں.

ہمارے ساتھی رويش رنجن شکلا نے کئی لوگوں سے بات کر کے پتہ لگایا ہے کہ رام وركش یادو کا ایک فائنینسر بھی ہے، راکیش بابو جو بدایوں کا رہنے والا ہے. مغربی بنگال کا کوئی چندن بوس یادو کا ساتھی تھا جو تشدد کے لئے اکساتا تھا. یہ لوگ منظم طریقے سے وصولی کا بھی کام کرتے تھے. رام وركش یادو پر متھرا آنے سے پہلے آٹھ مقدمات درج تھے. وہ قتل کے الزام میں سات ماہ  جیل میں رہا ہے. متھرا آنے کے بعد سات معاملے درج ہوئے ہیں. بہت سی مقامی تنظیموں اور سیاسی جماعتوں نے انتظامیہ پر ہمیشہ دباؤ ڈالا کہ جواہر پارک خالی کرایا جائے. جواہر پارک  مکتی آندولن کے نام سے کئی تنظیموں کا بھی ذکر ملتا ہے. رام وركش یادو کے قبضے سے جواہر پارک خالی کرانے کے بعد ہمارے ساتھی رويش رنجن شکلا نے اندر جا کر جائزہ لیا تھا.

ضلع مجسٹریٹ کی کوٹھی کے سامنے اس طرح کی ایک مجرمانہ سلطنت بستی چلی گئی. یہ لوگ شہر میں انتظامی عملے کے ساتھ مار پیٹ کر رہے تھے. پھر بھی انتظامیہ نے اتنی تیاری کیوں نہیں دکھائی. 6 مئی کے امر اجالا کی خبر ہے کہ مئی کے پہلے ہفتے میں انتظامیہ نے جھانسی، فیض آباد، سلطان پور اور مراد آباد سے چار کمپنی پی اے سی کی منگا لی تھی. 20 تھانوں کی پولیس کے ساتھ باقاعدہ ریہرسل بھی کیا گیا. فساد کنٹرول، پمپ گن، اسٹین گن، ایم پی 5- گن، مرچی بم، کرنٹ بم، آسٹن بم، آنسو گیس کے گولوں کا ریہرسل ہوا تھا. خبر کے مطابق جواہر باغ کے لئے 30 کمپنیاں طلب کی گئی تھیں. مرحوم ایس پی سٹی مکل دویدی کا بیان تھا کہ اس کے لئے حکومت سے 15 کمپنی ریپڈ ایکشن فورس کی مانگ کی گئی ہے. گوگل میپ کی نظر سے جواہر باغ پر نظر رکھی جا رہی ہے.

ان خبروں سے پتہ چلتا ہے کہ جواہر باغ کے اندر کیا ہو رہا ہے، اس کی اطلاع انتظامیہ سے لے کر پریس اور متھرا کے شہریوں کو تھی. تمام طرح کی خبریں شائع ہو رہی تھیں، تو کیا ستیہ گرہیوں کا حوصلہ اتنا بڑھ گیا تھا کہ انہوں نے اسلحے جمع کر لئے. نیتا جی سبھاش چندر بوس کے نام پر یہ لوگ پوری فوج بنا کر بیٹھے تھے. اتنے اسلحے کہاں سے آتے ہیں. ایسے لوگوں کے پاس پیسے کہاں سے آ جاتے ہیں. کس طرح ان کی اتنی بڑی سلطنت کھڑی ہو جاتی ہے. مدھیہ پردیش کے سمندر میں اس نے ایک عجیب سی مہم چلائی تھی کہ ایک روپے لیٹر میں پٹرول- ڈیزل ملے، 12 روپے تولہ سونا ملے، گولڈ کرنسی چلانا چاہتا تھا. کیا ایسے لوگوں کے مطالبات کے سامنے انتظامیہ اس لئے جھکتی ہے، کیونکہ ان کے ساتھ مذہبی بنیاد بھی جڑا رہتا ہے. جے گرودیو کی اپنی ایک مذہبی سلطنت تو ہے ہی. کیا مذہبی ہونے کی وجہ سے انتظامیہ کو نہیں سوجھتا کہ ان سے کیسے نپٹے.

نومبر 2014 میں ہسار میں کوئی رام پال تھا، رام پال نے ستلوک آشرم کے اندر سینکڑوں لوگوں کو یرغمال سا بنا لیا تھا. ہائی کورٹ کا حکم تھا کہ ان کی پیشی ہو مگر دو ہفتے لگ گئے پولیس کو آشرم خالی کرانے میں. بیس ہزار لوگ آشرم کے اندر تھے. وزیر اعلی نے اپیل کی، ہسار کی ناکہ بندی کر دی. خوب گولیاں چلیں. آنسو گیس چلے. الٹا صحافیوں پر پولیس نے حملہ کر دیا. آشرم کے دم پر پورے ہریانہ انتظامیہ کی ناک میں دم کر رکھا تھا. یہ آدمی چار سال تک عدالت میں پیش ہی نہیں ہوا. وہاں بھی متھرا کے وکلاء کی طرح ہریانہ بار ایسوسی ایشن نے توہین عدالت کی عرضداشت داخل کی تھی. نیم فوجی دستوں کی 35 کمپنیاں تعینات کرنی پڑیں. ہوائی سروے ہوئے. حامیوں نے ججوں پر الزام لگانے والے بینر پوسٹر لگا دیے. پتہ چلا کہ آشرم کے پاس اپنے کمانڈو ہیں. رام پال نے لوگوں کو آگے کر دیا. وہ پولیس سے لوہا لینے لاٹھی ڈنڈا لے کر آگے آ گئے. بعد میں آشرم خالی کرا لیا گیا. ستلوک آشرم تو خالی ہو گیا مگر اسی ہریانہ میں کچھ ایسے آشرم ہیں، جہاں پولیس جا نہیں سکتی. متھرا کے ان ستیہ گرہیوں کا حال دیکھا ہی آپ نے!

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close