آج کا کالم

"سرپرست دن” پر دہلی کے ایک اسکول کا تجزیہ

رویش کمار

سرکاری سروودیہ اسکول، علی گنج، لودھی کالونی، نئی دہلی اسکول کے مرکزی دروازے پرگیندے کے پھول کی لڑيا لٹک رہی تھیں- سرخ اور سفید پھول کی پتیوں سے فرش پر ویلکم لکھا ہوا تھا- ماں باپ اچھی طرح سے سج سنور کر اپنے بچوں کے ساتھ جھٹكتے ہوئے چلے آ رہے تھے- سب کو گلاب کا ایک پھول دیا جا رہا تھا- نادانستہ طور پر مجھے بھی مل گیا اور کوئی پہچان نہ لے، اس وجہ سے میں تیزی سے لے کر آگے بڑھ گیا- میں دیکھنا چاہتا تھا کہ دہلی میں جس "سرپرست دن” کے فروغ کے لئے نائب وزیر اعلی منیش سسودیا نے ریڈیو سننا مشکل کر دیا ہے، اس کا کوئی فائدہ بھی ہے یا نہیں- ریڈیو پر تین چار بار سننے کے بعد ہی طے کرلیا کہ دیکھ کر آتے ہیں- تبھی راستے میں یہ اسکول دکھ گیا اور میں نے اپنا آپریشن تجربہ شروع کر دیا- ہر شہری کو خاص کر مڈل کلاس کو پاس کے سرکاری اسکول اور ہسپتال میں جا کر خود دیکھنا چاہئے کہ کام ہو رہا ہے یا نہیں- یہ کام خود کرنا چاہئے نہ کہ اخبار اور ٹی وی کے بھروسے رہنا چاہئے-

دروازے سے اندر داخل ہوتے ہی سروودیہ اسکول کا باہری احاطہ انتہائی صاف ستھرا دیکھنے کو ملا- کئی دہائیوں پرانے سروودیہ اسکول میں ہزار کے قریب بچے پڑھتے ہیں- نرسری سے بارہویں تک- عام دنوں میں تو صاف ستھرا شاید نہیں ہوتا ہوگا، لیکن ایک دن کے لئے ہی صحیح احاطے کی صفائی نے مجھے متاثر کیا- دیواریں بتا رہی تھیں کہ باقی دنوں میں یہاں حالات ٹھیک ہی رہتے ہیں- اسکول اندر سے کافی سجا سنورا لگ رہا تھا- تھوڑا رنگین بھی- طلبہ و طالبات والنٹير بنے ہوئے تھے- آنے والے ہر سرپرست سے ایک کاغذ پر نام اور فون نمبر لے رہے تھے- ان کا دستخط لیا جا رہا تھا اور پھر انہیں کلاس کے حساب سے بھیج دیا جا رہا تھا. والدین کے ساتھ بچے ایسے دبکے ہوئے چلے جا رہے تھے، جیسے پہلی بار اسکول آئے ہوں- زندگی میں کبھی بد معاشی نہ کی ہو، کبھی تیز دوڑ نہ لگاءی ہو- خاص کر کمزور طالب علم کچھ زیادہ ہی شریف لگ رہے تھے- ماں باپ کے ساتھ رذلٹ اور وہ بھی استاد کے سامنے! اتنا خطرناک کامبینیشن ہو تو اسکول سے بھاگ جانے کا ہی دل یکرنے لگے-

میں پہچانے جانے کو لے کر کافی محتاط تھا- ایک کلاس روم کے باہر دروازے کی اوٹ میں چھپ کر سننے لگا کہ ٹیچر بچوں کے عام والدین سے کیسے بات کرتے ہیں- کیا انہیں وہ احترام حاصل ہے جو پیسے والے والدین کو ملتا ہے- بات چیت سن ہی رہا تھا کہ پہچان لیا گیا- اب اندر جانے کے علاوہ کوئی چارہ نہیں بچا تھا- ہندی ٹیچر سمجھا رہے تھے کہ اس مضمون میں اتنے نمبر آئے ہیں- اس میں کم آئے ہیں- یہ میرے مضمون کا نمبر ہے- بہت کم کوشش میں اور بھی اچھا کر سکتا ہے- بات چیت کافی مثبت اور جامع لگی. اس سلسلے میں میرا ایک مشورہ ہے- ٹیچر کو یہ پوچھنا چاہئے کہ کیا وہ ان کے پڑھانے سے مطمئن ہیں- جب وہ کلاس میں بولتے ہیں تو بچہ سن سمجھ پاتا ہے- کیا انہیں شاعری سمجھ آتی ہے یا کہانی میں دل لگتا ہے- اچھا لگا کہ ٹیچر پورے احترام کے ساتھ والدین کے ساتھ بات کر رہے تھے. ماں باپ بھی احترام کر رہے تھے-

دیویندر ٹھاکر علی گنج میں ہی بال کاٹنے کا کام کرتے ہیں- ان کا بچہ 11 ویں میں پہنچ گیا، لیکن کبھی اس کے اسکول نہیں آئے- پہلی بار فروری کے "سرپرست دن” پر آنا ہوا. تب پتہ چلا کہ بچہ تو پڑھائی میں کچھ خاص نہیں کرتا- یہ پوچھنے پر کہ کیا موہن (بیٹے کا نام تبدیل کر دیا ہے) آپ کے کام میں بھی ہاتھ بنٹاتا ہے، تو دیویندر جی نے کہا کہ نہیں، میں نے صرف پڑھنے کے لئے کہا ہے- اس بار دیویندر دوسری بار آئے ہیں- اس سے پہلے موہن رز لٹ کے بارے میں کچھ بتاتا ہی نہیں تھا اور نہ انہیں معلوم تھا- دیویندر جی کو لگتا تھا کہ اسکول جا رہا ہے، تو پڑھ ہی رہا ہوگا- لیکن اب انہیں پتہ چل رہا ہے کہ تمام مضمون میں پڑھائی اچھی نہیں ہے-

 ہندی استاد سے کافی احترام سے ملنے کے بعد بھی دیویندر ہمت نہیں جٹا سکے یا انہیں ابھی پتہ نہیں ہے کہ پڑھائی کو لے کر استاد سے کیا پوچھنا چاہئے، لہذا سارا وقت سنتے ہی رہے، سر ہی ہلا تےرہے- ہو سکتا ہے یہ مہم کامیاب رہی تو ایک دن والدین یہ بھی کہیں گے کہ سر آپ جو پڑھاتے ہیں، کہتا ہے کہ سمجھ نہیں آتا، ٹیوشن دلوا دو، تو ہم کہاں سے ٹیوشن دلوائیں- اپنے والد کے سامنے کچھ  مضمون میں اوسط کارکردگی دیکھ کر موہن چپ ہی رہا- امید کرتا ہوں کہ ایک دن”سرپرست دن”  کے موقع پر طالب علم بھی اپنے استاد سے کہیں گے کہ سر فلاں مضمون نہیں سمجھ پاتا ہوں. پتہ نہیں ہے کہ الجبرا کیوں پڑھتے ہیں؟ الجبرا پڑھنے سے جلیبی بنتی ہے یا روٹی پکتی ہے- ایسے سوالات پوچھنے بے حد ضروری ہیں-

اب میں بہت سے اساتذہ سے گھر چکا تھا- پھر بھی میل ملاپ کے بعد ان سے دور ہوگیا- مجھے سرپرستوں سے بات کرنی تھی- بہترین فٹنگ والے سفاری سوٹ میں رام پھل جی مل گئے- آج کل لوگ ویسے بھی سفاری سوٹ کم پہنتے ہیں- ایک زمانے میں شمالی ہند کے جہیزکے لالچی انجینئر اور ڈاکٹر دلهوں کے لئے سفاری سوٹ خواب ہوا کرتا تھا. سفاری میں رام پھل جی کا انداز بتا رہا تھا کہ یہ ان کی محنت کی کمائی ہے. ویسے بھی اس عمر میں سسرال سے بنیان بھی نہیں ملتا-

رامپھل جی کا بیٹا پہلے نریلا کے سرکاری اسکول میں پڑھتا تھا- نریلا کے اسکول سے وہ مطمئن نہیں تھے- سروودیہ اسکول میں اس کا پہلا سال ہے. رام پھل جی سے چلتے چلتے پوچھ لیا کہ یہ اسکیم فرضی تو نہیں ہے- کچھ فائدہ بھی ہے اس کا؟ رام پھل محتاط ہو گئے، کہا – بالکل بہت اچھا ہے. میں تو پہلے بھی ہفتہ کے روز اسکول جاتا تھا، لیکن تمام سرپرست نہیں آتے تھے- تب بھی کیا رزلٹ آیا، کیا نہیں، یہ بتاتا نہیں تھا- میں تو کہتا ہوں کہ ہر تین ماہ میں ہونا چاہئے- بہت اچھا ہے- دیویندر ٹھاکر نے بھی کہا کہ اب پتہ چلا کہ سرکاری اسکول میں بھی کچھ ہو سکتا ہے- میں تو اب نظر رکھنے لگا ہوں کہ موہن پڑھ رہا ہے یا نہیں-

 طالب علموں نے بتایا کہ پہلے بھی ہر سال اسکول کے آخری ہفتے کے دن پر والدین کو بلایا جاتا تھا، مگر کچھ آتے تھے اور کچھ نہیں- لیکن اب سب کو آنا پڑتا ہے- اب ہم اپنا رزلٹ چھپا نہیں پاتے ہیں، بتانا پڑتا ہے- میں کچھ اعداد و شمار تلاش کر رہا تھا کہ فروری کے "سرپرست دن” پر ہندی میں کتنے نمبر تھے- اکتوبر کے سرپرست دن کے موقع اس میں بہتری آئی یا نہیں- اس طرح کے سوال پوچھے جانے چاہئے، لیکن اس کے لئے ضروری ہے کہ آپ شہری بھی خود جاکر چیک کریں کہ سرکاری اسکولوں میں کیا ہوتا ہے- ان کی عمارت کیسی ہے، کلاس روم کیسے ہیں. باہر آتے وقت ایک طالب علم نے مجھ سے بھی پوچھ لیا کہ سر بتایا نہیں میرا اسکول کیسا ہے- تمہارا اسکول بہت اچھا ہے. یہ بھی ضروری ہے کہ ہم سرکاری اسکول کے طالب علموں میں اعتماد بھریں کہ حکومت کا ہے تو بھی اچھا ہے- حکومت کا ہے تو اچھا ہونا ہی چاہئے-  میں نے تو ایک اسکول دیکھا، کاش چار پانچ اسکولوں کا دورہ کر پاتا-

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close